Search hadith by
Hadith Book
Search Query
Search Language
English Arabic Urdu
Search Type Basic    Case Sensitive
 

Sahih Bukhari

Patients

كتاب المرضى

حَدَّثَنَا قَبِيصَةُ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، عَنِ ابْنِ أَبِي نَجِيحٍ، وَأَيُّوبَ، عَنْ مُجَاهِدٍ، عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ أَبِي لَيْلَى، عَنْ كَعْبِ بْنِ عُجْرَةَ ـ رضى الله عنه‏.‏ مَرَّ بِيَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم وَأَنَا أُوقِدُ تَحْتَ الْقِدْرِ فَقَالَ ‏"‏ أَيُؤْذِيكَ هَوَامُّ رَأْسِكَ ‏"‏‏.‏ قُلْتُ نَعَمْ‏.‏ فَدَعَا الْحَلاَّقَ فَحَلَقَهُ ثُمَّ أَمَرَنِي بِالْفِدَاءِ‏.‏

Narrated Ka`b bin 'Ujara: The Prophet (PBUH) passed by me while I was kindling a fire under a (cooking) pot. He said, "Do the lice of your head trouble you?" I said, "Yes." So he called a barber to shave my head and ordered me to make expiation for that." ھم سے قبیصھ نے بیان کیا ، کھا ھم سے سفیان نے بیان کیا ، ان سے ابن ابی نجیح اور ایوب نے ، ان سے مجاھد نے ، ان سے عبدالرحمٰن بن ابی لیلیٰ نے اور ان سے کعب بن عجرھ رضی اللھ عنھ نے کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم میرے قریب سے گزر ے اور میں ھانڈی کے نیچے آگ سلگا رھا تھا ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کیا تمھارے سر کی جوویں تمھیں تکلیف پھنچاتی ھیں ۔ میں نے عرض کیا جی ھاں پھر آپ نے حجام بلوایا اور اس نے میرا سر مونڈ دیا اس کے بعد آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے مجھے فدیھ ادا کر دینے کا حکم فرمایا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 75 Hadith no 5665
Web reference: Sahih Bukhari Volume 7 Book 70 Hadith no 569


حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى أَبُو زَكَرِيَّاءَ، أَخْبَرَنَا سُلَيْمَانُ بْنُ بِلاَلٍ، عَنْ يَحْيَى بْنِ سَعِيدٍ، قَالَ سَمِعْتُ الْقَاسِمَ بْنَ مُحَمَّدٍ، قَالَ قَالَتْ عَائِشَةُ وَارَأْسَاهْ‏.‏ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ ذَاكِ لَوْ كَانَ وَأَنَا حَىٌّ، فَأَسْتَغْفِرُ لَكِ وَأَدْعُو لَكِ ‏"‏‏.‏ فَقَالَتْ عَائِشَةُ وَاثُكْلِيَاهْ، وَاللَّهِ إِنِّي لأَظُنُّكَ تُحِبُّ مَوْتِي، وَلَوْ كَانَ ذَاكَ لَظَلِلْتَ آخِرَ يَوْمِكَ مُعَرِّسًا بِبَعْضِ أَزْوَاجِكَ‏.‏ فَقَالَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ بَلْ أَنَا وَارَأْسَاهْ لَقَدْ هَمَمْتُ أَوْ أَرَدْتُ أَنْ أُرْسِلَ إِلَى أَبِي بَكْرٍ وَابْنِهِ، وَأَعْهَدَ أَنْ يَقُولَ الْقَائِلُونَ أَوْ يَتَمَنَّى الْمُتَمَنُّونَ، ثُمَّ قُلْتُ يَأْبَى اللَّهُ وَيَدْفَعُ الْمُؤْمِنُونَ، أَوْ يَدْفَعُ اللَّهُ وَيَأْبَى الْمُؤْمِنُونَ ‏"‏‏.‏

Narrated Al-Qasim bin Muhammad: `Aisha, (complaining of headache) said, "Oh, my head"! Allah's Messenger (PBUH) said, "I wish that had happened while I was still living, for then I would ask Allah's Forgiveness for you and invoke Allah for you." Aisha said, "Wa thuklayah! By Allah, I think you want me to die; and If this should happen, you would spend the last part of the day sleeping with one of your wives!" The Prophet (PBUH) said, "Nay, I should say, 'Oh my head!' I felt like sending for Abu Bakr and his son, and appoint him as my successor lest some people claimed something or some others wished something, but then I said (to myself), 'Allah would not allow it to be otherwise, and the Muslims would prevent it to be otherwise". ھم سے یحییٰ بن یحییٰ ابو زکریا نے بیان کیا ، کھا ھم کو سلیمان بن بلال نے خبر دی ، ان سے یحییٰ بن سعید نے ، کھ میں نے قاسم بن محمد سے سنا ، انھوں نے بیان کیا کھ ( سر کے شدید درد کی وجھ سے ) عائشھ رضی اللھ عنھا نے کھاھائے رے سر ! اس پر رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا اگر ایسا میری زندگی میں ھو گیا ( یعنی تمھارا انتقال ھو گیا ) تو میں تمھارے لیے استغفار اور دعا کروں گا ۔ عائشھ رضی اللھ عنھا نے کھا افسوس ، اللھ کی قسم ! میرا خیال ھے کھ آپ میرا مرجانا ھی پسند کرتے ھیں اور اگر ایسا ھو گیا تو آپ تو اسی دن رات اپنی کسی بیوی کے یھاں گزاریں گے ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا بلکھ میں خود درد سر میں مبتلاھوں ۔ میرا ارادھ ھوتا تھا کھ ابوبکر رضی اللھ عنھ اور ان کے بیٹے کو بلا بھیجوں اور انھیں ( خلافت کی ) وصیت کر دوں ۔ کھیں ایسا نھ ھو کھ میرے بعد کھنے والے کچھ اور کھیں ( کھ خلافت ھمارا حق ھے ) یا آرزو کرنے والے کسی اور بات کی آرزو کریں ( کھ ھم خلیفھ ھو جائیں ) پھر میں نے اپنے جی میں کھا ( اس کی ضرورت ھی کیا ھے ) خود اللھ تعالیٰ ابوبکر رضی اللھ عنھ کے سو اورکسی کو خلیفھ نھ ھونے دے گا نھ مسلمان اور کسی کی خلافت ھی قبول کریں گے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 75 Hadith no 5666
Web reference: Sahih Bukhari Volume 7 Book 70 Hadith no 570


حَدَّثَنَا مُوسَى، حَدَّثَنَا عَبْدُ الْعَزِيزِ بْنُ مُسْلِمٍ، حَدَّثَنَا سُلَيْمَانُ، عَنْ إِبْرَاهِيمَ التَّيْمِيِّ، عَنِ الْحَارِثِ بْنِ سُوَيْدٍ، عَنِ ابْنِ مَسْعُودٍ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ دَخَلْتُ عَلَى النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم وَهْوَ يُوعَكُ فَمَسِسْتُهُ فَقُلْتُ إِنَّكَ لَتُوعَكُ وَعْكًا شَدِيدًا‏.‏ قَالَ ‏"‏ أَجَلْ كَمَا يُوعَكُ رَجُلاَنِ مِنْكُمْ ‏"‏‏.‏ قَالَ لَكَ أَجْرَانِ قَالَ ‏"‏ نَعَمْ مَا مِنْ مُسْلِمٍ يُصِيبُهُ أَذًى مَرَضٌ فَمَا سِوَاهُ إِلاَّ حَطَّ اللَّهُ سَيِّئَاتِهِ كَمَا تَحُطُّ الشَّجَرَةُ وَرَقَهَا ‏"‏‏.‏

Narrated Ibn Mas`ud: I visited the Prophet (PBUH) while he was having a high fever. I touched him an said, "You have a very high fever" He said, "Yes, as much fever as two me of you may have." I said. "you will have a double reward?" He said, "Yes No Muslim is afflicted with hurt caused by disease or some other inconvenience, but that Allah will remove his sins as a tree sheds its leaves." ھم سے موسیٰ بن اسماعیل نے بیان کیا ، کھا ھم سے عبدالعزیز بن مسلم نے بیان کیا ، کھا ھم سے سلیمان اعمش نے بیان کیا ، ان سے ابراھیم تیمی نے ، ان سے حارث بن سوید نے اور ان سے حضرت عبداللھ بن مسعود رضی اللھ عنھما نے بیان کیا کھ میں نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم کی خدمت میں حاضر ھوا تو آپ کو بخار آیا ھوا تھا میں نے آپ کا جسم چھو کر عرض کیا کھ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کو بڑا تیز بخار ھے ۔ حضور اکرم صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ ھاں تم میں کے دو آدمیوں کے برابر ھے ۔ حضرت ابن مسعود رضی اللھ عنھما نے عرض کیا کھ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کا اجر بھی دو گنا ھے ۔ کھا ھاں پھر آپ نے فرمایا کھ کسی مسلمان کو بھی جب کسی مرض کی تکلیف یا اور کوئی تکلیف پھنچتی ھے تو اللھ اس کے گناھ کو اس طرح جھاڑ دیتا ھے جس طرح درخت اپنے پتوں کو جھاڑ تا ھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 75 Hadith no 5667
Web reference: Sahih Bukhari Volume 7 Book 70 Hadith no 571


حَدَّثَنَا مُوسَى بْنُ إِسْمَاعِيلَ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الْعَزِيزِ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ أَبِي سَلَمَةَ، أَخْبَرَنَا الزُّهْرِيُّ، عَنْ عَامِرِ بْنِ سَعْدٍ، عَنْ أَبِيهِ، قَالَ جَاءَنَا رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم يَعُودُنِي مِنْ وَجَعٍ اشْتَدَّ بِي زَمَنَ حَجَّةِ الْوَدَاعِ فَقُلْتُ بَلَغَ بِي مَا تَرَى وَأَنَا ذُو مَالٍ وَلاَ يَرِثُنِي إِلاَّ ابْنَةٌ لِي أَفَأَتَصَدَّقُ بِثُلُثَىْ مَالِي قَالَ ‏"‏ لاَ ‏"‏‏.‏ قُلْتُ بِالشَّطْرِ قَالَ ‏"‏ لاَ ‏"‏‏.‏ قُلْتُ الثُّلُثُ قَالَ ‏"‏ الثُّلُثُ كَثِيرٌ، أَنْ تَدَعَ وَرَثَتَكَ أَغْنِيَاءَ خَيْرٌ مِنْ أَنْ تَذَرَهُمْ عَالَةً يَتَكَفَّفُونَ النَّاسَ وَلَنْ تُنْفِقَ نَفَقَةً تَبْتَغِي بِهَا وَجْهَ اللَّهِ إِلاَّ أُجِرْتَ عَلَيْهَا حَتَّى مَا تَجْعَلُ فِي فِي امْرَأَتِكَ ‏"‏‏.‏

Narrated Sa`d: Allah's Messenger (PBUH) came to visit me during my ailment which had been aggravated during Hajjat-al- Wada`. I said to him, "You see how sick I am. I have much property but have no heir except my only daughter May I give two thirds of my property in charity?"! He said, "No." I said, "Half of it?" He said, "No." I said "One third?" He said, "One third is too much, for to leave your heirs rich is better than to leave them poor, begging of others. Nothing you spend seeking Allah's pleasure but you shall get a reward for it, even for what you put in the mouth of your wife." ھم سے موسیٰ بن اسماعیل نے بیان کیا ، کھا ھم سے عبدالعزیز بن عبداللھ بن ابی سلمھ نے بیان کیا ، کھا ھم کو زھری نے خبر دی ، انھیں عامر بن سعد بن ابی وقاص نے اور ان سے ان کے والد نے کھ ھمارے یھاں رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم میری عیادت کے لیے تشریف لائے میں حجۃ الوداع کے زمانھ میں ایک سخت بیماری میں مبتلا ھو گیا تھا میں نے عرض کیا کھ میری بیماری جس حد کو پھنچ چکی ھے اسے آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم دیکھ رھے ھیں ، میں صاحب دولت ھوں اور میری وارث میری صرف ایک لڑکی کے سوا اور کوئی نھیں تو کیا میں اپنا دو تھائی مال صدقھ کروں ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ نھیں ۔ میں نے عرض کیا پھر آدھا کر دوں ، آپ نے فرمایا کھ نھیں ۔ میں نے عرض کیا ایک تھائی کر دوں ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ تھائی بھت کافی ھے اگر تم اپنے وارثوں کو غنی چھوڑ کر جاؤ یھ اس سے بھتر ھے کھ انھیں محتاج چھوڑو اور وھ لوگوں کے سامنے ھاتھ پھیلاتے پھر یں اور تم جو بھی خرچ کرو گے اور اس سے اللھ کی خوشنودی حاصل کرنا مقصود ھو گا اس پر بھی تمھیں ثواب ملے گا ۔ یھاں تک کھ اس لقمھ پر بھی تمھیں ثواب ملے گا جو تم اپنی بیوی کے منھ میں ڈالتے ھو ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 75 Hadith no 5668
Web reference: Sahih Bukhari Volume 7 Book 70 Hadith no 572


حَدَّثَنَا إِبْرَاهِيمُ بْنُ مُوسَى، حَدَّثَنَا هِشَامٌ، عَنْ مَعْمَرٍ، وَحَدَّثَنِي عَبْدُ اللَّهِ بْنُ مُحَمَّدٍ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ، أَخْبَرَنَا مَعْمَرٌ، عَنِ الزُّهْرِيِّ، عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ ـ رضى الله عنهما ـ قَالَ لَمَّا حُضِرَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم وَفِي الْبَيْتِ رِجَالٌ فِيهِمْ عُمَرُ بْنُ الْخَطَّابِ قَالَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ هَلُمَّ أَكْتُبْ لَكُمْ كِتَابًا لاَ تَضِلُّوا بَعْدَهُ ‏"‏‏.‏ فَقَالَ عُمَرُ إِنَّ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم قَدْ غَلَبَ عَلَيْهِ الْوَجَعُ وَعِنْدَكُمُ الْقُرْآنُ، حَسْبُنَا كِتَابُ اللَّهِ فَاخْتَلَفَ أَهْلُ الْبَيْتِ فَاخْتَصَمُوا، مِنْهُمْ مَنْ يَقُولُ قَرِّبُوا يَكْتُبْ لَكُمُ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم كِتَابًا لَنْ تَضِلُّوا بَعْدَهُ، وَمِنْهُمْ مَنْ يَقُولُ مَا قَالَ عُمَرُ فَلَمَّا أَكْثَرُوا اللَّغْوَ وَالاِخْتِلاَفَ عِنْدَ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ قُومُوا ‏"‏‏.‏ قَالَ عُبَيْدُ اللَّهِ فَكَانَ ابْنُ عَبَّاسٍ يَقُولُ إِنَّ الرَّزِيَّةَ كُلَّ الرَّزِيَّةِ مَا حَالَ بَيْنَ رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم وَبَيْنَ أَنْ يَكْتُبَ لَهُمْ ذَلِكَ الْكِتَابَ مِنِ اخْتِلاَفِهِمْ وَلَغَطِهِمْ‏.‏


Chapter: The saying of the patient: "Get up from me!"

Narrated Ibn `Abbas: When Allah's Messenger (PBUH) was on his death-bed and in the house there were some people among whom was `Umar bin Al-Khattab, the Prophet (PBUH) said, "Come, let me write for you a statement after which you will not go astray." `Umar said, "The Prophet (PBUH) is seriously ill and you have the Qur'an; so the Book of Allah is enough for us." The people present in the house differed and quarrelled. Some said "Go near so that the Prophet (PBUH) may write for you a statement after which you will not go astray," while the others said as `Umar said. When they caused a hue and cry before the Prophet, Allah's Messenger (PBUH) said, "Go away!" Narrated 'Ubaidullah: Ibn `Abbas used to say, "It was very unfortunate that Allah's Messenger (PBUH) was prevented from writing that statement for them because of their disagreement and noise." ھم سے ابراھیم بن موسیٰ نے بیان کیا ، کھا ھم سے ھشام بن عروھ نے بیان کیا ، ان سے معمر نے ( دوسری سند ) اور مجھ سے عبداللھ بن محمد نے بیان کیا ، کھا ھم سے عبدالرزاق نے بیان کیا ، کھا ھم کو معمر نے خبر دی ، انھیں زھری نے ، انھیں عبیداللھ بن عبداللھ نے اور ان سے حضرت ابن عباس رضی اللھ عنھما نے بیان کیا کھ جب رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم کی وفات کا وقت قریب آیا تو گھر میں کئی صحابھ موجود تھے ۔ حضرت عمر بن خطاب رضی اللھ عنھ بھی وھیں موجود تھے ۔ حضور اکرم صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا لاؤ میں تمھارے لیے ایک تحریر لکھ دوں تاکھ اس کے بعد تم غلط راھ پر نھ چلو ۔ حضرت عمر رضی اللھ عنھ نے اس پر کھا کھ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم اس وقت سخت تکلیف میں ھیں اور تمھارے پاس قرآن مجید تو موجود ھے ھی ھمارے لیے اللھ کی کتاب کافی ھے ۔ اس مسئلھ پر گھر میں موجود صحابھ کا اختلاف ھو گیا اور بحث کرنے لگے ۔ بعض صحابھ کھتے تھے کھ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کو ( لکھنے کی چیزیں ) دے دو تاکھ آنحضور صلی اللھ علیھ وسلم ایسی تحریر لکھ دیں جس کے بعد تم گمراھ نھ ھو سکو اور بعض صحابھ وھ کھتے تھے جو حضرت عمر رضی اللھ عنھ نے کھا تھا ۔ جب آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کے پاس اختلاف اور بحث بڑھ گئی تو آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ یھاں سے چلے جاؤ ۔ حضرت عبیداللھ نے بیان کیا کھ حضرت ابن عباس رضی اللھ عنھما کھا کرتے تھے کھ سب سے زیادھ افسوس یھی ھے کھ ان کے اختلاف اور بحث کی وجھ سے آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے وھ تحریر نھیں لکھی جو آپ مسلمانوں کے لیے لکھنا چاھتے تھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 75 Hadith no 5669
Web reference: Sahih Bukhari Volume 7 Book 70 Hadith no 573


حَدَّثَنَا إِبْرَاهِيمُ بْنُ حَمْزَةَ، حَدَّثَنَا حَاتِمٌ ـ هُوَ ابْنُ إِسْمَاعِيلَ ـ عَنِ الْجُعَيْدِ، قَالَ سَمِعْتُ السَّائِبَ، يَقُولُ ذَهَبَتْ بِي خَالَتِي إِلَى رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم فَقَالَتْ يَا رَسُولَ اللَّهِ إِنَّ ابْنَ أُخْتِي وَجِعٌ فَمَسَحَ رَأْسِي وَدَعَا لِي بِالْبَرَكَةِ، ثُمَّ تَوَضَّأَ فَشَرِبْتُ مِنْ وَضُوئِهِ وَقُمْتُ خَلْفَ ظَهْرِهِ فَنَظَرْتُ إِلَى خَاتَمِ النُّبُوَّةِ بَيْنَ كَتِفَيْهِ مِثْلَ زِرِّ الْحَجَلَةِ‏.‏


Chapter: Whoever took the sick boy (to someone) to invoke Allah for him

Narrated As-Sa'ib: My aunt took me to Allah's Messenger (PBUH) and said, "O Allah's Messenger (PBUH)! My nephew is- ill." The Prophet (PBUH) touched my head with his hand and invoked Allah to bless me. He then performed ablution and I drank of the remaining water of his ablution and then stood behind his back and saw "Khatam An- Nubuwwa" (The Seal of Prophethood) between his shoulders like a button of a tent. ھم سے ابراھیم بن حمزھ نے بیان کیا ، کھا ھم سے حاتم بن اسماعیل نے بیان کیا ، ان سے جعید بن عبدالرحمٰن نے بیان کیا کھ میں نے حضرت سائب بن یزید رضی اللھ عنھ سے سنا ، انھوں نے بیان کیا کھ مجھے میری خالھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم کی خدمت میں بچپن میں لے گئیں اور عرض کیا یا رسول اللھ ! میرے بھانجے کو درد ھے ۔ حضور اکرم صلی اللھ علیھ وسلم نے میرے سر پر ھاتھ پھیرا اور میرے لیے برکت کی دعا کی پھر آپ نے وضو کیا اور میں نے آپ کے وضو کا پانی پیا اور میں نے آپ کی پیٹھ کے پیچھے کھڑے ھو کر نبوت کی مھر آپ کے دونوں شانوں کے درمیان دیکھی ۔ یھ مھر نبوت حجلھ عروس کی گھنڈی جیسی تھی ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 75 Hadith no 5670
Web reference: Sahih Bukhari Volume 7 Book 70 Hadith no 574



Copyrights: if you have any objection regarding any shared content on pdf9.com please click here.