Search hadith by
Hadith Book
Search Query
Search Language
English Arabic Urdu
Search Type Basic    Case Sensitive
 

Sahih Bukhari

Lost Things Picked up by Someone (Luqatah)

كتاب فى اللقطة

حَدَّثَنَا آدَمُ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ،‏.‏ وَحَدَّثَنِي مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ، حَدَّثَنَا غُنْدَرٌ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، عَنْ سَلَمَةَ، سَمِعْتُ سُوَيْدَ بْنَ غَفَلَةَ، قَالَ لَقِيتُ أُبَىَّ بْنَ كَعْبٍ ـ رضى الله عنه ـ فَقَالَ أَخَذْتُ صُرَّةً مِائَةَ دِينَارٍ فَأَتَيْتُ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم فَقَالَ ‏"‏ عَرِّفْهَا حَوْلاً‏"‏‏.‏ فَعَرَّفْتُهَا حَوْلَهَا فَلَمْ أَجِدْ مَنْ يَعْرِفُهَا، ثُمَّ أَتَيْتُهُ فَقَالَ ‏"‏ عَرِّفْهَا حَوْلاً ‏"‏ فَعَرَّفْتُهَا فَلَمْ أَجِدْ، ثُمَّ أَتَيْتُهُ ثَلاَثًا فَقَالَ ‏"‏ احْفَظْ وِعَاءَهَا وَعَدَدَهَا وَوِكَاءَهَا، فَإِنْ جَاءَ صَاحِبُهَا، وَإِلاَّ فَاسْتَمْتِعْ بِهَا ‏"‏‏.‏ فَاسْتَمْتَعْتُ فَلَقِيتُهُ بَعْدُ بِمَكَّةَ فَقَالَ لاَ أَدْرِي ثَلاَثَةَ أَحْوَالٍ أَوْ حَوْلاً وَاحِدًا‏.‏


Chapter: Owner's proof

Narrated Ubai bin Ka`b: I found a purse containing one hundred Diners. So I went to the Prophet (and informed him about it), he said, "Make public announcement about it for one year" I did so, but nobody turned up to claim it, so I again went to the Prophet (PBUH) who said, "Make public announcement for another year." I did, but none turned up to claim it. I went to him for the third time and he said, "Keep the container and the string which is used for its tying and count the money it contains and if its owner comes, give it to him; otherwise, utilize it." The sub-narrator Salama said, "I met him (Suwaid, another sub-narrator) in Mecca and he said, 'I don't know whether Ubai made the announcement for three years or just one year.' " ھم سے آدم نے بیان کیا ، کھا ھم سے شعبھ نے بیان کیا ( دوسری سند ) اور مجھ سے محمد بن بشار نے بیان کیا ، ان سے غندر نے ، ان سے شعبھ نے ، ان سے سلمھ نے کھ میں نے سوید بن غفلھ سے سنا ، انھوں نے بیان کیا کھ میں نے ابی بن کعب رضی اللھ عنھ سے ملاقات کی تو انھوں نے کھا کھ میں نے سو دینار کی ایک تھیلی ( کھیں راستے میں پڑی ھوئی ) پائی ۔ میں اسے رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم کی خدمت میں لایا تو آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ ایک سال تک اس کا اعلان کرتا رھ ۔ میں نے ایک سال تک اس کا اعلان کیا ، لیکن مجھے کوئی ایسا شخص نھیں ملا جو اسے پھچان سکتا ۔ اس لیے میں پھر آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کی خدمت میں آیا ۔ آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ ایک سال تک اس کاا علان کرتا رھ ۔ میں نے پھر ( سال بھر ) اعلان کیا ۔ لیکن ان کا مالک مجھے نھیں ملا ۔ تیسری مرتبھ حاضر ھوا ، تو آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ اس تھیلی کی بناوٹ ، دینار کی تعداد اور تھیلی کے بندھن کو محفوظ رکھ ۔ اگر اس کا مالک آ جائے تو ( علامت پوچھ کے ) اسے واپس کر دینا ، ورنھ اپنے خرچ میں اسے استعمال کر لے چنانچھ میں اسے اپنے اخراجات میں لایا ۔ ( شعبھ نے بیان کیا کھ ) پھر میں نے سلمھ سے اس کے بعد مکھ میں ملاقات کی تو انھوں کھا کھ مجھے یاد نھیں رسول کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے ( حدیث میں ) تین سال تک ( اعلان کرنے کے لیے فرمایا تھا ) یا صرف ایک سال کے لیے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 45 Hadith no 2426
Web reference: Sahih Bukhari Volume 3 Book 42 Hadith no 608


حَدَّثَنَا عَمْرُو بْنُ عَبَّاسٍ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، عَنْ رَبِيعَةَ، حَدَّثَنِي يَزِيدُ، مَوْلَى الْمُنْبَعِثِ عَنْ زَيْدِ بْنِ خَالِدٍ الْجُهَنِيِّ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ جَاءَ أَعْرَابِيٌّ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم فَسَأَلَهُ عَمَّا يَلْتَقِطُهُ فَقَالَ ‏"‏ عَرِّفْهَا سَنَةً، ثُمَّ احْفَظْ عِفَاصَهَا وَوِكَاءَهَا، فَإِنْ جَاءَ أَحَدٌ يُخْبِرُكَ بِهَا، وَإِلاَّ فَاسْتَنْفِقْهَا ‏"‏‏.‏ قَالَ يَا رَسُولَ اللَّهِ فَضَالَّةُ الْغَنَمِ قَالَ ‏"‏ لَكَ أَوْ لأَخِيكَ أَوْ لِلذِّئْبِ ‏"‏‏.‏ قَالَ ضَالَّةُ الإِبِلِ فَتَمَعَّرَ وَجْهُ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم‏.‏ فَقَالَ ‏"‏ مَا لَكَ وَلَهَا، مَعَهَا حِذَاؤُهَا وَسِقَاؤُهَا، تَرِدُ الْمَاءَ وَتَأْكُلُ الشَّجَرَ ‏"‏‏.‏


Chapter: Lost camels

Narrated Zaid bin Khalid Al-Juhani: A bedouin went to the Prophet (PBUH) and asked him about picking up a lost thing. The Prophet (PBUH) said, "Make public announcement about it for one year. Remember the description of its container and the string with which it is tied; and if somebody comes and claims it and describes it correctly, (give it to him); otherwise, utilize it." He said, "O Allah's Messenger (PBUH)! What about a lost sheep?" The Prophet (PBUH) said, "It is for you, for your brother (i.e. its owner), or for the wolf." He further asked, "What about a lost camel?" On that the face of the Prophet (PBUH) became red (with anger) and said, "You have nothing to do with it, as it has its feet, its water reserve and can reach places of water and drink, and eat trees." ھم سے عمرو بن عباس نے بیان کیا ، کھا کھ ھم سے عبدالرحمٰن بن مھدی نے بیان کیا ، کھا ھم سے سفیان نے ، ان سے ربیعھ نے ، ان سے منبعث کے غلام یزید نے ، اور ان سے زید بن خالد جھنی رضی اللھ عنھ نے کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم کی خدمت میں ایک دیھاتی حاضر ھوا ۔ اور راستے میں پڑی ھوئی کسی چیز کو اٹھانے کے بارے میں آپ سے سوال کیا ۔ آپ نے ان سے فرمایا کھ ایک سال تک اس کا اعلان کرتا رھ ۔ پھر اس کے برتن کی بناوٹ اور اس کے بندھن کو ذھن میں رکھ ۔ اگر کوئی ایسا شخص آئے جو اس کی نشانیاں ٹھیک ٹھیک بتا دے ( تو اسے اس کا مال واپس کر دے ) ورنھ اپنی ضروریات میں خرچ کر ۔ صحابی نے پوچھا ، یا رسول اللھ ! ایسی بکری کا کیا کیا جائے جس کے مالک کا پتھ نھ ھو ؟ آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ وھ یا تو تمھاری ھو گی یا تمھارے بھائی ( مالک ) کو مل جائے گی یا پھر بھیڑئیے کا لقمھ بنے گی ۔ صحابھ نے پھر پوچھا اور اس اونٹ کا کیا کیا جائے جو راستھ بھول گیا ھو ؟ اس پر رسول کریم صلی اللھ علیھ وسلم کے چھرھ مبارک کا رنگ بدل گیا ۔ آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا ، تمھیں اس سے کیا مطلب ؟ اس کے ساتھ خود اس کے کھر ھیں ۔ ( جن سے وھ چلے گا ) اس کا مشکیزھ ھے ، پانی پر وھ خود پھنچ جائے گا ۔ اور درخت کے پتے وھ خود کھا لے گا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 45 Hadith no 2427
Web reference: Sahih Bukhari Volume 3 Book 42 Hadith no 609


حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيلُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ، قَالَ حَدَّثَنِي سُلَيْمَانُ، عَنْ يَحْيَى، عَنْ يَزِيدَ، مَوْلَى الْمُنْبَعِثِ أَنَّهُ سَمِعَ زَيْدَ بْنَ خَالِدٍ ـ رضى الله عنه ـ يَقُولُ سُئِلَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم عَنِ اللُّقَطَةِ فَزَعَمَ أَنَّهُ قَالَ ‏"‏ اعْرِفْ عِفَاصَهَا وَوِكَاءَهَا، ثُمَّ عَرِّفْهَا سَنَةً ‏"‏‏.‏ يَقُولُ يَزِيدُ إِنْ لَمْ تُعْتَرَفِ اسْتَنْفَقَ بِهَا صَاحِبُهَا وَكَانَتْ وَدِيعَةً، عِنْدَهُ‏.‏ قَالَ يَحْيَى فَهَذَا الَّذِي لاَ أَدْرِي أَفِي حَدِيثِ رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم هُوَ أَمْ شَىْءٌ مِنْ عِنْدِهِ ـ ثُمَّ قَالَ كَيْفَ تَرَى فِي ضَالَّةِ الْغَنَمِ قَالَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ خُذْهَا فَإِنَّمَا هِيَ لَكَ أَوْ لأَخِيكَ أَوْ لِلذِّئْبِ ‏"‏‏.‏ قَالَ يَزِيدُ وَهْىَ تُعَرَّفُ أَيْضًا‏.‏ ثُمَّ قَالَ كَيْفَ تَرَى فِي ضَالَّةِ الإِبِلِ قَالَ فَقَالَ ‏"‏ دَعْهَا فَإِنَّ مَعَهَا حِذَاءَهَا وَسِقَاءَهَا، تَرِدُ الْمَاءَ وَتَأْكُلُ الشَّجَرَ، حَتَّى يَجِدَهَا رَبُّهَا ‏"‏‏.‏


Chapter: Lost sheep

Narrated Sulaiman bin Bilal from Yahya: Yazid Maula Al-Munba'ith heard Zaid bin Khalid al-Juham saying, "The Prophet (PBUH) was asked about Luqata. He said, 'Remember the description of its container and the string it is tied with, and announce it publicly for one year.' " Yazid added, "If nobody claims then the person who has found it can spend it, and it is regarded as a trust entrusted to him." Yahya said, "I do not know whether the last sentences were said by the Prophet (PBUH) or by Yazid." Zaid further said, "The Prophet (PBUH) was asked, 'What about a lost sheep?' The Prophet (PBUH) said, 'Take it, for it is for you or for your brother (i.e. its owner) or for the wolf." Yazid added that it should also be announced publicly. The man then asked the Prophet (PBUH) about a lost camel. The Prophet (PBUH) said, "Leave it, as it has its feet, water container (reservoir), and it will reach a place of water and eat trees till its owner finds it." ھم سے اسماعیل بن عبداللھ نے بیان کیا ، کھا کھ مجھ سے سلیمان تیمی نے بیان کیا ، ان سے یحییٰ بن سعید انصاری نے ، ان سے منبعث کے غلام یزید نے ، انھوں نے زید بن خالد سے سنا ، انھوں نے کھا کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم سے لقطھٰ کے متعلق پوچھا گیا ۔ وھ یقین رکھتے تھے کھ آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا اس کے برتن کی بناوٹ اور اس کے بندھن کو ذھن میں رکھ ، پھر ایک سال تک اس کا اعلان کرتا رھ ۔ یزید بیان کرتے تھے کھ اگر اسے پھچاننے والا ( اس عرصھ میں ) نھ ملے تو پانے والے کو اپنی ضروریات میں خرچ کر لینا چاھئے ۔ اور یھ اس کے پاس امانت کے طور پر ھو گا ۔ اس آخری ٹکڑے ( کھ اس کے پاس امانت کے طور پر ھو گا ) کے متعلق مجھے معلوم نھیں کھ یھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم کی حدیث ھے یا خود انھوں نے اپنی طرف سے یھ بات کھی ھے ۔ پھر پوچھا ، راستھ بھولی ھوئی بکری کے متعلق آپ کا کیا ارشاد ھے ؟ آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ اسے پکڑ لو ۔ وھ یا تمھاری ھو گی ( جب کھ اصل مالک نھ ملے ) یا تمھارے بھائی ( مالک ) کے پاس پھنچ جائے گی ، یا پھر اسے بھیڑیا اٹھا لے جائے گا ۔ یزید نے بیان کیا کھ اس کا بھی اعلان کیا جائے گا ۔ پھر صحابی نے پوچھا ، راستھ بھولے ھوئے اونٹ کے بارے میں آپ کا کیا ارشاد ھے ؟ آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ اسے آزاد رھنے دو ، اس کے ساتھ اس کے کھر بھی ھیں اور اس کا مشکیزھ بھی ، خود پانی پر پھنچ جائے گا اور خود ھی درخت کے پتے کھا لے گا اور اس طرح وھ اپنے مالک تک پھنچ جائے گا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 45 Hadith no 2428
Web reference: Sahih Bukhari Volume 3 Book 42 Hadith no 610


حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ يُوسُفَ، أَخْبَرَنَا مَالِكٌ، عَنْ رَبِيعَةَ بْنِ أَبِي عَبْدِ الرَّحْمَنِ، عَنْ يَزِيدَ، مَوْلَى الْمُنْبَعِثِ عَنْ زَيْدِ بْنِ خَالِدٍ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ جَاءَ رَجُلٌ إِلَى رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم فَسَأَلَهُ عَنِ اللُّقَطَةِ‏.‏ فَقَالَ ‏"‏ اعْرِفْ عِفَاصَهَا وَوِكَاءَهَا، ثُمَّ عَرِّفْهَا سَنَةً، فَإِنْ جَاءَ صَاحِبُهَا، وَإِلاَّ فَشَأْنَكَ بِهَا ‏"‏‏.‏ قَالَ فَضَالَّةُ الْغَنَمِ قَالَ ‏"‏ هِيَ لَكَ أَوْ لأَخِيكَ أَوْ لِلذِّئْبِ ‏"‏‏.‏ قَالَ فَضَالَّةُ الإِبِلِ قَالَ ‏"‏ مَا لَكَ وَلَهَا، مَعَهَا سِقَاؤُهَا وَحِذَاؤُهَا، تَرِدُ الْمَاءَ وَتَأْكُلُ الشَّجَرَ، حَتَّى يَلْقَاهَا رَبُّهَا ‏"‏‏.‏


Chapter: If the owner of a lost thing is not found for one year

Narrated Zaid bin Khalid: A man came and asked Allah's Messenger (PBUH) about picking a lost thing. The Prophet (PBUH) said, "Remember the description of its container and the string it is tied with, and make public announcement about it for one year. If the owner shows up, give it to him; otherwise, do whatever you like with it." He then asked, "What about a lost sheep?" The Prophet (PBUH) said, "It is for you, for your brother (i.e. its owner), or for the wolf." He further asked, "What about a lost camel?" The Prophet (PBUH) said, "It is none of your concern. It has its water-container (reservoir) and its feet, and it will reach water and drink it and eat the trees till its owner finds it." ھم سے عبداللھ بن یوسف نے بیان کیا ، کھا کھ ھم کو امام مالک نے خبر دی ، انھیں ربیعھ بن ابی عبدالرحمٰن نے ، انھیں منبعث کے غلام یزید نے اور ان سے زید بن خالد رضی اللھ عنھ نے کھ ایک شخص نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم کی خدمت میں حاضر ھوا اور آپ صلی اللھ علیھ وسلم سے لقطھٰ کے بارے میں سوال کیا ۔ آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ اس کے برتن کی بناوٹ اور اس کے بندھن کو ذھن میں یاد رکھ کر ایک سال تک اس کا اعلان کرتا رھ ۔ اگر مالک مل جائے ( تو اسے دیدے ) و رنھ اپنی ضرورت میں خرچ کر ۔ انھوں نے پوچھا اور اگر راستھ بھولی ھوئی بکری ملے ؟ آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ وھ تمھاری ھو گی یا تمھارے بھائی کی ھو گی ۔ ورنھ پھر بھیڑیا اسے اٹھا لے جائے گا صحابی نے پوچھا اور اونٹ جو راستھ بھول جائے ؟ آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا تمھیں اس سے کیا مطلب ؟ اس کے ساتھ خود اس کا مشکیزھ ھے ، اس کے کھر ھیں ، پانی پر وھ خود ھی پھنچ جائے گا اور خود ھی درخت کے پتے کھا لے گا ۔ اور اس طرح کسی نھ کسی دن اس کا مالک اسے خود پالے گا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 45 Hadith no 2429
Web reference: Sahih Bukhari Volume 3 Book 42 Hadith no 611


وَقَالَ اللَّيْثُ حَدَّثَنِي جَعْفَرُ بْنُ رَبِيعَةَ، عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ هُرْمُزَ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ـ رضى الله عنه ـ عَنْ رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم أَنَّهُ ذَكَرَ رَجُلاً مِنْ بَنِي إِسْرَائِيلَ ـ وَسَاقَ الْحَدِيثَ ـ ‏"‏فَخَرَجَ يَنْظُرُ لَعَلَّ مَرْكَبًا قَدْ جَاءَ بِمَالِهِ، فَإِذَا هُوَ بِالْخَشَبَةِ فَأَخَذَهَا لأَهْلِهِ حَطَبًا، فَلَمَّا نَشَرَهَا وَجَدَ الْمَالَ وَالصَّحِيفَةَ ‏"‏‏.‏


Chapter: If someone finds a thing in the sea

Narrated 'Abdur-Rahman bin Hurmuz: Abu Hurairah (ra) said, "Allah's Messenger (PBUH) mentioned an Israeli man." Abu Hurairah then told the whole narration). (At the end of the narration it was mentioned that the creditor) went out to the sea, hoping that a boat might have brought his money. Suddenly he saw a piece of wood and he took it to his house to use as firewood. When he sawed it, he found his money and a letter in it. [See hadith No. 2291 for details] اور لیث بن سعد نے بیان کیا کھ مجھ سے جعفر بن ربیعھ نے بیان کیا ، ان سے عبدالرحمٰن بن ھرمز نے اور ان سے ابوھریرھ رضی اللھ عنھ نے کھ رسول کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے بنی اسرائیل کے ایک مرد کا ذکر کیا ۔ پھر پوری حدیث بیان کی ( جو اس سے پھلے گز رچکی ھے ) کھ ( قرض دینے والا ) باھر یھ دیکھنے کے لیے نکلا کھ ممکن ھے کوئی جھاز اس کا روپیھ لے کر آیا ھو ۔ ( دریا کے کنارے پر جب وھ پھنچا ) تو اسے ایک لکڑی ملی جسے اس نے اپنے گھر کے ایندھن کے لیے اٹھا لیا ۔ لیکن جب اسے چیرا تو اس میں روپیھ اور خط پایا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 45 Hadith no 2430
Web reference: Sahih Bukhari Volume 3 Book 42 Hadith no 611


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ يُوسُفَ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، عَنْ مَنْصُورٍ، عَنْ طَلْحَةَ، عَنْ أَنَسٍ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ مَرَّ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم بِتَمْرَةٍ فِي الطَّرِيقِ قَالَ ‏"‏ لَوْلاَ أَنِّي أَخَافُ أَنْ تَكُونَ مِنَ الصَّدَقَةِ لأَكَلْتُهَا ‏"‏‏.‏ وَقَالَ يَحْيَى حَدَّثَنَا سُفْيَانُ حَدَّثَنِي مَنْصُورٌ وَقَالَ زَائِدَةُ عَنْ مَنْصُورٍ عَنْ طَلْحَةَ حَدَّثَنَا أَنَسٌ‏.‏


Chapter: If somebody finds a date on the way

Narrated Anas: The Prophet (PBUH) passed a date fallen on the way and said, "Were I not afraid that it may be from a Sadaqa (charitable gifts), I would have eaten it." ھم سے محمد بن یوسف نے بیان کیا ، کھا کھ ھم سے سفیان ثوری نے بیان کیا ، ان سے منصور بن معتمر نے ، ان سے طلحھ نے اور ان سے انس رضی اللھ عنھ نے بیان کیا کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم کی راستے میں ایک کھجور پر نظر پڑی ۔ تو آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ اگر اس کا ڈر نھ ھوتا کھ صدقھ کی ھے تو میں خو داسے کھا لیتا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 45 Hadith no 2431
Web reference: Sahih Bukhari Volume 3 Book 42 Hadith no 612



Copyrights: if you have any objection regarding any shared content on pdf9.com please click here.