Search hadith by
Hadith Book
Search Query
Search Language
English Arabic Urdu
Search Type Basic    Case Sensitive
 

Sahih Bukhari

Asking Permission

كتاب الاستئذان

حَدَّثَنَا إِسْحَاقُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ، أَخْبَرَنَا رَوْحُ بْنُ عُبَادَةَ، حَدَّثَنَا ابْنُ جُرَيْجٍ، قَالَ أَخْبَرَنِي زِيَادٌ، أَنَّ ثَابِتًا، أَخْبَرَهُ ـ وَهْوَ، مَوْلَى عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ زَيْدٍ ـ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ـ رضى الله عنه ـ عَنْ رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم أَنَّهُ قَالَ ‏"‏ يُسَلِّمُ الرَّاكِبُ عَلَى الْمَاشِي وَالْمَاشِي عَلَى الْقَاعِدِ، وَالْقَلِيلُ عَلَى الْكَثِيرِ ‏"‏‏.‏


Chapter: The walking person should greet the sitting one

Narrated Abu Huraira: Allah's Messenger (PBUH) said, "The riding person should greet the walking one, and the walking one should greet the sitting one, and the small number of persons should greet the large number of persons." ھم سے اسحاق بن ابراھیم نے بیان کیا ، انھوں نے کھا ھم کوروح بن عبادھ نے خبر دی ، انھوں نے کھا ھم سے ابن جریج نے بیان کیا ، انھوں نے کھا کھ مجھے زیاد نے خبر دی ، انھیں ثابت نے خبر دی جو عبدالرحمٰن بن زید کے غلام ھیں ۔ اور انھیں حضرت ابوھریرھ رضی اللھ عنھ نے خبر دی کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا ، سوار پیدل چلنے والے کو سلام کرے ، پیدل چلنے والا بیٹھے ھوئے شخص کو اور چھوٹی جماعت پھلے بڑی جماعت کو سلام کرے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 79 Hadith no 6233
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 74 Hadith no 252


وَقَالَ إِبْرَاهِيمُ عَنْ مُوسَى بْنِ عُقْبَةَ، عَنْ صَفْوَانَ بْنِ سُلَيْمٍ، عَنْ عَطَاءِ بْنِ يَسَارٍ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، قَالَ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ يُسَلِّمُ الصَّغِيرُ عَلَى الْكَبِيرِ، وَالْمَارُّ عَلَى الْقَاعِدِ، وَالْقَلِيلُ عَلَى الْكَثِيرِ ‏"‏‏.‏


Chapter: The younger person should greet the older one

Narrated Abu Huraira: Allah's Messenger (PBUH) said, "The younger person should greet the older one, and the walking person should greet the sitting one, and the small number of persons should greet the large number of persons." اور ابراھیم بن طھمان نے بیان کیا ، انھوں نے کھا کھ ھم سے موسیٰ بن عقبھ نے بیان کیا ، ان سے صفوان بن سلیم نے بیان کیا ، ان سے عطاء بن یسار نے بیان کیا اور ان سے حضرت ابوھریرھ رضی اللھ عنھ نے بیان کیا کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا چھوٹا بڑے کو سلام کرے ، گزرنے والا بیٹھنے والے کواور کم تعدا د والے بڑی تعداد والوں کو ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 79 Hadith no 6234
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 74 Hadith no 252


حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ، حَدَّثَنَا جَرِيرٌ، عَنِ الشَّيْبَانِيِّ، عَنْ أَشْعَثَ بْنِ أَبِي الشَّعْثَاءِ، عَنْ مُعَاوِيَةَ بْنِ سُوَيْدِ بْنِ مُقَرِّنٍ، عَنِ الْبَرَاءِ بْنِ عَازِبٍ ـ رضى الله عنهما ـ قَالَ أَمَرَنَا رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم بِسَبْعٍ بِعِيَادَةِ الْمَرِيضِ، وَاتِّبَاعِ الْجَنَائِزِ، وَتَشْمِيتِ الْعَاطِسِ، وَنَصْرِ الضَّعِيفِ، وَعَوْنِ الْمَظْلُومِ، وَإِفْشَاءِ السَّلاَمِ، وَإِبْرَارِ الْمُقْسِمِ، وَنَهَى عَنِ الشُّرْبِ فِي الْفِضَّةِ، وَنَهَانَا عَنْ تَخَتُّمِ الذَّهَبِ، وَعَنْ رُكُوبِ الْمَيَاثِرِ، وَعَنْ لُبْسِ الْحَرِيرِ، وَالدِّيبَاجِ، وَالْقَسِّيِّ، وَالإِسْتَبْرَقِ‏.‏


Chapter: To propagate As-salam

Narrated Al-Bara' bin 'Azib: Allah's Messenger (PBUH) ordered us to do seven (things): to visit the sick, to follow the funeral processions, to say Tashmit to a sneezer, to help the weak, to help the oppressed ones, to propagate As-Salam (greeting), and to help others to fulfill their oaths (if it is not sinful). He forbade us to drink from silver utensils, to wear gold rings, to ride on silken saddles, to wear silk clothes, Dibaj (thick silk cloth), Qassiy and Istabraq (two kinds of silk). (See Hadith No. 539, Vol. 7) ھم سے قتیبھ نے بیان کیا ، کھا ھم سے جریر نے بیان کیا ، ان سے شیبانی نے ، ان سے اشعث بن ابی الشعثاء نے ، ان سے معاویھ بن سوید بن مقرن نے اور ان سے براء بن عازب رضی اللھ عنھ نے بیان کیا کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے ھمیں سات باتوں کاحکم دیا تھا ۔ بیمار کی مزاج پرسی کرنے کا ، جنازے کے پیچھے چلنے کا ، چھینکنے والے کے جواب دینے کا ۔ کمزور کی مدد کرنے کا ، مظلوم کی مدد کرنے کا ، افشاء سلام ( سلام کا جواب دینے اور بکثرت سلام کرنے ) کا قسم ( حق ) کھانے والے کی قسم پوری کرنے کا ، اور آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے چاندی کے برتن میں پینے سے منع فرمایا تھا اور سونے کی انگوٹھی پھننے سے ھمیں منع فرمایا تھا ۔ میثر ( ریشم کی زین ) پر سوار ھونے سے ، ریشم اور دیباج پھننے ، قسی ( ریشمی کپڑا ) اور استبرق پھننے سے ( منع فرمایا تھا ) ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 79 Hadith no 6235
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 74 Hadith no 253


حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ يُوسُفَ، حَدَّثَنَا اللَّيْثُ، قَالَ حَدَّثَنِي يَزِيدُ، عَنْ أَبِي الْخَيْرِ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَمْرٍو، أَنَّ رَجُلاً، سَأَلَ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم أَىُّ الإِسْلاَمِ خَيْرٌ قَالَ ‏"‏ تُطْعِمُ الطَّعَامَ، وَتَقْرَأُ السَّلاَمَ عَلَى مَنْ عَرَفْتَ، وَعَلَى مَنْ لَمْ تَعْرِفْ ‏"‏‏.‏


Chapter: To greet everybody

Narrated 'Abdullah bin 'Amr: A man asked the Prophet, "What Islamic traits are the best?" The Prophet said, "Feed the people, and greet those whom you know and those whom you do not know." ھم سے عبداللھ بن یوسف نے بیان کیا ، کھا ھم سے لیث بن سعد نے بیان کیا ، کھا کھ مجھ سے یزید نے بیان کیا ، ان سے ابوالخیر نے ، ان سے عبداللھ بن عمر و رضی اللھ عنھ نے کھ ایک صاحب نے نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم سے پوچھا اسلام کی کون سی حالت افضل ھے ؟ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا یھ کھ ( مخلوق خدا کو ) کھا نا کھلاؤاورسلام کرو ، اسے بھی جسے تم پھچانتے ھو اور اسے بھی جسے نھیں پھچانتے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 79 Hadith no 6236
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 74 Hadith no 253


حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، عَنِ الزُّهْرِيِّ، عَنْ عَطَاءِ بْنِ يَزِيدَ اللَّيْثِيِّ، عَنْ أَبِي أَيُّوبَ ـ رضى الله عنه ـ عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ لاَ يَحِلُّ لِمُسْلِمٍ أَنْ يَهْجُرَ أَخَاهُ فَوْقَ ثَلاَثٍ، يَلْتَقِيَانِ فَيَصُدُّ هَذَا، وَيَصُدُّ هَذَا، وَخَيْرُهُمَا الَّذِي يَبْدَأُ بِالسَّلاَمِ ‏"‏‏.‏ وَذَكَرَ سُفْيَانُ أَنَّهُ سَمِعَهُ مِنْهُ ثَلاَثَ مَرَّاتٍ‏.‏

Narrated Abu Aiyub: The Prophet (PBUH) said, "It is not lawful for a Muslim to desert (not to speak to) his brother Muslim for more than three days while meeting, one turns his face to one side and the other turns his face to the other side. Lo! The better of the two is the one who starts greeting the other." ھم سے علی بن عبداللھ نے بیان کیا ، انھوں نے کھا ھم سے سفیان نے بیان کیا ، ان سے زھری نے بیان کیا ، ان سے عطاء بن یزید لیثی نے اور ان سے ابوایوب رضی اللھ عنھ نے کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کسی مسلمان کے لئے جائز نھیں کھ وھ اپنے کسی ( مسلمان ) بھائی سے تین دن سے زیادھ تعلق کاٹے کھ جب وھ ملیں تو یھ ایک طرف منھ پھیرلے اور دوسرا دوسری طرف اور دونوں میں اچھا وھ ھے جو سلام پھلے کرے ۔ اور سفیان نے کھا کھ انھوں نے یھ حدیث زھری سے تین مرتبھ سنی ھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 79 Hadith no 6237
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 74 Hadith no 254


حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ سُلَيْمَانَ، حَدَّثَنَا ابْنُ وَهْبٍ، أَخْبَرَنِي يُونُسُ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ، قَالَ أَخْبَرَنِي أَنَسُ بْنُ مَالِكٍ، أَنَّهُ كَانَ ابْنَ عَشْرِ سِنِينَ مَقْدَمَ رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم الْمَدِينَةَ، فَخَدَمْتُ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم عَشْرًا حَيَاتَهُ، وَكُنْتُ أَعْلَمَ النَّاسِ بِشَأْنِ الْحِجَابِ حِينَ أُنْزِلَ، وَقَدْ كَانَ أُبَىُّ بْنُ كَعْبٍ يَسْأَلُنِي عَنْهُ، وَكَانَ أَوَّلَ مَا نَزَلَ فِي مُبْتَنَى رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم بِزَيْنَبَ ابْنَةِ جَحْشٍ، أَصْبَحَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم بِهَا عَرُوسًا فَدَعَا الْقَوْمَ، فَأَصَابُوا مِنَ الطَّعَامِ ثُمَّ خَرَجُوا، وَبَقِيَ مِنْهُمْ رَهْطٌ عِنْدَ رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم فَأَطَالُوا الْمُكْثَ فَقَامَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم فَخَرَجَ وَخَرَجْتُ مَعَهُ كَىْ يَخْرُجُوا، فَمَشَى رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم وَمَشَيْتُ مَعَهُ حَتَّى جَاءَ عَتَبَةَ حُجْرَةِ عَائِشَةَ، ثُمَّ ظَنَّ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم أَنَّهُمْ خَرَجُوا فَرَجَعَ وَرَجَعْتُ مَعَهُ، حَتَّى دَخَلَ عَلَى زَيْنَبَ فَإِذَا هُمْ جُلُوسٌ لَمْ يَتَفَرَّقُوا، فَرَجَعَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم وَرَجَعْتُ مَعَهُ، حَتَّى بَلَغَ عَتَبَةَ حُجْرَةِ عَائِشَةَ، فَظَنَّ أَنْ قَدْ خَرَجُوا، فَرَجَعَ وَرَجَعْتُ مَعَهُ، فَإِذَا هُمْ قَدْ خَرَجُوا، فَأُنْزِلَ آيَةُ الْحِجَابِ، فَضَرَبَ بَيْنِي وَبَيْنَهُ سِتْرًا‏.‏


Chapter: The Divine Verse of Al-Hijab

Narrated Anas bin Malik: that he was a boy of ten at the time when the Prophet (PBUH) emigrated to Medina. He added: I served Allah's Apostle for ten years (the last part of his life time) and I know more than the people about the occasion whereupon the order of Al-Hijab was revealed (to the Prophet). Ubai b n Ka`b used to ask me about it. It was revealed (for the first time) during the marriage of Allah's Messenger (PBUH) with Zainab bint Jahsh. In the morning, the Prophet (PBUH) was a bride-groom of her and he Invited the people, who took their meals and went away, but a group of them remained with Allah's Messenger (PBUH) and they prolonged their stay. Allah's Messenger (PBUH) got up and went out, and I too, went out along with him till he came to the lintel of `Aisha's dwelling place. Allah's Messenger (PBUH) thought that those people had left by then, so he returned, and I too, returned with him till he entered upon Zainab and found that they were still sitting there and had not yet gone. The Prophet (PBUH) went out again, and so did I with him till he reached the lintel of `Aisha's dwelling place, and then he thought that those people must have left by then, so he returned, and so did I with him, and found those people had gone. At that time the Divine Verse of Al-Hijab was revealed, and the Prophet (PBUH) set a screen between me and him (his family). ھم سے یحییٰ بن سلیمان نے بیان کیا ، کھا ھم سے ابن وھب نے بیان کیا ، کھا مجھ کو یونس نے خبر دی ، انھیں ابن شھاب نے کھا کھ مجھے انس بن مالک رضی اللھ عنھ نے خبر دی کھ جب رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم مدینھ منورھ ( ھجرت کر کے ) تشریف لائے تو ان کی عمر دس سال تھی ۔ پھر میں نے آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کی زندگی کے باقی دس سالوںمیں آپ کی خدمت کی اور میں پردھ کے حکم کے متعلق سب سے زیادھ جانتا ھوں کھ کب نازل ھوا تھا ۔ ابی بن کعب رضی اللھ عنھ مجھ سے اس کے بارے میں پوچھا کرتے تھے ۔ پردھ کے حکم کانزول سب سے پھلے اس رات ھوا جس میں رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے زینب بنت جحش ر ضی اللھ عنھا سے نکاح کے بعد ان کے ساتھ پھلی خلوت کی تھی ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم ان کے دولھا تھے اور آپ نے صحابھ کو دعوت ولیمھ پر بلایا تھا ۔ کھانے سے فارغ ھو کر سب لوگ چلے گئے لیکن چند آدمی آپ کے پاس بیٹھے رھ گئے اور بھت دیر تک وھیں ٹھھرے رھے ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم اٹھ کر باھر تشریف لے گئے اور میں بھی آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کے ساتھ چلا گیا تاکھ وھ لوگ بھی چلے جائیں ۔ آنحضرت چلتے رھے اور میں بھی آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کے ساتھ چلتا رھا اور سمجھا کھ وھ لوگ اب چلے گئے ھیں ۔ اس لئے واپس تشریف لائے اور میں بھی آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کے ساتھ واپس آیا لیکن آپ جب زینب رضی اللھ عنھا کے حجرے میں داخل ھوئے تو وھ لوگ ابھی بیٹھے ھوئے تھے اور ابھی تک واپس نھیں گئے تھے ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم دوبارھ وھاں سے لوٹ گئے اور میں بھی آپ کے ساتھ لوٹ گیا ۔ جب آپ عائشھ رضی اللھ عنھا کے حجرھ کی چوکھٹ تک پھنچے تو آپ نے سمجھا کھ وھ لوگ نکل چکے ھوں گے ۔ پھر آپ لوٹ کر آئے اور میں بھی آپ کے ساتھ لوٹ آیا تو واقعی وھ لوگ جا چکے تھے ۔ پھر پردھ کی آیت نازل ھوئی اور آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے میرے اور اپنے درمیان پردھ لٹکا لیا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 79 Hadith no 6238
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 74 Hadith no 255



Copyrights: if you have any objection regarding any shared content on pdf9.com please click here.