Search hadith by
Hadith Book
Search Query
Search Language
English Arabic Urdu
Search Type Basic    Case Sensitive
 

Sahih Bukhari

Revelation

كتاب بدء الوحى

حَدَّثَنَا الْحُمَيْدِيُّ عَبْدُ اللَّهِ بْنُ الزُّبَيْرِ، قَالَ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، قَالَ حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ سَعِيدٍ الأَنْصَارِيُّ، قَالَ أَخْبَرَنِي مُحَمَّدُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ التَّيْمِيُّ، أَنَّهُ سَمِعَ عَلْقَمَةَ بْنَ وَقَّاصٍ اللَّيْثِيَّ، يَقُولُ سَمِعْتُ عُمَرَ بْنَ الْخَطَّابِ ـ رضى الله عنه ـ عَلَى الْمِنْبَرِ قَالَ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم يَقُولُ ‏"‏ إِنَّمَا الأَعْمَالُ بِالنِّيَّاتِ، وَإِنَّمَا لِكُلِّ امْرِئٍ مَا نَوَى، فَمَنْ كَانَتْ هِجْرَتُهُ إِلَى دُنْيَا يُصِيبُهَا أَوْ إِلَى امْرَأَةٍ يَنْكِحُهَا فَهِجْرَتُهُ إِلَى مَا هَاجَرَ إِلَيْهِ ‏"‏‏.‏


Chapter: How the Divine Revelation started being revealed to Allah's Messenger

Narrated 'Umar bin Al-Khattab: I heard Allah's Messenger (PBUH) saying, "The reward of deeds depends upon the intentions and every person will get the reward according to what he has intended. So whoever emigrated for worldly benefits or for a woman to marry, his emigration was for what he emigrated for." ھم کو حمیدی نے یھ حدیث بیان کی ، انھوں نے کھا کھ ھم کو سفیان نے یھ حدیث بیان کی ، وھ کھتے ھیں ھم کو یحییٰ بن سعید انصاری نے یھ حدیث بیان کی ، انھوں نے کھا کھ مجھے یھ حدیث محمد بن ابراھیم تیمی سے حاصل ھوئی ۔ انھوں نے اس حدیث کو علقمھ بن وقاص لیثی سے سنا ، ان کا بیان ھے کھ میں نے مسجدنبوی میں منبر رسول صلی اللھ علیھ وسلم پر حضرت عمر بن خطاب رضی اللھ عنھ کی زبان سے سنا ، وھ فرما رھے تھے کھ میں نے جناب رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم سے سنا آپ صلی اللھ علیھ وسلم فرما رھے تھے کھ تمام اعمال کا دارومدار نیت پر ھے اور ھر عمل کا نتیجھ ھر انسان کو اس کی نیت کے مطابق ھی ملے گا ۔ پس جس کی ھجرت ( ترک وطن ) دولت دنیا حاصل کرنے کے لیے ھو یا کسی عورت سے شادی کی غرض ھو ۔ پس اس کی ھجرت ان ھی چیزوں کے لیے ھو گی جن کے حاصل کرنے کی نیت سے اس نے ھجرت کی ھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 1 Hadith no 1
Web reference: Sahih Bukhari Volume 1 Book 1 Hadith no 1


حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ يُوسُفَ، قَالَ أَخْبَرَنَا مَالِكٌ، عَنْ هِشَامِ بْنِ عُرْوَةَ، عَنْ أَبِيهِ، عَنْ عَائِشَةَ أُمِّ الْمُؤْمِنِينَ ـ رضى الله عنها ـ أَنَّ الْحَارِثَ بْنَ هِشَامٍ ـ رضى الله عنه ـ سَأَلَ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم فَقَالَ يَا رَسُولَ اللَّهِ كَيْفَ يَأْتِيكَ الْوَحْىُ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ أَحْيَانًا يَأْتِينِي مِثْلَ صَلْصَلَةِ الْجَرَسِ ـ وَهُوَ أَشَدُّهُ عَلَىَّ ـ فَيُفْصَمُ عَنِّي وَقَدْ وَعَيْتُ عَنْهُ مَا قَالَ، وَأَحْيَانًا يَتَمَثَّلُ لِيَ الْمَلَكُ رَجُلاً فَيُكَلِّمُنِي فَأَعِي مَا يَقُولُ ‏"‏‏.‏ قَالَتْ عَائِشَةُ رضى الله عنها وَلَقَدْ رَأَيْتُهُ يَنْزِلُ عَلَيْهِ الْوَحْىُ فِي الْيَوْمِ الشَّدِيدِ الْبَرْدِ، فَيَفْصِمُ عَنْهُ وَإِنَّ جَبِينَهُ لَيَتَفَصَّدُ عَرَقًا‏.‏

Narrated 'Aisha: (the mother of the faithful believers) Al-Harith bin Hisham asked Allah's Messenger (PBUH) "O Allah's Messenger (PBUH)! How is the Divine Inspiration revealed to you?" Allah's Messenger (PBUH) replied, "Sometimes it is (revealed) like the ringing of a bell, this form of Inspiration is the hardest of all and then this state passes off after I have grasped what is inspired. Sometimes the Angel comes in the form of a man and talks to me and I grasp whatever he says." 'Aisha added: Verily I saw the Prophet (PBUH) being inspired divinely on a very cold day and noticed the sweat dropping from his forehead (as the Inspiration was over). ھم کو عبداللھ بن یوسف نے حدیث بیان کی ، ان کو مالک نے ھشام بن عروھ کی روایت سے خبر دی ، انھوں نے اپنے والد سے نقل کی ، انھوں نے ام المؤمنین حضرت عائشھ صدیقھ رضی اللھ عنھا سے نقل کی آپ نے فرمایا کھ ایک شخص حارث بن ھشام نامی نے آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم سے سوال کیا تھا کھ یا رسول اللھ ! آپ پر وحی کیسے نازل ھوتی ھے ؟ آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ وحی نازل ھوتے وقت کبھی مجھ کو گھنٹی کی سی آواز محسوس ھوتی ھے اور وحی کی یھ کیفیت مجھ پر بھت شاق گذرتی ھے ۔ جب یھ کیفیت ختم ھوتی ھے تو میرے دل و دماغ پر اس ( فرشتے ) کے ذریعھ نازل شدھ وحی محفوظ ھو جاتی ھے اور کسی وقت ایسا ھوتا ھے کھ فرشتھ بشکل انسان میرے پاس آتا ھے اور مجھ سے کلام کرتا ھے ۔ پس میں اس کا کھا ھوا یاد رکھ لیتا ھوں ۔ حضرت عائشھ رضی اللھ عنھا کا بیان ھے کھ میں نے سخت کڑاکے کی سردی میں آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کو دیکھا ھے کھ آپ صلی اللھ علیھ وسلم پر وحی نازل ھوئی اور جب اس کا سلسلھ موقوف ھوا تو آپ صلی اللھ علیھ وسلم کی پیشانی پسینے سے شرابور تھی ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 1 Hadith no 2
Web reference: Sahih Bukhari Volume 1 Book 1 Hadith no 2


حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ بُكَيْرٍ، قَالَ حَدَّثَنَا اللَّيْثُ، عَنْ عُقَيْلٍ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ، عَنْ عُرْوَةَ بْنِ الزُّبَيْرِ، عَنْ عَائِشَةَ أُمِّ الْمُؤْمِنِينَ، أَنَّهَا قَالَتْ أَوَّلُ مَا بُدِئَ بِهِ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم مِنَ الْوَحْىِ الرُّؤْيَا الصَّالِحَةُ فِي النَّوْمِ، فَكَانَ لاَ يَرَى رُؤْيَا إِلاَّ جَاءَتْ مِثْلَ فَلَقِ الصُّبْحِ، ثُمَّ حُبِّبَ إِلَيْهِ الْخَلاَءُ، وَكَانَ يَخْلُو بِغَارِ حِرَاءٍ فَيَتَحَنَّثُ فِيهِ ـ وَهُوَ التَّعَبُّدُ ـ اللَّيَالِيَ ذَوَاتِ الْعَدَدِ قَبْلَ أَنْ يَنْزِعَ إِلَى أَهْلِهِ، وَيَتَزَوَّدُ لِذَلِكَ، ثُمَّ يَرْجِعُ إِلَى خَدِيجَةَ، فَيَتَزَوَّدُ لِمِثْلِهَا، حَتَّى جَاءَهُ الْحَقُّ وَهُوَ فِي غَارِ حِرَاءٍ، فَجَاءَهُ الْمَلَكُ فَقَالَ اقْرَأْ‏.‏ قَالَ ‏"‏ مَا أَنَا بِقَارِئٍ ‏"‏‏.‏ قَالَ ‏"‏ فَأَخَذَنِي فَغَطَّنِي حَتَّى بَلَغَ مِنِّي الْجَهْدَ، ثُمَّ أَرْسَلَنِي فَقَالَ اقْرَأْ‏.‏ قُلْتُ مَا أَنَا بِقَارِئٍ‏.‏ فَأَخَذَنِي فَغَطَّنِي الثَّانِيَةَ حَتَّى بَلَغَ مِنِّي الْجَهْدَ، ثُمَّ أَرْسَلَنِي فَقَالَ اقْرَأْ‏.‏ فَقُلْتُ مَا أَنَا بِقَارِئٍ‏.‏ فَأَخَذَنِي فَغَطَّنِي الثَّالِثَةَ، ثُمَّ أَرْسَلَنِي فَقَالَ ‏{‏اقْرَأْ بِاسْمِ رَبِّكَ الَّذِي خَلَقَ * خَلَقَ الإِنْسَانَ مِنْ عَلَقٍ * اقْرَأْ وَرَبُّكَ الأَكْرَمُ‏}‏ ‏"‏‏.‏ فَرَجَعَ بِهَا رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم يَرْجُفُ فُؤَادُهُ، فَدَخَلَ عَلَى خَدِيجَةَ بِنْتِ خُوَيْلِدٍ رضى الله عنها فَقَالَ ‏"‏ زَمِّلُونِي زَمِّلُونِي ‏"‏‏.‏ فَزَمَّلُوهُ حَتَّى ذَهَبَ عَنْهُ الرَّوْعُ، فَقَالَ لِخَدِيجَةَ وَأَخْبَرَهَا الْخَبَرَ ‏"‏ لَقَدْ خَشِيتُ عَلَى نَفْسِي ‏"‏‏.‏ فَقَالَتْ خَدِيجَةُ كَلاَّ وَاللَّهِ مَا يُخْزِيكَ اللَّهُ أَبَدًا، إِنَّكَ لَتَصِلُ الرَّحِمَ، وَتَحْمِلُ الْكَلَّ، وَتَكْسِبُ الْمَعْدُومَ، وَتَقْرِي الضَّيْفَ، وَتُعِينُ عَلَى نَوَائِبِ الْحَقِّ‏.‏ فَانْطَلَقَتْ بِهِ خَدِيجَةُ حَتَّى أَتَتْ بِهِ وَرَقَةَ بْنَ نَوْفَلِ بْنِ أَسَدِ بْنِ عَبْدِ الْعُزَّى ابْنَ عَمِّ خَدِيجَةَ ـ وَكَانَ امْرَأً تَنَصَّرَ فِي الْجَاهِلِيَّةِ، وَكَانَ يَكْتُبُ الْكِتَابَ الْعِبْرَانِيَّ، فَيَكْتُبُ مِنَ الإِنْجِيلِ بِالْعِبْرَانِيَّةِ مَا شَاءَ اللَّهُ أَنْ يَكْتُبَ، وَكَانَ شَيْخًا كَبِيرًا قَدْ عَمِيَ ـ فَقَالَتْ لَهُ خَدِيجَةُ يَا ابْنَ عَمِّ اسْمَعْ مِنَ ابْنِ أَخِيكَ‏.‏ فَقَالَ لَهُ وَرَقَةُ يَا ابْنَ أَخِي مَاذَا تَرَى فَأَخْبَرَهُ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم خَبَرَ مَا رَأَى‏.‏ فَقَالَ لَهُ وَرَقَةُ هَذَا النَّامُوسُ الَّذِي نَزَّلَ اللَّهُ عَلَى مُوسَى صلى الله عليه وسلم يَا لَيْتَنِي فِيهَا جَذَعًا، لَيْتَنِي أَكُونُ حَيًّا إِذْ يُخْرِجُكَ قَوْمُكَ‏.‏ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ أَوَمُخْرِجِيَّ هُمْ ‏"‏‏.‏ قَالَ نَعَمْ، لَمْ يَأْتِ رَجُلٌ قَطُّ بِمِثْلِ مَا جِئْتَ بِهِ إِلاَّ عُودِيَ، وَإِنْ يُدْرِكْنِي يَوْمُكَ أَنْصُرْكَ نَصْرًا مُؤَزَّرًا‏.‏ ثُمَّ لَمْ يَنْشَبْ وَرَقَةُ أَنْ تُوُفِّيَ وَفَتَرَ الْوَحْىُ‏.‏

Narrated 'Aisha: (the mother of the faithful believers) The commencement of the Divine Inspiration to Allah's Messenger (PBUH) was in the form of good dreams which came true like bright daylight, and then the love of seclusion was bestowed upon him. He used to go in seclusion in the cave of Hira where he used to worship (Allah alone) continuously for many days before his desire to see his family. He used to take with him the journey food for the stay and then come back to (his wife) Khadija to take his food likewise again till suddenly the Truth descended upon him while he was in the cave of Hira. The angel came to him and asked him to read. The Prophet (PBUH) replied, "I do not know how to read." The Prophet (PBUH) added, "The angel caught me (forcefully) and pressed me so hard that I could not bear it any more. He then released me and again asked me to read and I replied, 'I do not know how to read.' Thereupon he caught me again and pressed me a second time till I could not bear it any more. He then released me and again asked me to read but again I replied, 'I do not know how to read (or what shall I read)?' Thereupon he caught me for the third time and pressed me, and then released me and said, 'Read in the name of your Lord, who has created (all that exists), created man from a clot. Read! And your Lord is the Most Generous." (96.1, 96.2, 96.3) Then Allah's Messenger (PBUH) returned with the Inspiration and with his heart beating severely. Then he went to Khadija bint Khuwailid and said, "Cover me! Cover me!" They covered him till his fear was over and after that he told her everything that had happened and said, "I fear that something may happen to me." Khadija replied, "Never! By Allah, Allah will never disgrace you. You keep good relations with your kith and kin, help the poor and the destitute, serve your guests generously and assist the deserving calamity-afflicted ones." Khadija then accompanied him to her cousin Waraqa bin Naufal bin Asad bin 'Abdul 'Uzza, who, during the pre-Islamic Period became a Christian and used to write the writing with Hebrew letters. He would write from the Gospel in Hebrew as much as Allah wished him to write. He was an old man and had lost his eyesight. Khadija said to Waraqa, "Listen to the story of your nephew, O my cousin!" Waraqa asked, "O my nephew! What have you seen?" Allah's Messenger (PBUH) described whatever he had seen. Waraqa said, "This is the same one who keeps the secrets (angel Gabriel) whom Allah had sent to Moses. I wish I were young and could live up to the time when your people would turn you out." Allah's Messenger (PBUH) asked, "Will they drive me out?" Waraqa replied in the affirmative and said, "Anyone (man) who came with something similar to what you have brought was treated with hostility; and if I should remain alive till the day when you will be turned out then I would support you strongly." But after a few days Waraqa died and the Divine Inspiration was also paused for a while. ھم کو یحییٰ بن بکیر نے یھ حدیث بیان کی ، وھ کھتے ھیں کھ اس حدیث کی ھم کو لیث نے خبر دی ، لیث عقیل سے روایت کرتے ھیں ۔ عقیل ابن شھاب سے ، وھ عروھ بن زبیر سے ، وھ ام المؤمنین حضرت عائشھ رضی اللھ عنھا سے نقل کرتے ھیں کھ انھوں نے بتلایا کھ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم پر وحی کا ابتدائی دور اچھے سچے پاکیزھ خوابوں سے شروع ھوا ۔ آپ صلی اللھ علیھ وسلم خواب میں جو کچھ دیکھتے وھ صبح کی روشنی کی طرح صحیح اور سچا ثابت ھوتا ۔ پھر من جانب قدرت آپ صلی اللھ علیھ وسلم تنھائی پسند ھو گئے اور آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے غار حرا میں خلوت نشینی اختیار فرمائی اور کئی کئی دن اور رات وھاں مسلسل عبادت اور یاد الٰھی و ذکر و فکر میں مشغول رھتے ۔ جب تک گھر آنے کو دل نھ چاھتا توشھ ھمراھ لیے ھوئے وھاں رھتے ۔ توشھ ختم ھونے پر ھی اھلیھ محترمھ حضرت خدیجھ رضی اللھ عنھا کے پاس تشریف لاتے اور کچھ توشھ ھمراھ لے کر پھر وھاں جا کر خلوت گزیں ھو جاتے ، یھی طریقھ جاری رھا یھاں تک کھ آپ صلی اللھ علیھ وسلم پر حق منکشف ھو گیا اور آپ صلی اللھ علیھ وسلم غار حرا ھی میں قیام پذیر تھے کھ اچانک حضرت جبرائیل علیھ السلام آپ صلی اللھ علیھ وسلم کے پاس حاضر ھوئے اور کھنے لگے کھ اے محمد ! پڑھو آپ صلی اللھ علیھ وسلم فرماتے ھیں کھ میں نے کھا کھ میں پڑھنا نھیں جانتا ، آپ صلی اللھ علیھ وسلم فرماتے ھیں کھ فرشتے نے مجھے پکڑ کر اتنے زور سے بھینچا کھ میری طاقت جواب دے گئی ، پھر مجھے چھوڑ کر کھا کھ پڑھو ، میں نے پھر وھی جواب دیا کھ میں پڑھا ھوا نھیں ھوں ۔ اس فرشتے نے مجھ کو نھایت ھی زور سے بھینچا کھ مجھ کو سخت تکلیف محسوس ھوئی ، پھر اس نے کھا کھ پڑھ ! میں نے کھا کھ میں پڑھا ھوا نھیں ھوں ۔ فرشتے نے تیسری بار مجھ کو پکڑا اور تیسری مرتبھ پھر مجھ کو بھینچا پھر مجھے چھوڑ دیا اور کھنے لگا کھ پڑھو اپنے رب کے نام کی مدد سے جس نے پیدا کیا اور انسان کو خون کی پھٹکی سے بنایا ، پڑھو اور آپ کا رب بھت ھی مھربانیاں کرنے والا ھے ۔ پس یھی آیتیں آپ صلی اللھ علیھ وسلم حضرت جبرائیل علیھ السلام سے سن کر اس حال میں غار حرا سے واپس ھوئے کھ آپ صلی اللھ علیھ وسلم کا دل اس انوکھے واقعھ سے کانپ رھا تھا ۔ آپ صلی اللھ علیھ وسلم حضرت خدیجھ کے ھاں تشریف لائے اور فرمایا کھ مجھے کمبل اڑھا دو ، مجھے کمبل اڑھا دو ۔ لوگوں نے آپ صلی اللھ علیھ وسلم کو کمبل اڑھا دیا ۔ جب آپ صلی اللھ علیھ وسلم کا ڈر جاتا رھا ۔ تو آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے اپنی زوجھ محترمھ حضرت خدیجھ رضی اللھ عنھا کو تفصیل کے ساتھ یھ واقعھ سنایا اور فرمانے لگے کھ مجھ کو اب اپنی جان کا خوف ھو گیا ھے ۔ آپ صلی اللھ علیھ وسلم کی اھلیھ محترمھ حضرت خدیجھ رضی اللھ عنھا نے آپ صلی اللھ علیھ وسلم کی ڈھارس بندھائی اور کھا کھ آپ کا خیال صحیح نھیں ھے ۔ خدا کی قسم آپ کو اللھ کبھی رسوا نھیں کرے گا ، آپ تو اخلاق فاضلھ کے مالک ھیں ، آپ تو کنبھ پرور ھیں ، بے کسوں کا بوجھ اپنے سر پر رکھ لیتے ھیں ، مفلسوں کے لیے آپ کماتے ھیں ، مھمان نوازی میں آپ بےمثال ھیں اور مشکل وقت میں آپ امر حق کا ساتھ دیتے ھیں ۔ ایسے اوصاف حسنھ والا انسان یوں بے وقت ذلت و خواری کی موت نھیں پا سکتا ۔ پھر مزید تسلی کے لیے حضرت خدیجھ رضی اللھ عنھا آپ صلی اللھ علیھ وسلم کو ورقھ بن نوفل کے پاس لے گئیں ، جو ان کے چچا زاد بھائی تھے اور زمانھ جاھلیت میں نصرانی مذھب اختیار کر چکے تھے اور عبرانی زبان کے کاتب تھے ، چنانچھ انجیل کو بھی حسب منشائے خداوندی عبرانی زبان میں لکھا کرتے تھے ۔ ( انجیل سریانی زبان میں نازل ھوئی تھی پھر اس کا ترجمھ عبرانی زبان میں ھوا ۔ ورقھ اسی کو لکھتے تھے ) وھ بھت بوڑھے ھو گئے تھے یھاں تک کھ ان کی بینائی بھی رخصت ھو چکی تھی ۔ حضرت خدیجھ رضی اللھ عنھا نے ان کے سامنے آپ صلی اللھ علیھ وسلم کے حالات بیان کیے اور کھا کھ اے چچا زاد بھائی ! اپنے بھتیجے ( محمد صلی اللھ علیھ وسلم ) کی زبانی ذرا ان کی کیفیت سن لیجیئے وھ بولے کھ بھتیجے آپ نے جو کچھ دیکھا ھے ، اس کی تفصیل سناؤ ۔ چنانچھ آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے از اول تا آخر پورا واقعھ سنایا ، جسے سن کر ورقھ بے اختیار ھو کر بول اٹھے کھ یھ تو وھی ناموس ( معزز راز دان فرشتھ ) ھے جسے اللھ نے حضرت موسیٰ علیھ السلام پر وحی دے کر بھیجا تھا ۔ کاش ، میں آپ کے اس عھد نبوت کے شروع ھونے پر جوان عمر ھوتا ۔ کاش میں اس وقت تک زندھ رھتا جب کھ آپ کی قوم آپ کو اس شھر سے نکال دے گی ۔ رسول کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے یھ سن کر تعجب سے پوچھا کھ کیا وھ لوگ مجھ کو نکال دیں گے ؟ ( حالانکھ میں تو ان میں صادق و امین و مقبول ھوں ) ورقھ بولا ھاں یھ سب کچھ سچ ھے ۔ مگر جو شخص بھی آپ کی طرح امر حق لے کر آیا لوگ اس کے دشمن ھی ھو گئے ھیں ۔ اگر مجھے آپ کی نبوت کا وھ زمانھ مل جائے تو میں آپ کی پوری پوری مدد کروں گا ۔ مگر ورقھ کچھ دنوں کے بعد انتقال کر گئے ۔ پھر کچھ عرصھ تک وحی کی آمد موقوف رھی ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 1 Hadith no 3
Web reference: Sahih Bukhari Volume 1 Book 1 Hadith no 3


قَالَ ابْنُ شِهَابٍ وَأَخْبَرَنِي أَبُو سَلَمَةَ بْنُ عَبْدِ الرَّحْمَنِ، أَنَّ جَابِرَ بْنَ عَبْدِ اللَّهِ الأَنْصَارِيَّ، قَالَ ـ وَهُوَ يُحَدِّثُ عَنْ فَتْرَةِ الْوَحْىِ، فَقَالَ ـ فِي حَدِيثِهِ ‏"‏ بَيْنَا أَنَا أَمْشِي، إِذْ سَمِعْتُ صَوْتًا، مِنَ السَّمَاءِ، فَرَفَعْتُ بَصَرِي فَإِذَا الْمَلَكُ الَّذِي جَاءَنِي بِحِرَاءٍ جَالِسٌ عَلَى كُرْسِيٍّ بَيْنَ السَّمَاءِ وَالأَرْضِ، فَرُعِبْتُ مِنْهُ، فَرَجَعْتُ فَقُلْتُ زَمِّلُونِي‏.‏ فَأَنْزَلَ اللَّهُ تَعَالَى ‏{‏يَا أَيُّهَا الْمُدَّثِّرُ * قُمْ فَأَنْذِرْ‏}‏ إِلَى قَوْلِهِ ‏{‏وَالرُّجْزَ فَاهْجُرْ‏}‏ فَحَمِيَ الْوَحْىُ وَتَتَابَعَ ‏"‏‏.‏ تَابَعَهُ عَبْدُ اللَّهِ بْنُ يُوسُفَ وَأَبُو صَالِحٍ‏.‏ وَتَابَعَهُ هِلاَلُ بْنُ رَدَّادٍ عَنِ الزُّهْرِيِّ‏.‏ وَقَالَ يُونُسُ وَمَعْمَرٌ ‏"‏ بَوَادِرُهُ ‏"‏‏.‏

Narrated Jabir bin 'Abdullah Al-Ansari (while talking about the period of pause in revelation) reporting the speech of the Prophet: "While I was walking, all of a sudden I heard a voice from the sky. I looked up and saw the same angel who had visited me at the cave of Hira' sitting on a chair between the sky and the earth. I got afraid of him and came back home and said, 'Wrap me (in blankets).' And then Allah revealed the following Holy Verses (of Quran): 'O you (i.e. Muhammad)! wrapped up in garments!' Arise and warn (the people against Allah's Punishment),... up to 'and desert the idols.' (74.1-5) After this the revelation started coming strongly, frequently and regularly." ابن شھاب کھتے ھیں مجھ کو ابوسلمھ بن عبدالرحمٰن نے حضرت جابر بن عبداللھ انصاری رضی اللھ عنھما سے یھ روایت نقل کی کھ آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے وحی کے رک جانے کے زمانے کے حالات بیان فرماتے ھوئے کھا کھ ایک روز میں چلا جا رھا تھا کھ اچانک میں نے آسمان کی طرف ایک آواز سنی اور میں نے اپنا سر آسمان کی طرف اٹھایا کیا دیکھتا ھوں کھ وھی فرشتھ جو میرے پاس غار حرا میں آیا تھا وھ آسمان و زمین کے بیچ میں ایک کرسی پر بیٹھا ھوا ھے ۔ میں اس سے ڈر گیا اور گھر آنے پر میں نے پھر کمبل اوڑھنے کی خواھش ظاھر کی ۔ اس وقت اللھ پاک کی طرف سے یھ آیات نازل ھوئیں ۔ اے لحاف اوڑھ کر لیٹنے والے ! اٹھ کھڑا ھو اور لوگوں کو عذاب الٰھی سے ڈرا اور اپنے رب کی بڑائی بیان کر اور اپنے کپڑوں کو پاک صاف رکھ اور گندگی سے دور رھ ۔ اس کے بعد وحی تیزی کے ساتھ پے در پے آنے لگی ۔ اس حدیث کو یحییٰ بن بکیر کے علاوھ لیث بن سعد سے عبداللھ بن یوسف اور ابوصالح نے بھی روایت کیا ھے ۔ اور عقیل کے علاوھ زھری سے ھلال بن رواد نے بھی روایت کیا ھے ۔ یونس اور معمر نے اپنی روایت میں لفظ «فواده» کی جگھ «بوادره» نقل کیا ھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 1 Hadith no 4
Web reference: Sahih Bukhari Volume 1 Book 1 Hadith no 3


حَدَّثَنَا مُوسَى بْنُ إِسْمَاعِيلَ، قَالَ حَدَّثَنَا أَبُو عَوَانَةَ، قَالَ حَدَّثَنَا مُوسَى بْنُ أَبِي عَائِشَةَ، قَالَ حَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ جُبَيْرٍ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ، فِي قَوْلِهِ تَعَالَى ‏{‏لاَ تُحَرِّكْ بِهِ لِسَانَكَ لِتَعْجَلَ بِهِ‏}‏ قَالَ كَانَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم يُعَالِجُ مِنَ التَّنْزِيلِ شِدَّةً، وَكَانَ مِمَّا يُحَرِّكُ شَفَتَيْهِ ـ فَقَالَ ابْنُ عَبَّاسٍ فَأَنَا أُحَرِّكُهُمَا لَكُمْ كَمَا كَانَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم يُحَرِّكُهُمَا‏.‏ وَقَالَ سَعِيدٌ أَنَا أُحَرِّكُهُمَا كَمَا رَأَيْتُ ابْنَ عَبَّاسٍ يُحَرِّكُهُمَا‏.‏ فَحَرَّكَ شَفَتَيْهِ ـ فَأَنْزَلَ اللَّهُ تَعَالَى ‏{‏لاَ تُحَرِّكْ بِهِ لِسَانَكَ لِتَعْجَلَ بِهِ* إِنَّ عَلَيْنَا جَمْعَهُ وَقُرْآنَهُ‏}‏ قَالَ جَمْعُهُ لَهُ فِي صَدْرِكَ، وَتَقْرَأَهُ ‏{‏فَإِذَا قَرَأْنَاهُ فَاتَّبِعْ قُرْآنَهُ‏}‏ قَالَ فَاسْتَمِعْ لَهُ وَأَنْصِتْ ‏{‏ثُمَّ إِنَّ عَلَيْنَا بَيَانَهُ‏}‏ ثُمَّ إِنَّ عَلَيْنَا أَنْ تَقْرَأَهُ‏.‏ فَكَانَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم بَعْدَ ذَلِكَ إِذَا أَتَاهُ جِبْرِيلُ اسْتَمَعَ، فَإِذَا انْطَلَقَ جِبْرِيلُ قَرَأَهُ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم كَمَا قَرَأَهُ‏.‏

Narrated Said bin Jubair: Ibn 'Abbas in the explanation of the statement of Allah "Move not your tongue concerning (the Quran) to make haste therewith." (75.16) said "Allah's Messenger (PBUH) used to bear the revelation with great trouble and used to move his lips (quickly) with the Inspiration." Ibn 'Abbas moved his lips saying, "I am moving my lips in front of you as Allah's Messenger (PBUH) used to move his." Said moved his lips saying: "I am moving my lips, as I saw Ibn 'Abbas moving his." Ibn 'Abbas added, "So Allah revealed 'Move not your tongue concerning (the Qur'an) to make haste therewith. It is for Us to collect it and to give you (O Muhammad) the ability to recite it (the Quran)' (75.16-17) which means that Allah will make him (the Prophet) remember the portion of the Qur'an which was revealed at that time by heart and recite it. The statement of Allah: 'And when we have recited it to you (O Muhammad through Gabriel) then you follow its (Quran) recital' (75.18) means 'listen to it and be silent.' Then it is for Us (Allah) to make it clear to you' (75.19) means 'Then it is (for Allah) to make you recite it (and its meaning will be clear by itself through your tongue). Afterwards, Allah's Messenger (PBUH) used to listen to Gabriel whenever he came and after his departure he used to recite it as Gabriel had recited it." موسیٰ بن اسماعیل نے ھم سے حدیث بیان کی ، ان کو ابوعوانھ نے خبر دی ، ان سے موسیٰ ابن ابی عائشھ نے بیان کی ، ان سے سعید بن جبیر نے انھوں نے ابن عباس رضی اللھ عنھما سے کلام الٰھی «لا تحرك به لسانك لتعجل به‏» الخ کی تفسیر کے سلسلھ میں سنا کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نزول قرآن کے وقت بھت سختی محسوس فرمایا کرتے تھے اور اس کی ( علامتوں ) میں سے ایک یھ تھی کھ یاد کرنے کے لیے آپ اپنے ھونٹوں کو ھلاتے تھے ۔ ابن عباس رضی اللھ عنھما نے کھا میں اپنے ھونٹ ھلاتا ھوں جس طرح آپ ھلاتے تھے ۔ سعید کھتے ھیں میں بھی اپنے ھونٹ ھلاتا ھوں جس طرح ابن عباس رضی اللھ عنھما کو میں نے ھلاتے دیکھا ۔ پھر انھوں نے اپنے ھونٹ ھلائے ۔ ( ابن عباس رضی اللھ عنھما نے کھا ) پھر یھ آیت اتری کھ اے محمد ! قرآن کو جلد جلد یاد کرنے کے لیے اپنی زبان نھ ھلاؤ ۔ اس کا جمع کر دینا اور پڑھا دینا ھمارا ذمھ ھے ۔ حضرت ابن عباس رضی اللھ عنھما کھتے ھیں یعنی قرآن آپ صلی اللھ علیھ وسلم کے دل میں جما دینا اور پڑھا دینا ھمارے ذمھ ھے ۔ پھر جب ھم پڑھ چکیں تو اس پڑھے ھوئے کی اتباع کرو ۔ ابن عباس رضی اللھ عنھما فرماتے ھیں ( اس کا مطلب یھ ھے ) کھ آپ اس کو خاموشی کے ساتھ سنتے رھو ۔ اس کے بعد مطلب سمجھا دینا ھمارے ذمھ ھے ۔ پھر یقیناً یھ ھماری ذمھ داری ھے کھ آپ اس کو پڑھو ( یعنی اس کو محفوظ کر سکو ) چنانچھ اس کے بعد جب آپ کے پاس حضرت جبرائیل علیھ السلام ( وحی لے کر ) آتے تو آپ ( توجھ سے ) سنتے ۔ جب وھ چلے جاتے تو رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم اس ( وحی ) کو اسی طرح پڑھتے جس طرح حضرت جبرائیل علیھ السلام نے اسے پڑھا تھا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 1 Hadith no 5
Web reference: Sahih Bukhari Volume 1 Book 1 Hadith no 4


حَدَّثَنَا عَبْدَانُ، قَالَ أَخْبَرَنَا عَبْدُ اللَّهِ، قَالَ أَخْبَرَنَا يُونُسُ، عَنِ الزُّهْرِيِّ، ح وَحَدَّثَنَا بِشْرُ بْنُ مُحَمَّدٍ، قَالَ أَخْبَرَنَا عَبْدُ اللَّهِ، قَالَ أَخْبَرَنَا يُونُسُ، وَمَعْمَرٌ، عَنِ الزُّهْرِيِّ، نَحْوَهُ قَالَ أَخْبَرَنِي عُبَيْدُ اللَّهِ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ، قَالَ كَانَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم أَجْوَدَ النَّاسِ، وَكَانَ أَجْوَدُ مَا يَكُونُ فِي رَمَضَانَ حِينَ يَلْقَاهُ جِبْرِيلُ، وَكَانَ يَلْقَاهُ فِي كُلِّ لَيْلَةٍ مِنْ رَمَضَانَ فَيُدَارِسُهُ الْقُرْآنَ، فَلَرَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم أَجْوَدُ بِالْخَيْرِ مِنَ الرِّيحِ الْمُرْسَلَةِ‏.‏

Narrated Ibn 'Abbas: Allah's Messenger (PBUH) was the most generous of all the people, and he used to reach the peak in generosity in the month of Ramadan when Gabriel met him. Gabriel used to meet him every night of Ramadan to teach him the Qur'an. Allah's Messenger (PBUH) was the most generous person, even more generous than the strong uncontrollable wind (in readiness and haste to do charitable deeds). ھم کو عبدان نے حدیث بیان کی ، انھیں عبداللھ بن مبارک نے خبر دی ، ان کو یونس نے ، انھوں نے زھری سے یھ حدیث سنی ۔ ( دوسری سند یھ ھے کھ ) ھم سے بشر بن محمد نے یھ حدیث بیان کی ۔ ان سے عبداللھ بن مبارک نے ، ان سے یونس اور معمر دونوں نے ، ان دونوں نے زھری سے روایت کی پھلی سند کے مطابق زھری سے عبیداللھ بن عبداللھ نے ، انھوں نے حضرت ابن عباس رضی اللھ عنھما سے یھ روایت نقل کی کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم سب لوگوں سے زیادھ جواد ( سخی ) تھے اور رمضان میں ( دوسرے اوقات کے مقابلھ میں جب ) جبرائیل علیھ السلام آپ صلی اللھ علیھ وسلم سے ملتے بھت ھی زیادھ جود و کرم فرماتے ۔ جبرائیل علیھ السلام رمضان کی ھر رات میں آپ صلی اللھ علیھ وسلم سے ملاقات کرتے اور آپ صلی اللھ علیھ وسلم کے ساتھ قرآن کا دورھ کرتے ، غرض آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم لوگوں کو بھلائی پھنچانے میں بارش لانے والی ھوا سے بھی زیادھ جود و کرم فرمایا کرتے تھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 1 Hadith no 6
Web reference: Sahih Bukhari Volume 1 Book 1 Hadith no 5



Copyrights: if you have any objection regarding any shared content on pdf9.com please click here.