Search hadith by
Hadith Book
Search Query
Search Language
English Arabic Urdu
Search Type Basic    Case Sensitive
 

Sahih Bukhari

Medicine

كتاب الطب

حَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ عُفَيْرٍ، حَدَّثَنَا اللَّيْثُ، قَالَ حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ خَالِدٍ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ، عَنْ أَبِي سَلَمَةَ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم قَضَى فِي امْرَأَتَيْنِ مِنْ هُذَيْلٍ اقْتَتَلَتَا، فَرَمَتْ إِحْدَاهُمَا الأُخْرَى بِحَجَرٍ، فَأَصَابَ بَطْنَهَا وَهْىَ حَامِلٌ، فَقَتَلَتْ وَلَدَهَا الَّذِي فِي بَطْنِهَا فَاخْتَصَمُوا إِلَى النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم فَقَضَى أَنَّ دِيَةَ مَا فِي بَطْنِهَا غُرَّةٌ عَبْدٌ أَوْ أَمَةٌ، فَقَالَ وَلِيُّ الْمَرْأَةِ الَّتِي غَرِمَتْ كَيْفَ أَغْرَمُ يَا رَسُولَ اللَّهِ مَنْ لاَ شَرِبَ، وَلاَ أَكَلَ، وَلاَ نَطَقَ، وَلاَ اسْتَهَلَّ، فَمِثْلُ ذَلِكَ يُطَلّ فَقَالَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ إِنَّمَا هَذَا مِنْ إِخْوَانِ الْكُهَّانِ ‏"‏‏.‏


Chapter: Foretellers

Narrated Abu Huraira: Allah's Messenger (PBUH) gave his verdict about two ladies of the Hudhail tribe who had fought each other and one of them had hit the other with a stone. The stone hit her `Abdomen and as she was pregnant, the blow killed the child in her womb. They both filed their case with the Prophet (PBUH) and he judged that the blood money for what was in her womb. was a slave or a female slave. The guardian of the lady who was fined said, "O Allah's Messenger (PBUH)! Shall I be fined for a creature that has neither drunk nor eaten, neither spoke nor cried? A case like that should be nullified." On that the Prophet (PBUH) said, "This is one of the brothers of soothsayers. ھم سے سعید بن عفیر نے بیان کیا ، کھا ھم سے لیث بن سعد نے بیان کیا ، کھا کھ مجھ سے عبدالرحمٰن بن خالد نے بیان کیا ، ان سے ابن شھاب نے ، ان سے ابوسلمھ بن عبدالرحمٰن بن عوف رضی اللھ عنھ نے اور ان سے حضرت ابوھریرھ رضی اللھ عنھ نے کھ قبیلھ ھذیل کی دو عورتوں کے بارے میں جنھوں نے جھگڑا کیا تھا یھاں تک کھ ان میں سے ایک عورت ( ام عطیف بنت مروح ) نے دوسری کو پتھر پھینک کر مارا ( جس کا نام ملیکھ بنت عویمر تھا ) وھ پتھر عورت کے پیٹ میں جا کر لگا ۔ یھ عورت حاملھ تھی اس لیے اس کے پیٹ کا بچھ ( پتھر کی چوٹ سے ) مرگیا ۔ یھ معاملھ دونوں فریق نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم کے پاس لے گئے تو آپ نے فیصلھ کیا کھ عورت کے پیٹ کے بچھ کی دیت ایک غلام یا باندی آزاد کرنا ھے جس عورت پر تاوان واجب ھوا تھا اس کے ولی ( حمل بن مالک بن نابغھ ) نے کھا یا رسول اللھ ( صلی اللھ علیھ وسلم ) ! میں ایسی چیز کی دیت کیسے دے دوں جس نے کھایا نھ پیا نھ بولا اور نھ ولادت کے وقت اس کی آواز ھی سنائی دی ؟ ایسی صورت میں تو کچھ بھی دیت نھیں ھو سکتی ۔ آپ نے اس پر فرمایا کھ یھ شخص تو کاھنوں کا بھائی معلوم ھوتا ھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 76 Hadith no 5758
Web reference: Sahih Bukhari Volume 7 Book 71 Hadith no 654


حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ، عَنْ مَالِكٍ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ، عَنْ أَبِي سَلَمَةَ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ـ رضى الله عنه ـ أَنَّ امْرَأَتَيْنِ، رَمَتْ إِحْدَاهُمَا الأُخْرَى بِحَجَرٍ فَطَرَحَتْ جَنِينَهَا، فَقَضَى فِيهِ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم بِغُرَّةٍ عَبْدٍ أَوْ وَلِيدَةٍ‏.‏ وَعَنِ ابْنِ شِهَابٍ، عَنْ سَعِيدِ بْنِ الْمُسَيَّبِ، أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم قَضَى فِي الْجَنِينِ يُقْتَلُ فِي بَطْنِ أُمِّهِ بِغُرَّةٍ عَبْدٍ أَوْ وَلِيدَةٍ‏.‏ فَقَالَ الَّذِي قُضِيَ عَلَيْهِ كَيْفَ أَغْرَمُ مَنْ لاَ أَكَلَ، وَلاَ شَرِبَ، وَلاَ نَطَقَ، وَلاَ اسْتَهَلَّ، وَمِثْلُ ذَلِكَ بَطَلْ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ إِنَّمَا هَذَا مِنْ إِخْوَانِ الْكُهَّانِ ‏"‏‏.‏

Narrated Abu Huraira: Two ladies (had a fight) and one of them hit the other with a stone on the `Abdomen and caused her to abort. The Prophet (PBUH) judged that the victim be given either a slave or a female slave (as blood-money). Narrated Ibn Shihab: Sa`id bin Al-Musayyab said, "Allah's Messenger (PBUH) judged that in case of child killed in the womb of its mother, the offender should give the mother a slave or a female slave in recompense The offender said, How can I be fined for killing one who neither ate nor drank, neither spoke nor cried: a case like that should be denied ' On that Allah's Messenger (PBUH) said 'He is one of the brothers of the foretellers ھم سے قتیبھ بن سعید نے بیان کیا ، ان سے حضرت امام مالک نے ، ان سے ابن شھاب نے ، ان سے ابوسلمھ نے اور ان سے حضرت ابوھریرھ رضی اللھ عنھ نے کھ دو عورتیں تھیں ۔ ایک نے دوسری کو پتھر دے مارا جس سے اس کے پیٹ کا حمل گر گیا ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے اس معاملھ میں ایک غلام یا باندی کا دیت میں دیئے جانے کا فیصلھ کیا ۔ اور ابن شھاب نے بیان کیا ، ان سے حضرت سعید بن مسیب نے کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے جنین جسے اس کی ماں کے پیٹ میں مار ڈالا گیا ھو ، کی دیت کے طور پر ایک غلام یا ایک باندی دیئے جانے کا فیصلھ کیا تھا جسے دیت دینی تھی اس نے کھا کھ ایسے بچھ کی دیت آخر کیوں دوں جس نے نھ کھایا ، نھ پیا ، نھ بولا اور نھ ولادت کے وقت ھی آوازنکالی ؟ ایسی صورت میں تو دیت نھیں ھو سکتی ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ یھ شخص تو کاھنوں کا بھائی معلوم ھوتا ھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 76 Hadith no 5759, 5760
Web reference: Sahih Bukhari Volume 7 Book 71 Hadith no 655


حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ مُحَمَّدٍ، حَدَّثَنَا ابْنُ عُيَيْنَةَ، عَنِ الزُّهْرِيِّ، عَنْ أَبِي بَكْرِ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ الْحَارِثِ، عَنْ أَبِي مَسْعُودٍ، قَالَ نَهَى النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم عَنْ ثَمَنِ الْكَلْبِ، وَمَهْرِ الْبَغِيِّ، وَحُلْوَانِ الْكَاهِنِ‏.‏

Narrated Abu Mas`ud: The Prophet (PBUH) forbade the utilization of the price of a dog, the earnings of prostitute and the earnings of a foreteller. ھم سے عبداللھ بن محمد مسندی نے بیان کیا ، کھا ھم سے سفیان ابن عیینھ نے بیان کیا ، ان سے زھری نے ، ان سے ابوبکر بن عبدالرحمٰن بن حارث نے اور ان سے ابومسعود رضی اللھ عنھ نے کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے کتے کی قیمت ، زنا کی اجرت اور کاھن کی کھا نت کی وجھ سے ملنے والے ھدیھ سے منع فرمایا ھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 76 Hadith no 5761
Web reference: Sahih Bukhari Volume 7 Book 71 Hadith no 656


حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ، حَدَّثَنَا هِشَامُ بْنُ يُوسُفَ، أَخْبَرَنَا مَعْمَرٌ، عَنِ الزُّهْرِيِّ، عَنْ يَحْيَى بْنِ عُرْوَةَ بْنِ الزُّبَيْرِ، عَنْ عُرْوَةَ، عَنْ عَائِشَةَ ـ رضى الله عنها ـ قَالَتْ سَأَلَ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم نَاسٌ عَنِ الْكُهَّانِ‏.‏ فَقَالَ ‏"‏ لَيْسَ بِشَىْءٍ ‏"‏‏.‏ فَقَالُوا يَا رَسُولَ اللَّهِ إِنَّهُمْ يُحَدِّثُونَا أَحْيَانًا بِشَىْءٍ فَيَكُونُ حَقًّا‏.‏ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ تِلْكَ الْكَلِمَةُ مِنَ الْحَقِّ، يَخْطَفُهَا مِنَ الْجِنِّيِّ، فَيَقُرُّهَا فِي أُذُنِ وَلِيِّهِ، فَيَخْلِطُونَ مَعَهَا مِائَةَ كَذْبَةٍ ‏"‏‏.‏ قَالَ عَلِيٌّ قَالَ عَبْدُ الرَّزَّاقِ مُرْسَلٌ، الْكَلِمَةُ مِنَ الْحَقِّ‏.‏ ثُمَّ بَلَغَنِي أَنَّهُ أَسْنَدَهُ بَعْدَهُ‏.‏

Narrated `Aisha: Some people asked Allah's Messenger (PBUH) about the fore-tellers He said. ' They are nothing" They said, 'O Allah's Messenger (PBUH)! Sometimes they tell us of a thing which turns out to be true." Allah's Messenger (PBUH) said, "A Jinn snatches that true word and pours it Into the ear of his friend (the fore-teller) (as one puts something into a bottle) The foreteller then mixes with that word one hundred lies." ھم سے علی بن عبداللھ مدینی نے بیان کیا ، کھا ھم سے ھشام بن یوسف نے بیان کیا ، کھا ھم کو معمر نے خبر دی ، انھیں زھری نے ، انھیں یحییٰ بن عروھ بن زبیر نے ، انھیں عروھ نے اور ان سے حضرت عائشھ رضی اللھ عنھا نے بیان کیا کھ کچھ لوگوں نے رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم سے کاھنوں کے متعلق پوچھا آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ اس کی کوئی بنیاد نھیں ۔ لوگوں نے کھا کھ یا رسول اللھ ( صلی اللھ علیھ وسلم ) ! بعض اوقات وھ ھمیں ایسی چیزیں بھی بتاتے ھیں جو صحیح ھو جاتی ھیں ۔ حضور اکرم صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ یھ کلمھ حق ھوتا ھے ۔ اسے کاھن کسی جنی سے سن لیتا ھے وھ جنی اپنے دوست کاھن کے کان میں ڈال جاتا ھے اور پھر یھ کاھن اس کے ساتھ سوجھوٹ ملا کر بیان کرتے ھیں ۔ علی بن عبداللھ مدینی نے بیان کیا کھ عبدالرزاق اس کلمھ تلک الکلمۃ من الحق کو مرسلاً روایت کرتے تھے پھر انھوں نے کھا مجھ کو یھ خبر پھنچی کھ عبدالرزاق اس کے بعد اس کو مسنداً حضرت عائشھ رضی اللھ عنھا سے روایت کیا ھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 76 Hadith no 5762
Web reference: Sahih Bukhari Volume 7 Book 71 Hadith no 657


حَدَّثَنَا إِبْرَاهِيمُ بْنُ مُوسَى، أَخْبَرَنَا عِيسَى بْنُ يُونُسَ، عَنْ هِشَامٍ، عَنْ أَبِيهِ، عَنْ عَائِشَةَ ـ رضى الله عنها ـ قَالَتْ سَحَرَ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم رَجُلٌ مِنْ بَنِي زُرَيْقٍ يُقَالُ لَهُ لَبِيدُ بْنُ الأَعْصَمِ، حَتَّى كَانَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم يُخَيَّلُ إِلَيْهِ أَنَّهُ يَفْعَلُ الشَّىْءَ وَمَا فَعَلَهُ، حَتَّى إِذَا كَانَ ذَاتَ يَوْمٍ أَوْ ذَاتَ لَيْلَةٍ وَهْوَ عِنْدِي لَكِنَّهُ دَعَا وَدَعَا ثُمَّ قَالَ ‏"‏ يَا عَائِشَةُ، أَشَعَرْتِ أَنَّ اللَّهَ أَفْتَانِي فِيمَا اسْتَفْتَيْتُهُ فِيهِ، أَتَانِي رَجُلاَنِ فَقَعَدَ أَحَدُهُمَا عِنْدَ رَأْسِي، وَالآخَرُ عِنْدَ رِجْلَىَّ، فَقَالَ أَحَدُهُمَا لِصَاحِبِهِ مَا وَجَعُ الرَّجُلِ فَقَالَ مَطْبُوبٌ‏.‏ قَالَ مَنْ طَبَّهُ قَالَ لَبِيدُ بْنُ الأَعْصَمِ‏.‏ قَالَ فِي أَىِّ شَىْءٍ قَالَ فِي مُشْطٍ وَمُشَاطَةٍ، وَجُفِّ طَلْعِ نَخْلَةٍ ذَكَرٍ‏.‏ قَالَ وَأَيْنَ هُوَ قَالَ فِي بِئْرِ ذَرْوَانَ ‏"‏‏.‏ فَأَتَاهَا رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم فِي نَاسٍ مِنْ أَصْحَابِهِ فَجَاءَ فَقَالَ ‏"‏ يَا عَائِشَةُ كَأَنَّ مَاءَهَا نُقَاعَةُ الْحِنَّاءِ، أَوْ كَأَنَّ رُءُوسَ نَخْلِهَا رُءُوسُ الشَّيَاطِينِ ‏"‏‏.‏ قُلْتُ يَا رَسُولَ اللَّهِ أَفَلاَ أَسْتَخْرِجُهُ قَالَ ‏"‏ قَدْ عَافَانِي اللَّهُ، فَكَرِهْتُ أَنْ أُثَوِّرَ عَلَى النَّاسِ فِيهِ شَرًّا ‏"‏‏.‏ فَأَمَرَ بِهَا فَدُفِنَتْ‏.‏ تَابَعَهُ أَبُو أُسَامَةَ وَأَبُو ضَمْرَةَ وَابْنُ أَبِي الزِّنَادِ عَنْ هِشَامٍ‏.‏ وَقَالَ اللَّيْثُ وَابْنُ عُيَيْنَةَ عَنْ هِشَامٍ فِي مُشْطٍ وَمُشَاقَةٍ‏.‏ يُقَالُ الْمُشَاطَةُ مَا يَخْرُجُ مِنَ الشَّعَرِ إِذَا مُشِطَ، وَالْمُشَاقَةُ مِنْ مُشَاقَةِ الْكَتَّانِ‏.‏

Narrated `Aisha: A man called Labid bin al-A'sam from the tribe of Bani Zaraiq worked magic on Allah's Messenger (PBUH) till Allah's Messenger (PBUH) started imagining that he had done a thing that he had not really done. One day or one night he was with us, he invoked Allah and invoked for a long period, and then said, "O `Aisha! Do you know that Allah has instructed me concerning the matter I have asked him about? Two men came to me and one of them sat near my head and the other near my feet. One of them said to his companion, "What is the disease of this man?" The other replied, "He is under the effect of magic.' The first one asked, 'Who has worked the magic on him?' The other replied, "Labid bin Al-A'sam.' The first one asked, 'What material did he use?' The other replied, 'A comb and the hairs stuck to it and the skin of pollen of a male date palm.' The first one asked, 'Where is that?' The other replied, '(That is) in the well of Dharwan;' " So Allah's Messenger (PBUH) along with some of his companions went there and came back saying, "O `Aisha, the color of its water is like the infusion of Henna leaves. The tops of the date-palm trees near it are like the heads of the devils." I asked. "O Allah's Messenger (PBUH)? Why did you not show it (to the people)?" He said, "Since Allah cured me, I disliked to let evil spread among the people." Then he ordered that the well be filled up with earth. ھم سے ابراھیم بن موسیٰ اشعری نے بیان کیا ، کھا ھم کو عیسیٰ بن یونس نے خبر دی ، انھیں ھشام بن عروھ نے ، انھیں ان کے والد نے اور ان سے حضرت عائشھ رضی اللھ عنھا نے بیان کیا کھ بنی زریق کے ایک شخص یھودی لبید بن اعصم نے رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم پر جادو کر دیا تھا اور اس کی وجھ سے آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کسی چیز کے متعلق خیال کرتے کھ آپ نے وھ کام کر لیا ھے حالانکھ آپ نے وھ کام نھ کیا ھوتا ۔ ایک دن یا ( راوی نے بیان کیا کھ ) ایک رات آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم میرے یھاں تشریف رکھتے تھے اورمسلسل دعا کر رھے تھے پھر آپ نے فرمایا عائشھ ! تمھیں معلوم ھے اللھ سے جو بات میں پوچھ رھا تھا ، اس نے اس کا جواب مجھے دے دیا ۔ میرے پاس دو ( فرشتے حضرت جبرائیل وحضرت میکائیل علیھما السلام ) آئے ۔ ایک میرے سر کی طرف کھڑا ھو گیا اور دوسرا میرے پاؤں کی طرف ۔ ایک نے اپنے دوسرے ساتھی سے پوچھا ان صاحب کی بیماری کیا ھے ؟ دوسرے نے کھا کھ ان پر جادو ھوا ھے ۔ اسنے پوچھا کس نے جادو کیا ھے ؟ جواب دیا کھ لبید بن اعصم نے ۔ پوچھا کس چیز میں ؟ جواب دیا کھ کنگھے اور سر کے بال میں جو نر کھجور کے خوشے میں رکھے ھوئے ھیں ۔ سوال کیا اور یھ جادو ھے کھاں ؟ جواب دیا کھ زر وان کے کنویں میں ۔ پھر آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم اس کنویں پر اپنے چند صحابھ کے ساتھ تشریف لے گئے اور جب واپس آئے تو فرمایا عائشھ ! اس کا پانی ایسا ( سرخ ) تھا جیسے مھندی کا نچوڑ ھوتا ھے اور اس کے کھجور کے درختوں کے سر ( اوپر کا حصھ ) شیطان کے سروں کی طرح تھے میں نے عرض کیا یا رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم آپ نے اس جادو کو باھر کیوں نھیں کر دیا ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ اللھ تعالیٰ نے مجھے اس سے عافیت دے دی اس لیے میں نے مناسب نھیں سمجھا کھ اب میں خواھ مخواھ لوگوں میں اس برائی کو پھیلاؤ ں پھر آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے اس جادو کا سامان کنگھی بال خرما کا غلاف ھوتے ھیں اسی میں دفن کرا دیا ۔ عیسیٰ بن یونس کے ساتھ اس حدیث کو ابواسامھ اور ابو ضمرھ ( انس بن عیاض ) اورابن ابی الزناد تینوں نے ھشام سے یوں روایت کیا اور لیث بن مسور اور سفیان بن عیینھ نے ھشام سے یوں روایت کیا ھے ۔ ” فی مشط ومشاقۃ مشاطۃ “ اسے کھتے ھیں جوبال کنگھی کرنے میں نکلیں سر یا داڑھی کے اور مشاقھ روئی کے تار یعنی سوت کے تار کو کھتے ھیں ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 76 Hadith no 5763
Web reference: Sahih Bukhari Volume 7 Book 71 Hadith no 658


حَدَّثَنِي عَبْدُ الْعَزِيزِ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ، قَالَ حَدَّثَنِي سُلَيْمَانُ، عَنْ ثَوْرِ بْنِ زَيْدٍ، عَنْ أَبِي الْغَيْثِ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ـ رضى الله عنه ـ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ اجْتَنِبُوا الْمُوبِقَاتِ الشِّرْكُ بِاللَّهِ، وَالسِّحْرُ ‏"‏‏.‏


Chapter: Shirk and witchcraft are from the Mubiqat (great destructive sins)

Narrated Abu Huraira: Allah's Messenger (PBUH) said, "Avoid the Mubiqat, i.e., shirk and witchcraft." مجھ سے عبدالعزیز بن عبداللھ اویسی نے بیان کیا ، کھا مجھ سے سلیمان بن بلال نے بیان کیا ، ان سے ثور بن زید نے ، ان سے ابو الغیث نے اور ان سے حضرت ابوھریرھ رضی اللھ عنھ نے کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا تباھ کر دینے والی چیز اللھ کے ساتھ شرک کرنا ھے اس سے بچو اور جادو کرنے کرانے سے بھی بچو ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 76 Hadith no 5764
Web reference: Sahih Bukhari Volume 7 Book 71 Hadith no 659



@2019 Copyrights: if you have any objection regarding any shared content on pdf9.com please click here.