Search hadith by
Hadith Book
Search Query
Search Language
English Arabic Urdu
Search Type Basic    Case Sensitive
 

Sahih Bukhari

Apostates

كتاب استتابة المرتدين والمعاندين وقتالهم

حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ بُكَيْرٍ، حَدَّثَنَا اللَّيْثُ، عَنْ عُقَيْلٍ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ، أَخْبَرَنِي عُبَيْدُ اللَّهِ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُتْبَةَ، أَنَّ أَبَا هُرَيْرَةَ، قَالَ لَمَّا تُوُفِّيَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم وَاسْتُخْلِفَ أَبُو بَكْرٍ، وَكَفَرَ مَنْ كَفَرَ مِنَ الْعَرَبِ، قَالَ عُمَرُ يَا أَبَا بَكْرٍ، كَيْفَ تُقَاتِلُ النَّاسَ، وَقَدْ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ أُمِرْتُ أَنْ أُقَاتِلَ النَّاسَ حَتَّى يَقُولُوا لاَ إِلَهَ إِلاَّ اللَّهُ‏.‏ فَمَنْ قَالَ لاَ إِلَهَ إِلاَّ اللَّهُ‏.‏ عَصَمَ مِنِّي مَالَهُ وَنَفْسَهُ، إِلاَّ بِحَقِّهِ، وَحِسَابُهُ عَلَى اللَّهِ ‏"‏‏.‏ قَالَ أَبُو بَكْرٍ وَاللَّهِ لأُقَاتِلَنَّ مَنْ فَرَّقَ بَيْنَ الصَّلاَةِ وَالزَّكَاةِ، فَإِنَّ الزَّكَاةَ حَقُّ الْمَالِ، وَاللَّهِ لَوْ مَنَعُونِي عَنَاقًا كَانُوا يُؤَدُّونَهَا إِلَى رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم لَقَاتَلْتُهُمْ عَلَى مَنْعِهَا‏.‏ قَالَ عُمَرُ فَوَاللَّهِ مَا هُوَ إِلاَّ أَنْ رَأَيْتُ أَنْ قَدْ شَرَحَ اللَّهُ صَدْرَ أَبِي بَكْرٍ لِلْقِتَالِ فَعَرَفْتُ أَنَّهُ الْحَقُّ‏.‏

Narrated Abu Huraira: When the Prophet (PBUH) died and Abu Bakr became his successor and some of the Arabs reverted to disbelief, `Umar said, "O Abu Bakr! How can you fight these people although Allah's Messenger (PBUH) said, 'I have been ordered to fight the people till they say: 'None has the right to be worshipped but Allah, 'and whoever said, 'None has the right to be worshipped but Allah', Allah will save his property and his life from me, unless (he does something for which he receives legal punishment) justly, and his account will be with Allah?' "Abu Bakr said, "By Allah! I will fight whoever differentiates between prayers and Zakat as Zakat is the right to be taken from property (according to Allah's Orders). By Allah! If they refused to pay me even a kid they used to pay to Allah's Messenger (PBUH), I would fight with them for withholding it." `Umar said, "By Allah: It was nothing, but I noticed that Allah opened Abu Bakr's chest towards the decision to fight, therefore I realized that his decision was right." ھم سے یحییٰ بن بکیر نے بیان کیا ، کھا ھم سے لیث بن سعد نے ، انھوں نے عقیل سے ، انھوں نے ابن شھاب سے ، انھوں نے کھا مجھ کو عبیداللھ بن عبداللھ بن عتبھ نے خبر دی کھ حضرت ابوھریرھ رضی اللھ عنھ نے کھا جب آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کی وفات ھو گئی اور حضرت ابوبکر صدیق رضی اللھ عنھ خلیفھ بنے اور عرب کے کچھ لوگ کافر بن گئے تو حضرت عمر رضی اللھ عنھ نے ان سے کھا تم ان لوگوں سے کیسے لڑوگے آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے تو یھ فرمایا ھے مجھ کو لوگوں سے لڑنے کا اس وقت تک حکم ھوا جب تک وھ لا الھٰ الا اللھ نھ کھیں پھر جس نے لا الھٰ الا اللھ کھھ لیا اس نے اپنے مال اور اپنی جان کو مجھ سے بچا لیا البتھ کسی حق کے بدلھ اس کی جان یا مال کو نقصان پھنچایا جائے تو یھ اور بات ھے ۔ اب اس کے دل میں کیا ھے اس کا حساب لینے والا اللھ ھے ۔ حضرت ابوبکرصدیق رضی اللھ عنھ نے کھا میں تو خدا کی قسم اس شخص سے لڑوں گا جو نماز اور زکوٰۃ میں فرق کرے ، اس لیے کھ زکوٰۃ مال کا حق ھے ( جیسے نماز جسم کا حق ھے ) خدا کی قسم اگر یھ لوگ مجھ کو ایک بکری کا بچھ نھ دیں گے جو آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کو دیا کرتے تھے تو میں اس کے نھ دینے پر ان سے لڑوں گا ۔ حضرت عمر رضی اللھ عنھ نے کھا قسم خدا کی اس کے بعد میں سمجھ گیا کھ ابوبکر رضی اللھ عنھ کے دل میں جو لڑائی کا ارادھ ھوا ھے یھ اللھ نے ان کے دل میں ڈالا ھے اور میں پھچان گیا کھ ابوبکر رضی اللھ عنھ کی رائے حق ھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 88 Hadith no 6924, 6925
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 84 Hadith no 59


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ مُقَاتِلٍ أَبُو الْحَسَنِ، أَخْبَرَنَا عَبْدُ اللَّهِ، أَخْبَرَنَا شُعْبَةُ، عَنْ هِشَامِ بْنِ زَيْدِ بْنِ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ، قَالَ سَمِعْتُ أَنَسَ بْنَ مَالِكٍ، يَقُولُ مَرَّ يَهُودِيٌّ بِرَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم فَقَالَ السَّامُ عَلَيْكَ‏.‏ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ وَعَلَيْكَ ‏"‏‏.‏ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ أَتَدْرُونَ مَا يَقُولُ قَالَ السَّامُ عَلَيْكَ ‏"‏‏.‏ قَالُوا يَا رَسُولَ اللَّهِ أَلاَ نَقْتُلُهُ قَالَ ‏"‏ لاَ، إِذَا سَلَّمَ عَلَيْكُمْ أَهْلُ الْكِتَابِ فَقُولُوا وَعَلَيْكُمْ ‏"‏‏.‏


Chapter: If somebody else abuses the Prophet (saws)

Narrated Anas bin Malik: A Jew passed by Allah's Messenger (PBUH) and said, "As-Samu 'Alaika." Allah's Messenger (PBUH) said in reply, "We 'Alaika." Allah's Messenger (PBUH) then said to his companions, "Do you know what he (the Jew) has said? He said, 'As-Samu 'Alaika.'" They said, "O Allah's Messenger (PBUH)! Shall we kill him?" The Prophet, said, "No. When the people of the Book greet you, say: 'Wa 'Alaikum.'" ھم سے محمد بن مقاتل ابوالحسن مروزی نے بیان کیا ، کھا ھم کو عبداللھ بن مبارک نے خبر دی ، کھا ھم کو شعبھ بن حجاج نے ، انھوں نے ھشام بن زید بن انس سے ، وھ کھتے تھے میں نے اپنے دادا انس بن مالک رضی اللھ عنھ سے سنا ، وھ کھتے تھے ایک یھودی آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کے پاس سے گزرا کھنے لگا السام علیک یعنی تم مرو ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے جواب میں صرف وعلیک کھا ( تو بھی مرے گا ) پھر آپ نے صحابھ رضی اللھ عنھم سے فرمایا تم کو معلوم ھوا ، اس نے کیا کھا ؟ اس نے اسلام علیک کھا ۔ صحابھ نے عرض کیا یا رسول اللھ ! ( حکم ھو تو ) اس کو مار ڈالیں ۔ آپ نے فرمایا نھیں ۔ جب کتاب والے یھود اور نصاریٰ تم کو سلام کیا کریں تو تم بھی یھی کھا کرو وعلیکم ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 88 Hadith no 6926
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 84 Hadith no 60


حَدَّثَنَا أَبُو نُعَيْمٍ، عَنِ ابْنِ عُيَيْنَةَ، عَنِ الزُّهْرِيِّ، عَنْ عُرْوَةَ، عَنْ عَائِشَةَ ـ رضى الله عنها ـ قَالَتِ اسْتَأْذَنَ رَهْطٌ مِنَ الْيَهُودِ عَلَى النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم فَقَالُوا السَّامُ عَلَيْكَ‏.‏ فَقُلْتُ بَلْ عَلَيْكُمُ السَّامُ وَاللَّعْنَةُ‏.‏ فَقَالَ ‏"‏ يَا عَائِشَةُ إِنَّ اللَّهَ رَفِيقٌ يُحِبُّ الرِّفْقَ فِي الأَمْرِ كُلِّهِ ‏"‏‏.‏ قُلْتُ أَوَلَمْ تَسْمَعْ مَا قَالُوا قَالَ ‏"‏ قُلْتُ وَعَلَيْكُمْ ‏"‏‏.‏

Narrated `Aisha: A group of Jews asked permission to visit the Prophet (and when they were admitted) they said, "As- Samu 'Alaika (Death be upon you)." I said (to them), "But death and the curse of Allah be upon you!" The Prophet (PBUH) said, "O `Aisha! Allah is kind and lenient and likes that one should be kind and lenient in all matters." I said, "Haven't you heard what they said?" He said, "I said (to them), 'Wa 'Alaikum (and upon you). ھم سے ابونعیم نے بیان کیا ، انھوں نے سفیان بن عیینھ سے ، انھوں نے زھری سے ، انھوں نے عروھ سے ، انھوں نے حضرت عائشھ رضی اللھ عنھا سے ، انھوں نے کھا یھود میں سے چند لوگوں نے آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کے پاس آنے کی اجازت چاھی جب آئے تو کھنے لگے السام علیک میں نے جواب میں یوں کھا علیک السام واللعنۃ ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا اے عائشھ ! اللھ تعالیٰ نرمی کرتا ھے اور ھر کام میں نرمی کو پسند کرتا ھے ۔ میں نے کھا یا رسول اللھ ! کیا آپ نے ان کا کھنا نھیں سنا آپ نے فرمایا میں نے بھی تو جواب دے دیا وعلیکم ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 88 Hadith no 6927
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 84 Hadith no 61


حَدَّثَنَا مُسَدَّدٌ، حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ سَعِيدٍ، عَنْ سُفْيَانَ، وَمَالِكِ بْنِ أَنَسٍ، قَالاَ حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ دِينَارٍ، قَالَ سَمِعْتُ ابْنَ عُمَرَ ـ رضى الله عنهما ـ يَقُولُ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ إِنَّ الْيَهُودَ إِذَا سَلَّمُوا عَلَى أَحَدِكُمْ إِنَّمَا يَقُولُونَ سَامٌ عَلَيْكَ‏.‏ فَقُلْ عَلَيْكَ ‏"‏‏.‏

Narrated Ibn `Umar: Allah's Messenger (PBUH) said, "When the Jews greet anyone of you they say: 'Sam'Alaika (death be upon you); so you should say; 'Wa 'Alaika (and upon you).'" ھم سے مسدد نے بیان کیا ، انھوں نے کھا ھم سے یحییٰ بن سعید قطان نے ، انھوں نے سفیان بن عیینھ ، اور امام مالک سے ، ان دونوں نے کھا ھم سے عبداللھ بن دینار نے بیان کیا ، کھا میں نے عبداللھ بن عمر رضی اللھ عنھما سے سنا ، وھ کھتے تھے آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا یھودی لوگ جب تم مسلمانوں میں سے کسی کو سلام کرتے ھیں تو سام علیک کھتے ھیں تم بھی جواب میں علیک کھا کرو ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 88 Hadith no 6928
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 84 Hadith no 62


حَدَّثَنَا عُمَرُ بْنُ حَفْصٍ، حَدَّثَنَا أَبِي، حَدَّثَنَا الأَعْمَشُ، قَالَ حَدَّثَنِي شَقِيقٌ، قَالَ قَالَ عَبْدُ اللَّهِ كَأَنِّي أَنْظُرُ إِلَى النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم يَحْكِي نَبِيًّا مِنَ الأَنْبِيَاءِ ضَرَبَهُ قَوْمُهُ فَأَدْمَوْهُ، فَهْوَ يَمْسَحُ الدَّمَ عَنْ وَجْهِهِ وَيَقُولُ رَبِّ اغْفِرْ لِقَوْمِي، فَإِنَّهُمْ لاَ يَعْلَمُونَ‏.‏


Chapter: Chapter

Narrated `Abdullah: As if I am looking at the Prophet (PBUH) while he was speaking about one of the prophets whose people have beaten and wounded him, and he was wiping the blood off his face and saying, "O Lord! Forgive my, people as they do not know." ھم سے عمر بن حفص بن غیاث نے بیان کیا ، کھا ھم سے ھمارے والد نے ، کھا ھم سے اعمش نے ، کھا مجھ سے شقیق ابن سلمھ نے کھ حضرت عبداللھ بن مسعود رضی اللھ عنھما نے کھا جیسے میں ( اس وقت ) آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کو دیکھ رھا ھوں آپ ایک پیغمبر ( حضرت نوح علیھ السلام ) کی حکایت بیان کر رھے تھے ان کی قوم والوں نے ان کو اتنا مارا کھ لھولھان کر دیا وھ اپنے منھ سے خون پونچھتے تھے اور یوں دعا کرتے جاتے پروردگار میری قوم والوں کو بخش دے وھ نادان ھیں ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 88 Hadith no 6929
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 84 Hadith no 63


حَدَّثَنَا عُمَرُ بْنُ حَفْصِ بْنِ غِيَاثٍ، حَدَّثَنَا أَبِي، حَدَّثَنَا الأَعْمَشُ، حَدَّثَنَا خَيْثَمَةُ، حَدَّثَنَا سُوَيْدُ بْنُ غَفَلَةَ، قَالَ عَلِيٌّ ـ رضى الله عنه ـ إِذَا حَدَّثْتُكُمْ عَنْ رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم حَدِيثًا فَوَاللَّهِ، لأَنْ أَخِرَّ مِنَ السَّمَاءِ أَحَبُّ إِلَىَّ مِنْ أَنْ أَكْذِبَ عَلَيْهِ، وَإِذَا حَدَّثْتُكُمْ فِيمَا بَيْنِي وَبَيْنَكُمْ فَإِنَّ الْحَرْبَ خَدْعَةٌ، وَإِنِّي سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم يَقُولُ ‏"‏ سَيَخْرُجُ قَوْمٌ فِي آخِرِ الزَّمَانِ، حُدَّاثُ الأَسْنَانِ، سُفَهَاءُ الأَحْلاَمِ، يَقُولُونَ مِنْ خَيْرِ قَوْلِ الْبَرِيَّةِ، لاَ يُجَاوِزُ إِيمَانُهُمْ حَنَاجِرَهُمْ، يَمْرُقُونَ مِنَ الدِّينِ كَمَا يَمْرُقُ السَّهْمُ مِنَ الرَّمِيَّةِ، فَأَيْنَمَا لَقِيتُمُوهُمْ فَاقْتُلُوهُمْ، فَإِنَّ فِي قَتْلِهِمْ أَجْرًا لِمَنْ قَتَلَهُمْ يَوْمَ الْقِيَامَةِ ‏"‏‏.‏

Narrated `Ali: Whenever I tell you a narration from Allah's Messenger (PBUH), by Allah, I would rather fall down from the sky than ascribe a false statement to him, but if I tell you something between me and you (not a Hadith) then it was indeed a trick (i.e., I may say things just to cheat my enemy). No doubt I heard Allah's Apostle saying, "During the last days there will appear some young foolish people who will say the best words but their faith will not go beyond their throats (i.e. they will have no faith) and will go out from (leave) their religion as an arrow goes out of the game. So, where-ever you find them, kill them, for who-ever kills them shall have reward on the Day of Resurrection." ھم سے عمر بن حفص بن غیاث نے بیان کیا ، کھا ھم ھمارے سے والد نے ، کھا ھم سے اعمش نے ، کھا ھم سے خیثمھ بن عبدالرحمٰن نے ، کھا ھم سے سوید بن غفلھ نے کھ حضرت علی رضی اللھ عنھ نے کھا جب میں تم سے آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کی کوئی حدیث بیان کروں تو قسم خدا کی اگر میں آسمان سے نیچے گرپڑوں یھ مجھ کو اس سے اچھا لگتا ھے کھ میں آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم پر جھوٹ باندھوں ھاں جب مجھ میں تم میں آپس میں گفتگو ھو تو اس میں بنا کر بات کھنے میں کوئی قباحت نھیں کیونکھ ( آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا ھے ) لڑائی تدبیر اور مکر کا نام ھے ۔ دیکھو میں نے آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم سے سنا ھے آپ فرماتے تھے اخیر زمانھ قریب ھے جب ایسے لوگ مسلمانوں میں نکلیں گے جو نوعمر بیوقوف ھوں گے ( ان کی عقل میں فتور ھو گا ) ظاھر میں تو ساری خلق کے کلاموں میں جو بھتر ھے ( یعنی حدیث شریف ) وھ پڑھیں گے مگر درحقیقت ایمان کا نور ان کے حلق سے نیچے نھیں اترے گا ، وھ دین سے اس طرح باھر ھو جائیں گے جیسے تیر شکار کے جانور سے پار نکل جاتا ھے ۔ ( اس میں کچھ لگا نھیں رھتا ) تم ان لوگوں کو جھاں پانا بے تامل قتل کرنا ، ان کو جھاں پاؤ قتل کرنے میں قیامت کے دن ثواب ملے گا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 88 Hadith no 6930
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 84 Hadith no 64



@2019 Copyrights: if you have any objection regarding any shared content on pdf9.com please click here.