Search hadith by
Hadith Book
Search Query
Search Language
English Arabic Urdu
Search Type Basic    Case Sensitive
 

Sahih Bukhari

Medicine

كتاب الطب

حَدَّثَنَا حَفْصُ بْنُ عُمَرَ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، قَالَ أَخْبَرَنِي حَبِيبُ بْنُ أَبِي ثَابِتٍ، قَالَ سَمِعْتُ إِبْرَاهِيمَ بْنَ سَعْدٍ، قَالَ سَمِعْتُ أُسَامَةَ بْنَ زَيْدٍ، يُحَدِّثُ سَعْدًا عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ إِذَا سَمِعْتُمْ بِالطَّاعُونِ بِأَرْضٍ فَلاَ تَدْخُلُوهَا، وَإِذَا وَقَعَ بِأَرْضٍ وَأَنْتُمْ بِهَا فَلاَ تَخْرُجُوا مِنْهَا ‏"‏‏.‏ فَقُلْتُ أَنْتَ سَمِعْتَهُ يُحَدِّثُ سَعْدًا وَلاَ يُنْكِرُهُ قَالَ نَعَمْ‏.‏


Chapter: What has been mentioned about the plague

Narrated Saud: The Prophet (PBUH) said, "If you hear of an outbreak of plague in a land, do not enter it; but if the plague breaks out in a place while you are in it, do not leave that place." ھم سے حفص بن عمر نے بیان کیا ، کھا ھم سے شعبھ نے کھا کھ مجھے حبیب بن ابی ثابت نے خبر دی ، کھا کھ میں نے ابراھیم بن سعد سے سنا ، کھا کھ میں نے اسامھ بن زید رضی اللھ عنھما سے سنا ، وھ سعد رضی اللھ عنھ سے بیان کرتے تھے کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا جب تم سن لو کھ کسی جگھ طاعون کی وبا پھیل رھی ھے تو وھاں مت جاؤ لیکن جب کسی جگھ یھ وبا پھوٹ پڑے اور تم وھیں موجود ھو تو اس جگھ سے نکلو بھی مت ( حبیب بن ابی ثابت نے بیان کیا کھ میں نے ابراھیم بن سعد سے ) کھا تم نے خود یھ حدیث اسامھ رضی اللھ عنھ سے سنی ھے کھ انھوں نے سعد رضی اللھ عنھ سے بیان کیا اور انھوں نے اس کا انکار نھیں کیا ؟ فرمایا کھ ھاں ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 76 Hadith no 5728
Web reference: Sahih Bukhari Volume 7 Book 71 Hadith no 624


حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ يُوسُفَ، أَخْبَرَنَا مَالِكٌ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ، عَنْ عَبْدِ الْحَمِيدِ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ زَيْدِ بْنِ الْخَطَّابِ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ الْحَارِثِ بْنِ نَوْفَلٍ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَبَّاسٍ، أَنَّ عُمَرَ بْنَ الْخَطَّابِ ـ رضى الله عنه ـ خَرَجَ إِلَى الشَّأْمِ حَتَّى إِذَا كَانَ بِسَرْغَ لَقِيَهُ أُمَرَاءُ الأَجْنَادِ أَبُو عُبَيْدَةَ بْنُ الْجَرَّاحِ وَأَصْحَابُهُ، فَأَخْبَرُوهُ أَنَّ الْوَبَاءَ قَدْ وَقَعَ بِأَرْضِ الشَّأْمِ‏.‏ قَالَ ابْنُ عَبَّاسٍ فَقَالَ عُمَرُ ادْعُ لِي الْمُهَاجِرِينَ الأَوَّلِينَ‏.‏ فَدَعَاهُمْ فَاسْتَشَارَهُمْ وَأَخْبَرَهُمْ أَنَّ الْوَبَاءَ قَدْ وَقَعَ بِالشَّأْمِ فَاخْتَلَفُوا‏.‏ فَقَالَ بَعْضُهُمْ قَدْ خَرَجْتَ لأَمْرٍ، وَلاَ نَرَى أَنْ تَرْجِعَ عَنْهُ‏.‏ وَقَالَ بَعْضُهُمْ مَعَكَ بَقِيَّةُ النَّاسِ وَأَصْحَابُ رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم وَلاَ نَرَى أَنْ تُقْدِمَهُمْ عَلَى هَذَا الْوَبَاءِ‏.‏ فَقَالَ ارْتَفِعُوا عَنِّي‏.‏ ثُمَّ قَالَ ادْعُوا لِي الأَنْصَارَ‏.‏ فَدَعَوْتُهُمْ فَاسْتَشَارَهُمْ، فَسَلَكُوا سَبِيلَ الْمُهَاجِرِينَ، وَاخْتَلَفُوا كَاخْتِلاَفِهِمْ، فَقَالَ ارْتَفِعُوا عَنِّي‏.‏ ثُمَّ قَالَ ادْعُ لِي مَنْ كَانَ هَا هُنَا مِنْ مَشْيَخَةِ قُرَيْشٍ مِنْ مُهَاجِرَةِ الْفَتْحِ‏.‏ فَدَعَوْتُهُمْ، فَلَمْ يَخْتَلِفْ مِنْهُمْ عَلَيْهِ رَجُلاَنِ، فَقَالُوا نَرَى أَنْ تَرْجِعَ بِالنَّاسِ، وَلاَ تُقْدِمَهُمْ عَلَى هَذَا الْوَبَاءِ، فَنَادَى عُمَرُ فِي النَّاسِ، إِنِّي مُصَبِّحٌ عَلَى ظَهْرٍ، فَأَصْبِحُوا عَلَيْهِ‏.‏ قَالَ أَبُو عُبَيْدَةَ بْنُ الْجَرَّاحِ أَفِرَارًا مِنْ قَدَرِ اللَّهِ فَقَالَ عُمَرُ لَوْ غَيْرُكَ قَالَهَا يَا أَبَا عُبَيْدَةَ، نَعَمْ نَفِرُّ مِنْ قَدَرِ اللَّهِ إِلَى قَدَرِ اللَّهِ، أَرَأَيْتَ لَوْ كَانَ لَكَ إِبِلٌ هَبَطَتْ وَادِيًا لَهُ عُدْوَتَانِ، إِحْدَاهُمَا خَصِبَةٌ، وَالأُخْرَى جَدْبَةٌ، أَلَيْسَ إِنْ رَعَيْتَ الْخَصْبَةَ رَعَيْتَهَا بِقَدَرِ اللَّهِ، وَإِنْ رَعَيْتَ الْجَدْبَةَ رَعَيْتَهَا بِقَدَرِ اللَّهِ قَالَ فَجَاءَ عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ عَوْفٍ، وَكَانَ مُتَغَيِّبًا فِي بَعْضِ حَاجَتِهِ فَقَالَ إِنَّ عِنْدِي فِي هَذَا عِلْمًا سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم يَقُولُ ‏"‏ إِذَا سَمِعْتُمْ بِهِ بِأَرْضٍ فَلاَ تَقْدَمُوا عَلَيْهِ، وَإِذَا وَقَعَ بِأَرْضٍ وَأَنْتُمْ بِهَا فَلاَ تَخْرُجُوا فِرَارًا مِنْهُ ‏"‏‏.‏ قَالَ فَحَمِدَ اللَّهَ عُمَرُ ثُمَّ انْصَرَفَ‏.‏

Narrated `Abdullah bin `Abbas: `Umar bin Al-Khattab departed for Sham and when he reached Sargh, the commanders of the (Muslim) army, Abu 'Ubaida bin Al-Jarrah and his companions met him and told him that an epidemic had broken out in Sham. `Umar said, "Call for me the early emigrants." So `Umar called them, consulted them and informed them that an epidemic had broken out in Sham. Those people differed in their opinions. Some of them said, "We have come out for a purpose and we do not think that it is proper to give it up," while others said (to `Umar), "You have along with you. other people and the companions of Allah's Messenger (PBUH) so do not advise that we take them to this epidemic." `Umar said to them, "Leave me now." Then he said, "Call the Ansar for me." I called them and he consulted them and they followed the way of the emigrants and differed as they did. He then said to them, Leave me now," and added, "Call for me the old people of Quraish who emigrated in the year of the Conquest of Mecca." I called them and they gave a unanimous opinion saying, "We advise that you should return with the people and do not take them to that (place) of epidemic." So `Umar made an announcement, "I will ride back to Medina in the morning, so you should do the same." Abu 'Ubaida bin Al-Jarrah said (to `Umar), "Are you running away from what Allah had ordained?" `Umar said, "Would that someone else had said such a thing, O Abu 'Ubaida! Yes, we are running from what Allah had ordained to what Allah has ordained. Don't you agree that if you had camels that went down a valley having two places, one green and the other dry, you would graze them on the green one only if Allah had ordained that, and you would graze them on the dry one only if Allah had ordained that?" At that time `Abdur-Rahman bin `Auf, who had been absent because of some job, came and said, "I have some knowledge about this. I have heard Allah's Messenger (PBUH) saying, 'If you hear about it (an outbreak of plague) in a land, do not go to it; but if plague breaks out in a country where you are staying, do not run away from it.' " `Umar thanked Allah and returned to Medina. ھم سے عبداللھ بن یوسف نے بیان کیا ، کھا ھم کو امام مالک نے خبر دی ، انھیں ابن شھاب نے ، انھیں عبدالحمید بن عبدالرحمٰن بن زید بن خطاب نے ، انھیں عبداللھ بن عبداللھ بن حارث بن نوفل نے اور انھیں حضرت ابن عباس رضی اللھ عنھما نے کھ حضرت عمر بن خطاب رضی اللھ عنھ شام تشریف لے جا رھے تھے جب آپ مقام سرغ پر پھنچے تو آپ کی ملاقات فوجوں کے امراء حضرت ابوعبیدھ بن جراح رضی اللھ عنھ اور آپ کے ساتھیوں سے ھوئی ۔ ان لوگوں نے امیرالمؤمنین کو بتایا کھ طاعون کی وبا شام میں پھوٹ پڑی ھے ۔ حضرت ابن عباس رضی اللھ عنھما نے بیان کیا کھ اس پر حضرت عمر رضی اللھ عنھ نے کھا کھ میرے پاس مھاجرین اولین کو بلا لاؤ ۔ آپ انھیں بلا لائے تو حضرت عمر رضی اللھ عنھ نے ان سے مشورھ کیا اور انھیں بتایا کھ شام میں طاعون کی وبا پھوٹ پڑی ھے ، مھاجرین اولین کی رائیں مختلف ھو گئیں ۔ بعض لوگوں نے کھا کھ صحابھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم کے ساتھیوں کی باقی ماندھ جماعت آپ کے ساتھ ھے اور یھ مناسب نھیں ھے کھ آپ انھیں اس وبا میں ڈال دیں ۔ حضرت عمر رضی اللھ عنھ نے کھا کھ اچھا اب آپ لوگ تشریف لے جائیں پھر فرمایا کھ انصار کو بلاؤ ۔ میں انصار کو بلا کر لایا آپ نے ان سے بھی مشورھ کیا اور انھوں نے بھی مھاجرین کی طرح اختلاف کیا کوئی کھنے لگا چلو ، کوئی کھنے لگا لوٹ جاؤ ۔ امیرالمؤمنین نے فرمایا کھ اب آپ لوگ بھی تشریف لے جائیں پھر فرمایا کھ یھاں پر جو قریش کے بڑے بوڑھے ھیں جو فتح مکھ کے وقت اسلام قبول کر کے مدینھ آئے تھے انھیں بلا لاؤ ، میں انھیں بلا کر لایا ۔ ان لوگوں میں کوئی اختلاف رائے پیدا نھیں ھوا سب نے کھا کھ ھمارا خیال ھے کھ آپ لوگوں کو ساتھ لے کر واپس لوٹ چلیں اور وبائی ملک میں لوگوں کو نھ لے کر جائیں ۔ یھ سنتے ھی حضرت عمر رضی اللھ عنھ نے لوگوں میں اعلان کرا دیا کھ میں صبح کو اونٹ پر سوار ھو کر واپس مدینھ منورھ لوٹ جاؤں گا تم لوگ بھی واپس چلو ۔ صبح کو ایسا ھی ھوا حضرت ابوعبیدھ ابن جراح رضی اللھ عنھ نے کھا کیا اللھ کی تقدیر سے فرار اختیار کیا جائے گا ۔ حضرت عمر رضی اللھ عنھ نے کھا کاش ! یھ بات کسی اورنے کھی ھوتی ھاں ھم اللھ کی تقدیر سے فرار اختیار کر رھے ھیں لیکن اللھ ھی کی تقدیر کی طرف ۔ کیا تمھارے پاس اونٹ ھوں اور تم انھیں لے کر کسی ایسی وادی میں جاؤ جس کے دو کنارے ھوں ایک سرسبز شاداب اور دوسرا خشک ۔ کیا یھ واقعھ نھیں کھ اگر تم سرسبز کنارے پر چراؤ گے تو وھ بھی اللھ کی تقدیر سے ھو گا ۔ اور خشک کنارے پر چراؤ گے تو وھ بھی اللھ کی تقدیر سے ھی ھو گا ۔ بیان کیا کھ پھر حضرت عبدالرحمٰن بن عوف رضی اللھ عنھ آ گئے وھ اپنی کسی ضرورت کی وجھ سے اس وقت موجود نھیں تھے انھوں نے بتایا کھ میرے پاس مسئلھ سے متعلق ایک ” علم “ ھے ۔ میں نے رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم سے سنا ھے آپ نے فرمایا کھ جب تم کسی سرزمین میں ( وبا کے متعلق ) سنو تو وھاں نھ جاؤ اور جب ایسی جگھ وبا آ جائے جھاں تم خود موجود ھو تو وھاں سے مت نکلو ۔ راوی نے بیان کیا کھ اس پر عمر رضی اللھ عنھ نے اللھ تعالیٰ کی حمد کی اور پھر واپس ھو گئے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 76 Hadith no 5729
Web reference: Sahih Bukhari Volume 7 Book 71 Hadith no 625


حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ يُوسُفَ، أَخْبَرَنَا مَالِكٌ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَامِرٍ، أَنَّ عُمَرَ، خَرَجَ إِلَى الشَّأْمِ، فَلَمَّا كَانَ بِسَرْغَ بَلَغَهُ أَنَّ الْوَبَاءَ قَدْ وَقَعَ بِالشَّأْمِ، فَأَخْبَرَهُ عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ عَوْفٍ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ إِذَا سَمِعْتُمْ بِهِ بِأَرْضٍ فَلاَ تَقْدَمُوا عَلَيْهِ وَإِذَا وَقَعَ بِأَرْضٍ وَأَنْتُمْ بِهَا فَلاَ تَخْرُجُوا فِرَارًا مِنْهُ ‏"‏‏.‏

Narrated `Abdullah bin 'Amir: `Umar went to Sham and when he reached Sargh, he got the news that an epidemic (of plague) had broken out in Sham. `Abdur-Rahman bin `Auf told him that Allah's Messenger (PBUH) said, "If you hear that it (plague) has broken out in a land, do not go to it; but if it breaks out in a land where you are present, do not go out escaping from it." ھم سے عبداللھ بن یوسف نے بیان کیا ، کھا ھم کو امام مالک نے خبر دی ، انھیں ابن شھاب نے ، انھیں عبداللھ بن عامر نے کھ حضرت عمر رضی اللھ عنھ شام کے لیے روانھ ھوئے جب مقام سرغ میں پھنچے تو آپ کو خبر ملی کھ شام میں طاعون کی وبا پھوٹ پڑی ھے ۔ پھر حضرت عبدالرحمٰن بن عوف رضی اللھ عنھ نے ان کو خبر دی کھ رسول کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا جب تم وبا کے متعلق سنو کھ وھ کسی جگھ ھے تو وھاں نھ جاؤ اور جب کسی ایسی جگھ وبا پھوٹ پڑے جھاں تم موجود ھو تو وھاں سے بھی مت بھاگو ۔ ( وبا میں طاعون ھیضھ وغیرھ سب داخل ھیں ۔ )

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 76 Hadith no 5730
Web reference: Sahih Bukhari Volume 7 Book 71 Hadith no 626


حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ يُوسُفَ، أَخْبَرَنَا مَالِكٌ، عَنْ نُعَيْمٍ الْمُجْمِرِ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ لاَ يَدْخُلُ الْمَدِينَةَ الْمَسِيحُ وَلاَ الطَّاعُونُ ‏"‏‏.‏

Narrated Abu Huraira: Allah's Messenger (PBUH) said, "Neither Messiah (Ad-Dajjal) nor plague will enter Medina." ھم سے عبداللھ بن یوسف نے بیان کیا ، انھوں نے کھا ھم کو امام مالک نے خبر دی ، انھیں نعیم مجمر نے اور انھوں نے کھا ھم سے حضرت ابوھریرھ رضی اللھ عنھ نے بیان کیا کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا مدینھ منورھ میں دجال داخل نھیں ھو سکے گا اور نھ طاعون آ سکے گا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 76 Hadith no 5731
Web reference: Sahih Bukhari Volume 7 Book 71 Hadith no 627


حَدَّثَنَا مُوسَى بْنُ إِسْمَاعِيلَ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الْوَاحِدِ، حَدَّثَنَا عَاصِمٌ، حَدَّثَتْنِي حَفْصَةُ بِنْتُ سِيرِينَ، قَالَتْ قَالَ لِي أَنَسُ بْنُ مَالِكٍ ـ رضى الله عنه ـ يَحْيَى بِمَا مَاتَ قُلْتُ مِنَ الطَّاعُونِ‏.‏ قَالَ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ الطَّاعُونُ شَهَادَةٌ لِكُلِّ مُسْلِمٍ ‏"‏‏.‏

Narrated Anas bin Malik: Allah's Messenger (PBUH) said, "(Death from) plague is martyrdom for every Muslim." ھم سے موسیٰ بن اسماعیل نے بیان کیا ، کھا ھم سے عبدالواحد نے بیان کیا ، کھا ھم سے عاصم نے بیان کیا ، کھا مجھ سے حفصھ بنت سیرین نے بیان کیا ، کھا کھ مجھ سے حضرت انس بن مالک رضی اللھ عنھ نے پوچھا کھ یحییٰ بن سیرین کاکس بیماری میں انتقال ھوا تھا ۔ میں نے کھا کھ طاعون میں ۔ بیان کیا کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ طاعون ھر مسلمان کے لیے شھادت ھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 76 Hadith no 5732
Web reference: Sahih Bukhari Volume 7 Book 71 Hadith no 628


حَدَّثَنَا أَبُو عَاصِمٍ، عَنْ مَالِكٍ، عَنْ سُمَىٍّ، عَنْ أَبِي صَالِحٍ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ الْمَبْطُونُ شَهِيدٌ، وَالْمَطْعُونُ شَهِيدٌ ‏"‏‏.‏

Narrated Abu Huraira: The Prophet (PBUH) said, "He (a Muslim) who dies of an abdominal disease is a martyr, and he who dies of plague is a martyr." ھم سے ابو عاصم نے بیان کیا ، ان سے امام مالک نے ، ان سے سمی نے ، ان سے ابوصالح نے اور ان سے حضرت ابوھریرھ رضی اللھ عنھ نے کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ پیٹ کی بیماری میں یعنی ھیضھ سے مرنے والا شھید ھے اور طاعون کی بیماری میں مرنے والا شھید ھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 76 Hadith no 5733
Web reference: Sahih Bukhari Volume 7 Book 71 Hadith no 629



@2019 Copyrights: if you have any objection regarding any shared content on pdf9.com please click here.