Search hadith by
Hadith Book
Search Query
Search Language
English Arabic Urdu
Search Type Basic    Case Sensitive
 

Sahih Bukhari

Fighting for the Cause of Allah (Jihaad)

كتاب الجهاد والسير

حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، عَنْ عَمْرٍو، سَمِعَ جَابِرَ بْنَ عَبْدِ اللَّهِ ـ رضى الله عنهما ـ يَقُولُ اصْطَبَحَ نَاسٌ الْخَمْرَ يَوْمَ أُحُدٍ، ثُمَّ قُتِلُوا شُهَدَاءَ‏.‏ فَقِيلَ لِسُفْيَانَ مِنْ آخِرِ ذَلِكَ الْيَوْمِ قَالَ لَيْسَ هَذَا فِيهِ‏.‏

Narrated Jabir bin `Abdullah: "Some people drank alcohol in the morning of the day (of the battle) of Uhud and were martyred (on the same day)." Sufyan was asked, "(Were they martyred) in the last part of the day?)" He replied, "Such information does not occur in the narration." ھم سے علی بن عبداللھ نے بیان کیا ‘ کھا ھم سے سفیان نے بیان کیا عمروسے ‘ انھوں نے جابر بن عبداللھ رضی اللھ عنھما سے سنا ‘ آپ بیان کرتے تھے کھ کچھ صحابھ نے جنگ احد کے دن صبح کے وقت شراب پی ( راوی حدیث ) سے پوچھا گیا کیا اسی دن کے آخری حصے میں ( ان کی شھادت ھوئی ) تھی جس دن انھوں نے شراب پی تھی ؟ تو انھوں نے جواب دیا کھ حدیث میں اس کا کوئی ذکر نھیں ھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 56 Hadith no 2815
Web reference: Sahih Bukhari Volume 4 Book 52 Hadith no 70


حَدَّثَنَا صَدَقَةُ بْنُ الْفَضْلِ، قَالَ أَخْبَرَنَا ابْنُ عُيَيْنَةَ، قَالَ سَمِعْتُ مُحَمَّدَ بْنَ الْمُنْكَدِرِ، أَنَّهُ سَمِعَ جَابِرًا، يَقُولُ جِيءَ بِأَبِي إِلَى النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم وَقَدْ مُثِّلَ بِهِ وَوُضِعَ بَيْنَ يَدَيْهِ، فَذَهَبْتُ أَكْشِفُ عَنْ وَجْهِهِ، فَنَهَانِي قَوْمِي، فَسَمِعَ صَوْتَ صَائِحَةٍ فَقِيلَ ابْنَةُ عَمْرٍو، أَوْ أُخْتُ عَمْرٍو‏.‏ فَقَالَ ‏"‏ لِمَ تَبْكِي أَوْ لاَ تَبْكِي، مَا زَالَتِ الْمَلاَئِكَةُ تُظِلُّهُ بِأَجْنِحَتِهَا ‏"‏‏.‏ قُلْتُ لِصَدَقَةَ أَفِيهِ حَتَّى رُفِعَ قَالَ رُبَّمَا قَالَهُ‏.‏


Chapter: The shade of angels on the martyr

Narrated Jabir: My father's mutilated body was brought to the Prophet (PBUH) and was placed in front of him. I went to uncover his face but my companions forbade me. Then mourning cries of a lady were heard, and it was said that she was either the daughter or the sister of `Amr. The Prophet (PBUH) said, "Why is she crying?" Or said, "Do not cry, for the angels are still shading him with their wings." (Al-Bukhari asked Sadqa, a sub-narrator, "Does the narration include the expression: 'Till he was lifted?' " The latter replied, "Jabir may have said it.") ھم سے صدقھ بن فضل نے بیان کیا ‘ کھا کھ ھمیں سفیان بن عیینھ نے خبر دی ‘ کھا کھ میں نے محمد بن منکدر سے سنا ‘ انھوں نے جابر رضی اللھ عنھ سے سنا ‘ وھ بیان کرتے تھے کھ میرے والد رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم کے سامنے لائے گئے ( احد کے موقع پر ) اور کافروں نے ان کے ناک کان کاٹ ڈالے تھے ‘ ان کی نعش نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم کے سامنے رکھی گئی تو میں نے آگے بڑھ کر ان کا چھرھ کھولنا چاھا لیکن میری قوم کے لوگوں نے مجھے منع کر دیا پھر نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے رونے پیٹنے کی آواز سنی ( تو دریافت فرمایا کھ کس کی آواز ھے ؟ ) لوگوں نے بتایا کھ عمرو کی لڑکی ھیں ( شھید کی بھن ) یا عمرو کی بھن ھیں ( شھید کی چچی شک راوی کو تھا ) آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کیوں رو رھی ھیں یا ( آپ نے فرمایا کھ ) روئیں نھیں ملائکھ برابر ان پر اپنے پروں کا سایھ کئے ھوئے ھیں ۔ امام بخاری رحمھ اللھ کھتے ھیں کھ میں نے صدقھ سے پوچھا کیا حدیث میں یھ بھی ھے کھ ( جنازھ ) اٹھائے جانے تک تو انھوں نے بتایا کھ سفیان نے بعض اوقات یھ الفاظ بھی حدیث میں بیان کئے تھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 56 Hadith no 2816
Web reference: Sahih Bukhari Volume 4 Book 52 Hadith no 71


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ، حَدَّثَنَا غُنْدَرٌ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، قَالَ سَمِعْتُ قَتَادَةَ، قَالَ سَمِعْتُ أَنَسَ بْنَ مَالِكٍ ـ رضى الله عنه ـ عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ مَا أَحَدٌ يَدْخُلُ الْجَنَّةَ يُحِبُّ أَنْ يَرْجِعَ إِلَى الدُّنْيَا وَلَهُ مَا عَلَى الأَرْضِ مِنْ شَىْءٍ، إِلاَّ الشَّهِيدُ، يَتَمَنَّى أَنْ يَرْجِعَ إِلَى الدُّنْيَا فَيُقْتَلَ عَشْرَ مَرَّاتٍ، لِمَا يَرَى مِنَ الْكَرَامَةِ ‏"‏‏.‏


Chapter: The wish of the Mujahid to return to the world

Narrated Anas bin Malik: The Prophet (PBUH) said, "Nobody who enters Paradise likes to go back to the world even if he got everything on the earth, except a Mujahid who wishes to return to the world so that he may be martyred ten times because of the dignity he receives (from Allah)." ھم سے محمد بن بشارنے بیان کیا ‘ کھا ھم سے غندر نے بیان کیا‘کھا ھم سے شعبھ نے بیان کیا ‘ کھا میں نے قتادھ سے سنا ‘ کھا کھ میں نے انس بن مالک رضی اللھ عنھ سے سنا کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کوئی شخص بھی ایسا نھ ھو گا جو جنت میں داخل ھونے کے بعد دنیا میں دوبارھ آنا پسند کرے ‘ خواھ اسے ساری دنیا مل جائے سوائے شھید کے ۔ اس کی یھ تمنا ھو گی کھ دنیا میں دوبارھ واپس جا کر دس مرتبھ اور قتل ھو ( اللھ کے راستے میں ) کیونکھ وھ شھادت کی عزت وھاں دیکھتا ھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 56 Hadith no 2817
Web reference: Sahih Bukhari Volume 4 Book 52 Hadith no 72


حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ مُحَمَّدٍ، حَدَّثَنَا مُعَاوِيَةُ بْنُ عَمْرٍو، حَدَّثَنَا أَبُو إِسْحَاقَ، عَنْ مُوسَى بْنِ عُقْبَةَ، عَنْ سَالِمٍ أَبِي النَّضْرِ، مَوْلَى عُمَرَ بْنِ عُبَيْدِ اللَّهِ وَكَانَ كَاتِبَهُ قَالَ كَتَبَ إِلَيْهِ عَبْدُ اللَّهِ بْنُ أَبِي أَوْفَى ـ رضى الله عنهما ـ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ وَاعْلَمُوا أَنَّ الْجَنَّةَ تَحْتَ ظِلاَلِ السُّيُوفِ ‏"‏‏.‏ تَابَعَهُ الأُوَيْسِيُّ عَنِ ابْنِ أَبِي الزِّنَادِ عَنْ مُوسَى بْنِ عُقْبَةَ‏.‏

Narrated `Abdullah bin Abi `Aufa: Allah's Messenger (PBUH) said, "Know that Paradise is under the shades of swords." ھم سے عبداللھ بن محمد نے بیان کیا ‘ انھوں نے کھا ھم سے معاویھ بن عمرو نے بیان کیا ‘ انھوں نے کھا ھم سے ابواسحاق نے بیان کیا موسیٰ بن عقبھ سے‘ ان سے عمر بن عبیداللھ کے مولیٰ سالم ابو النضر نے سالم عمر بن عبیداللھ کے کاتب بھی تھے بیان کیا کھ عبداللھ بن ابی اوفی رضی اللھ عنھ نے عمر بن عبیداللھ کو لکھا تھا کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا ھے یقین جانو جنت تلواروں کے سائے کے نیچے ھے ۔ اس روایت کی متابعت اویسی نے ابن ابی الزناد کے واسطھ سے کی ان سے موسیٰ بن عقبھ نے بیان کیا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 56 Hadith no 2818
Web reference: Sahih Bukhari Volume 4 Book 52 Hadith no 73


وَقَالَ اللَّيْثُ حَدَّثَنِي جَعْفَرُ بْنُ رَبِيعَةَ، عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ هُرْمُزَ، قَالَ سَمِعْتُ أَبَا هُرَيْرَةَ ـ رضى الله عنه ـ عَنْ رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ قَالَ سُلَيْمَانُ بْنُ دَاوُدَ ـ عَلَيْهِمَا السَّلاَمُ ـ لأَطُوفَنَّ اللَّيْلَةَ عَلَى مِائَةِ امْرَأَةٍ ـ أَوْ تِسْعٍ وَتِسْعِينَ ـ كُلُّهُنَّ يَأْتِي بِفَارِسٍ يُجَاهِدُ فِي سَبِيلِ اللَّهِ، فَقَالَ لَهُ صَاحِبُهُ إِنْ شَاءَ اللَّهُ‏.‏ فَلَمْ يَقُلْ إِنْ شَاءَ اللَّهُ‏.‏ فَلَمْ يَحْمِلْ مِنْهُنَّ إِلاَّ امْرَأَةٌ وَاحِدَةٌ، جَاءَتْ بِشِقِّ رَجُلٍ، وَالَّذِي نَفْسُ مُحَمَّدٍ بِيَدِهِ، لَوْ قَالَ إِنْ شَاءَ اللَّهُ، لَجَاهَدُوا فِي سَبِيلِ اللَّهِ فُرْسَانًا أَجْمَعُونَ ‏"‏‏.‏


Chapter: Who wishes to beget a son to send for Jihad

Narrated Abu Huraira: Allah's Messenger (PBUH) said, "Once Solomon, son of David said, '(By Allah) Tonight I will have sexual intercourse with one hundred (or ninety-nine) women each of whom will give birth to a knight who will fight in Allah's Cause.' On that a (i.e. if Allah wills) but he did not say, 'Allah willing.' Therefore only one of those women conceived and gave birth to a half-man. By Him in Whose Hands Muhammad's life is, if he had said, "Allah willing', (he would have begotten sons) all of whom would have been knights striving in Allah's Cause." لیث نے بیان کیا کھ مجھ سے جعفر بن ربیعھ نے بیان کیا ‘ ان سے عبداللھ بن ھرمز نے بیان کیا انھوں نے کھا کھ میں نے ابوھریرھ رضی اللھ عنھ سے سنا‘ ان سے رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ سلیمان بن داؤد علیھما السلام نے فرمایا آج رات اپنی سویا ( راوی کو شک تھا ) ننانوے بیویوں کے پاس جاؤں گا اور ھر بیوی ایک ایک شھسوار جنے گی جو اللھ تعالیٰ کے راستے میں جھاد کریں گے ۔ ان کے ساتھی نے کھا کھ انشاءاللھ بھی کھھ لیجئے لیکن انھوں نے انشاءاللھ نھیں کھا ۔ چنانچھ صرف ایک بیوی حاملھ ھوئیں اور ان کے بھی آدھا بچھ پیدا ھوا ۔ اس ذات کی قسم جس کے ھاتھ میں محمد صلی اللھ علیھ وسلم کی جان ھے اگر سلیمان علیھ السلام اس وقت انشاءاللھ کھھ لیتے تو ( تمام بیویاں حاملھ ھوتیں اور ) سب کے یھاں ایسے شھسوار بچے پیدا ھوتے جو اللھ کے راستے میں جھاد کرتے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 56 Hadith no 2819
Web reference: Sahih Bukhari Volume 4 Book 52 Hadith no 74


حَدَّثَنَا أَحْمَدُ بْنُ عَبْدِ الْمَلِكِ بْنِ وَاقِدٍ، حَدَّثَنَا حَمَّادُ بْنُ زَيْدٍ، عَنْ ثَابِتٍ، عَنْ أَنَسٍ، رضى الله عنه قَالَ كَانَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم أَحْسَنَ النَّاسِ وَأَشْجَعَ النَّاسِ وَأَجْوَدَ النَّاسِ، وَلَقَدْ فَزِعَ أَهْلُ الْمَدِينَةِ، فَكَانَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم سَبَقَهُمْ عَلَى فَرَسٍ، وَقَالَ ‏"‏ وَجَدْنَاهُ بَحْرًا ‏"‏‏.‏


Chapter: Bravery and cowardice in the battle

Narrated Anas: The Prophet (PBUH) was the best, the bravest and the most generous of all the people. Once when the people of Medina got frightened, the Prophet (PBUH) rode a horse and went ahead of them and said, "We found this horse very fast." ھم سے احمد بن عبدالملک بن واقد نے بیان کیا ‘ کھا ھم سے حماد بن زید نے بیان کیا ثابت بنانی سے اور ان سے انس بن مالک رضی اللھ عنھ نے کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم سب سے زیادھ حسین ( خوبصورت ) سب سے زیادھ بھادر اور سب سے زیادھ فیاض تھے ‘ مدینھ طیبھ کے تمام لوگ ( ایک رات ) خوف زدھ تھے ( آواز سنائی دی تھی اور سب لوگ اس کی طرف بڑھ رھے تھے ) لیکن نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم اس وقت ایک گھوڑے پر سوار سب سے آگے تھے ( جب واپس ھوئے تو ) فرمایا اس گھوڑے کو ( دوڑنے میں ) ھم نے سمندر پایا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 56 Hadith no 2820
Web reference: Sahih Bukhari Volume 4 Book 52 Hadith no 74



@2019 Copyrights: if you have any objection regarding any shared content on pdf9.com please click here.