Search hadith by
Hadith Book
Search Query
Search Language
English Arabic Urdu
Search Type Basic    Case Sensitive
 

Sahih Bukhari

Conditions

كتاب الشروط

حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ بُكَيْرٍ، حَدَّثَنَا اللَّيْثُ، عَنْ عُقَيْلٍ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ، قَالَ أَخْبَرَنِي عُرْوَةُ بْنُ الزُّبَيْرِ، أَنَّهُ سَمِعَ مَرْوَانَ، وَالْمِسْوَرَ بْنَ مَخْرَمَةَ، رضى الله عنهما يُخْبِرَانِ عَنْ أَصْحَابِ، رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم قَالَ لَمَّا كَاتَبَ سُهَيْلُ بْنُ عَمْرٍو يَوْمَئِذٍ كَانَ فِيمَا اشْتَرَطَ سُهَيْلُ بْنُ عَمْرٍو عَلَى النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم أَنَّهُ لاَ يَأْتِيكَ مِنَّا أَحَدٌ وَإِنْ كَانَ عَلَى دِينِكَ إِلاَّ رَدَدْتَهُ إِلَيْنَا، وَخَلَّيْتَ بَيْنَنَا وَبَيْنَهُ‏.‏ فَكَرِهَ الْمُؤْمِنُونَ ذَلِكَ، وَامْتَعَضُوا مِنْهُ، وَأَبَى سُهَيْلٌ إِلاَّ ذَلِكَ، فَكَاتَبَهُ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم عَلَى ذَلِكَ، فَرَدَّ يَوْمَئِذٍ أَبَا جَنْدَلٍ عَلَى أَبِيهِ سُهَيْلِ بْنِ عَمْرٍو، وَلَمْ يَأْتِهِ أَحَدٌ مِنَ الرِّجَالِ إِلاَّ رَدَّهُ فِي تِلْكَ الْمُدَّةِ، وَإِنْ كَانَ مُسْلِمًا، وَجَاءَ الْمُؤْمِنَاتُ مُهَاجِرَاتٍ، وَكَانَتْ أُمُّ كُلْثُومٍ بِنْتُ عُقْبَةَ بْنِ أَبِي مُعَيْطٍ مِمَّنْ خَرَجَ إِلَى رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم يَوْمَئِذٍ وَهْىَ عَاتِقٌ، فَجَاءَ أَهْلُهَا يَسْأَلُونَ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم أَنْ يَرْجِعَهَا إِلَيْهِمْ، فَلَمْ يَرْجِعْهَا إِلَيْهِمْ لِمَا أَنْزَلَ اللَّهُ فِيهِنَّ ‏{‏إِذَا جَاءَكُمُ الْمُؤْمِنَاتُ مُهَاجِرَاتٍ فَامْتَحِنُوهُنَّ اللَّهُ أَعْلَمُ بِإِيمَانِهِنَّ‏}‏ إِلَى قَوْلِهِ ‏{‏وَلاَ هُمْ يَحِلُّونَ لَهُنَّ‏}‏‏.‏

Narrated Marwan and al-Miswar bin Makhrama: (from the companions of Allah's Messenger (PBUH)) When Suhail bin `Amr agreed to the Treaty (of Hudaibiya), one of the things he stipulated then, was that the Prophet (PBUH) should return to them (i.e. the pagans) anyone coming to him from their side, even if he was a Muslim; and would not interfere between them and that person. The Muslims did not like this condition and got disgusted with it. Suhail did not agree except with that condition. So, the Prophet (PBUH) agreed to that condition and returned Abu Jandal to his father Suhail bin `Amr. Thenceforward the Prophet (PBUH) returned everyone in that period (of truce) even if he was a Muslim. During that period some believing women emigrants including Um Kulthum bint `Uqba bin Abu Muait who came to Allah's Messenger (PBUH) and she was a young lady then. Her relative came to the Prophet (PBUH) and asked him to return her, but the Prophet (PBUH) did not return her to them for Allah had revealed the following Verse regarding women: "O you who believe! When the believing women come to you as emigrants. Examine them, Allah knows best as to their belief, then if you know them for true believers, Send them not back to the unbelievers, (for) they are not lawful (wives) for the disbelievers, Nor are the unbelievers lawful (husbands) for them (60.10) ھم سے یحییٰ بن بکیر نے بیان کیا ، کھا ھم سے لیث نے بیان کیا ، ان سے عقیل نے ، ان سے ابن شھاب نے بیان کیا ، انھیں عروھ بن زبیر نے خبر دی ، انھوں نے خلیفھ مروان اور مسور بن مخرمھ رضی اللھ عنھ سے سنا ، یھ دونوں حضرات اصحاب رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم سے خبر دیتے تھے کھ جب سھیل بن عمرو نے ( حدیبیھ میں کفار قریش کی طرف سے معاھدھ صلح ) لکھوایا تو جو شرائط نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم کے سامنے سھیل نے رکھی تھیں ، ان میں یھ شرط بھی تھیں کھ ھم میں سے کوئی بھی شخص اگر آپ کے یھاں ( فرار ھو کر ) چلا جائے خواھ وھ آپ کے دین پر ھی کیوں نھ ھو تو آپ کو اسے ھمارے حوالھ کرنا ھو گا ۔ مسلمان یھ شرط پسند نھیں کر رھے تھے اور اس پر انھیں دکھ ھوا تھا ۔ لیکن سھیل نے اس شرط کے بغیر صلح قبول نھ کی ۔ آخر آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے اسی شرط پر صلح نامھ لکھوا لیا ۔ اتفاق سے اسی دن ابوجندل رضی اللھ عنھ کو جو مسلمان ھو کر آیا تھا ( معاھدھ کے تحت بادل ناخواستھ ) ان کے والد سھیل بن عمرو کے حوالے کر دیا گیا ۔ اسی طرح مدت صلح میں جو مرد بھی آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کی خدمت میں ( مکھ سے بھاگ کر آیا ) آپ نے اسے ان کے حوالے کر دیا ۔ خواھ وھ مسلمان ھی کیوں نھ رھا ھو ۔ لیکن چند ایمان والی عورتیں بھی ھجرت کر کے آ گئی تھیں ، ام کلثوم بنت عقبھ بن ابی معیط رضی اللھ عنھا بھی ان میں شامل تھیں جو اسی دن ( مکھ سے نکل کر ) آپ کی خدمت میں آئی تھیں ، وھ جوان تھیں اور جب ان کے گھر والے آئے اور رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم سے ان کی واپسی کا مطالبھ کیا ، تو آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے انھیں ان کے حوالے نھیں فرمایا ، بلکھ عورتوں کے متعلق اللھ تعالیٰ ( سورۃ الممتحنھ میں ) ارشاد فرما چکا تھا کھ ” جب مسلمان عورتیں تمھارے یھاں ھجرت کر کے پھنچیں تو پھلے تم ان کا امتحان لے لو ، یوں تو ان کے ایمان کے متعلق جاننے والا اللھ تعالیٰ ھی ھے ۔ اللھ تعالیٰ کے اس ارشاد تک کھ ” کفار و مشرکین ان کے لیے حلال نھیں ھیں الخ “ ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 54 Hadith no 2711, 2712
Web reference: Sahih Bukhari Volume 3 Book 50 Hadith no 874


قَالَ عُرْوَةُ فَأَخْبَرَتْنِي عَائِشَةُ، أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم كَانَ يَمْتَحِنُهُنَّ بِهَذِهِ الآيَةِ ‏{‏يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا إِذَا جَاءَكُمُ الْمُؤْمِنَاتُ مُهَاجِرَاتٍ فَامْتَحِنُوهُنَّ ‏}‏ إِلَى ‏{‏غَفُورٌ رَحِيمٌ‏}‏‏.‏ قَالَ عُرْوَةُ قَالَتْ عَائِشَةُ فَمَنْ أَقَرَّ بِهَذَا الشَّرْطِ مِنْهُنَّ قَالَ لَهَا رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ قَدْ بَايَعْتُكِ ‏"‏‏.‏ كَلاَمًا يُكَلِّمُهَا بِهِ، وَاللَّهِ مَا مَسَّتْ يَدُهُ يَدَ امْرَأَةٍ قَطُّ فِي الْمُبَايَعَةِ، وَمَا بَايَعَهُنَّ إِلاَّ بِقَوْلِهِ‏.‏

Narrated `Urwa: Aisha told me, "Allah's Messenger (PBUH) used to examine them according to this Verse: "O you who believe! When the believing women come to you, as emigrants test them . . . for Allah is Oft- Forgiving, Most Merciful." (60.10-12) Aisha said, "When any of them agreed to that condition Allah's Apostle would say to her, 'I have accepted your pledge of allegiance.' He would only say that, but, by Allah he never touched the hand of any women (i.e. never shook hands with them) while taking the pledge of allegiance and he never took their pledge of allegiance except by his words (only). عروھ نے کھا کھ مجھے عائشھ رضی اللھ عنھا نے خبر دی کھ رسول کریم صلی اللھ علیھ وسلم ھجرت کرنے والی عورتوں کا اس آیت کی وجھ سے امتحان لیا کرتے تھے ” اے مسلمانو ! جب تمھارے یھاں مسلمان عورتیں ھجرت کر کے آئیں تو تم ان کا امتحان لے لو “ ۔ غفور رحیم تک ۔ عروھ نے کھا کھ حضرت عائشھ رضی اللھ عنھا نے کھا کھ ان عورتوں میں سے جو اس شرط کا اقرار کر لیتیں تو رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم فرماتے کھ میں نے تم سے بیعت کی ، آپ صرف زبان سے بیعت کرتے تھے ۔ قسم اللھ کی ! بیعت کرتے وقت آپ صلی اللھ علیھ وسلم کے ھاتھ نے کسی بھی عورت کے ھاتھ کو کبھی نھیں چھوا ، بلکھ آپ صرف زبان سے بیعت لیا کرتے تھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 54 Hadith no 2713
Web reference: Sahih Bukhari Volume 3 Book 50 Hadith no 874


حَدَّثَنَا أَبُو نُعَيْمٍ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، عَنْ زِيَادِ بْنِ عِلاَقَةَ، قَالَ سَمِعْتُ جَرِيرًا ـ رضى الله عنه ـ يَقُولُ بَايَعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم فَاشْتَرَطَ عَلَىَّ وَالنُّصْحِ لِكُلِّ مُسْلِمٍ‏.‏

Narrated Jarir: When I gave the pledge of allegiance to Allah's Messenger (PBUH) and he stipulated that I should give good advice to every Muslim. ھم سے ابونعیم نے بیان کیا ، کھا کھ ھم سے سفیان نے بیان کیا ، ان سے زیاد بن علاقھ نے بیان کیا کھ میں نے جریر رضی اللھ عنھ سے سنا ، آپ بیان کرتے تھے کھ میں نے رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم سے بیعت کی تو آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے مجھ سے ھر مسلمان کے ساتھ خیرخواھی کرنے کی شرط پر بیعت کی تھی ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 54 Hadith no 2714
Web reference: Sahih Bukhari Volume 3 Book 50 Hadith no 875


حَدَّثَنَا مُسَدَّدٌ، حَدَّثَنَا يَحْيَى، عَنْ إِسْمَاعِيلَ، قَالَ حَدَّثَنِي قَيْسُ بْنُ أَبِي حَازِمٍ، عَنْ جَرِيرِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ بَايَعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم عَلَى إِقَامِ الصَّلاَةِ وَإِيتَاءِ الزَّكَاةِ وَالنُّصْحِ لِكُلِّ مُسْلِمٍ‏.‏

Narrated Jabir bin `Abdullah: I gave the pledge of allegiance to Allah's Messenger (PBUH) for offering the prayers perfectly paying the Zakat and giving good advice to every Muslim. ھم سے مسدد نے بیان کیا ، انھوں نے کھا ھم سے یحییٰ نے بیان کیا ، انھوں نے کھا ھم سے اسماعیل نے بیان کیا ، ان سے قیس بن ابی حازم نے اور ان سے جریر بن عبداللھ رضی اللھ عنھ نے بیان کیا کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم سے میں نے نماز قائم کرنے ، زکوٰۃ ادا کرنے اور ھر مسلمان کے ساتھ خیرخواھی کرنے کی شرطوں کے ساتھ بیعت کی تھی ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 54 Hadith no 2715
Web reference: Sahih Bukhari Volume 3 Book 50 Hadith no 876


حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ يُوسُفَ، أَخْبَرَنَا مَالِكٌ، عَنْ نَافِعٍ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ ـ رضى الله عنهما ـ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ مَنْ بَاعَ نَخْلاً قَدْ أُبِّرَتْ فَثَمَرَتُهَا لِلْبَائِعِ إِلاَّ أَنْ يَشْتَرِطَ الْمُبْتَاعُ ‏"‏‏.‏


Chapter: The sale of pollinated date-palms

Narrated `Abdullah bin `Umar: Allah's Messenger (PBUH) said, "If someone sells pollinated date-palms, their fruits will be for the seller, unless the buyer stipulates the contrary." ھم سے عبداللھ بن یوسف نے بیان کیا ، کھا ھم کو امام مالک نے خبر دی ، انھیں نافع نے اور انھیں عبداللھ بن عمر رضی اللھ عنھما نے کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا ، جس نے کوئی ایسا کھجور کا باغ بیچا جس کی پیوند کاری ھو چکی تھی تو اس کا پھل ( اس سال کے ) بیچنے والے ھی کا ھو گا ۔ ھاں اگر خریدار شرط لگا دے ۔ ( تو پھل سمیت بیع سمجھی جائے گی ) ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 54 Hadith no 2716
Web reference: Sahih Bukhari Volume 3 Book 50 Hadith no 877


حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ مَسْلَمَةَ، حَدَّثَنَا اللَّيْثُ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ، عَنْ عُرْوَةَ، أَنَّ عَائِشَةََ،ـ رضى الله عنها ـ أَخْبَرَتْهُ أَنَّ بَرِيرَةَ جَاءَتْ عَائِشَةَ تَسْتَعِينُهَا فِي كِتَابَتِهَا، وَلَمْ تَكُنْ قَضَتْ مِنْ كِتَابَتِهَا شَيْئًا، قَالَتْ لَهَا عَائِشَةُ ارْجِعِي إِلَى أَهْلِكِ، فَإِنْ أَحَبُّوا أَنْ أَقْضِيَ عَنْكِ كِتَابَتَكِ، وَيَكُونَ وَلاَؤُكِ لِي فَعَلْتُ‏.‏ فَذَكَرَتْ ذَلِكَ بَرِيرَةُ إِلَى أَهْلِهَا فَأَبَوْا وَقَالُوا إِنْ شَاءَتْ أَنْ تَحْتَسِبَ عَلَيْكِ فَلْتَفْعَلْ، وَيَكُونَ لَنَا وَلاَؤُكِ‏.‏ فَذَكَرَتْ ذَلِكَ لِرَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم فَقَالَ لَهَا ‏"‏ ابْتَاعِي فَأَعْتِقِي، فَإِنَّمَا الْوَلاَءُ لِمَنْ أَعْتَقَ ‏"‏‏.‏


Chapter: The conditions of selling

Narrated `Urwa: Aisha told me that Buraira came to seek her help in writing for emancipation and at that time she had not paid any part of her price. `Aisha said to her, "Go to your masters and if they agree that I will pay your price (and free you) on condition that your Wala' will be for me, I will pay the money." Buraira told her masters about that, but they refused, and said, "If `Aisha wants to do a favor she could, but your Wala will be for us." Aisha informed Allah's Messenger (PBUH) of that and he said to her, "Buy and manumit Buraira as the Wala' will go to the manumitted." ھم سے عبداللھ بن مسلمھ نے بیان کیا ، کھا ھم سے لیث نے بیان کیا ، ان سے ابن شھاب نے ، ان سے عروھ نے اور انھیں عائشھ رضی اللھ عنھا نے خبر دی کھ بریرھ عائشھ رضی اللھ عنھا کے یھاں اپنی مکاتبت کے بارے میں ان سے مدد لینے کے لیے آئیں ، انھوں نے ابھی تک اس معاملے میں ( اپنے مالکوں کو ) کچھ دیا نھیں تھا ۔ عائشھ رضی اللھ عنھا نے ان سے فرمایا کھ اپنے مالکوں کے یھاں جا کر ( ان سے دریافت کرو ) اگر وھ یھ صورت پسند کریں کھ تمھاری مکاتبت کی ساری رقم میں ادا کر دوں اور تمھاری ولاء میرے لیے ھو جائے تو میں ایسا کر سکتی ھوں ۔ بریرھ نے اس کا تذکرھ جب اپنے مالکوں کے سامنے کیا تو انھوں نے انکار کیا اور کھا کھ وھ ( عائشھ رضی اللھ عنھا ) اگر چاھیں تو یھ کار ثواب تمھارے ساتھ کر سکتی ھیں لیکن ولاء تو ھمارے ھی رھے گی ۔ عائشھ رضی اللھ عنھا نے اس کا ذکر رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم سے کیا تو آپ نے ان سے فرمایا کھ تم انھیں خرید کر آزاد کر دو ، ولاء تو بھرحال اسی کی ھوتی ھے جو آزاد کر دے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 54 Hadith no 2717
Web reference: Sahih Bukhari Volume 3 Book 50 Hadith no 878



Copyrights: if you have any objection regarding any shared content on pdf9.com please click here.