Search hadith by
Hadith Book
Search Query
Search Language
English Arabic Urdu
Search Type Basic    Case Sensitive
 

Sahih Bukhari

Oaths and Vows

كتاب الأيمان والنذور

حَدَّثَنَا عَبْدُ الْعَزِيزِ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ، حَدَّثَنَا سُلَيْمَانُ بْنُ بِلاَلٍ، عَنْ حُمَيْدٍ، عَنْ أَنَسٍ، قَالَ آلَى رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم مِنْ نِسَائِهِ، وَكَانَتِ انْفَكَّتْ رِجْلُهُ، فَأَقَامَ فِي مَشْرُبَةٍ تِسْعًا وَعِشْرِينَ لَيْلَةً، ثُمَّ نَزَلَ فَقَالُوا يَا رَسُولَ اللَّهِ آلَيْتَ شَهْرًا‏.‏ فَقَالَ ‏{‏إِنَّ الشَّهْرَ يَكُونُ تِسْعًا وَعِشْرِينَ‏}‏


Chapter: Whoever took an oath that he would not enter upon his wife for one month

Narrated Anas: Allah's Messenger (PBUH) took an oath for abstention from his wives (for one month), and during those days he had a sprain in his foot. He stayed in a Mashrubah (an upper room) for twenty-nine nights and then came down. Then the people said, "O Allah's Messenger (PBUH)! You took an oath for abstention (from your wives) for one month." On that he said, "A (lunar) month can be of twenty-nine days." ھم سے عبدالعزیز بن عبداللھ نے بیان کیا ، کھا ھم سے سلیمان بن بلال نے بیان کیا ، ان سے حمید نے اور ان سے انس رضی اللھ عنھ نے بیان کیا کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے اپنی بیویوں کے ساتھ ایلاء کیا ( یعنی قسم کھائی کھ آپ ان کے یھاں ایک مھینھ تک نھیں جائیں گے ) اور آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کے پاؤں میں موچ آ گئی تھی ۔ چنانچھ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم اپنے بالا خانھ میں انتیس دن تک قیام پذیر رھے ۔ پھر وھاں سے اترے ۔ لوگوں نے کھا یا رسول اللھ ! آپ نے ایلاء ایک مھینے کے لئے کیا تھا ؟ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ یھ مھینھ انتیس دن کا ھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 83 Hadith no 6684
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 78 Hadith no 675


حَدَّثَنِي عَلِيٌّ، سَمِعَ عَبْدَ الْعَزِيزِ بْنَ أَبِي حَازِمٍ، أَخْبَرَنِي أَبِي، عَنْ سَهْلِ بْنِ سَعْدٍ، أَنَّ أَبَا أُسَيْدٍ، صَاحِبَ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم أَعْرَسَ فَدَعَا النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم لِعُرْسِهِ، فَكَانَتِ الْعَرُوسُ خَادِمَهُمْ‏.‏ فَقَالَ سَهْلٌ لِلْقَوْمِ هَلْ تَدْرُونَ مَا سَقَتْهُ قَالَ أَنْقَعَتْ لَهُ تَمْرًا فِي تَوْرٍ مِنَ اللَّيْلِ، حَتَّى أَصْبَحَ عَلَيْهِ فَسَقَتْهُ إِيَّاهُ‏.‏


Chapter: If somebody takes an oath not to drink Nabidh

Narrated Abu Hazim: Sahl bin Sa`d said, "Abu Usaid, the companion of the Prophet, got married, so he invited the Prophet (PBUH) to his wedding party, and the bride herself served them. Sahl said to the People, 'Do you know what drink she served him with? She infused some dates in a pot at night and the next morning she served him with the infusion." مجھ سے علی بن عبداللھ مدینی نے بیان کیا ، انھوں نے عبدالعزیز بن ابی حازم سے سنا ، کھا مجھ کو میرے والد نے خبر دی ، انھیں حضرت سھل بن سعد رضی اللھ عنھ نے کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم کے صحابی ابواسید رضی اللھ عنھ نے نکاح کیا اور آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کو اپنی شادی کے موقع پر بلایا ۔ دلھن ھی ان کی میزبانی کا کام کر رھی تھیں ۔ پھر حضرت سھل رضی اللھ عنھ نے لوگوں سے پوچھا ، تمھیں معلوم ھے ، میں نے آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کو کیا پلایا تھا ۔ کھا کھ رات میں آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کے لئے میں نے کھجور ایک بڑے پیالھ میں بھگو دی تھی اور صبح کے وقت اس کا پانی آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کو پلایا تھا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 83 Hadith no 6685
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 78 Hadith no 676


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ مُقَاتِلٍ، أَخْبَرَنَا عَبْدُ اللَّهِ، أَخْبَرَنَا إِسْمَاعِيلُ بْنُ أَبِي خَالِدٍ، عَنِ الشَّعْبِيِّ، عَنْ عِكْرِمَةَ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ ـ رضى الله عنهما ـ عَنْ سَوْدَةَ، زَوْجِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم قَالَتْ مَاتَتْ لَنَا شَاةٌ فَدَبَغْنَا مَسْكَهَا ثُمَّ مَا زِلْنَا نَنْبِذُ فِيهِ حَتَّى صَارَتْ شَنًّا‏.‏

Narrated Sauda: (the wife of the Prophet) One of our sheep died and we tanned its skin and kept on infusing dates in it till it was a worn out water skin. ھم سے محمد بن مقاتل نے بیان کیا ، کھا ھم کو عبداللھ بن مبارک نے خبر دی ، کھا ھم کو اسماعیل بن ابی خالد نے خبر دی ، انھیں شعبی نے ، انھیں عکرمھ نے اور انھیں حضرت ابن عباس رضی اللھ عنھما نے کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم کی بیوی صاحبھ حضرت سودھ رضی اللھ عنھا نے بیان کیا کھ ان کی ایک بکری مرگئی تو اس کے چمڑے کو ھم نے دباغت دے دیا ۔ پھر ھم اس کی مشک میں نبیذ بناتے رھے یھاں تک کھ وھ پرانی ھو گئی ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 83 Hadith no 6686
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 78 Hadith no 677


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ يُوسُفَ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ عَابِسٍ، عَنْ أَبِيهِ، عَنْ عَائِشَةَ ـ رضى الله عنها ـ قَالَتْ مَا شَبِعَ آلُ مُحَمَّدٍ صلى الله عليه وسلم مِنْ خُبْزِ بُرٍّ مَأْدُومٍ ثَلاَثَةَ أَيَّامٍ حَتَّى لَحِقَ بِاللَّهِ‏.‏ وَقَالَ ابْنُ كَثِيرٍ أَخْبَرَنَا سُفْيَانُ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ، عَنْ أَبِيهِ، أَنَّهُ قَالَ لِعَائِشَةَ بِهَذَا‏.‏


Chapter: If someone takes an oath that he will not eat Udm

Narrated `Aisha: The family of (the Prophet) Muhammad never ate wheat-bread with meat for three consecutive days to their fill, till he met Allah. ھم سے محمد بن یوسف نے بیان کیا ، کھا ھم سے سفیان نے بیان کیا ، ان سے عبدالرحمٰن بن عابس نے ، ان سے ان کے والد نے اور ان سے حضرت عائشھ رضی اللھ عنھا نے بیان کیا کھ آل محمد صلی اللھ علیھ وسلم کبھی پے درپے تین دن تک سالن کے ساتھ گیھوں کی روٹی نھیں کھا سکے یھاں تک کھ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم سے جا ملے اور ابن کثیر نے بیان کیا کھ ھم کو سفیان نے خبر دی کھ ھم سے عبدالرحمٰن نے بیان کیا ، ان سے ان کے والد نے اور ان سے حضرت عائشھ رضی اللھ عنھا نے یھی حدیث بیان کی ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 83 Hadith no 6687
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 78 Hadith no 678


حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ، عَنْ مَالِكٍ، عَنْ إِسْحَاقَ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ أَبِي طَلْحَةَ، أَنَّهُ سَمِعَ أَنَسَ بْنَ مَالِكٍ، قَالَ قَالَ أَبُو طَلْحَةَ لأُمِّ سُلَيْمٍ لَقَدْ سَمِعْتُ صَوْتَ، رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ضَعِيفًا أَعْرِفُ فِيهِ الْجُوعَ، فَهَلْ عِنْدَكِ مِنْ شَىْءٍ فَقَالَتْ نَعَمْ‏.‏ فَأَخْرَجَتْ أَقْرَاصًا مِنْ شَعِيرٍ، ثُمَّ أَخَذَتْ خِمَارًا لَهَا، فَلَفَّتِ الْخُبْزَ بِبَعْضِهِ، ثُمَّ أَرْسَلَتْنِي إِلَى رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم فَذَهَبْتُ فَوَجَدْتُ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم فِي الْمَسْجِدِ وَمَعَهُ النَّاسُ، فَقُمْتُ عَلَيْهِمْ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ أَرْسَلَكَ أَبُو طَلْحَةَ ‏"‏‏.‏ فَقُلْتُ نَعَمْ‏.‏ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم لِمَنْ مَعَهُ ‏"‏ قُومُوا ‏"‏‏.‏ فَانْطَلَقُوا، وَانْطَلَقْتُ بَيْنَ أَيْدِيهِمْ حَتَّى جِئْتُ أَبَا طَلْحَةَ فَأَخْبَرْتُهُ‏.‏ فَقَالَ أَبُو طَلْحَةَ يَا أُمَّ سُلَيْمٍ قَدْ جَاءَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم وَلَيْسَ عِنْدَنَا مِنَ الطَّعَامِ مَا نُطْعِمُهُمْ‏.‏ فَقَالَتِ اللَّهُ وَرَسُولُهُ أَعْلَمُ‏.‏ فَانْطَلَقَ أَبُو طَلْحَةَ حَتَّى لَقِيَ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم فَأَقْبَلَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم وَأَبُو طَلْحَةَ حَتَّى دَخَلاَ، فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ هَلُمِّي يَا أُمَّ سُلَيْمٍ مَا عِنْدَكِ ‏"‏‏.‏ فَأَتَتْ بِذَلِكَ الْخُبْزِ ـ قَالَ ـ فَأَمَرَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم بِذَلِكَ الْخُبْزِ فَفُتَّ، وَعَصَرَتْ أُمُّ سُلَيْمٍ عُكَّةً لَهَا فَأَدَمَتْهُ، ثُمَّ قَالَ فِيهِ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم مَا شَاءَ اللَّهُ أَنْ يَقُولَ، ثُمَّ قَالَ ‏"‏ ائْذَنْ لِعَشَرَةٍ ‏"‏‏.‏ فَأَذِنَ لَهُمْ فَأَكَلُوا حَتَّى شَبِعُوا، ثُمَّ خَرَجُوا، ثُمَّ قَالَ ‏"‏ ائْذَنْ لِعَشَرَةٍ ‏"‏‏.‏ فَأَذِنَ لَهُمْ، فَأَكَلَ الْقَوْمُ كُلُّهُمْ وَشَبِعُوا، وَالْقَوْمُ سَبْعُونَ أَوْ ثَمَانُونَ رَجُلاً‏.‏

Narrated Anas bin Malik: Abu Talha said to Um Sulaim, "I heard the voice of Allah's Messenger (PBUH) rather weak, and I knew that it was because of hunger. Have you anything (to present to the Prophet)?" She said, "Yes." Then she took out a few loaves of barley bread and took a veil of hers and wrapped the bread with a part of it and sent me to Allah's Messenger (PBUH). I went and found Allah's Messenger (PBUH) sitting in the mosque with some people. I stood up before him. Allah's Messenger (PBUH) said to me, "Has Abu Talha sent you?" I said, ' Yes. Then Allah's Messenger (PBUH) said to those who were with him. "Get up and proceed." I went ahead of them (as their forerunner) and came to Abu Talha and informed him about it. Abu Talha said, "O Um Sulaim! Allah's Messenger (PBUH) has come and we have no food to feed them." Um Sulaim said, "Allah and His Apostle know best." So Abu Talha went out (to receive them) till he met Allah's Messenger (PBUH). Allah's Messenger (PBUH) came in company with Abu Talha and they entered the house. Allah's Messenger (PBUH) said, "O Um Sulaim! Bring whatever you have." So she brought that (barley) bread and Allah's Messenger (PBUH) ordered that bread to be broken into small pieces, and then Um Sulaim poured over it some butter from a leather butter container, and then Allah's Messenger (PBUH) said what Allah wanted him to say, (i.e. blessing the food). Allah's Messenger (PBUH) then said, "Admit ten men." Abu Talha admitted them and they ate to their fill and went out. He again said, "Admit ten men." He admitted them, and in this way all the people ate to their fill, and they were seventy or eighty men." ھم سے قتیبھ بن سعید نے بیان کیا ، ان سے امام مالک نے بیان کیا ، ان سے اسحاق بن عبداللھ بن ابی طلحھ نے بیان کیا ، انھوں نے حضرت انس بن مالک رضی اللھ عنھ سے سنا ، انھوں نے بیان کیا کھ حضرت ابوطلحھ رضی اللھ عنھ نے ( اپنی بیوی ) ام سلیم رضی اللھ عنھا سے کھا کھ میں سن کر آ رھا ھوں آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کی آواز ( فاقوں کی وجھ سے ) کمزور پڑ گئی ھے اور میں نے آواز سے آپ کے فاقھ کا اندازھ لگایا ھے ، کیا تمھارے پاس کھانے کی کوئی چیز ھے ؟ انھوں نے کھا ھاں ۔ چنانچھ انھوں نے جو کی چند روٹیاں نکالیں اور ایک اوڑھنی لے کر روٹی کو اس کے ایک کونے سے لپیٹ دیا اور اسے آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کی خدمت میں بھجوایا ۔ میں لے کر گیا تو میں نے دیکھا کھ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم مسجد میں تشریف رکھتے ھیں اور آپ کے ساتھ کچھ لوگ ھیں ، میں ان کے پاس جاکے کھڑا ھو گیا تو آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے پوچھا ، کیا تمھیں ابوطلحھ نے بھیجا ھے ، میں نے عرض کیا جی ھاں ۔ پھر آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے ان لوگوں سے کھا جو ساتھ تھے کھ اٹھو اور چلو ، میں ان کے آگے آگے چل رھا تھا ۔ آخر میں حضرت ابوطلحھ رضی اللھ عنھ کے یھاں پھنچا اور ان کو اطلاع دی ۔ ابوطلحھ نے کھا ام سلیم ! جناب رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم تشریف لائے ھیں اور ھمارے پاس تو کوئی ایسا کھانا نھیں ھے جو سب کو پیش کیا جا سکے ؟ انھوں نے کھا کھ اللھ اور اس کے رسول کو زیادھ علم ھے ۔ پھر حضرت ابوطلحھ رضی اللھ عنھ باھر نکلے اور آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم سے ملے ، اس کے بعد آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم اور ابوطلحھ گھر کی طرف بڑھے اور اندر گئے ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا ، ام سلیم ! جو کچھ تمھارے پاس ھے میرے پاس لاؤ ۔ وھ یھی روٹیاں لائیں ۔ راوی نے بیان کیا کھ پھر آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کے حکم سے ان روٹیوں کو چورا کر دیا گیا اور ام سلیم رضی اللھ عنھا نے اپنی ایک ( گھی کی ) کپی کو نچوڑا گیا یھی سالن تھا ۔ اس کے بعد آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے جیسا کھ اللھ نے چاھا دعا پڑھی اور فرمایا کھ دس دس آدمیوں کو اندر بلاؤ انھیں بلایا گیا اور اس طرح سب لوگوں نے کھایا اور خوب سیر ھو گئے ۔ حاضرین کی تعداد ستر یا اسی آدمیوں کی تھی ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 83 Hadith no 6688
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 78 Hadith no 679


حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الْوَهَّابِ، قَالَ سَمِعْتُ يَحْيَى بْنَ سَعِيدٍ، يَقُولُ أَخْبَرَنِي مُحَمَّدُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ، أَنَّهُ سَمِعَ عَلْقَمَةَ بْنَ وَقَّاصٍ اللَّيْثِيَّ، يَقُولُ سَمِعْتُ عُمَرَ بْنَ الْخَطَّابِ ـ رضى الله عنه ـ يَقُولُ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم يَقُولُ ‏"‏ إِنَّمَا الأَعْمَالُ بِالنِّيَّةِ، وَإِنَّمَا لاِمْرِئٍ مَا نَوَى، فَمَنْ كَانَتْ هِجْرَتُهُ إِلَى اللَّهِ وَرَسُولِهِ فَهِجْرَتُهُ إِلَى اللَّهِ وَرَسُولِهِ، وَمَنْ كَانَتْ هِجْرَتُهُ إِلَى دُنْيَا يُصِيبُهَا أَوِ امْرَأَةٍ يَتَزَوَّجُهَا، فَهِجْرَتُهُ إِلَى مَا هَاجَرَ إِلَيْهِ ‏"‏‏.‏


Chapter: The intention in taking oaths

Narrated `Umar bin Al-Khattab: I heard Allah's Messenger (PBUH) saying, "The (reward of) deeds, depend upon the intentions and every person will get the reward according to what he has intended. So whoever emigrated for the sake of Allah and His Apostle, then his emigration will be considered to be for Allah and His Apostle, and whoever emigrated for the sake of worldly gain or for a woman to marry, then his emigration will be considered to be for what he emigrated for." ھم سے قتیبھ بن سعید نے بیان کیا ، انھوں نے کھا ھم سے عبدالوھاب نے بیان کیا ، انھوں نے کھا میں نے یحییٰ بن سعید سے سنا ، انھوں نے کھا کھ مجھ سے محمد بن ابراھیم نے بیان کیا ، انھوں نے علقمھ بن وقاص لیثی سے سنا ، انھوں نے بیان کیا کھ میں نے حضرت عمر بن خطاب رضی اللھ عنھ سے سنا ، انھوں نے بیان کیا کھ میں نے نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم سے سنا کھ بلاشبھ عمل کا دارومدار نیت پر ھے اور انسان کو وھی ملے گا جس کی وجھ نیت کرے گا پس جس کی ھجرت اللھ اور اس کے رسول کے لئے ھو گی تو واقعی وھ انھیں کے لئے ھو گی اور جس کی ھجرت دنیا حاصل کرنے کے لئے یا کسی عورت سے شادی کرنے کے لیے ھو گی تو اس کی ھجرت اسی کے لیے ھو گی جس کے لیے اس نے ھجرت کی ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 83 Hadith no 6689
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 78 Hadith no 680



@2019 Copyrights: if you have any objection regarding any shared content on pdf9.com please click here.