Search hadith by
Hadith Book
Search Query
Search Language
English Arabic Urdu
Search Type Basic    Case Sensitive
 

Sahih Bukhari

Laws of Inheritance (Al-Faraa'id)

كتاب الفرائض

حَدَّثَنَا عَبْدَانُ، أَخْبَرَنَا عَبْدُ اللَّهِ، أَخْبَرَنَا يُونُسُ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ، حَدَّثَنِي أَبُو سَلَمَةَ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ـ رضى الله عنه ـ عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ أَنَا أَوْلَى، بِالْمُؤْمِنِينَ مِنْ أَنْفُسِهِمْ، فَمَنْ مَاتَ وَعَلَيْهِ دَيْنٌ، وَلَمْ يَتْرُكْ وَفَاءً، فَعَلَيْنَا قَضَاؤُهُ، وَمَنْ تَرَكَ مَالاً فَلِوَرَثَتِهِ ‏"‏‏.‏


Chapter: “Whoever leaves some property, then it is for his family.”

Narrated Abu Huraira: The Prophet (PBUH) said, "I am more closer to the believers than their own selves, so whoever (of them) dies while being in debt and leaves nothing for its repayment, then we are to pay his debts on his behalf and whoever (among the believers) dies leaving some property, then that property is for his heirs." ھم سے عبدان نے بیان کیا ، کھا ھم کو عبداللھ بن مبارک نے خبر دی ، کھا ھم کو یونس بن یزید ایلی نے خبر دی ، انھیں ابن شھاب نے ، کھا مجھ سے ابوسلمھ بن عبدالرحمٰن نے بیان کیا اور ان سے ابوھریرھ رضی اللھ عنھ نے کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا میں مومنوں کا خود ان سے زیادھ حقدار ھوں ۔ پس ان میں سے جو کوئی قرض دار مرے گا اور ادائےگی کے لئے کچھ نھ چھوڑے گا تو ھم پراس کی ادائےگی کی ذمھ داری ھے اور جس نے کوئی مال چھوڑا ھو گا وھ اس کے وارثوں کا حصھ ھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 85 Hadith no 6731
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 80 Hadith no 723


حَدَّثَنَا مُوسَى بْنُ إِسْمَاعِيلَ، حَدَّثَنَا وُهَيْبٌ، حَدَّثَنَا ابْنُ طَاوُسٍ، عَنْ أَبِيهِ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ ـ رضى الله عنهما ـ عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ أَلْحِقُوا الْفَرَائِضَ بِأَهْلِهَا، فَمَا بَقِيَ فَهْوَ لأَوْلَى رَجُلٍ ذَكَرٍ ‏"‏‏.‏

Narrated Ibn `Abbas: The Prophet (PBUH) said, "Give the Fara'id (the shares of the inheritance that are prescribed in the Qur'an) to those who are entitled to receive it. Then whatever remains, should be given to the closest male relative of the deceased ." ھم سے موسیٰ بن اسماعیل نے بیان کیا کھا ھم سے وھیب نے بیان کیا ، کھا ھم سے عبداللھ ابن طاؤس نے بیان کیا ، ان سے ان کے والد نے اور ان سے حضرت ابن عباس رضی اللھ عنھما نے کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا میراث اس کے حق داروں تک پھنچا دو اور جو کچھ باقی بچے وھ سب سے زیادھ قریبی مرد عزیز کا حصھ ھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 85 Hadith no 6732
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 80 Hadith no 724


حَدَّثَنَا الْحُمَيْدِيُّ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، حَدَّثَنَا الزُّهْرِيُّ، قَالَ أَخْبَرَنِي عَامِرُ بْنُ سَعْدِ بْنِ أَبِي وَقَّاصٍ، عَنْ أَبِيهِ، قَالَ مَرِضْتُ بِمَكَّةَ مَرَضًا، فَأَشْفَيْتُ مِنْهُ عَلَى الْمَوْتِ، فَأَتَانِي النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم يَعُودُنِي فَقُلْتُ يَا رَسُولَ اللَّهِ إِنَّ لِي مَالاً كَثِيرًا، وَلَيْسَ يَرِثُنِي إِلاَّ ابْنَتِي، أَفَأَتَصَدَّقُ بِثُلُثَىْ مَالِي قَالَ ‏"‏ لاَ ‏"‏‏.‏ قَالَ قُلْتُ فَالشَّطْرُ قَالَ ‏"‏ لاَ ‏"‏‏.‏ قُلْتُ الثُّلُثُ قَالَ ‏"‏ الثُّلُثُ كَبِيرٌ إِنَّكَ إِنْ تَرَكْتَ وَلَدَكَ أَغْنِيَاءَ خَيْرٌ مِنْ أَنْ تَتْرُكَهُمْ عَالَةً يَتَكَفَّفُونَ النَّاسَ، وَإِنَّكَ لَنْ تُنْفِقَ نَفَقَةً إِلاَّ أُجِرْتَ عَلَيْهَا، حَتَّى اللُّقْمَةَ تَرْفَعُهَا إِلَى فِي امْرَأَتِكَ ‏"‏‏.‏ فَقُلْتُ يَا رَسُولَ اللَّهِ أَأُخَلَّفُ عَنْ هِجْرَتِي فَقَالَ ‏"‏ لَنْ تُخَلَّفَ بَعْدِي فَتَعْمَلَ عَمَلاً تُرِيدُ بِهِ وَجْهَ اللَّهِ، إِلاَّ ازْدَدْتَ بِهِ رِفْعَةً وَدَرَجَةً، وَلَعَلَّ أَنْ تُخَلَّفَ بَعْدِي حَتَّى يَنْتَفِعَ بِكَ أَقْوَامٌ وَيُضَرَّ بِكَ آخَرُونَ، لَكِنِ الْبَائِسُ سَعْدُ ابْنُ خَوْلَةَ يَرْثِي لَهُ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم أَنْ مَاتَ بِمَكَّةَ ‏"‏‏.‏ قَالَ سُفْيَانُ وَسَعْدُ بْنُ خَوْلَةَ رَجُلٌ مِنْ بَنِي عَامِرِ بْنِ لُؤَىٍّ‏.‏


Chapter: The inheritance of daughters

Narrated Sa`d bin Abi Waqqas: I was stricken by an ailment that led me to the verge of death. The Prophet (PBUH) came to pay me a visit. I said, "O Allah's Messenger (PBUH)! I have much property and no heir except my single daughter. Shall I give two-thirds of my property in charity?" He said, "No." I said, "Half of it?" He said, "No." I said, "Onethird of it?" He said, "You may do so) though one-third is also to a much, for it is better for you to leave your off-spring wealthy than to leave them poor, asking others for help. And whatever you spend (for Allah's sake) you will be rewarded for it, even for a morsel of food which you may put in the mouth of your wife." I said, "O Allah's Messenger (PBUH)! Will I remain behind and fail to complete my emigration?" The Prophet (PBUH) said, "If you are left behind after me, whatever good deeds you will do for Allah's sake, that will upgrade you and raise you high. May be you will have long life so that some people may benefit by you and others (the enemies) be harmed by you." But Allah's Messenger (PBUH) felt sorry for Sa`d bin Khaula as he died in Mecca. (Sufyan, a sub-narrator said that Sa`d bin Khaula was a man from the tribe of Bani 'Amir bin Lu'ai.) ھم سے امام حمیدی نے بیان کیا ، کھا ھم سے سفیان بن عیینھ نے بیان کیا ، کھا ھم سے زھری نے بیان کیا ، کھا مجھے عامر بن سعد بن ابی وقاص نے خبر دی اور ان سے ان کے والد نے بیان کیا کھ میں مکھ مکرمھ میں ( حجۃ الوداع میں ) بیمار پڑ گیا اور موت کے قریب پھنچ گیا ۔ پھر آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم میری عیادت کے لئے تشریف لائے تو میں نے عرض کیا یا رسول اللھ ! میرے پاس بھت زیادھ مال ھے اور ایک لڑکی کے سوا اس کا کوئی وارث نھیں تو کیا مجھے اپنے مال کے دو تھائی حصھ کا صدقھ کر دینا چاھئے ؟ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ نھیں ۔ بیان کیا کھ میں نے عرض کیا پھر آدھے کا کر دوں ؟ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ نھیں ۔ میں نے عرض کیا ایک تھائی کا ؟ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ ھاں ۔ گو تھائی بھی بھت ھے ، اگر تم اپنے بچوں کو مالدار چھوڑو تو یھ اس سے بھتر ھے کھ انھیں تنگدست چھوڑو اور وھ لوگوں کے سامنے ھاتھ پھیلا پھریں اور تم جو بھی خرچ کرو گے اس پر تمھیں ثواب ملے گا یھاں تک کھ اس لقمھ پر بھی ثواب ملے گا جو تم اپنی بیوی کے منھ میں رکھو گے ۔ پھر میں نے عرض کیا یا رسول اللھ ! کیا میں اپنی ھجرت میں پیچھے رھ جاؤں گا ؟ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ اگر میرے بعد تم پیچھے رھ بھی گئے تب بھی جو عمل تم کرو گے اور اس سے اللھ کی خوشنودی مقصود ھو گی تو اس کے ذریعھ درجھ و مرتبھ بلند ھو گا اور غالباً تم میرے بعد زندھ رھو گے اور تم سے بھت سے لوگوں کو فائدھ ھو گا اور بھتوں کو نقصان پھنچے گا ۔ قابل افسوس تو سعد ابن خولھ ھیں ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے ان کے بارے میں اس لئے افسوس کا اظھار کیا کھ ( ھجرت کے بعد اتفاق سے ) ان کی وفات مکھ مکرمھ میں ھی ھو گئی ۔ سفیان نے بیان کیا کھ سعد ابن خولھ رضی اللھ عنھ بنی عامر بن لوی کے ایک آدمی تھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 85 Hadith no 6733
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 80 Hadith no 725


حَدَّثَنِي مَحْمُودٌ، حَدَّثَنَا أَبُو النَّضْرِ، حَدَّثَنَا أَبُو مُعَاوِيَةَ، شَيْبَانُ عَنْ أَشْعَثَ، عَنِ الأَسْوَدِ بْنِ يَزِيدَ، قَالَ أَتَانَا مُعَاذُ بْنُ جَبَلٍ بِالْيَمَنِ مُعَلِّمًا وَأَمِيرًا، فَسَأَلْنَاهُ عَنْ رَجُلٍ، تُوُفِّيَ وَتَرَكَ ابْنَتَهُ وَأُخْتَهُ، فَأَعْطَى الاِبْنَةَ النِّصْفَ وَالأُخْتَ النِّصْفَ‏.‏

Narrated Al-Aswad bin Yazid: Mu`adh bin Jabal came to us in Yemen as a tutor and a ruler, and we (the people of Yemen) asked him about (the distribution of the property of ) a man who had died leaving a daughter and a sister. Mu`adh gave the daughter one-half of the property and gave the sister the other half. مجھ سے محمود بن غیلان نے بیان کیا ، کھا ھم سے ابوالنضر نے بیان کیا ، کھا ھم سے ابومعاویھ شیبان نے بیان کیا ، ان سے اشعث بن ابی الشعثاء نے ، ان سے اسود بن یزید نے بیان کیا کھ حضرت معاذ بن جبل رضی اللھ عنھ ھمارے یھاں یمن میں معلم و امیر بن کر تشریف لائے ۔ ھم نے ان سے ایک ایسے شخص کے ترکھ کے بارے میں پوچھا جس کی وفات ھوئی ھو اور اس نے ایک بیٹی اور ایک بھن چھوڑی ھو اور اس نے اپنی بیٹی کو آدھا اور بھن کو بھی آدھا دیا ھو ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 85 Hadith no 6734
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 80 Hadith no 726


حَدَّثَنَا مُسْلِمُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ، حَدَّثَنَا وُهَيْبٌ، حَدَّثَنَا ابْنُ طَاوُسٍ، عَنْ أَبِيهِ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ، قَالَ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ أَلْحِقُوا الْفَرَائِضَ بِأَهْلِهَا فَمَا بَقِيَ فَهْوَ لأَوْلَى رَجُلٍ ذَكَرٍ ‏"‏‏.‏

Narrated Ibn `Abbas: Allah's Messenger (PBUH) said, "Give the Fara'id (shares prescribed in the Qur'an) to those who are entitled to receive it; and whatever remains, should be given to the closest male relative of the deceased.' ھم سے مسلم بن ابراھیم نے بیان کیا ، کھا ھم سے وھیب نے بیان کیا ، کھا ھم سے عبداللھ ابن طاؤس نے بیان کیا ، ان سے ان کے والد نے اور ان سے حضرت ابن عباس نے بیان کیا کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا پھلے میراث ان کے وارثوں تک پھنچا دو اور جو باقی رھ جائے وھ اس کو ملے گا جو مرد میت کا بھت نزدیکی رشتھ دار ھو ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 85 Hadith no 6735
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 80 Hadith no 727


حَدَّثَنَا آدَمُ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، حَدَّثَنَا أَبُو قَيْسٍ، سَمِعْتُ هُزَيْلَ بْنَ شُرَحْبِيلَ، قَالَ سُئِلَ أَبُو مُوسَى عَنِ ابْنَةٍ وَابْنَةِ ابْنٍ وَأُخْتٍ، فَقَالَ لِلاِبْنَةِ النِّصْفُ وَلِلأُخْتِ النِّصْفُ، وَأْتِ ابْنَ مَسْعُودٍ فَسَيُتَابِعُنِي‏.‏ فَسُئِلَ ابْنُ مَسْعُودٍ وَأُخْبِرَ بِقَوْلِ أَبِي مُوسَى، فَقَالَ لَقَدْ ضَلَلْتُ إِذًا وَمَا أَنَا مِنَ الْمُهْتَدِينَ،، أَقْضِي فِيهَا بِمَا قَضَى النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ لِلاِبْنَةِ النِّصْفُ، وَلاِبْنَةِ ابْنٍ السُّدُسُ تَكْمِلَةَ الثُّلُثَيْنِ، وَمَا بَقِيَ فَلِلأُخْتِ ‏"‏‏.‏ فَأَتَيْنَا أَبَا مُوسَى فَأَخْبَرْنَاهُ بِقَوْلِ ابْنِ مَسْعُودٍ، فَقَالَ لاَ تَسْأَلُونِي مَا دَامَ هَذَا الْحَبْرُ فِيكُمْ‏.‏


Chapter: The share of inheritance of one’s son’s daughter

Narrated Huzail bin Shirahbil: Abu Musa was asked regarding (the inheritance of) a daughter, a son's daughter, and a sister. He said, "The daughter will take one-half and the sister will take one-half. If you go to Ibn Mas`ud, he will tell you the same." Ibn Mas`ud was asked and was told of Abu Musa's verdict. Ibn Mas`ud then said, "If I give the same verdict, I would stray and would not be of the rightly-guided. The verdict I will give in this case, will be the same as the Prophet (PBUH) did, i.e. one-half is for daughter, and one-sixth for the son's daughter, i.e. both shares make two-thirds of the total property; and the rest is for the sister." Afterwards we cams to Abu Musa and informed him of Ibn Mas`ud's verdict, whereupon he said, "So, do not ask me for verdicts, as long as this learned man is among you." ھم سے آدم بن ابی ایاس نے بیان کیا ، کھا ھم سے شعبھ نے ، کھا ھم سے ابوقیس عبدالرحمٰن بن ثروان نے ، انھوں نے ھزیل بن شرحبیل سے سنا ، بیان کیا کھ ابوموسیٰ رضی اللھ عنھ سے بیٹی ، پوتی اور بھن کی میراث کے بارے میں پوچھا گیا تو انھوں نے کھا کھ بیٹی کو آدھا ملے گا اور بھن کو آدھا ملے گا اور تو ابن مسعود رضی اللھ عنھما کے یھاں جا ، شاید وھ بھی یھی بتائیں گے ۔ پھر ابن مسعود رضی اللھ عنھما سے پوچھا گیا اور ابوموسیٰ رضی اللھ عنھ کی بات بھی پھنچائی گئی تو انھوں نے کھا کھ میں اگر ایسا فتویٰ دوں تو گمراھ ھو چکا اور ٹھیک راستے سے بھٹک گیا ۔ میں تو اس میں وھی فیصلھ کروں گا جو رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے کیا تھا کھ بیٹی کو آدھا ملے گا ، پوتھی کو چھٹا حصھ ملے گا ، اس طرح دو تھائی پوری ھو جائے گی اور پھر جو باقی بچے گا وھ بھن کو ملے گا ۔ پھر ابوموسیٰ رضی اللھ عنھ کے پاس آئے اور ابن مسعود رضی اللھ عنھما کی بات ان تک پھنچائی تو انھوں نے کھا کھ جب تک یھ عالم تم میں موجود ھیں مجھ سے مسائل نھ پوچھا کرو ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 85 Hadith no 6736
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 80 Hadith no 728



Copyrights: if you have any objection regarding any shared content on pdf9.com please click here.