Search hadith by
Hadith Book
Search Query
Search Language
English Arabic Urdu
Search Type Basic    Case Sensitive
 

Sahih Bukhari

To make the Heart Tender (Ar-Riqaq)

كتاب الرقاق

حَدَّثَنَا الْحُمَيْدِيُّ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، حَدَّثَنَا الأَعْمَشُ، قَالَ سَمِعْتُ أَبَا وَائِلٍ، قَالَ عُدْنَا خَبَّابًا فَقَالَ هَاجَرْنَا مَعَ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم نُرِيدُ وَجْهَ اللَّهِ، فَوَقَعَ أَجْرُنَا عَلَى اللَّهِ، فَمِنَّا مَنْ مَضَى لَمْ يَأْخُذْ مِنْ أَجْرِهِ، مِنْهُمْ مُصْعَبُ بْنُ عُمَيْرٍ قُتِلَ يَوْمَ أُحُدٍ، وَتَرَكَ نَمِرَةً فَإِذَا غَطَّيْنَا رَأْسَهُ بَدَتْ رِجْلاَهُ، وَإِذَا غَطَّيْنَا رِجْلَيْهِ بَدَا رَأْسُهُ، فَأَمَرَنَا النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم أَنْ نُغَطِّيَ رَأْسَهُ، وَنَجْعَلَ عَلَى رِجْلَيْهِ مِنَ الإِذْخِرِ، وَمِنَّا مَنْ أَيْنَعَتْ لَهُ ثَمَرَتُهُ فَهْوَ يَهْدُبُهَا‏.‏

Narrated Abu Wail: We paid a visit to Khabbab who was sick, and he said, "We migrated with the Prophet (PBUH) for Allah's Sake and our wages became due on Allah. Some of us died without having received anything of the wages, and one of them was Mus`ab bin `Umar, who was martyred on the day of the battle of Uhud, leaving only one sheet (to shroud him in). If we covered his head with it, his feet became uncovered, and if we covered his feet with it, his head became uncovered. So the Prophet (PBUH) ordered us to cover his head with it and put some Idhkhir (a kind of grass) over his feet. On the other hand, some of us have had the fruits (of our good deed) and are plucking them (in this world). ھم سے عبداللھ بن زبیر حمیدی نے بیان کیا ، کھا ھم سے سفیان ثوری نے بیان کیا ، کھا ھم سے اعمش نے ، کھا کھ میں نے ابووائل سے سنا ، کھا کھ ھم نے خباب بن ارت رضی اللھ عنھ سے سنا ، انھوں نے بیان کیاکھ ھم نے نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم کے ساتھ اللھ تعالیٰ کی رضا حاصل کرنے کے لئے ھجرت کی ۔ چنانچھ ھمارا اجر اللھ کے ذمھ رھا ۔ پس ھم میں سے کوئی تو گزر گیا اور اپنا اجر ( اس دنیا میں ) نھیں لیا ۔ حضرت مصعب بن عمیر رضی اللھ عنھ ( انھی ) میں سے تھے ، وھ جنگ احد کے موقع پر شھید ھو گئے تھے اور ایک چادر چھوڑی تھی ( اس چادرکا ان کو کفن دیا گیا تھا ) اس چادرسے ھم اگر ان کا سر ڈھکتے تو ان کے پاؤں کھل جاتے اور پاؤں ڈھکتے تو سر کھل جاتا ۔ چنانچھ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے ھمیں حکم دیا کھ ھم ان کا سر ڈھک دیں اور پاؤں پر اذخر گھاس ڈال دیں اور کوئی ھم میں سے ایسے ھوئے جن کے پھل خوب پکے اور وھ مزے سے چن چن کر کھا رھے ھیں ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 81 Hadith no 6448
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 76 Hadith no 455


حَدَّثَنَا أَبُو الْوَلِيدِ، حَدَّثَنَا سَلْمُ بْنُ زَرِيرٍ، حَدَّثَنَا أَبُو رَجَاءٍ، عَنْ عِمْرَانَ بْنِ حُصَيْنٍ ـ رضى الله عنهما ـ عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ اطَّلَعْتُ فِي الْجَنَّةِ فَرَأَيْتُ أَكْثَرَ أَهْلِهَا الْفُقَرَاءَ، وَاطَّلَعْتُ فِي النَّارِ فَرَأَيْتُ أَكْثَرَ أَهْلِهَا النِّسَاءَ ‏"‏‏.‏ تَابَعَهُ أَيُّوبُ وَعَوْفٌ، وَقَالَ صَخْرٌ وَحَمَّادُ بْنُ نَجِيحٍ عَنْ أَبِي رَجَاءٍ عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ‏.‏

Narrated `Imran bin Husain: The Prophet (PBUH) said, "I looked into Paradise and found that the majority of its dwellers were the poor people, and I looked into the (Hell) Fire and found that the majority of its dwellers were women." ھم سے ابو ولید نے بیان کیا ، کھا ھم سے سلم بن زریر نے بیان کیا ، کھا ھم سے ابو رجاء عمران بن تمیم نے بیان کیا ، ان سے عمران بن حصین رضی اللھ عنھما نے کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا میں جنت میں جھانکا تو اس میں رھنے والے اکثر غریب لوگ تھے اور میں نے دوزخ میں جھانکا تو اس کی رھنے والیاں اکثر عورتیں تھیں ۔ ابورجاء کے ساتھ اس حدیث کو ایوب سختیانی اور عوف اعرابی نے بھی روایت کیا ھے اورصخر بن جویریھ اور حماد بن نجیح دونوں اس حدیث کو ابورجاء سے ، انھوں نے حضرت ابن عباس رضی اللھ عنھماسے روایت کیا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 81 Hadith no 6449
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 76 Hadith no 456


حَدَّثَنَا أَبُو مَعْمَرٍ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الْوَارِثِ، حَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ أَبِي عَرُوبَةَ، عَنْ قَتَادَةَ، عَنْ أَنَسٍ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ لَمْ يَأْكُلِ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم عَلَى خِوَانٍ حَتَّى مَاتَ، وَمَا أَكَلَ خُبْزًا مُرَقَّقًا حَتَّى مَاتَ‏.‏

Narrated Anas: The Prophet (PBUH) did not eat at a table till he died, and he did not eat a thin nicely baked wheat bread till he died. ھم سے ابو معمر عبداللھ بن محمد بن عمرو بن حجاج نے بیان کیا ، کھا ھم سے عبدالوارث بن سعید نے بیان کیا ، کھا ھم سے سعید بن ابی عروبھ نے بیان کیا ، ان سے قتادھ نے اور ان سے حضرت انس رضی اللھ عنھ نے بیان کیاکھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے کبھی میز پر کھانا نھیں کھایا ۔ یھاں تک کھ آپ صلی اللھ علیھ وسلم کی وفات ھو گئی اور نھ وفات تک آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے کبھی باریک چپاتی تناول فرمائی ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 81 Hadith no 6450
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 76 Hadith no 457


حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ، حَدَّثَنَا أَبُو أُسَامَةَ، حَدَّثَنَا هِشَامٌ، عَنْ أَبِيهِ، عَنْ عَائِشَةَ ـ رضى الله عنها ـ قَالَتْ لَقَدْ تُوُفِّيَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم وَمَا فِي رَفِّي مِنْ شَىْءٍ يَأْكُلُهُ ذُو كَبِدٍ، إِلاَّ شَطْرُ شَعِيرٍ فِي رَفٍّ لِي، فَأَكَلْتُ مِنْهُ حَتَّى طَالَ عَلَىَّ، فَكِلْتُهُ، فَفَنِيَ‏.‏

Narrated `Aisha: When the Prophet (PBUH) died, nothing which can be eaten by a living creature was left on my shelf except some barley grain. I ate of it for a period and when I measured it, it finished. ھم سے ابوبکر عبداللھ بن ابی شیبھ نے بیان کیا ، کھا ھم سے ابواسامھ نے بیان کیا ، کھا ھم سے ھشام بن عروھ نے بیان کیا ، ان سے ان کے والد نے اور ان سے حضرت عائشھ رضی اللھ عنھا نے بیان کیاکھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم کی وفات ھوئی تو میرے توشھ خانھ میں کوئی غلھ نھ تھا جو کسی جاندار کے کھانے کے قابل ھوتا ، سوا تھوڑے سے جو کے میرے توشھ خانھ میں تھے ، میں ان میں ھی سے کھاتی رھی آخر اکتا کر جب بھت دن ھو گئے تو میں نے انھیں ناپا تو وھ ختم ھو گئے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 81 Hadith no 6451
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 76 Hadith no 458


حَدَّثَنِي أَبُو نُعَيْمٍ، بِنَحْوٍ مِنْ نِصْفِ هَذَا الْحَدِيثِ حَدَّثَنَا عُمَرُ بْنُ ذَرٍّ، حَدَّثَنَا مُجَاهِدٌ، أَنَّ أَبَا هُرَيْرَةَ، كَانَ يَقُولُ آللَّهِ الَّذِي لاَ إِلَهَ إِلاَّ هُوَ إِنْ كُنْتُ لأَعْتَمِدُ بِكَبِدِي عَلَى الأَرْضِ مِنَ الْجُوعِ، وَإِنْ كُنْتُ لأَشُدُّ الْحَجَرَ عَلَى بَطْنِي مِنَ الْجُوعِ، وَلَقَدْ قَعَدْتُ يَوْمًا عَلَى طَرِيقِهِمُ الَّذِي يَخْرُجُونَ مِنْهُ، فَمَرَّ أَبُو بَكْرٍ، فَسَأَلْتُهُ عَنْ آيَةٍ مِنْ كِتَابِ اللَّهِ، مَا سَأَلْتُهُ إِلاَّ لِيُشْبِعَنِي، فَمَرَّ وَلَمْ يَفْعَلْ، ثُمَّ مَرَّ بِي عُمَرُ فَسَأَلْتُهُ عَنْ آيَةٍ مِنْ كِتَابِ اللَّهِ، مَا سَأَلْتُهُ إِلاَّ لِيُشْبِعَنِي، فَمَرَّ فَلَمْ يَفْعَلْ، ثُمَّ مَرَّ بِي أَبُو الْقَاسِمِ صلى الله عليه وسلم فَتَبَسَّمَ حِينَ رَآنِي وَعَرَفَ، مَا فِي نَفْسِي وَمَا فِي وَجْهِي ثُمَّ قَالَ ‏"‏ أَبَا هِرٍّ ‏"‏‏.‏ قُلْتُ لَبَّيْكَ يَا رَسُولَ اللَّهِ‏.‏ قَالَ ‏"‏ الْحَقْ ‏"‏‏.‏ وَمَضَى فَتَبِعْتُهُ، فَدَخَلَ فَاسْتَأْذَنَ، فَأَذِنَ لِي، فَدَخَلَ فَوَجَدَ لَبَنًا فِي قَدَحٍ فَقَالَ ‏"‏ مِنْ أَيْنَ هَذَا اللَّبَنُ ‏"‏‏.‏ قَالُوا أَهْدَاهُ لَكَ فُلاَنٌ أَوْ فُلاَنَةُ‏.‏ قَالَ ‏"‏ أَبَا هِرٍّ ‏"‏‏.‏ قُلْتُ لَبَّيْكَ يَا رَسُولَ اللَّهِ‏.‏ قَالَ ‏"‏ الْحَقْ إِلَى أَهْلِ الصُّفَّةِ فَادْعُهُمْ لِي ‏"‏‏.‏ قَالَ وَأَهْلُ الصُّفَّةِ أَضْيَافُ الإِسْلاَمِ، لاَ يَأْوُونَ إِلَى أَهْلٍ وَلاَ مَالٍ، وَلاَ عَلَى أَحَدٍ، إِذَا أَتَتْهُ صَدَقَةٌ بَعَثَ بِهَا إِلَيْهِمْ، وَلَمْ يَتَنَاوَلْ مِنْهَا شَيْئًا، وَإِذَا أَتَتْهُ هَدِيَّةٌ أَرْسَلَ إِلَيْهِمْ، وَأَصَابَ مِنْهَا وَأَشْرَكَهُمْ فِيهَا، فَسَاءَنِي ذَلِكَ فَقُلْتُ وَمَا هَذَا اللَّبَنُ فِي أَهْلِ الصُّفَّةِ كُنْتُ أَحَقُّ أَنَا أَنْ أُصِيبَ مِنْ هَذَا اللَّبَنِ شَرْبَةً أَتَقَوَّى بِهَا، فَإِذَا جَاءَ أَمَرَنِي فَكُنْتُ أَنَا أُعْطِيهِمْ، وَمَا عَسَى أَنْ يَبْلُغَنِي مِنْ هَذَا اللَّبَنِ، وَلَمْ يَكُنْ مِنْ طَاعَةِ اللَّهِ وَطَاعَةِ رَسُولِهِ صلى الله عليه وسلم بُدٌّ، فَأَتَيْتُهُمْ فَدَعَوْتُهُمْ فَأَقْبَلُوا، فَاسْتَأْذَنُوا فَأَذِنَ لَهُمْ، وَأَخَذُوا مَجَالِسَهُمْ مِنَ الْبَيْتِ قَالَ ‏"‏ يَا أَبَا هِرٍّ ‏"‏‏.‏ قُلْتُ لَبَّيْكَ يَا رَسُولَ اللَّهِ‏.‏ قَالَ ‏"‏ خُذْ فَأَعْطِهِمْ ‏"‏‏.‏ قَالَ فَأَخَذْتُ الْقَدَحَ فَجَعَلْتُ أُعْطِيهِ الرَّجُلَ فَيَشْرَبُ حَتَّى يَرْوَى، ثُمَّ يَرُدُّ عَلَىَّ الْقَدَحَ، فَأُعْطِيهِ الرَّجُلَ فَيَشْرَبُ حَتَّى يَرْوَى، ثُمَّ يَرُدُّ عَلَىَّ الْقَدَحَ فَيَشْرَبُ حَتَّى يَرْوَى، ثُمَّ يَرُدُّ عَلَىَّ الْقَدَحَ، حَتَّى انْتَهَيْتُ إِلَى النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم وَقَدْ رَوِيَ الْقَوْمُ كُلُّهُمْ، فَأَخَذَ الْقَدَحَ فَوَضَعَهُ عَلَى يَدِهِ فَنَظَرَ إِلَىَّ فَتَبَسَّمَ فَقَالَ ‏"‏ أَبَا هِرٍّ ‏"‏‏.‏ قُلْتُ لَبَّيْكَ يَا رَسُولَ اللَّهِ‏.‏ قَالَ ‏"‏ بَقِيتُ أَنَا وَأَنْتَ ‏"‏‏.‏ قُلْتُ صَدَقْتَ يَا رَسُولَ اللَّهِ‏.‏ قَالَ ‏"‏ اقْعُدْ فَاشْرَبْ ‏"‏‏.‏ فَقَعَدْتُ فَشَرِبْتُ‏.‏ فَقَالَ ‏"‏ اشْرَبْ ‏"‏‏.‏ فَشَرِبْتُ، فَمَا زَالَ يَقُولُ ‏"‏ اشْرَبْ ‏"‏‏.‏ حَتَّى قُلْتُ لاَ وَالَّذِي بَعَثَكَ بِالْحَقِّ، مَا أَجِدُ لَهُ مَسْلَكًا‏.‏ قَالَ ‏"‏ فَأَرِنِي ‏"‏‏.‏ فَأَعْطَيْتُهُ الْقَدَحَ فَحَمِدَ اللَّهَ وَسَمَّى، وَشَرِبَ الْفَضْلَةَ‏.‏


Chapter: How the Prophet (saws) and his Companions used to live

Narrated Abu Huraira: By Allah except Whom none has the right to- be worshipped, (sometimes) I used to lay (sleep) on the ground on my liver (abdomen) because of hunger, and (sometimes) I used to bind a stone over my belly because of hunger. One day I sat by the way from where they (the Prophet (PBUH) and h is companions) used to come out. When Abu Bakr passed by, I asked him about a Verse from Allah's Book and I asked him only that he might satisfy my hunger, but he passed by and did not do so. Then `Umar passed by me and I asked him about a Verse from Allah's Book, and I asked him only that he might satisfy my hunger, but he passed by without doing so. Finally Abu-l-Qasim (the Prophet (PBUH) ) passed by me and he smiled when he saw me, for he knew what was in my heart and on my face. He said, "O Aba Hirr (Abu Huraira)!" I replied, "Labbaik, O Allah's Messenger (PBUH)!" He said to me, "Follow me." He left and I followed him. Then he entered the house and I asked permission to enter and was admitted. He found milk in a bowl and said, "From where is this milk?" They said, "It has been presented to you by such-and-such man (or by such and such woman)." He said, "O Aba Hirr!" I said, "Labbaik, O Allah's Messenger (PBUH)!" He said, "Go and call the people of Suffa to me." These people of Suffa were the guests of Islam who had no families, nor money, nor anybody to depend upon, and whenever an object of charity was brought to the Prophet (PBUH) , he would send it to them and would not take anything from it, and whenever any present was given to him, he used to send some for them and take some of it for himself. The order off the Prophet upset me, and I said to myself, "How will this little milk be enough for the people of As- Suffa?" thought I was more entitled to drink from that milk in order to strengthen myself, but behold! The Prophet (PBUH) came to order me to give that milk to them. I wondered what will remain of that milk for me, but anyway, I could not but obey Allah and His Apostle so I went to the people of As-Suffa and called them, and they came and asked the Prophet's permission to enter. They were admitted and took their seats in the house. The Prophet (PBUH) said, "O Aba-Hirr!" I said, "Labbaik, O Allah's Messenger (PBUH)!" He said, "Take it and give it to them." So I took the bowl (of Milk) and started giving it to one man who would drink his fill and return it to me, whereupon I would give it to another man who, in his turn, would drink his fill and return it to me, and I would then offer it to another man who would drink his fill and return it to me. Finally, after the whole group had drunk their fill, I reached the Prophet (PBUH) who took the bowl and put it on his hand, looked at me and smiled and said. "O Aba Hirr!" I replied, "Labbaik, O Allah's Messenger (PBUH)!" He said, "There remain you and I." I said, "You have said the truth, O Allah's Messenger (PBUH)!" He said, "Sit down and drink." I sat down and drank. He said, "Drink," and I drank. He kept on telling me repeatedly to drink, till I said, "No. by Allah Who sent you with the Truth, I have no space for it (in my stomach)." He said, "Hand it over to me." When I gave him the bowl, he praised Allah and pronounced Allah's Name on it and drank the remaining milk. مجھ سے ابونعیم نے یھ حدیث آدھی کے قریب بیان کی اور آدھی دوسرے شخص نے ، کھا ھم سے عمر بن ذرنے بیان کیا ، کھا ھم سے مجاھد نے بیان کیا کھ حضرت ابوھریرھ رضی اللھ عنھ کھا کرتے تھے کھ ” اللھ کی قسم جس کے سوا کوئی معبود نھیں میں ( زمانھ نبوی میں ) بھوک کے مارے زمین پر اپنے پیٹ کے بل لیٹ جاتا تھا اور کبھی میں بھوک کے مارے اپنے پیٹ پر پتھر باندھا کرتا تھا ۔ ایک دن میں اس راستے پر بیٹھ گیا جس سے صحابھ نکلتے تھے ۔ حضرت ابوبکر صدیق رضی اللھ عنھ گزر ے اور میں نے ان سے کتاب اللھ کی ایک آیت کے بارے میں پوچھا ، میرے پوچھنے کا مقصد صرف یھ تھا کھ وھ مجھے کچھ کھلا دیں مگر وھ چلے گئے اور کچھ نھیں کیا ۔ پھر حضرت عمر رضی اللھ عنھ میرے پاس سے گزرے ، میں نے ان سے بھی قرآن مجید کی ایک آیت پوچھی اور پوچھنے کا مقصد صرف یھ تھا کھ وھ مجھے کچھ کھلا دیں مگر وھ بھی گزر گئے اور کچھ نھیں کیا ۔ اس کے بعد حضور اکرم صلی اللھ علیھ وسلم گزرے اور آپ نے جب مجھے دیکھا تو آپ مسکرا دئیے اور آپ میرے دل کی بات سمجھ گئے اور میرے چھرے کو آپ نے تاڑلیا ۔ پھر آپ نے فرمایا اباھر ! میں نے عرض کیا لبیک ، یا رسول اللھ ! فرمایا میرے ساتھ آ جاؤ اور آپ چلنے لگے ۔ میں آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کے پیچھے چل دیا ۔ پھر آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم اندر گھر میں تشریف لے گئے ۔ پھر میں نے اجازت چاھی اور مجھے اجازت ملی ۔ جب آپ داخل ھوئے تو ایک پیالے دودھ ملا ۔ دریافت فرمایا کھ یھ دودھ کھاں سے آیا ھے ؟ کھا فلاں یا فلانی نے آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کے لئے تحفھ میں بھیجا ھے ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا اباھر ! میں نے عرض کیا لبیک ، یا رسول اللھ ! فرمایا ، اھل صفھ کے پاس جاؤ اور انھیں بھی میرے پاس بلا لاؤ ۔ کھا کھ اھل صفھ اسلام کے مھمان ھیں ، وھ نھ کسی کے گھر پناھ ڈھونڈھتے ، نھ کسی کے مال میں اور نھ کسی کے پاس ! جب آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کے پاس صدقھ آتا تو اسے آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم انھیں کے پاس بھیج دیتے اور خود اس میں سے کچھ نھ رکھتے ۔ البتھ جب آپ کے پاس تحفھ آتا تو انھیں بلا بھیجتے اور خود بھی اس میں سے کچھ کھاتے اور انھیں بھی شریک کرتے ۔ چنانچھ مجھے یھ بات ناگوار گزری اور میں نے سوچا کھ یھ دودھ ھے ھی کتنا کھ سارے صفھ والوں میں تقسیم ھو ، اس کا حقدار میں تھا کھ اسے پی کر کچھ قوت حاصل کرتا ۔ جب صفھ والے آئیں گے تو آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم مجھ سے فرمائیں گے اور میں انھیں اسے دے دوں گا ۔ مجھے تو شاید اس دودھ میں سے کچھ بھی نھیں ملے گا لیکن اللھ اور اس کے رسول کی حکم برداری کے سوا کوئی اور چارھ بھی نھیں تھا ۔ چنانچھ میں ان کے پاس آیا اور آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کی دعوت پھنچائی ، وھ آ گئے اور اجازت چاھی ۔ انھیں اجازت مل گئی پھر وھ گھر میں اپنی اپنی جگھ بیٹھ گئے ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا : اباھر ! میں نے عرض کیا لبیک ، یا رسول اللھ ! فرمایا لواور اسے ان سب حاضرین کو دے دو ۔ بیان کیا کھ پھر میں نے پیالھ پکڑ لیا اور ایک ایک کو دینے لگا ۔ ایک شخص دودھ پی کر جب سیراب ھو جاتا تو مجھے پیالھ واپس کر دیتا پھر دوسرے شخص کو دیتا وھ بھی سیراب ھو کر پیتا پھر پیالھ مجھ کو واپس کر دیتا اور اسی طرح تیسرا پی کر پھر مجھے پیالھ واپس کر دیتا ۔ اس طرح میں نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم تک پھنچا لوگ پی کر سیراب ھو چکے تھے ۔ آخر میں آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے پیالھ پکڑا اور اپنے ھاتھ پر رکھ کر آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے میری طرف دیکھا اورمسکرا کر فرمایا ، اباھر ! میں نے عرض کیا ، لبیک ، یا رسول اللھ ! فرمایا ، اب میں اور تم باقی رھ گئے ھیں ، میں نے عرض کیا یا رسول اللھ ! آپ نے سچ فرمایا ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا بیٹھ جاؤ اور پیو ۔ میں بیٹھ گیا اور میں نے دودھ پیا اور آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم برابر فرماتے رھے کھ اور پیو آخر مجھے کھنا پڑا ، نھیں اس ذات کی قسم جس نے آپ کو حق کے ساتھ بھیجا ھے ، اب بالکل گنجائش نھیں ھے ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا پھر مجھے دے دو ، میں نے پیالھ آنحضرت صلھی اللھ علیھ وسلم کو دے دیا آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے اللھ کی حمد بیان کی اور بسم اللھ پڑھ کر بچا ھوا خود پی گئے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 81 Hadith no 6452
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 76 Hadith no 459


حَدَّثَنَا مُسَدَّدٌ، حَدَّثَنَا يَحْيَى، عَنْ إِسْمَاعِيلَ، حَدَّثَنَا قَيْسٌ، قَالَ سَمِعْتُ سَعْدًا، يَقُولُ إِنِّي لأَوَّلُ الْعَرَبِ رَمَى بِسَهْمٍ فِي سَبِيلِ اللَّهِ، وَرَأَيْتُنَا نَغْزُو، وَمَا لَنَا طَعَامٌ إِلاَّ وَرَقُ الْحُبْلَةِ وَهَذَا السَّمُرُ، وَإِنَّ أَحَدَنَا لَيَضَعُ كَمَا تَضَعُ الشَّاةُ، مَا لَهُ خِلْطٌ، ثُمَّ أَصْبَحَتْ بَنُو أَسَدٍ تُعَزِّرُنِي عَلَى الإِسْلاَمِ، خِبْتُ إِذًا وَضَلَّ سَعْيِي‏.‏

Narrated Sa`d: I was the first man among the Arabs to throw an arrow for Allah's Cause. We used to fight in Allah's Cause while we had nothing to eat except the leaves of the Hubla and the Sumur trees (desert trees) so that we discharged excrement like that of sheep (i.e. unmixed droppings). Today the (people of the) tribe of Bani Asad teach me the laws of Islam. If so, then I am lost, and all my efforts of that hard time had gone in vain. ھم سے مسدد نے بیان کیا ، کھا ھم سے یحییٰ قطان نے بیان کیا ، ان سے اسماعیل بن ابی خالد نے ، ان سے قیس نے بیان کیا ، کھا کھ میں نے سعد بن ابی وقاص رضی اللھ عنھ سے سنا ، انھوں نے بیان کیا کھ میں سب سے پھلا عرب ھوں جس نے اللھ کے راستے میں تیر چلائے ۔ ھم نے اس حال میں وقت گزارا ھے کھ جھاد کر رھے ھیں اور ھمارے پاس کھانے کی کوئی چیز حبلھ کے پتوں اور اس ببول کے سوا کھانے کے لئے نھیں تھی اور بکری کی مینگنیوں کی طرح ھم پاخانھ کیا کرتے تھے ۔ اب یھ بنو اسد کے لوگ مجھ کو اسلام سکھلا کر درست کرنا چاھتے ھیں پھر تو میں بالکل بدنصیب ٹھھرا اور میرا سارا کیا کرایا اکارت گیا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 81 Hadith no 6453
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 76 Hadith no 460



@2019 Copyrights: if you have any objection regarding any shared content on pdf9.com please click here.