Search hadith by
Hadith Book
Search Query
Search Language
English Arabic Urdu
Search Type Basic    Case Sensitive
 

Sahih Bukhari

Wishes

كتاب التمنى

حَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ عُفَيْرٍ، حَدَّثَنِي اللَّيْثُ، حَدَّثَنِي عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ خَالِدٍ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ، عَنْ أَبِي سَلَمَةَ، وَسَعِيدِ بْنِ الْمُسَيَّبِ، أَنَّ أَبَا هُرَيْرَةَ، قَالَ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم يَقُولُ ‏"‏ وَالَّذِي نَفْسِي بِيَدِهِ لَوْلاَ أَنَّ رِجَالاً يَكْرَهُونَ أَنْ يَتَخَلَّفُوا بَعْدِي وَلاَ أَجِدُ مَا أَحْمِلُهُمْ مَا تَخَلَّفْتُ، لَوَدِدْتُ أَنِّي أُقْتَلُ فِي سَبِيلِ اللَّهِ، ثُمَّ أُحْيَا ثُمَّ أُقْتَلُ، ثُمَّ أُحْيَا ثُمَّ أُقْتَلُ، ثُمَّ أُحْيَا ثُمَّ أُقْتَلُ ‏"‏‏.‏


Chapter: Wishes for martyrdom

Narrated Abu Huraira: I heard Allah's Messenger (PBUH) saying, "By Him in Whose Hands my life is! Were it not for some men who dislike to be left behind and for whom I do not have means of conveyance, I would not stay away (from any Holy Battle). I would love to be martyred in Allah's Cause and come to life and then get, martyred and then come to life and then get martyred and then get resurrected and then get martyred. ھم سے سعید بن عفیر نے بیان کیا ‘ کھا مجھ سے لیث بن سعد نے ‘ کھا مجھ سے عبدالرحمٰن بن خالد نے بیان کیا ‘ ان سے ابن شھاب نے ‘ ان سے ابوسلمھ اور سعید بن مسیب نے اور ان سے ابوھریرھ رضی اللھ عنھ نے کھ میں نے رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے سنا آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا ‘ اس ذات کی قسم جس کے ھاتھ میں میری جان ھے ۔ اگر ان لوگوں کا خیال نھ ھوتا جو میرے ساتھ غزوھ میں شریک نھ ھو سکنے کو برا جانتے ھیں مگر اسباب کی کمی کی وجھ سے وھ شریک نھیں ھو سکتے اور کوئی ایسی چیز میرے پاس نھیں ھے جس پر انھیں سوار کروں تو میں کبھی ( غزاوات میں شریک ھونے سے ) پیچھے نھ رھتا ۔ میری خواھش ھے کھ اللھ کے راستے میں قتل کیا جاؤں پھر زندھ کیا جاؤں ‘ پھر قتل کیا جاؤں ‘ پھر زندھ کیا جاؤں ‘ پھر قتل کیا جاؤں ‘ اور پھر زندھ کیا جاؤں اور پھر مارا جاؤں ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 94 Hadith no 7226
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 90 Hadith no 332


حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ يُوسُفَ، أَخْبَرَنَا مَالِكٌ، عَنْ أَبِي الزِّنَادِ، عَنِ الأَعْرَجِ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ وَالَّذِي نَفْسِي بِيَدِهِ وَدِدْتُ أَنِّي لأُقَاتِلُ فِي سَبِيلِ اللَّهِ فَأُقْتَلُ ثُمَّ أُحْيَا ثُمَّ أُقْتَلُ، ثُمَّ أُحْيَا، ثُمَّ أُقْتَلُ، ثُمَّ أُحْيَا، ثُمَّ أُقْتَلُ، ثُمَّ أُحْيَا ‏"‏‏.‏ فَكَانَ أَبُو هُرَيْرَةَ يَقُولُهُنَّ ثَلاَثًا أَشْهَدُ بِاللَّهِ‏.‏

Narrated Al-A'raj: Abu Huraira said, Allah's Messenger (PBUH) said, "By Him in Whose Hand my life is, I would love to fight in Allah's Cause and then get martyred and then resurrected (come to life) and then get martyred and then resurrected (come to life) and then get martyred, and then resurrected (come to life) and then get martyred and then resurrected (come to life)." Abu Huraira used to repeat those words three times and I testify to it with Allah's Oath. ھم سے عبداللھ بن یوسف نے بیان کیا ‘ کھا ھم کو مالک نے خبر دی ‘ انھیں ابوالزناد نے ‘ انھیں اعرج نے اور انھیں ابوھریرھ رضی اللھ عنھ نے کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا ‘ اس ذات کی قسم جس کے ھاتھ میں میری جان ھے ۔ میری آرزو ھے کھ میں اللھ کے راستے میں جنگ کروں اور قتل کیا جاؤں پھر زندھ کیا جاؤں ‘ پھر قتل کیا جاؤں ‘ پھر زندھ کیا جاؤں ‘ پھر قتل کیا جاؤں ‘ابوھریرھ رضی اللھ عنھ ان الفاظ کو تین مرتبھ دھراتے تھے کھ میں اللھ کو گواھ کر کے کھتا ھوں ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 94 Hadith no 7227
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 90 Hadith no 333


حَدَّثَنَا إِسْحَاقُ بْنُ نَصْرٍ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ، عَنْ مَعْمَرٍ، عَنْ هَمَّامٍ، سَمِعَ أَبَا هُرَيْرَةَ، عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ لَوْ كَانَ عِنْدِي أُحُدٌ ذَهَبًا، لأَحْبَبْتُ أَنْ لاَ يَأْتِيَ ثَلاَثٌ وَعِنْدِي مِنْهُ دِينَارٌ، لَيْسَ شَىْءٌ أُرْصِدُهُ فِي دَيْنٍ عَلَىَّ أَجِدُ مَنْ يَقْبَلُهُ ‏"‏‏.‏

Narrated Abu Huraira: The Prophet (PBUH) said, "If I had gold equal to the mountain of Uhud, I would love that, before three days had passed, not a single Dinar thereof remained with me if I found somebody to accept it excluding some amount that I would keep for the payment of my debts.'' ھم سے اسحاق بن نصر نے بیان کیا ‘ کھا ھم سے عبدالرزاق نے بیان کیا ‘ ان سے معمر نے ‘ ان سے ھمام بن منبھ نے ‘ انھوں نے ابوھریرھ رضی اللھ عنھ سے سنا کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا ، اگر میرے پاس احد پھاڑ کے برابر سونا ھوتا تو میں پسند کرتاکھ اگر ان کے لینے والے مل جائیں تو تین دن گزرنے سے پھلے ھی میرے پاس اس میں سے ایک دینار بھی نھ بچے ‘ سوا اس کے جسے میں اپنے اوپر قرض کی ادائیگی کے لیے روک لوں ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 94 Hadith no 7228
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 90 Hadith no 334


حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ بُكَيْرٍ، حَدَّثَنَا اللَّيْثُ، عَنْ عُقَيْلٍ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ، حَدَّثَنِي عُرْوَةُ، أَنَّ عَائِشَةَ، قَالَتْ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ لَوِ اسْتَقْبَلْتُ مِنْ أَمْرِي مَا اسْتَدْبَرْتُ مَا سُقْتُ الْهَدْىَ، وَلَحَلَلْتُ مَعَ النَّاسِ حِينَ حَلُّوا ‏"‏‏.‏


Chapter: “If I had formerly known what I came to know recently…”

Narrated `Aisha: Allah's Messenger (PBUH) said, "If I had formerly known what I came to know recently, I would not have driven the Hadi with me and would have finished the state of Ihram along with the people when they finished it." ھم سے یحییٰ بن بکیر نے بیان کیا ‘ کھا ھم سے لیث بن سعد نے بیان کیا ‘ ان سے عقیل نے ‘ ان سے ابن شھاب نے ‘ ان سے عروھ رضی اللھ عنھ نے کھ عائشھ رضی اللھ عنھا نے بیان کیا کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے ( حجتھ الوداع کے موقع پر ) فرمایا اگر مجھ کو اپنا حال پھلے سے معلوم ھوتا جو بعد کو معلوم ھوا تو میں اپنے ساتھ قربانی کا جانور نھ لاتا اور عمرھ کر کے دوسرے لوگوں کی طرح بھی احرام کھول ڈالتا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 94 Hadith no 7229
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 90 Hadith no 335


حَدَّثَنَا الْحَسَنُ بْنُ عُمَرَ، حَدَّثَنَا يَزِيدُ، عَنْ حَبِيبٍ، عَنْ عَطَاءٍ، عَنْ جَابِرِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ، قَالَ كُنَّا مَعَ رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم فَلَبَّيْنَا بِالْحَجِّ وَقَدِمْنَا مَكَّةَ لأَرْبَعٍ خَلَوْنَ مِنْ ذِي الْحِجَّةِ، فَأَمَرَنَا النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم أَنْ نَطُوفَ بِالْبَيْتِ وَبِالصَّفَا وَالْمَرْوَةِ، وَأَنْ نَجْعَلَهَا عُمْرَةً وَلْنَحِلَّ، إِلاَّ مَنْ كَانَ مَعَهُ هَدْىٌ قَالَ وَلَمْ يَكُنْ مَعَ أَحَدٍ مِنَّا هَدْىٌ غَيْرَ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم وَطَلْحَةَ، وَجَاءَ عَلِيٌّ مِنَ الْيَمَنِ مَعَهُ الْهَدْىُ فَقَالَ أَهْلَلْتُ بِمَا أَهَلَّ بِهِ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم فَقَالُوا نَنْطَلِقُ إِلَى مِنًى وَذَكَرُ أَحَدِنَا يَقْطُرُ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ إِنِّي لَوِ اسْتَقْبَلْتُ مِنْ أَمْرِي مَا اسْتَدْبَرْتُ مَا أَهْدَيْتُ، وَلَوْلاَ أَنَّ مَعِي الْهَدْىَ لَحَلَلْتُ ‏"‏‏.‏ قَالَ وَلَقِيَهُ سُرَاقَةُ وَهْوَ يَرْمِي جَمْرَةَ الْعَقَبَةِ فَقَالَ يَا رَسُولَ اللَّهِ أَلَنَا هَذِهِ خَاصَّةً قَالَ ‏"‏ لاَ بَلْ لأَبَدٍ ‏"‏‏.‏ قَالَ وَكَانَتْ عَائِشَةُ قَدِمَتْ مَكَّةَ وَهْىَ حَائِضٌ، فَأَمَرَهَا النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم أَنْ تَنْسُكَ الْمَنَاسِكَ كُلَّهَا، غَيْرَ أَنَّهَا لاَ تَطُوفُ وَلاَ تُصَلِّي حَتَّى تَطْهُرَ، فَلَمَّا نَزَلُوا الْبَطْحَاءَ قَالَتْ عَائِشَةُ يَا رَسُولَ اللَّهِ أَتَنْطَلِقُونَ بِحَجَّةٍ وَعُمْرَةٍ وَأَنْطَلِقُ بِحَجَّةٍ‏.‏ قَالَ ثُمَّ أَمَرَ عَبْدَ الرَّحْمَنِ بْنَ أَبِي بَكْرٍ الصِّدِّيقِ أَنْ يَنْطَلِقَ مَعَهَا إِلَى التَّنْعِيمِ، فَاعْتَمَرَتْ عُمْرَةً فِي ذِي الْحَجَّةِ بَعْدَ أَيَّامِ الْحَجِّ‏.‏

Narrated Jabir bin `Abdullah: We were in the company of Allah's Messenger (PBUH) and we assumed the state of Ihram of Hajj and arrived at Mecca on the fourth of Dhul-Hijja. The Prophet (PBUH) ordered us to perform the Tawaf around the Ka`ba and (Sa`i) between As-Safa and Al-Marwa and use our lhram just for `Umra, and finish the state of Ihram unless we had our Hadi with us. None of us had the Hadi with him except the Prophet (PBUH) and Talha. `Ali came from Yemen and brought the Hadi with him. `Ali said, 'I had assumed the state of Ihram with the same intention as that with which Allah's Messenger (PBUH) had assumed it. The people said, "How can we proceed to Mina and our male organs are dribbling?" Allah's Messenger (PBUH) said, "If I had formerly known what I came to know latterly, I would not have brought the Hadi, and had there been no Hadi with me, I would have finished my Ihram." Suraqa (bin Malik) met the Prophet (PBUH) while he was throwing pebbles at the Jamrat-Al-`Aqaba, and asked, "O Allah's Messenger (PBUH)! Is this (permitted) for us only?" The Prophet (PBUH) replied. "No, it is forever" `Aisha had arrived at Mecca while she was menstruating, therefore the Prophet (PBUH) ordered her to perform all the ceremonies of Hajj except the Tawaf around the Ka`ba, and not to perform her prayers unless and until she became clean . When they encamped at Al-Batha, `Aisha said, "O Allah's Messenger (PBUH)! You are proceeding after performing both Hajj and `Umra while I am proceeding with Hajj only?" So the Prophet (PBUH) ordered `Abdur-Rahman bin Abu Bakr As-Siddiq to go with her to at-Tan`im, and so she performed the `Umra in Dhul-Hijja after the days of the Hajj. ھم سے حسن بن عمر جرمی نے بیان کیا ‘ کھا ھم سے یزید بن زریع بصریٰ نے ‘ ان سے حبیب بن ابی قریبھ نے ‘ ان سے عطاء بن ابی رباح نے ‘ ان سے جابر بن عبداللھ رضی اللھ عنھ نے بیان کیا کھ ھم رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم کے ( حجۃ الوداع کے موقع پر ) ساتھ تھے ‘ پھر ھم نے حج کے لیے تلبیھ کھا اور 4 ذی الحجھ کو مکھ پھنچے ‘ پھر آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے ھمیں بیت اللھ اور صفا اور مروھ کے طواف کا حکم دیا اور یھ کھ ھم اسے عمرھ بنا لیں اور اس کے بعد حلال ھو جائیں ( سو ان کے جن کے ساتھ قربانی جانور ھو وھ حلال نھیں ھو سکتے ) بیان کیا کھ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم اورطلحھ رضی اللھ عنھ کے سوا ھم میں سے کسی کے پاس قربانی کا جانور نھ تھا اور علی رضی اللھ عنھ یمن سے آئے تھے اور ان کے ساتھ بھی ھدی تھی اور کھا کھ میں بھی اس کا احرام باندھ کر آیا ھوں جس کا رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے احرام باندھا ھے ‘ پھر دوسرے لوگ کھنے لگے کھ کیا ھم اپنی عورتوں کے ساتھ صحبت کرنے کے بعد منیٰ جا سکتے ھیں ؟ ( اس حال میں کھ ھمارے ذکر منی ٹپکاتے ھوں ؟ ) آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے اس پر فرمایا کھ جو بات مجھے بعد میں معلوم ھوئی اگر پھلے ھی معلوم ھوتی تو میں ھدی ساتھ نھ لاتا اور اگر میرے ساتھ ھدی نھ ھوتی تو میں بھی حلال ھو جاتا ۔ بیان کیا کھ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم سے سراقھ بن مالک نے ملاقات کی ۔ اس وقت آپ بڑے شیطان پر رمی کر رھے تھے اور پوچھا یا رسول اللھ ! یھ ھمارے لیے خاص ھے ؟ آپ نے فرمایا کھ نھیں بلکھ ھمیشھ کے لیے ھے ۔ بیان کیا کھ عائشھ رضی اللھ عنھا بھی مکھ آئی تھیں لیکن وھ حائضھ تھیں تو آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے انھیں تمام اعمال حج ادا کرنے کا حکم دیا ‘ صرف وھ پاک ھونے سے پھلے طواف نھیں کر سکتی تھیں اور نھ نماز پڑھ سکتی تھیں ۔ جب سب لوگ بطحاء میں اترے تو عائشھ رضی اللھ عنھا نے کھا یا رسول اللھ ! کیا آپ سب لوگ عمرھ و حج دونوں کے کے لوٹیں گے اور میرا صرف حج ھو گا ؟ بیان کیا کھ پھر آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے عبدالرحمٰن بن ابی بکر صدیق رضی اللھ عنھ کو حکم دیا کھ عائشھ کو ساتھ لے کر مقام تنعیم جائیں ۔ چنانچھ انھوں نے بھی ایام حج کے بعد ذی الحجھ میں عمرھ کیا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 94 Hadith no 7230
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 90 Hadith no 336


حَدَّثَنَا خَالِدُ بْنُ مَخْلَدٍ، حَدَّثَنَا سُلَيْمَانُ بْنُ بِلاَلٍ، حَدَّثَنِي يَحْيَى بْنُ سَعِيدٍ، سَمِعْتُ عَبْدَ اللَّهِ بْنَ عَامِرِ بْنِ رَبِيعَةَ، قَالَ قَالَتْ عَائِشَةُ أَرِقَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ذَاتَ لَيْلَةٍ فَقَالَ ‏"‏ لَيْتَ رَجُلاً صَالِحًا مِنْ أَصْحَابِي يَحْرُسُنِي اللَّيْلَةَ ‏"‏‏.‏ إِذْ سَمِعْنَا صَوْتَ السِّلاَحِ قَالَ ‏"‏ مَنْ هَذَا ‏"‏‏.‏ قِيلَ سَعْدٌ يَا رَسُولَ اللَّهِ جِئْتُ أَحْرُسُكَ‏.‏ فَنَامَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم حَتَّى سَمِعْنَا غَطِيطَهُ‏.‏ قَالَ أَبُو عَبْدِ اللَّهِ وَقَالَتْ عَائِشَةُ قَالَ بِلاَلٌ أَلاَ لَيْتَ شِعْرِي هَلْ أَبِيتَنَّ لَيْلَةً بِوَادٍ وَحَوْلِي إِذْخِرٌ وَجَلِيلُ فَأَخْبَرْتُ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم‏.‏


Chapter: “Would that so-and-so…”

Narrated Aisha: One night the Prophet (PBUH) was unable to sleep and said, "Would that a righteous man from my companions guarded me tonight." Suddenly we heard the clatter of arms, whereupon the Prophet (PBUH) said, "Who is it?" It was said, "I am Sa`d, O Allah's Messenger (PBUH)! I have come to guard you." The Prophet (PBUH) then slept so soundly that we heard him snoring. Abu `Abdullah said: `Aisha said: Bilal said, "Would that I but stayed overnight in a valley with Idhkhir and Jalil (two kinds of grass) around me (i.e., in Mecca)." Then I told that to the Prophet (PBUH) . ھم سے خالد بن مخلد نے بیان کیا ‘ کھا ھم سے سلیمان بن بلال نے بیان کیا ‘ کھا مجھ سے یحییٰ بن سعید نے بیان کیا ‘ انھوں نے عبداللھ بن عامر بن ربیعھ سے سنا کھ عائشھ رضی اللھ عنھا نے بیان کیا کھ ایک رات نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم کو نیند نھ آئی ‘ پھر آپ نے فرمایا ‘ کاش میرے صحابھ میں سے کوئی نیک مرد میرے لیے آج رات پھرھ دیتا ۔ اتنے میں ھم نے ھتھیاروں کی آواز سنی ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے پوچھا کون صاحب ھیں ؟ بتایا گیا کھ سعد بن ابی وقاص رضی اللھ عنھ ھیں یا رسول اللھ ! ( انھوں نے کھا ) میں آپ صلی اللھ علیھ وسلم کے لئے پھرھ دینے آیا ھوں ‘ پھر آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم سوئے یھاں تک کھ ھم نے آپکے خراٹے کی آواز سنے ۔ ابوعبداللھ امام بخاری نے بیان کیا کھ عائشھ رضی اللھ عنھا نے بیان کیا کھ بلال رضی اللھ عنھ جب نئے نئے مدینھ آئے تو بحالت بخار حیرانی میں یھ شعر پڑھتے تھے ۔ ” کاش میں جانتا کھ میں ایک رات اس وادی میں گزار سکوں گا ( وادی میں ) اور میرے چاروں طرف اذ خر اور جیل گھاس ھو گی ۔ “ پھر میں نے نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم سے اس کی خبر کی ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 94 Hadith no 7231
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 90 Hadith no 337



Copyrights: if you have any objection regarding any shared content on pdf9.com please click here.