Search hadith by
Hadith Book
Search Query
Search Language
English Arabic Urdu
Search Type Basic    Case Sensitive
 

Sahih Bukhari

Afflictions and the End of the World

كتاب الفتن

حَدَّثَنِي عَبْدُ اللَّهِ بْنُ مُحَمَّدٍ، حَدَّثَنَا هِشَامُ بْنُ يُوسُفَ، عَنْ مَعْمَرٍ، عَنِ الزُّهْرِيِّ، عَنْ سَالِمٍ، عَنْ أَبِيهِ، عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم أَنَّهُ قَامَ إِلَى جَنْبِ الْمِنْبَرِ فَقَالَ ‏"‏ الْفِتْنَةُ هَا هُنَا الْفِتْنَةُ هَا هُنَا مِنْ حَيْثُ يَطْلُعُ قَرْنُ الشَّيْطَانِ ‏"‏‏.‏ أَوْ قَالَ ‏"‏ قَرْنُ الشَّمْسِ ‏"‏‏.‏


Chapter: “Al-Fitnah will appear from the east.”

Narrated Salim's father: The Prophet (PBUH) stood up beside the pulpit (and pointed with his finger towards the East) and said, "Afflictions are there! Afflictions are there, from where the side of the head of Satan comes out," or said, "..the side of the sun.." ھم سے عبداللھ بن محمد مسندی نے بیان کیا ، انھوں نے کھا ھم سے ھشام بن یوسف نے بیان کیا ، انھوں نے کھا ان سے معمر نے بیان کیا ، ان سے زھری نے بیان کیا ، ان سے سالم نے ، ان سے ان کے والد نے کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم منبر کے ایک طرف کھڑے ھوئے اور فرمایا فتنھ ادھر ھے ، فتنھ ادھر ھے جدھر سے شیطان کا سینگ طلوع ھوتا ھے یا ” سورج کا سینگ “ فرمایا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 92 Hadith no 7092
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 88 Hadith no 212


حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ، حَدَّثَنَا لَيْثٌ، عَنْ نَافِعٍ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ ـ رضى الله عنهما ـ أَنَّهُ سَمِعَ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم وَهْوَ مُسْتَقْبِلٌ الْمَشْرِقَ يَقُولُ ‏"‏ أَلاَ إِنَّ الْفِتْنَةَ هَا هُنَا مِنْ حَيْثُ يَطْلُعُ قَرْنُ الشَّيْطَانِ ‏"‏‏.‏

Narrated Ibn `Umar: I heard Allah's Messenger (PBUH) while he was facing the East, saying, "Verily! Afflictions are there, from where the side of the head of Satan comes out." ھم سے قتیبھ بن سعید نے بیان کیا ، کھا ھم سے لیث نے بیان کیا ، ان سے نافع نے اور ان سے ابن عمر رضی اللھ عنھما نے کھ انھوں نے نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم سے سنا ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم مشرق کی طرف رخ کئے ھوئے تھے اور فرما رھے تھے آگاھ ھو جاؤ ، فتنھ اس طرف ھے جدھر سے شیطان کا سینگ طلوع ھوتا ھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 92 Hadith no 7093
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 88 Hadith no 213


حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ، حَدَّثَنَا أَزْهَرُ بْنُ سَعْدٍ، عَنِ ابْنِ عَوْنٍ، عَنْ نَافِعٍ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ، قَالَ ذَكَرَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ اللَّهُمَّ بَارِكْ لَنَا فِي شَأْمِنَا، اللَّهُمَّ بَارِكْ لَنَا فِي يَمَنِنَا ‏"‏‏.‏ قَالُوا وَفِي نَجْدِنَا‏.‏ قَالَ ‏"‏ اللَّهُمَّ بَارِكْ لَنَا فِي شَأْمِنَا، اللَّهُمَّ بَارِكْ لَنَا فِي يَمَنِنَا ‏"‏‏.‏ قَالُوا يَا رَسُولَ اللَّهِ وَفِي نَجْدِنَا فَأَظُنُّهُ قَالَ فِي الثَّالِثَةَ ‏"‏ هُنَاكَ الزَّلاَزِلُ وَالْفِتَنُ، وَبِهَا يَطْلُعُ قَرْنُ الشَّيْطَانِ ‏"‏‏.‏

Narrated Ibn `Umar: The Prophet (PBUH) said, "O Allah! Bestow Your blessings on our Sham! O Allah! Bestow Your blessings on our Yemen." The People said, "And also on our Najd." He said, "O Allah! Bestow Your blessings on our Sham (north)! O Allah! Bestow Your blessings on our Yemen." The people said, "O Allah's Apostle! And also on our Najd." I think the third time the Prophet (PBUH) said, "There (in Najd) is the place of earthquakes and afflictions and from there comes out the side of the head of Satan." ھم سے علی بن عبداللھ مدینی نے بیان کیا ، انھوں نے کھا ھم سے ازھر بن سعد نے بیان کیا ، ان سے ابن عون نے بیان کیا ، ان سے نافع نے بیان کیا ، ان سے حضرت عبداللھ بن عمر رضی اللھ عنھما نے بیان کیا کھ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا اے اللھ ! ھمارے ملک شام میں ھمیں برکت دے ، ھمارے یمن میں ھمیں برکت دے ۔ صحابھ نے عرض کیا اور ھمارے نجد میں ؟ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے پھر فرمایا اے اللھ ھمارے شام میں برکت دے ، ھمیں ھمارے یمن میں برکت دے ۔ صحابھ نے عرض کی اور ھمارے نجد میں ؟ میرا گمان ھے کھ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے تیسری مرتبھ فرمایا وھاں زلزلے اور فتنے ھیں اور وھاں شیطان کا سینگ طلوع ھو گا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 92 Hadith no 7094
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 88 Hadith no 214


حَدَّثَنَا إِسْحَاقُ الْوَاسِطِيُّ، حَدَّثَنَا خَالِدٌ، عَنْ بَيَانٍ، عَنْ وَبَرَةَ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ، عَنْ سَعِيدِ بْنِ جُبَيْرٍ، قَالَ خَرَجَ عَلَيْنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ عُمَرَ فَرَجَوْنَا أَنْ يُحَدِّثَنَا، حَدِيثًا حَسَنًا ـ قَالَ ـ فَبَادَرَنَا إِلَيْهِ رَجُلٌ فَقَالَ يَا أَبَا عَبْدِ الرَّحْمَنِ حَدِّثْنَا عَنِ الْقِتَالِ فِي الْفِتْنَةِ وَاللَّهُ يَقُولُ ‏{‏وَقَاتِلُوهُمْ حَتَّى لاَ تَكُونَ فِتْنَةٌ‏}‏ فَقَالَ هَلْ تَدْرِي مَا الْفِتْنَةُ ثَكِلَتْكَ أُمُّكَ، إِنَّمَا كَانَ مُحَمَّدٌ صلى الله عليه وسلم يُقَاتِلُ الْمُشْرِكِينَ، وَكَانَ الدُّخُولُ فِي دِينِهِمْ فِتْنَةً، وَلَيْسَ كَقِتَالِكُمْ عَلَى الْمُلْكِ‏.‏

Narrated Sa`id bin Jubair: `Abdullah bin `Umar came to us and we hoped that he would narrate to us a good Hadith. But before we asked him, a man got up and said to him, "O Abu `Abdur-Rahman! Narrate to us about the battles during the time of the afflictions, as Allah says:-- 'And fight them until there is no more afflictions (i.e. no more worshipping of others besides Allah).'" (2.193) Ibn `Umar said (to the man), "Do you know what is meant by afflictions? Let your mother bereave you! Muhammad used to fight against the pagans, for a Muslim was put to trial in his religion (The pagans will either kill him or chain him as a captive). His fighting was not like your fighting which is carried on for the sake of ruling." ھم سے اسحاق بن شاھین واسطی نے بیان کیا ، کھا ھم سے خلف بن عبداللھ طحان نے بیان کیا ، ان سے بیان ابن بصیر نے ، ان سے وبرھ بن عبدالرحمٰن نے ، ان سے سعید بن جبیر نے بیان کیا کھ عبداللھ بن عمر رضی اللھ عنھما ھمارے پاس آئے تو ھم نے امید کی کھ وھ ھم سے کوئی اچھی بات کریں گے ۔ اتنے میں ایک صاحب حکیم نامی ھم سے پھلے ان کے پاس پھنچ گئے اور پوچھا اے ابوعبدالرحمن ! ھم سے زمانھ فتنھ میں قتال کے متعلق حدیث بیان کیجئے ۔ اللھ تعالیٰ فرماتا ھے تم ان سے جنگ کرو یھاں تک کھ فتنھ باقی نھ رھے ۔ ابن عمر رضی اللھ عنھما نے کھا تمھیں معلوم بھی ھے کھ فتنھ کیا ھے ؟ تمھاری ماں تمھیں روئے ۔ محمد صلی اللھ علیھ وسلم فتنھ رفع کرنے کے لیے مشرکین سے جنگ کرتے تھے ، شرک میں پڑنا یھ فتنھ ھے ۔ کیا آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کی لڑائی تم لوگوں کی طرح بادشاھت حاصل کرنے کے لیے ھوتی تھی ؟

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 92 Hadith no 7095
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 88 Hadith no 215


حَدَّثَنَا عُمَرُ بْنُ حَفْصِ بْنِ غِيَاثٍ، حَدَّثَنَا أَبِي، حَدَّثَنَا الأَعْمَشُ، حَدَّثَنَا شَقِيقٌ، سَمِعْتُ حُذَيْفَةَ، يَقُولُ بَيْنَا نَحْنُ جُلُوسٌ عِنْدَ عُمَرَ قَالَ أَيُّكُمْ يَحْفَظُ قَوْلَ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم فِي الْفِتْنَةِ‏.‏ قَالَ ‏"‏ فِتْنَةُ الرَّجُلِ فِي أَهْلِهِ وَمَالِهِ وَوَلَدِهِ وَجَارِهِ، تُكَفِّرُهَا الصَّلاَةُ وَالصَّدَقَةُ وَالأَمْرُ بِالْمَعْرُوفِ وَالنَّهْىُ عَنِ الْمُنْكَرِ ‏"‏‏.‏ قَالَ لَيْسَ عَنْ هَذَا أَسْأَلُكَ، وَلَكِنِ الَّتِي تَمُوجُ كَمَوْجِ الْبَحْرِ‏.‏ قَالَ لَيْسَ عَلَيْكَ مِنْهَا بَأْسٌ يَا أَمِيرَ الْمُؤْمِنِينَ، إِنَّ بَيْنَكَ وَبَيْنَهَا بَابًا مُغْلَقًا‏.‏ قَالَ عُمَرُ أَيُكْسَرُ الْبَابُ أَمْ يُفْتَحُ قَالَ بَلْ يُكْسَرُ‏.‏ قَالَ عُمَرُ إِذًا لاَ يُغْلَقَ أَبَدًا‏.‏ قُلْتُ أَجَلْ‏.‏ قُلْنَا لِحُذَيْفَةَ أَكَانَ عُمَرُ يَعْلَمُ الْبَابَ قَالَ نَعَمْ كَمَا أَعْلَمُ أَنَّ دُونَ غَدٍ لَيْلَةً، وَذَلِكَ أَنِّي حَدَّثْتُهُ حَدِيثًا لَيْسَ بِالأَغَالِيطِ‏.‏ فَهِبْنَا أَنْ نَسْأَلَهُ مَنِ الْبَابُ فَأَمَرْنَا مَسْرُوقًا فَسَأَلَهُ فَقَالَ مَنِ الْبَابُ قَالَ عُمَرُ‏.‏

Narrated Shaqiq: I heard Hudhaifa saying, "While we were sitting with `Umar, he said, 'Who among you remembers the statement of the Prophet (PBUH) about the afflictions?' Hudhaifa said, "The affliction of a man in his family, his property, his children and his neighbors are expiated by his prayers, Zakat (and alms) and enjoining good and forbidding evil." `Umar said, "I do not ask you about these afflictions, but about those afflictions which will move like the waves of the sea." Hudhaifa said, "Don't worry about it, O chief of the believers, for there is a closed door between you and them." `Umar said, "Will that door be broken or opened?" I said, "No. it will be broken." `Umar said, "Then it will never be closed," I said, "Yes." We asked Hudhaifa, "Did `Umar know what that door meant?" He replied, "Yes, as I know that there will be night before tomorrow morning, that is because I narrated to him a true narration free from errors." We dared not ask Hudhaifa as to whom the door represented so we ordered Masruq to ask him what does the door stand for? He replied, "`Umar." ھم سے عمر بن حفص بن غیاث نے بیان کیا ، کھا ھم سے ھمارے والد نے بیان کیا ، کھا ھم سے اعمش نے بیان کیا ، ان سے شقیق نے بیان کیا ، انھوں نے حذیفھ رضی اللھ عنھ سے سنا ، انھوں نے بیان کیا کھ ھم حضرت عمر رضی اللھ عنھ کی خدمت میں بیٹھے ھوئے تھے کھ انھوں نے پوچھا تم میں سے کسے فتنھ کے بارے میں نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم کا فرمان یاد ھے ؟ حذیفھ رضی اللھ عنھ نے کھا کھ انسان کا فتنھ ( آزمائش ) اس کی بیوی ، اس کے مال ، اس کے بچے اور پڑوسی کے معاملات میں ھوتا ھے جس کا کفارھ نماز ، صدقھ ، امربالمعروف اور نھی عن المنکر کر دیتا ھے ۔ حضرت عمر رضی اللھ عنھ نے کھا کھ میں اس کے متعلق نھیں پوچھتا بلکھ اس فتنھ کے بارے میں پوچھتا ھوں جو دریا کی طرح ٹھاٹھیں مارے گا ۔ حذیفھ رضی اللھ عنھ نے بیان کیا کھ امیرالمؤمنین تم پر اس کا کوئی خطرھ نھیں اس کے اور تمھارے درمیان ایک بند دروازھ رکاوٹ ھے ۔ عمر رضی اللھ عنھ نے پوچھا کیا وھ دروازھ توڑ دیا جائے گا یا کھولا جائے گا ؟ بیان کیا توڑ دیا جائے گا ۔ عمر رضی اللھ عنھ نے اس پر کھا کھ پھر تو وھ کبھی بند نھ ھو سکے گا ۔ میں نے کھا جی ھاں ۔ ھم نے حذیفھ رضی اللھ عنھ سے پوچھا کیا عمر رضی اللھ عنھ اس دروازھ کے متعلق جانتے تھے ؟ فرمایا کھ ھاں ، جس طرح میں جانتا ھوں کھ کل سے پھلے رات آئے گی کیونکھ میں نے ایسی بات بیان کی تھی جو بے بنیاد نھیں تھی ۔ ھمیں ان سے یھ پوچھتے ھوئے ڈر لگا کھ وھ دروازھ کون تھے ۔ چنانچھ ھم نے مسروق سے کھا ( کھ وھ پوچھیں ) جب انھوں نے پوچھا کھ وھ دروازھ کون تھے ؟ تو انھوں نے کھا کھ وھ دروازھ حضرت عمر رضی اللھ عنھ تھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 92 Hadith no 7096
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 88 Hadith no 216


حَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ أَبِي مَرْيَمَ، أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ، عَنْ شَرِيكِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ، عَنْ سَعِيدِ بْنِ الْمُسَيَّبِ، عَنْ أَبِي مُوسَى الأَشْعَرِيِّ، قَالَ خَرَجَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم إِلَى حَائِطٍ مِنْ حَوَائِطِ الْمَدِينَةِ لِحَاجَتِهِ، وَخَرَجْتُ فِي إِثْرِهِ، فَلَمَّا دَخَلَ الْحَائِطَ جَلَسْتُ عَلَى بَابِهِ وَقُلْتُ لأَكُونَنَّ الْيَوْمَ بَوَّابَ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم وَلَمْ يَأْمُرْنِي فَذَهَبَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم وَقَضَى حَاجَتَهُ، وَجَلَسَ عَلَى قُفِّ الْبِئْرِ، فَكَشَفَ عَنْ سَاقَيْهِ وَدَلاَّهُمَا فِي الْبِئْرِ، فَجَاءَ أَبُو بَكْرٍ يَسْتَأْذِنُ عَلَيْهِ لِيَدْخُلَ فَقُلْتُ كَمَا أَنْتَ حَتَّى أَسْتَأْذِنَ لَكَ، فَوَقَفَ فَجِئْتُ إِلَى النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم فَقُلْتُ يَا نَبِيَّ اللَّهِ أَبُو بَكْرٍ يَسْتَأْذِنُ عَلَيْكَ‏.‏ قَالَ ‏"‏ ائْذَنْ لَهُ، وَبَشِّرْهُ بِالْجَنَّةِ ‏"‏‏.‏ فَدَخَلَ فَجَاءَ عَنْ يَمِينِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم فَكَشَفَ عَنْ سَاقَيْهِ وَدَلاَّهُمَا فِي الْبِئْرِ، فَجَاءَ عُمَرُ فَقُلْتُ كَمَا أَنْتَ حَتَّى أَسْتَأْذِنَ لَكَ‏.‏ فَقَالَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ ائْذَنْ لَهُ، وَبَشِّرْهُ بِالْجَنَّةِ ‏"‏‏.‏ فَجَاءَ عَنْ يَسَارِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم فَكَشَفَ عَنْ سَاقَيْهِ فَدَلاَّهُمَا فِي الْبِئْرِ، فَامْتَلأَ الْقُفُّ فَلَمْ يَكُنْ فِيهِ مَجْلِسٌ، ثُمَّ جَاءَ عُثْمَانُ فَقُلْتُ كَمَا أَنْتَ حَتَّى أَسْتَأْذِنَ لَكَ‏.‏ فَقَالَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ ائْذَنْ لَهُ، وَبَشِّرْهُ بِالْجَنَّةِ، مَعَهَا بَلاَءٌ يُصِيبُهُ ‏"‏‏.‏ فَدَخَلَ فَلَمْ يَجِدْ مَعَهُمْ مَجْلِسًا، فَتَحَوَّلَ حَتَّى جَاءَ مُقَابِلَهُمْ عَلَى شَفَةِ الْبِئْرِ، فَكَشَفَ عَنْ سَاقَيْهِ ثُمَّ دَلاَّهُمَا فِي الْبِئْرِ‏.‏ فَجَعَلْتُ أَتَمَنَّى أَخًا لِي وَأَدْعُو اللَّهَ أَنْ يَأْتِيَ‏.‏ قَالَ ابْنُ الْمُسَيَّبِ فَتَأَوَّلْتُ ذَلِكَ قُبُورَهُمُ اجْتَمَعَتْ هَا هُنَا وَانْفَرَدَ عُثْمَانُ‏.‏

Narrated Abu Musa Al-Ash`ari: The Prophet (PBUH) went out to one of the gardens of Medina for some business and I went out to follow him. When he entered the garden, I sat at its gate and said to myself, "To day I will be the gatekeeper of the Prophet though he has not ordered me." The Prophet (PBUH) went and finished his need and went to sit on the constructed edge of the well and uncovered his legs and hung them in the well. In the meantime Abu Bakr came and asked permission to enter. I said (to him), "Wait till I get you permission." Abu Bakr waited outside and I went to the Prophet (PBUH) and said, "O Allah's Prophet! Abu Bakr asks your permission to enter." He said, "Admit him, and give him the glad tidings of entering Paradise." So Abu Bakr entered and sat on the right side of the Prophet (PBUH) and uncovered his legs and hung them in the well. Then `Umar came and I said (to him), "Wait till I get you permission." The Prophet (PBUH) said, "Admit him and give him the glad tidings of entering Paradise." So `Umar entered and sat on the left side of the Prophet and uncovered his legs and hung them in the well so that one side of the well became fully occupied and there remained no place for any-one to sit. Then `Uthman came and I said (to him), "Wait till I get permission for you." The Prophet (PBUH) said, "Admit him and give him the glad tidings of entering Paradise with a calamity which will befall him." When he entered, he could not find any place to sit with them so he went to the other edge of the well opposite them and uncovered his legs and hung them in the well. I wished that a brother of mine would come, so I invoked Allah for his coming. (Ibn Al-Musaiyab said, "I interpreted that (narration) as indicating their graves. The first three are together and the grave of `Uthman is separate from theirs.") ھم سے سعید بن ابی مریم نے بیان کیا ، کھا ھم کو محمد بن جعفر نے خبر دی ، انھیں شریک بن عبداللھ نے ، انھیں سعید بن مسیب نے اور ان سے ابوموسیٰ اشعری رضی اللھ عنھ نے بیان کیا کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم مدینھ کے باغات میں کسی باغ کی طرف اپنی کسی ضرورت کے لئے گئے ، میں بھی آپ کے پیچھے پیچھے گیا ۔ جب آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم باغ میں داخل ھوئے تو میں اس کے دروازے پر بیٹھ گیا اور اپنے دل میں کھا کھ آج میں حضرت کا دربان بنوں گا حالانکھ آپ نے مجھے اس کا حکم نھیں دیا تھا ۔ آپ اندر چلے گئے اور اپنی حاجت پوری کی ۔ پھر آپ کنوئیں کی منڈیر پر بیٹھ گئے اور اپنی دونوں پنڈلیوں کو کھول کر انھیں کنوئیں میں لٹکا لیا ۔ پھر ابوبکر رضی اللھ عنھ آئے اور اندر جانے کی اجازت چاھی ۔ میں نے ان سے کھا کھ آپ یھیں رھیں ، میں آپ کے لیے اجازت لے کر آتا ھوں ۔ چنانچھ وھ کھڑے رھے اور میں نے آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کی خدمت میں حاضر ھو کر عرض کیا یا نبی اللھ ! ابوبکر رضی اللھ عنھ آپ کے پاس آنے کی اجازت چاھتے ھیں ۔ فرمایا کھ انھیں اجازت دے دو اور انھیں جنت کی بشارت سنا دو ۔ چنانچھ وھ اندر آ گئے اور آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کی دائیں جانب آ کر انھوں نے بھی اپنی پنڈلیوں کو کھول کر کنوئیں میں لٹکا لیا ۔ اتنے میں عمر رضی اللھ عنھ آئے ۔ میں نے کھا ٹھھرو میں آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم سے اجازت لے لوں ( اور میں نے اندر جا کر آپ سے عرض کیا ) آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا ان کو بھی اجازت دے اور بھشت کی خوشخبری بھی ۔ خیر وھ بھی آئے اور اسی کنوئیں کی منڈیر پر آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کے بائیں جانب بیٹھے اور اپنی پنڈلیاں کھول کر کنوئیں میں لٹکا دیں ۔ اور کنوئیں کی منڈیر بھر گئی اور وھاں جگھ نھ رھی ۔ پھر عثمان رضی اللھ عنھ آئے اور میں نے ان سے بھی کھا کھ یھیں رھئے یھاں تک کھ آپ کے لیے آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم سے اجازت مانگ لوں ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ انھیں اجازت دو اور جنت کی بشارت دے دو اور اس کے ساتھ ایک آزمائش ھے جو انھیں پھنچے گی ۔ پھر وھ بھی داخل ھوئے ، ان کے ساتھ بیٹھنے کے لیے کوئی جگھ نھ تھی ۔ چنانچھ وھ گھوم کر ان کے سامنے کنوئیں کے کنارے پر آ گئے پھر انھوں نے اپنی پنڈلیاں کھول کر کنوئیں میں پاؤں لٹکالیے ، پھر میرے دل میں بھائی ( غالباً ابوبردھ یا ابورھم ) کی تمنا پیدا ھوئی اور میں دعا کرنے لگا کھ وھ بھی آ جاتے ، ابن المسیب نے بیان کیا کھ میں نے اس سے ان حضرت کی قبروں کی تعبیرلی کھ سب کی قبریں ایک جگھ ھوں گی لیکن عثمان رضی اللھ عنھ کی الگ بقیع غرقد میں ھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 92 Hadith no 7097
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 88 Hadith no 217



@2019 Copyrights: if you have any objection regarding any shared content on pdf9.com please click here.