Search hadith by
Hadith Book
Search Query
Search Language
English Arabic Urdu
Search Type Basic    Case Sensitive
 

Sahih Bukhari

Medicine

كتاب الطب

حَدَّثَنَا بِشْرُ بْنُ مُحَمَّدٍ، أَخْبَرَنَا عَبْدُ اللَّهِ، أَخْبَرَنَا مَعْمَرٌ، وَيُونُسُ، قَالَ الزُّهْرِيُّ أَخْبَرَنِي عُبَيْدُ اللَّهِ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُتْبَةَ، أَنَّ عَائِشَةَ ـ رضى الله عنها ـ زَوْجَ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم قَالَتْ لَمَّا ثَقُلَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم وَاشْتَدَّ وَجَعُهُ، اسْتَأْذَنَ أَزْوَاجَهُ فِي أَنْ يُمَرَّضَ فِي بَيْتِي، فَأَذِنَّ، فَخَرَجَ بَيْنَ رَجُلَيْنِ، تَخُطُّ رِجْلاَهُ فِي الأَرْضِ بَيْنَ عَبَّاسٍ وَآخَرَ‏.‏ فَأَخْبَرْتُ ابْنَ عَبَّاسٍ قَالَ هَلْ تَدْرِي مَنِ الرَّجُلُ الآخَرُ الَّذِي لَمْ تُسَمِّ عَائِشَةُ قُلْتُ لاَ‏.‏ قَالَ هُوَ عَلِيٌّ‏.‏ قَالَتْ عَائِشَةُ فَقَالَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم بَعْدَ مَا دَخَلَ بَيْتَهَا وَاشْتَدَّ بِهِ وَجَعُهُ ‏"‏ هَرِيقُوا عَلَىَّ مِنْ سَبْعِ قِرَبٍ لَمْ تُحْلَلْ أَوْكِيَتُهُنَّ، لَعَلِّي أَعْهَدُ إِلَى النَّاسِ ‏"‏‏.‏ قَالَتْ فَأَجْلَسْنَاهُ فِي مِخْضَبٍ لِحَفْصَةَ زَوْجِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم ثُمَّ طَفِقْنَا نَصُبُّ عَلَيْهِ مِنْ تِلْكَ الْقِرَبِ، حَتَّى جَعَلَ يُشِيرُ إِلَيْنَا أَنْ قَدْ فَعَلْتُنَّ‏.‏ قَالَتْ وَخَرَجَ إِلَى النَّاسِ فَصَلَّى لَهُمْ وَخَطَبَهُمْ‏.‏


Chapter: Chapter

Narrated `Aisha: (the wife of the Prophet) When the health of Allah's Messenger (PBUH) deteriorated and his condition became serious, he asked the permission of all his wives to allow him to be treated In my house, and they allowed him. He came out, supported by two men and his legs were dragging on the ground between `Abbas and another man. (The sub-narrator told Ibn `Abbas who said: Do you know who was the other man whom `Aisha did not mention? The sub-narrator said: No. Ibn `Abbas said: It was `Ali.) `Aisha added: When the Prophet entered my house and his disease became aggravated, he said, "Pour on me seven water skins full of water (the tying ribbons of which had not been untied) so that I may give some advice to the people." So we made him sit in a tub belonging to Hafsa, the wife of the Prophet (PBUH) and started pouring water on him from those water skins till he waved us to stop. Then he went out to the people and led them in prayer and delivered a speech before them. ھم سے بشر بن محمد نے بیان کیا ، کھا ھم کوعبداللھ بن مبارک نے خبر دی ، کھا ھم کو معمر اوریونس نے خبر دی ، ان سے زھری نے بیان کیا کھ مجھ کو عبیداللھ بن عبداللھ بن عتبھ نے خبر دی اور ان سے نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم کی زوجھ مطھرھ حضرت عائشھ رضی اللھ عنھا نے بیان کیا کھ جب ( مرض الموت میں ) رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم کے لیے چلنا پھرنا دشوار ھو گیا اور آپ کی تکلیف بڑھ گئی تو آپ نے بیماری کے دن میرے گھر میں گزارنے کی اجازت اپنی دوسری بیویوں سے مانگی جب اجازت مل گئی تو آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم دواشخاص حضرت عباس رضی اللھ عنھ اور ایک صاحب کے درمیاں ان کا سھارا لے کر باھر تشرےف لائے ، آپ کے مبارک قدم زمین پر گھسٹ رھے تھے ۔ میں نے حضرت ابن عباس رضی اللھ عنھما سے اس کا ذکر کیا تو انھوں نے کھا تمھیں معلوم ھے وھ دوسرے صاحب کون تھے جن کا عائشھ رضی اللھ عنھا نے نام نھیں بتایا ، میں نے کھا کھ نھیں کھا کھ وھ علی رضی اللھ عنھ تھے ۔ حضرت عائشھ رضی اللھ عنھا نے کھا کھ ان کے حجرے میں داخل ھونے کے بعد نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا جبکھ آپ کا مرض بڑھ گیا تھا کھ مجھ پر سات مشک ڈالو جو پانی سے لبریز ھوں ۔ شاید میں لوگوں کو کچھ نصیحت کر سکوں ۔ بیان کیا کھ پھر آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کو ھم نے ایک لگن میں بٹھایا جو آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کی زوجھ مطھرھ حضرت حفصھ رضی اللھ عنھ کا تھا اور آپ پر حکم کے مطابق مشکوں سے پانی ڈالنے لگے آخر آپ نے ھمیں اشارھ کیا کھ بس ھو چکا ۔ بیان کیا کھ پھر آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم صحابھ کے مجمع میں گئے ، انھیں نماز پڑھائی اور انھیں خطاب فرمایا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 76 Hadith no 5714
Web reference: Sahih Bukhari Volume 7 Book 71 Hadith no 612


حَدَّثَنَا أَبُو الْيَمَانِ، أَخْبَرَنَا شُعَيْبٌ، عَنِ الزُّهْرِيِّ، قَالَ أَخْبَرَنِي عُبَيْدُ اللَّهِ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ، أَنَّ أُمَّ قَيْسٍ بِنْتَ مِحْصَنٍ الأَسَدِيَّةَ ـ أَسَدَ خُزَيْمَةَ، وَكَانَتْ مِنَ الْمُهَاجِرَاتِ الأُوَلِ اللاَّتِي بَايَعْنَ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم وَهْىَ أُخْتُ عُكَّاشَةَ ـ أَخْبَرَتْهُ أَنَّهَا أَتَتْ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم بِابْنٍ لَهَا، قَدْ أَعْلَقَتْ عَلَيْهِ مِنَ الْعُذْرَةِ فَقَالَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ عَلَى مَا تَدْغَرْنَ أَوْلاَدَكُنَّ بِهَذَا الْعِلاَقِ عَلَيْكُمْ بِهَذَا الْعُودِ الْهِنْدِيِّ، فَإِنَّ فِيهِ سَبْعَةَ أَشْفِيَةٍ مِنْهَا ذَاتُ الْجَنْبِ ‏"‏‏.‏ يُرِيدُ الْكُسْتَ، وَهْوَ الْعُودُ الْهِنْدِيُّ‏.‏ وَقَالَ يُونُسُ وَإِسْحَاقُ بْنُ رَاشِدٍ عَنِ الزُّهْرِيِّ عَلَّقَتْ عَلَيْهِ‏.‏


Chapter: Al-Udhra (throat or tonsil diseases)

Narrated Um Qais: that she took to Allah's Messenger (PBUH) one of her sons whose palate and tonsils she had pressed because he had throat trouble. The Prophet (PBUH) said, "Why do you pain your children by getting the palate pressed like that? Use the Ud Al-Hindi (certain Indian incense) for it cures seven diseases one of which is pleurisy." ھم سے ابوالیمان نے بیان کیا ، کھا ھم کو شعیب نے خبر دی ، انھیں زھری نے کھا کھ مجھے عبیداللھ بن عبداللھ بن عتبھ نے خبر دی کھ ام قیس بنت محصن اسدیھ نے انھیں خبر دی ، ان کا تعلق قبیلھ خزیمھ کی شاخ بن اسد سے تھا وھ ان ابتدائی مھاجرات میں سے تھیں جنھوں نے نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم سے بیعت کی تھی ۔ آپ عکاشھ بن محصن رضی اللھ عنھ کی بھن ھیں ( انھوں نے بیان کیا کھ ) وھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم کی خدمت میں اپنے ایک بیٹے کو لے کر آئیں ۔ انھوں نے اپنے لڑکے کے عذرھ کا علاج تالو دبا کرکیا تھا آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا آخر تم عورتیں کیوں اپنی اولاد کو یوں تالو دبا کر تکلیف پھنچاتی ھو ۔ تمھیں چاھیئے کھ اس مرض میں عود ھندی کا استعمال کیا کروکیونکھ اس میں سات بیماریوں سے شفاء ھے ۔ ان میں ایک ذات الجنب کی بیماری بھی ھے ( عود ھندی سے ) آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کی مراد کست تھی یھی عود ھندی ھے ۔ اوریونس اور اسحاق بن راشد نے بیان کیا اور ان سے زھری نے اس روایت میں بجائے اعلقت علیھ کے علقت علیھ نقل کیا ھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 76 Hadith no 5715
Web reference: Sahih Bukhari Volume 7 Book 71 Hadith no 613


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ، حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، عَنْ قَتَادَةَ، عَنْ أَبِي الْمُتَوَكِّلِ، عَنْ أَبِي سَعِيدٍ، قَالَ جَاءَ رَجُلٌ إِلَى النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم فَقَالَ إِنَّ أَخِي اسْتَطْلَقَ بَطْنُهُ‏.‏ فَقَالَ ‏"‏ اسْقِهِ عَسَلاً ‏"‏‏.‏ فَسَقَاهُ‏.‏ فَقَالَ إِنِّي سَقَيْتُهُ فَلَمْ يَزِدْهُ إِلاَّ اسْتِطْلاَقًا‏.‏ فَقَالَ ‏"‏ صَدَقَ اللَّهُ وَكَذَبَ بَطْنُ أَخِيكَ ‏"‏‏.‏ تَابَعَهُ النَّضْرُ عَنْ شُعْبَةَ‏.‏


Chapter: The treatment for a person suffering from diarrhea

Narrated Abu Sa`id: A man came to the prophet and said, 'My brother has got loose motions. The Prophet (PBUH) said, Let him drink honey." The man again (came) and said, 'I made him drink (honey) but that made him worse.' The Prophet (PBUH) said, 'Allah has said the Truth, and the `Abdomen of your brother has told a lie." (See Hadith No. 88) ھم سے محمد بن بشار نے بیان کیا ، کھا ھم سے محمد بن جعفر نے بیان کیا ، ان سے شعبھ نے بیان کیا ، ان سے قتادھ نے ، ان سے ابو المتوکل نے اور ان سے حضرت ابوسعید رضی اللھ عنھ نے کھ ایک صاحب رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم کی خدمت میں حاضر ھوئے اور عرض کیا کھ میرے بھائی کو دست آ رھے ھیں آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ انھیں شھد پلاؤ ۔ انھوں نے پلایا اور پھر واپس آ کر کھا کھ میں نے انھیں شھد پلایا لیکن ان کے دستوں میں کوئی کمی نھیں ھوئی ۔ آپ نے اس پر فرمایا کھ اللھ تعالیٰ نے سچ فرمایا اور تمھارے بھائی کا پیٹ جھوٹا ھے ( آخر شھد ھی سے اسے شفاء ھوئی ) محمد بن جعفر کے ساتھ اس حدیث کو نضر بن شمیل نے بھی شعبھ سے روایت کیا ھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 76 Hadith no 5716
Web reference: Sahih Bukhari Volume 7 Book 71 Hadith no 614


حَدَّثَنَا عَبْدُ الْعَزِيزِ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ، حَدَّثَنَا إِبْرَاهِيمُ بْنُ سَعْدٍ، عَنْ صَالِحٍ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ، قَالَ أَخْبَرَنِي أَبُو سَلَمَةَ بْنُ عَبْدِ الرَّحْمَنِ، وَغَيْرُهُ، أَنَّ أَبَا هُرَيْرَةَ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ إِنَّ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ لاَ عَدْوَى وَلاَ صَفَرَ وَلاَ هَامَةَ ‏"‏‏.‏ فَقَالَ أَعْرَابِيٌّ يَا رَسُولَ اللَّهِ فَمَا بَالُ إِبِلِي تَكُونُ فِي الرَّمْلِ كَأَنَّهَا الظِّبَاءُ فَيَأْتِي الْبَعِيرُ الأَجْرَبُ فَيَدْخُلُ بَيْنَهَا فَيُجْرِبُهَا‏.‏ فَقَالَ ‏"‏ فَمَنْ أَعْدَى الأَوَّلَ ‏"‏‏.‏ رَوَاهُ الزُّهْرِيُّ عَنْ أَبِي سَلَمَةَ وَسِنَانِ بْنِ أَبِي سِنَانٍ‏.‏


Chapter: There is no Safar disease that afflicts the abdomen

Narrated Abu Huraira: Allah's Messenger (PBUH) said, 'There is no 'Adha (no disease is conveyed from the sick to the healthy without Allah's permission), nor Safar, nor Hama." A bedouin stood up and said, "Then what about my camels? They are like deer on the sand, but when a mangy camel comes and mixes with them, they all get infected with mangy." The Prophet (PBUH) said, "Then who conveyed the (mange) disease to the first one?" ھم سے عبدالعزیز بن عبداللھ نے بیان کیا ، کھا ھم سے ابراھیم بن سعد نے بیان کیا ، ان سے صالح نے ، ان سے ابن شھاب نے بیان کیا ، انھیں ابوسلمھ بن عبدالرحمٰن وغیرھ نے خبر دی اور ان سے حضرت ابوھریرھ رضی اللھ عنھ نے بیان کیا کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا امراض میں چھوت چھات صفر اور الو کی نحو ست کی کوئی اصل نھیں اس پر ایک اعرابی بولا کھ کھ یا رسول اللھ ! پھر میرے اونٹوں کو کیا ھو گیا کھ وھ جب تک ریگستان میں رھتے ھیں تو ھر نوں کی طرح ( صاف اور خوب چکنے ) رھتے ھیں پھر ان میں ایک خارش والا اونٹ آ جاتا ھے اور ان میں گھس کر انھیں بھی خارش لگا جاتا ھے تو آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے اس پر فرمایا لیکن یھ بتاؤ کھ پھلے اونٹ کو کس نے خارش لگائی تھی ؟ اس کی روایت زھری نے ابوسلمھ اور حضرت سنان بن سنان کے واسطھ سے کی ھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 76 Hadith no 5717
Web reference: Sahih Bukhari Volume 7 Book 71 Hadith no 615


حَدَّثَنِي مُحَمَّدٌ، أَخْبَرَنَا عَتَّابُ بْنُ بَشِيرٍ، عَنْ إِسْحَاقَ، عَنِ الزُّهْرِيِّ، قَالَ أَخْبَرَنِي عُبَيْدُ اللَّهِ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ، أَنَّ أُمَّ قَيْسٍ بِنْتَ مِحْصَنٍ،، وَكَانَتْ، مِنَ الْمُهَاجِرَاتِ الأُوَلِ اللاَّتِي بَايَعْنَ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم وَهْىَ أُخْتُ عُكَّاشَةَ بْنِ مِحْصَنٍ أَخْبَرَتْهُ أَنَّهَا أَتَتْ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم بِابْنٍ لَهَا قَدْ عَلَّقَتْ عَلَيْهِ مِنَ الْعُذْرَةِ فَقَالَ ‏"‏ اتَّقُوا اللَّهَ، عَلَى مَا تَدْغَرُونَ أَوْلاَدَكُمْ بِهَذِهِ الأَعْلاَقِ عَلَيْكُمْ بِهَذَا الْعُودِ الْهِنْدِيِّ، فَإِنَّ فِيهِ سَبْعَةَ أَشْفِيَةٍ، مِنْهَا ذَاتُ الْجَنْبِ ‏"‏‏.‏ يُرِيدُ الْكُسْتَ يَعْنِي الْقُسْطَ، قَالَ وَهْىَ لُغَةٌ‏.‏


Chapter: Pleurisy

Narrated Um Oais: that she took to Allah's Messenger (PBUH) one of her sons whose palate and tonsils she had pressed to treat a throat trouble. The Prophet (PBUH) said, "Be afraid of Allah! Why do you pain your children by having their tonsils pressed like that? Use the Ud Al-Hindi (a certain Indian incense) for it cures seven diseases, one of which is pleurisy." ھم سے محمد بن یحییٰ نے بیان کیا ، کھا ھم کو عتاب بن بشیر نے خبر دی ، انھیں اسحاق نے ، ان سے زھری نے بیان کیا کھ مجھ کو عبیداللھ بن عبداللھ نے خبر دی کھ ام قیس بنت محصن جو پھلے پھل ھجرت کرنے والی عورتوں میں سے تھیں جنھوں نے رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم سے بیعت کی تھی اور وھ حضرت عکاشھ بن محصن رضی اللھ عنھ کی بھن تھیں ، خبر دی کھ وھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم کی خدمت میں اپنے بیٹے کو لے کر حاضر ھوئیں ۔ انھوں نے اس بچے کا کوا گرنے میں تالو دبا کر علاج کیا تھا ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا اللھ سے ڈرو کھ تم اپنی اولاد کو اس طرح تالو دبا کر تکلیف پھنچاتی ھو عود ھندی ( کوٹ ) اس میں استعمال کرو کیونکھ اس میں سات بیماریوں کے لیے شفاء ھے جن میں سے ایک نمونیھ بھی ھے ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کی مراد عود ھندی سے کست تھی جسے قسط بھی کھتے ھیں یھ بھی ایک لغت ھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 76 Hadith no 5718
Web reference: Sahih Bukhari Volume 7 Book 71 Hadith no 616


حَدَّثَنَا عَارِمٌ، حَدَّثَنَا حَمَّادٌ، قَالَ قُرِئَ عَلَى أَيُّوبَ مِنْ كُتُبِ أَبِي قِلاَبَةَ، مِنْهُ مَا حَدَّثَ بِهِ وَمِنْهُ مَا قُرِئَ عَلَيْهِ، وَكَانَ هَذَا فِي الْكِتَابِ عَنْ أَنَسٍ أَنَّ أَبَا طَلْحَةَ وَأَنَسَ بْنَ النَّضْرِ كَوَيَاهُ، وَكَوَاهُ أَبُو طَلْحَةَ بِيَدِهِ‏.‏ وَقَالَ عَبَّادُ بْنُ مَنْصُورٍ عَنْ أَيُّوبَ، عَنْ أَبِي قِلاَبَةَ، عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ، قَالَ أَذِنَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم لأَهْلِ بَيْتٍ مِنَ الأَنْصَارِ أَنْ يَرْقُوا مِنَ الْحُمَةِ وَالأُذُنِ‏.‏ قَالَ أَنَسٌ كُوِيتُ مِنْ ذَاتِ الْجَنْبِ وَرَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم حَىٌّ، وَشَهِدَنِي أَبُو طَلْحَةَ وَأَنَسُ بْنُ النَّضْرِ وَزَيْدُ بْنُ ثَابِتٍ، وَأَبُو طَلْحَةَ كَوَانِي‏.‏

Narrated Anas bin Malik: Allah's Messenger (PBUH) allowed one of the Ansar families to treat persons who have taken poison and also who are suffering from ear ailment with Ruqya. Anas added: I got myself branded cauterized) for pleurisy, when Allah's Messenger (PBUH) was still alive. Abu Talha, Anas bin An-Nadr and Zaid bin Thabit witnessed that, and it was Abu Talha who branded (cauterized) me. ھم سے عارم نے بیان کیا ، کھا ھم سے حماد نے بیان کیا کھ ایوب سختیانی کے سامنے ابوقلابھ کی لکھی ھوئی احادیث پڑھی گئیں ان میں وھ احادیث بھی تھیں جنھیں ( ایوب نے ابوقلابھ سے ) بیان کیا تھا اور وھ بھی تھیں جو ان کے سامنے پڑھ کر سنائی گئی تھیں ۔ ان لکھی ھوئی احادیث کے ذخیرھ میں انس رضی اللھ عنھ کی یھ حدیث بھی تھی کھ ابوطلحھ اور انس بن نضر نے انس رضی اللھ عنھم کو داغ لگا کر ان کا علاج کیا تھا یا ابوطلحھ رضی اللھ عنھ نے ان کو خود اپنے ھاتھ سے داغا تھا ۔ اور عباد بن منصور نے بیان کیا ، ان سے ایوب نے ، ان سے ابوقلابھ نے اور ان سے انس رضی اللھ عنھ نے بیان کیا کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے قبیلھ انصار کے بعض گھرانوں کو زھریلے جانوروں کے کاٹنے اور کان کی تکلیف میں جھاڑنے کی اجازت دی تھی تو انس رضی اللھ عنھ نے بیان کیا کھ ذات الجنب کی بیماری میں مجھے داغا گیا تھا رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم کی زندگی میں اور اس وقت ابوطلحھ ، انس بن نضر اور زید بن ثابت رضی اللھ عنھم موجود تھے اور ابوطلحھ رضی اللھ عنھ نے مجھے داغا تھا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 76 Hadith no 5719, 5720
Web reference: Sahih Bukhari Volume 7 Book 71 Hadith no 617



@2019 Copyrights: if you have any objection regarding any shared content on pdf9.com please click here.