Search hadith by
Hadith Book
Search Query
Search Language
English Arabic Urdu
Search Type Basic    Case Sensitive
 

Sahih Bukhari

Wills and Testaments (Wasaayaa)

كتاب الوصايا

حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ يُوسُفَ، أَخْبَرَنَا مَالِكٌ، عَنْ نَافِعٍ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ ـ رضى الله عنهما ـ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ مَا حَقُّ امْرِئٍ مُسْلِمٍ لَهُ شَىْءٌ، يُوصِي فِيهِ يَبِيتُ لَيْلَتَيْنِ، إِلاَّ وَوَصِيَّتُهُ مَكْتُوبَةٌ عِنْدَهُ ‏"‏‏.‏ تَابَعَهُ مُحَمَّدُ بْنُ مُسْلِمٍ عَنْ عَمْرٍو عَنِ ابْنِ عُمَرَ عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم‏.‏

Narrated `Abdullah bin `Umar: Allah's Messenger (PBUH) said, "It is not permissible for any Muslim who has something to will to stay for two nights without having his last will and testament written and kept ready with him." ھم سے عبداللھ بن یوسف نے بیان کیا ‘ کھا ھم کو امام مالک نے خبر دی نافع سے ‘ وھ عبداللھ بن عمر رضی اللھ عنھما سے کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کسی مسلمان کے لئے جن کے پاس وصیت کے قابل کوئی بھی مال ھو درست نھیں کھ دو رات بھی وصیت کو لکھ کر اپنے پاس محفوظ رکھے بغیر گزارے ۔ امام مالک کے ساتھ اس روایت کی متابعت محمد بن مسلم نے عمرو بن دینار سے کی ھے ‘ انھوں نے ابن عمر رضی اللھ عنھما سے اور انھوں نے نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم سے روایت کی ھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 55 Hadith no 2738
Web reference: Sahih Bukhari Volume 4 Book 51 Hadith no 1


حَدَّثَنَا إِبْرَاهِيمُ بْنُ الْحَارِثِ، حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ أَبِي بُكَيْرٍ، حَدَّثَنَا زُهَيْرُ بْنُ مُعَاوِيَةَ الْجُعْفِيُّ، حَدَّثَنَا أَبُو إِسْحَاقَ، عَنْ عَمْرِو بْنِ الْحَارِثِ، خَتَنِ رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم أَخِي جُوَيْرِيَةَ بِنْتِ الْحَارِثِ قَالَ مَا تَرَكَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم عِنْدَ مَوْتِهِ دِرْهَمًا وَلاَ دِينَارًا وَلاَ عَبْدًا وَلاَ أَمَةً وَلاَ شَيْئًا، إِلاَّ بَغْلَتَهُ الْبَيْضَاءَ وَسِلاَحَهُ وَأَرْضًا جَعَلَهَا صَدَقَةً‏.‏

Narrated `Amr bin Al-Harith: (The brother of the wife of Allah's Messenger (PBUH). Juwaira bint Al-Harith) When Allah's Messenger (PBUH) died, he did not leave any Dirham or Dinar (i.e. money), a slave or a slave woman or anything else except his white mule, his arms and a piece of land which he had given in charity . ھم سے ابراھیم بن حارث نے بیان کیا ‘ انھوں نے کھا ھم سے یحییٰ ابن ابی بکیر نے بیان کیا ‘ انھوں نے کھا ھم سے زھیر بن معاویھ جعفی نے بیان کیا ‘ انھوں نے کھا ھم سے ابواسحاق عمرو بن عبداللھ نے بیان کیا اور ان سے رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم کے نسبتی بھائی عمرو بن حارث رضی اللھ عنھ نے جو جویریھ بنت حارث رضی اللھ عنھا ( ام المؤمنین ) کے بھائی ھیں ‘ بیان کیا کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے اپنی وفات کے بعد سوائے اپنے سفید خچر ‘ اپنے ھتھیار اور اپنی زمین کے جسے آپ صلی اللھ علیھ وسلم وقف کر گئے تھے نھ کوئی درھم چھوڑا تھا نھ دینار نھ غلام نھ باندی اور نھ کوئی چیز ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 55 Hadith no 2739
Web reference: Sahih Bukhari Volume 4 Book 51 Hadith no 2


حَدَّثَنَا خَلاَّدُ بْنُ يَحْيَى، حَدَّثَنَا مَالِكٌ، حَدَّثَنَا طَلْحَةُ بْنُ مُصَرِّفٍ، قَالَ سَأَلْتُ عَبْدَ اللَّهِ بْنَ أَبِي أَوْفَى ـ رضى الله عنهما ـ هَلْ كَانَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم أَوْصَى فَقَالَ لاَ‏.‏ فَقُلْتُ كَيْفَ كُتِبَ عَلَى النَّاسِ الْوَصِيَّةُ أَوْ أُمِرُوا بِالْوَصِيَّةِ قَالَ أَوْصَى بِكِتَابِ اللَّهِ‏.‏

Narrated Talha bin Musarrif: I asked `Abdullah bin Abu `Aufa "Did the Prophet (PBUH) make a will?" He replied, "No," I asked him, "How is it then that the making of a will has been enjoined on people, (or that they are ordered to make a will)?" He replied, "The Prophet (PBUH) bequeathed Allah's Book (i.e. Qur'an). ھم سے خلاد بن یحییٰ نے بیان کیا ‘ کھا ھم سے امام مالک نے بیان کیا ‘ کھا ھم سے طلحھ بن مصرف نے بیان کیا ‘ انھوں نے بیان کیا کھ میں نے عبداللھ بن ابی اوفی رضی اللھ عنھ سے سوال کیا کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے کوئی وصیت کی تھی ؟ انھوں نے کھا کھ نھیں ۔ اس پر میں نے پوچھا کھ پھر وصیت کس طرح لوگوں پر فرض ھوئی ؟ یا ( راوی نے اس طرح بیان کیا ) کھ لوگوں کو وصیت کا حکم کیوں کر دیا گیا ؟ انھوں نے کھا کھ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے لوگوں کو کتاب اللھ پر عمل کرنے کی وصیت کی تھی ۔ ( اور کتاب اللھ میں وصیت کرنے کے لئے حکم موجود ھے )

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 55 Hadith no 2740
Web reference: Sahih Bukhari Volume 4 Book 51 Hadith no 3


حَدَّثَنَا عَمْرُو بْنُ زُرَارَةَ، أَخْبَرَنَا إِسْمَاعِيلُ، عَنِ ابْنِ عَوْنٍ، عَنْ إِبْرَاهِيمَ، عَنِ الأَسْوَدِ، قَالَ ذَكَرُوا عِنْدَ عَائِشَةَ أَنَّ عَلِيًّا ـ رضى الله عنهما ـ كَانَ وَصِيًّا‏.‏ فَقَالَتْ مَتَى أَوْصَى إِلَيْهِ وَقَدْ كُنْتُ مُسْنِدَتَهُ إِلَى صَدْرِي ـ أَوْ قَالَتْ حَجْرِي ـ فَدَعَا بِالطَّسْتِ، فَلَقَدِ انْخَنَثَ فِي حَجْرِي، فَمَا شَعَرْتُ أَنَّهُ قَدْ مَاتَ، فَمَتَى أَوْصَى إِلَيْهِ

Narrated Al-Aswad: In the presence of `Aisha some people mentioned that the Prophet (PBUH) had appointed `Ali by will as his successor. `Aisha said, "When did he appoint him by will? Verily when he died he was resting against my chest (or said: in my lap) and he asked for a wash-basin and then collapsed while in that state, and I could not even perceive that he had died, so when did he appoint him by will?" ھم سے عمرو بن زرارھ نے بیان کیا ‘ کھ ھم کو اسماعیل بن علیھ نے خبر دی عبداللھ بن عون سے ‘ انھیں ابراھیم نخعی نے ‘ ان سے اسود بن یزید نے بیان کیا کھ عائشھ رضی اللھ عنھا کے یھاں کچھ لوگوں نے ذکر کیا کھ علی رضی اللھ عنھ ( نبی اکرم کے ) وصی تھے تو آپ نے کھا کھ کب انھیں وصی بنایا ۔ میں تو آپ کے وصال کے وقت سرمبارک اپنے سینے پر یا انھوں نے ( بجائے سینے کے ) کھا کھ اپنے گود میں رکھے ھوئے تھی پھر آپ نے ( پانی کا ) طشت منگوایا تھا کھ اتنے میں ( سرمبارک ) میری گود میں جھک گیا اور میں سمجھ نھ سکی کھ آپ کی وفات ھو چکی ھے تو آپ نے علی رضی اللھ عنھ کو وصی کب بنایا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 55 Hadith no 2741
Web reference: Sahih Bukhari Volume 4 Book 51 Hadith no 4


حَدَّثَنَا أَبُو نُعَيْمٍ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، عَنْ سَعْدِ بْنِ إِبْرَاهِيمَ، عَنْ عَامِرِ بْنِ سَعْدٍ، عَنْ سَعْدِ بْنِ أَبِي وَقَّاصٍ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ جَاءَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم يَعُودُنِي وَأَنَا بِمَكَّةَ، وَهْوَ يَكْرَهُ أَنْ يَمُوتَ بِالأَرْضِ الَّتِي هَاجَرَ مِنْهَا قَالَ ‏"‏ يَرْحَمُ اللَّهُ ابْنَ عَفْرَاءَ ‏"‏‏.‏ قُلْتُ يَا رَسُولَ اللَّهِ، أُوصِي بِمَالِي كُلِّهِ قَالَ ‏"‏ لاَ ‏"‏‏.‏ قُلْتُ فَالشَّطْرُ قَالَ ‏"‏ لاَ ‏"‏‏.‏ قُلْتُ الثُّلُثُ‏.‏ قَالَ ‏"‏ فَالثُّلُثُ، وَالثُّلُثُ كَثِيرٌ، إِنَّكَ أَنْ تَدَعَ وَرَثَتَكَ أَغْنِيَاءَ خَيْرٌ مِنْ أَنْ تَدَعَهُمْ عَالَةً يَتَكَفَّفُونَ النَّاسَ فِي أَيْدِيهِمْ، وَإِنَّكَ مَهْمَا أَنْفَقْتَ مِنْ نَفَقَةٍ فَإِنَّهَا صَدَقَةٌ، حَتَّى اللُّقْمَةُ الَّتِي تَرْفَعُهَا إِلَى فِي امْرَأَتِكَ، وَعَسَى اللَّهُ أَنْ يَرْفَعَكَ فَيَنْتَفِعَ بِكَ نَاسٌ وَيُضَرَّ بِكَ آخَرُونَ ‏"‏‏.‏ وَلَمْ يَكُنْ لَهُ يَوْمَئِذٍ إِلاَّ ابْنَةٌ‏.‏


Chapter: To leave inheritors wealthy than begging others

Narrated Sa`d bin Abu Waqqas: The Prophet (PBUH) came visiting me while I was (sick) in Mecca, ('Amir the sub-narrator said, and he disliked to die in the land, whence he had already migrated). He (i.e. the Prophet) said, "May Allah bestow His Mercy on Ibn Afra (Sa`d bin Khaula)." I said, "O Allah's Messenger (PBUH)! May I will all my property (in charity)?" He said, "No." I said, "Then may I will half of it?" He said, "No". I said, "One third?" He said: "Yes, one third, yet even one third is too much. It is better for you to leave your inheritors wealthy than to leave them poor begging others, and whatever you spend for Allah's sake will be considered as a charitable deed even the handful of food you put in your wife's mouth. Allah may lengthen your age so that some people may benefit by you, and some others be harmed by you." At that time Sa`d had only one daughter. ھم سے ابونعیم نے بیان کیا ‘ کھا ھم سے سفیان بن عیینھ نے بیان کیا سعد بن ابراھیم سے ‘ ان سے عامر بن سعد نے اور ان سے سعد بن ابی وقاص نے بیان کیا کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم ( حجۃ الوداع میں ) میری عیادت کو تشریف لائے ‘ میں اس وقت مکھ میں تھا ۔ حضور اکرم صلی اللھ علیھ وسلم اس سرزمین پر موت کو پسند نھیں فرماتے تھے جھاں سے کوئی ھجرت کر چکا ھو ۔ آنحضور صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا اللھ ابن عفراء ( سعد بن خولھ رضی اللھ عنھ ) پر رحم فرمائے ۔ میں عرض کیا یا رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم ! میں اپنے سارے مال و دولت کی وصیت کر دوں ۔ آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ نھیں میں نے پوچھا پھر آدھے کی کر دوں ؟ آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے اس پر بھی یھی فرمایا کھ نھیں ۔ میں نے پوچھا پھر تھائی کی کر دوں ۔ آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا تھائی کی کر سکتے ھو اور یھ بھی بھت ھے ‘ اگر تم اپنے وارثوں کو اپنے پیچھے مالدار چھوڑو تو یھ اس سے بھتر ھے کھ انھیں محتاج چھوڑو کھ لوگوں کے سامنے ھاتھ پھیلاتے پھریں ‘ اس میں کوئی شبھ نھیں کھ جب تم اپنی کوئی چیز ( اللھ کے لئے خرچ کرو گے ) تو وھ خیرات ھے ‘ یھاں تک کھ وھ لقمھ بھی جو تم اپنی بیوی کے منھ میں ڈالو گے ( وھ بھی خیرات ھے ) اور ( ابھی وصیت کرنے کی کوئی ضرورت بھی نھیں ) ممکن ھے کھ اللھ تعالیٰ تمھیں شفاء دے اور اس کے بعد تم سے بھت سے لوگوں کو فائدھ ھو اور دوسرے بھت سے لوگ ( اسلام کے مخالف ) نقصان اٹھائیں ۔ اس وقت حضرت سعد رضی اللھ عنھ کی صرف ایک بیٹی تھیں ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 55 Hadith no 2742
Web reference: Sahih Bukhari Volume 4 Book 51 Hadith no 5


حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، عَنْ هِشَامِ بْنِ عُرْوَةَ، عَنْ أَبِيهِ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ ـ رضى الله عنهما ـ قَالَ لَوْ غَضَّ النَّاسُ إِلَى الرُّبْعِ، لأَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ الثُّلُثُ، وَالثُّلُثُ كَثِيرٌ أَوْ كَبِيرٌ ‏"‏‏.‏

Narrated Ibn `Abbas: I recommend that people reduce the proportion of what they bequeath by will to the fourth (of the whole legacy), for Allah's Messenger (PBUH) said, "One-third, yet even one third is too much." ھم سے قتیبھ بن سعید نے بیان کیا ‘ کھا ھم سے سفیان بن عیینھ نے بیان کیا ‘ ان سے ھشام بن عروھ نے ‘ ان سے ان کے والد نے اور ان سے ابن عباس رضی اللھ عنھما نے بیان کیا ‘ کاش ! لوگ ( وصیت کو ) چوتھائی تک کم کر دیتے تو بھتر ھوتا کیونکھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا تھا کھ تم تھائی ( کی وصیت کر سکتے ھو ) اور تھائی بھی بھت ھے یا ۔ ( آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے یھ فرمایا کھ ) یھ بھت زیادھ رقم ھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 55 Hadith no 2743
Web reference: Sahih Bukhari Volume 4 Book 51 Hadith no 6



Copyrights: if you have any objection regarding any shared content on pdf9.com please click here.