Search hadith by
Hadith Book
Search Query
Search Language
English Arabic Urdu
Search Type Basic    Case Sensitive
 

Sahih Bukhari

Holding Fast to the Qur'an and Sunnah

كتاب الاعتصام بالكتاب والسنة

حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ كَثِيرٍ، أَخْبَرَنَا سُفْيَانُ، عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ عَابِسٍ، قَالَ سُئِلَ ابْنُ عَبَّاسٍ أَشَهِدْتَ الْعِيدَ مَعَ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم قَالَ نَعَمْ وَلَوْلاَ مَنْزِلَتِي مِنْهُ مَا شَهِدْتُهُ مِنَ الصِّغَرِ، فَأَتَى الْعَلَمَ الَّذِي عِنْدَ دَارِ كَثِيرِ بْنِ الصَّلْتِ فَصَلَّى ثُمَّ خَطَبَ، وَلَمْ يَذْكُرْ أَذَانًا وَلاَ إِقَامَةً، ثُمَّ أَمَرَ بِالصَّدَقَةِ فَجَعَلَ النِّسَاءُ يُشِرْنَ إِلَى آذَانِهِنَّ وَحُلُوقِهِنَّ، فَأَمَرَ بِلاَلاً فَأَتَاهُنَّ، ثُمَّ رَجَعَ إِلَى النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم‏.‏

Narrated `Abdur-Rahman bin `Abis: Ibn `Abbas was asked, "Did you offer the Id prayer with the Prophet?" He said, "Yes, had it not been for my close relation to the Prophet, I would not have performed it (with him) because of my being too young The Prophet (PBUH) came to the mark which is near the home of Kathir bin As-Salt and offered the Id prayer and then delivered the sermon. I do not remember if any Adhan or Iqama were pronounced for the prayer. Then the Prophet (PBUH) ordered (the women) to give alms, and they started stretching out their hands towards their ears and throats (giving their ornaments in charity), and the Prophet (PBUH) ordered Bilal to go to them (to collect the alms), and then Bilal returned to the Prophet. ھم سے محمد بن کثیر نے بیان کیا ‘ کھا ھم کو سفیان ثوری نے خبر دی ‘ ان سے عبدالرحمٰن بن عابس نے بیان کیا ‘ کھا کھ ابن عباس رضی اللھ عنھما سے پوچھا گیا کھ کیا آپ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم کے ساتھ عید میں گئے ھیں ؟ کھا کھ ھاں میں اس وقت کم سن تھا ۔ اگر آنخصرت صلی اللھ علیھ وسلم سے مجھ کو اتنا نزدیک کا رشتھ نھ ھوتا اور کم سن نھ ھوتا تو آپ کے ساتھ کبھی نھیں رھ سکتا تھا ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم گھر سے نکل کر اس نشان کے پاس آئے جو کثیر بن صلت کے مکان کے پاس ھے اور وھاں آپ نے نمازعید پڑھائی پھر خطبھ دیا ۔ انھوں نے اذان اور اقامت کا ذکر نھیں کیا ‘ پھر آپ نے صدقھ دینے کا حکم دیا تو عورتیں اپنے کانوں اور گردنوں کی طرف ھاتھ بڑھانے لگیں زیوروں کا صدقھ دینے کے لیے ۔ اس کے بعد آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے بلال رضی اللھ عنھ کو حکم فرمایا ۔ وھ آئے اور صدقھ میں ملی ھوئی چیزوں کو لے کر آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کے پاس واپس گئے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 96 Hadith no 7325
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 92 Hadith no 426


حَدَّثَنَا أَبُو نُعَيْمٍ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ دِينَارٍ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ ـ رضى الله عنهما ـ أَنَّ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم كَانَ يَأْتِي قُبَاءً مَاشِيًا وَرَاكِبًا‏.‏

Narrated Ibn `Umar: The Prophet (PBUH) used to go to the Quba' mosque, sometimes walking, sometimes riding. ھم سے ابونعیم نے بیان کیا ‘ کھا ھم سے سفیان بن عیینھ نے بیان کیا ‘ ان سے عبداللھ بن دینار نے اور ان سے ابن عمر رضی اللھ عنھما نے کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم قباء میں تشریف لاتے تھے ‘ کبھی پیدل اور کبھی سواری ( راجع : ۱۹۱۱ )

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 96 Hadith no 7326
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 92 Hadith no 427


حَدَّثَنَا عُبَيْدُ بْنُ إِسْمَاعِيلَ، حَدَّثَنَا أَبُو أُسَامَةَ، عَنْ هِشَامٍ، عَنْ أَبِيهِ، عَنْ عَائِشَةَ، قَالَتْ لِعَبْدِ اللَّهِ بْنِ الزُّبَيْرِ ادْفِنِّي مَعَ صَوَاحِبِي وَلاَ تَدْفِنِّي مَعَ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم فِي الْبَيْتِ، فَإِنِّي أَكْرَهُ أَنْ أُزَكَّى‏.‏ وَعَنْ هِشَامٍ، عَنْ أَبِيهِ، أَنَّ عُمَرَ، أَرْسَلَ إِلَى عَائِشَةَ ائْذَنِي لِي أَنْ أُدْفَنَ مَعَ صَاحِبَىَّ فَقَالَتْ إِي وَاللَّهِ‏.‏ قَالَ وَكَانَ الرَّجُلُ إِذَا أَرْسَلَ إِلَيْهَا مِنَ الصَّحَابَةِ قَالَتْ لاَ وَاللَّهِ لاَ أُوثِرُهُمْ بِأَحَدٍ أَبَدًا‏.‏

Narrated Hisham's father: `Aisha said to `Abdullah bin Az-Zubair, "Bury me with my female companions (i.e. the wives of the Prophet) and do not bury me with the Prophet (PBUH) in the house, for I do not like to be regarded as sanctified (just for being buried there).'' Narrated Hisham's father: `Umar sent a message to `Aisha, saying, "Will you allow me to be buried with my two companions (the Prophet (PBUH) and Abu Bakr) ?" She said, "Yes, by Allah." though it was her habit that if a man from among the companions (of the Prophet (PBUH) ) sent her a message asking her to allow him to be buried there, she would say, "No, by Allah, I will never give permission to anyone to be buried with them." ھم سے عبید بن اسماعیل نے بیان کیا ‘ کھا ھم سے ابواسامھ نے بیان کیا ‘ ان سے ھشام بن عروھ نے ‘ ان سے ان کے والد نے اور ان سے عائشھ رضی اللھ عنھا نے کھ انھوں نے عبداللھ بن زبیر رضی اللھ عنھما سے کھا تھا کھ مجھے انتقال کے بعد میری سو کنوں کے ساتھ دفن کرنا ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کے ساتھ حجرھ میں دفن مت کرنا کیونکھ میں پسند نھیں کرتی کھ میری آپ کی اور بیویوں سے زیادھ پاکی بیان کی جائے ۔ اور ھشام سے روایت ھے ‘ ان سے ان کے والد نے بیان کیا کھ عمر رضی اللھ عنھ نے عائشھ رضی اللھ عنھا کے یھاں آدمی بھیجا کھ مجھے اجازت دیں کھ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کے ساتھ دفن کیا جاؤں ۔ انھوں نے کھا کھ ھاں اللھ کی قسم ‘ میں ان کو اجازت دیتی ھوں ۔ راوی نے بیان کیا کھ پھلے جب کوئی صحابی ان سے وھاں دفن ھونے کی اجازت مانگتے تو وھ کھلادیتی تھیں کھ نھیں ! اللھ کی قسم میں ان کے ساتھ کسی اور کو دفن نھیں ھونے دوں گی ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 96 Hadith no 7327, 7328
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 92 Hadith no 428


حَدَّثَنَا أَيُّوبُ بْنُ سُلَيْمَانَ، حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي أُوَيْسٍ، عَنْ سُلَيْمَانَ بْنِ بِلاَلٍ، عَنْ صَالِحِ بْنِ كَيْسَانَ، قَالَ ابْنُ شِهَابٍ أَخْبَرَنِي أَنَسُ بْنُ مَالِكٍ، أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم كَانَ يُصَلِّي الْعَصْرَ فَيَأْتِي الْعَوَالِيَ وَالشَّمْسُ مُرْتَفِعَةٌ‏.‏ وَزَادَ اللَّيْثُ عَنْ يُونُسَ، وَبُعْدُ الْعَوَالِي أَرْبَعَةُ أَمْيَالٍ أَوْ ثَلاَثَةٌ‏.‏

Narrated Anas bin Malik: Allah's Messenger (PBUH) used to perform the `Asr prayer and then one could reach the `Awali (a place in the outskirts of Medina) while the sun was still quite high. Narrated Yunus: The distance of the `Awali (from Medina) was four or three miles. ھم سے ایوب بن سلمان نے بیان کیا ‘ کھا ھم سے ابوبکر بن اویس نے بیان کیا ‘ ان سے سلیمان بن بلال نے ‘ ان سے صالح بن کیسان نے ‘ ان سے ابن شھاب نے بیان کیا کھ مجھے انس بن مالک رضی اللھ عنھ نے خبر دی کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم عصر کی نماز پڑھ کر ان گاؤں میں جاتے جو مدینھ کی بلندی پر واقع ھیں وھاں پھنچ جاتے اور سورج بلند رھتا ۔ عوالی مدینھ کا بھی یھی حکم ھے اور لیث نے بھی اس حدیث کو یونس سے روایت کیا ۔ اس میں اتنا زیادھ ھے کھ یھ گاؤں مدینھ سے تین چار میل پر واقع ھیں ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 96 Hadith no 7329
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 92 Hadith no 429


حَدَّثَنَا عَمْرُو بْنُ زُرَارَةَ، حَدَّثَنَا الْقَاسِمُ بْنُ مَالِكٍ، عَنِ الْجُعَيْدِ، سَمِعْتُ السَّائِبَ بْنَ يَزِيدَ، يَقُولُ كَانَ الصَّاعُ عَلَى عَهْدِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم مُدًّا وَثُلُثًا بِمُدِّكُمُ الْيَوْمَ، وَقَدْ زِيدَ فِيهِ‏.‏ سَمِعَ الْقَاسِمُ بْنُ مَالِكٍ الْجُعَيْدَ

Narrated As-Sa'ib bin Yazid: The Sa' (a kind of measure) during the lifetime of the Prophet (PBUH) used to be equal to the one Mudd (another kind of measure) and one third of a Mudd which we use today, but the Sa' of today has become large. ھم سے عمرو بن زرارھ نے بیان کیا ‘ کھا ھم سے قاسم بن مالک نے بیان کیا ‘ ان سے جعید نے ‘ انھوں نے سائب بن یزید سے سنا ‘ انھوں نے بیان کیا کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم کے زمانے میں صاع تمھارے وقت کی مد سے ایک مداور ایک تھائی مد کا ھوتا تھا ‘پھر صاع کی مقدار بڑھ گئی یعنی حضرت عمر بن عبد العزیز کے زمانھ میں وھ چار مد کا ھو گیا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 96 Hadith no 7330
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 92 Hadith no 430


حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ مَسْلَمَةَ، عَنْ مَالِكٍ، عَنْ إِسْحَاقَ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ أَبِي طَلْحَةَ، عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ، أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ اللَّهُمَّ بَارِكْ لَهُمْ فِي مِكْيَالِهِمْ، وَبَارِكْ لَهُمْ فِي صَاعِهِمْ وَمُدِّهِمْ ‏"‏ يَعْنِي أَهْلَ الْمَدِينَةِ‏.‏

Narrated Anas bin Malik: Allah's Messenger (PBUH) said, "O Allah! Bestow Your Blessings on their measures, and bestow Your Blessings on their Sa' and Mudd." He meant those of the people of Medina. ھم سے عبداللھ بن مسلمھ نے بیان کیا ‘ ان سے امام مالک نے ‘ ان سے اسحاق بن عبداللھ بن ابی طلحھ نے اور ان سے انس بن مالک رضی اللھ عنھ نے کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا اے اللھ ! ان مدینھ والوں کے پیمانھ میں انھیں برکت دے اور ان کے صاع اور مد میں انھیں برکت دے ۔ آپ کی مراد اھل مدینھ ( کے صاع ومد ) سے تھی ۔ ( مدنی صاع اور مد کو بھی تاریخی عظمت حاصل ھے )

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 96 Hadith no 7331
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 92 Hadith no 431



@2019 Copyrights: if you have any objection regarding any shared content on pdf9.com please click here.