Search hadith by
Hadith Book
Search Query
Search Language
English Arabic Urdu
Search Type Basic    Case Sensitive
 

Sahih Bukhari

Hajj (Pilgrimage)

كتاب الحج

حَدَّثَنَا الْمَكِّيُّ بْنُ إِبْرَاهِيمَ، عَنِ ابْنِ جُرَيْجٍ، قَالَ عَطَاءٌ قَالَ جَابِرٌ ـ رضى الله عنه ـ أَمَرَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم عَلِيًّا ـ رضى الله عنه ـ أَنْ يُقِيمَ عَلَى إِحْرَامِهِ، وَذَكَرَ قَوْلَ سُرَاقَةَ‏.‏

Narrated Ata: Jabir said, "The Prophet (PBUH) ordered `Ali to keep on assuming his Ihram." The narrator then informed about the narration of Suraqa. ھم سے مکی بن ابراھیم نے بیان کیا ، ان سے ابن جریج نے ، ان سے عطاء بن ابی رباح نے بیان کیا کھ کھ جابر رضی اللھ عنھ نے فرمایا کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے حضرت علی رضی اللھ عنھ کو حکم دیا تھا کھ وھ اپنے احرام پر قائم رھیں ۔ انھوں نے سراقھ کا قول بھی ذکر کیا تھا ۔ اور محمد بن ابی بکر نے ابن جریج سے یوں روایت کیا کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے دریافت فرمایا علی ! تم نے کس چیز کا احرام باندھا ھے ؟ انھوں نے عرض کی نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے جس کا احرام باندھا ھو ( اسی کا میں نے بھی باندھا ھے ) آنحضور صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ پھر قربانی کر اور اپنی اسی حالت پر احرام جاری رکھ ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 25 Hadith no 1557
Web reference: Sahih Bukhari Volume 2 Book 26 Hadith no 628


حَدَّثَنَا الْحَسَنُ بْنُ عَلِيٍّ الْخَلاَّلُ الْهُذَلِيُّ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الصَّمَدِ، حَدَّثَنَا سَلِيمُ بْنُ حَيَّانَ، قَالَ سَمِعْتُ مَرْوَانَ الأَصْفَرَ، عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ قَدِمَ عَلِيٌّ ـ رضى الله عنه ـ عَلَى النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم مِنَ الْيَمَنِ فَقَالَ ‏"‏ بِمَا أَهْلَلْتَ ‏"‏‏.‏ قَالَ بِمَا أَهَلَّ بِهِ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم‏.‏ فَقَالَ ‏"‏ لَوْلاَ أَنَّ مَعِي الْهَدْىَ لأَحْلَلْتُ ‏"‏‏.‏ وَزَادَ مُحَمَّدُ بْنُ بَكْرٍ عَنِ ابْنِ جُرَيْجٍ قَالَ لَهُ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ بِمَا أَهْلَلْتَ يَا عَلِيُّ ‏"‏‏.‏ قَالَ بِمَا أَهَلَّ بِهِ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ فَأَهْدِ وَامْكُثْ حَرَامًا كَمَا أَنْتَ ‏"‏‏.‏

Narrated Anas bin Malik: `Ali came to the Prophet (p.b.u.h) from Yemen (to Mecca). The Prophet (PBUH) asked `Ali, "With what intention have you assumed Ihram?" `Ali replied, "I have assumed Ihram with the same intention as that of the Prophet." The Prophet (PBUH) said, "If I had not the Hadi with me I would have finished the Ihram." Muhammad bin Bakr narrated extra from Ibn Juraij, "The Prophet (PBUH) said to `Ali, "With what intention have you assumed the Ihram, O `Ali?" He replied, "With the same (intention) as that of the Prophet." The Prophet (PBUH) said, "Have a Hadi and keep your Ihram as it is." ھم سے حسن بن علی خلال ھذلی نے بیان کیا ، انھوں نے کھا کھ ھم سے عبدالصمد بن عبدالوارث نے بیان کیا ، انھوں نے کھا کھ ھم سے سلیم بن حیان نے بیان کیا ، انھوں نے کھا کھ میں نے مروان اصفر سے سنا اور ان سے انس بن مالک نے بیان کیا تھا کھ حضرت علی رضی اللھ عنھ یمن سے نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم کی خدمت میں حاضر ھوئے تو آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے پوچھا کھ کس طرح کا احرام باندھا ھے ؟ انھوں نے کھا کھ جس طرح کا آنحضور صلی اللھ علیھ وسلم نے باندھا ھو ۔ اس پر آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ اگر میرے ساتھ قربانی نھ ھوتی تو میں حلال ھو جاتا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 25 Hadith no 1558
Web reference: Sahih Bukhari Volume 2 Book 26 Hadith no 629


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ يُوسُفَ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، عَنْ قَيْسِ بْنِ مُسْلِمٍ، عَنْ طَارِقِ بْنِ شِهَابٍ، عَنْ أَبِي مُوسَى ـ رضى الله عنه ـ قَالَ بَعَثَنِي النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم إِلَى قَوْمٍ بِالْيَمَنِ فَجِئْتُ وَهْوَ بِالْبَطْحَاءِ فَقَالَ ‏"‏ بِمَا أَهْلَلْتَ ‏"‏‏.‏ قُلْتُ أَهْلَلْتُ كَإِهْلاَلِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ هَلْ مَعَكَ مِنْ هَدْىٍ ‏"‏‏.‏ قُلْتُ لاَ‏.‏ فَأَمَرَنِي فَطُفْتُ بِالْبَيْتِ وَبِالصَّفَا وَالْمَرْوَةِ ثُمَّ أَمَرَنِي فَأَحْلَلْتُ فَأَتَيْتُ امْرَأَةً مِنْ قَوْمِي فَمَشَطَتْنِي، أَوْ غَسَلَتْ رَأْسِي، فَقَدِمَ عُمَرُ ـ رضى الله عنه ـ فَقَالَ إِنْ نَأْخُذْ بِكِتَابِ اللَّهِ فَإِنَّهُ يَأْمُرُنَا بِالتَّمَامِ قَالَ اللَّهُ ‏{‏وَأَتِمُّوا الْحَجَّ وَالْعُمْرَةَ‏}‏ وَإِنْ نَأْخُذْ بِسُنَّةِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم فَإِنَّهُ لَمْ يَحِلَّ حَتَّى نَحَرَ الْهَدْىَ‏.‏

Narrated Abu Musa: The Prophet (PBUH) sent me to some people in Yemen and when I returned, I found him at Al-Batha. He asked me, "With what intention have you assumed Ihram (i.e. for Hajj or for Umra or for both?") I replied, "I have assumed Ihram with an intention like that of the Prophet." He asked, "Have you a Hadi with you?" I replied in the negative. He ordered me to perform Tawaf round the Ka`ba and between Safa and Marwa and then to finish my Ihram. I did so and went to a woman from my tribe who combed my hair or washed my head. Then, when `Umar came (i.e. became Caliph) he said, "If we follow Allah's Book, it orders us to complete Hajj and Umra; as Allah says: "Perform the Hajj and Umra for Allah." (2.196). And if we follow the tradition of the Prophet (PBUH) who did not finish his Ihram till he sacrificed his Hadi." ھم سے محمد بن یوسف فریابی نے بیان کیا ، کھا کھ ھم سے سفیان ثوری نے بیان کیا ، ان سے قیس بن مسلم نے ، ان سے طارق بن شھاب نے اور ان سے ابوموسیٰ اشعری نے کھ مجھے نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے میری قوم کے پاس یمن بھیجا تھا ۔ جب ( حجۃ الوداع کے موقع پر ) میں آیا تو آپ صلی اللھ علیھ وسلم سے بطحاء میں ملاقات ھوئی ۔ آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے دریافت فرمایا کھ کس کا احرام باندھا ھے ؟ میں نے عرض کی کھ آنحضور صلی اللھ علیھ وسلم نے جس کا باندھا ھو آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے پوچھا کیا تمھارے ساتھ قربانی ھے ؟ میں نے عرض کی کھ نھیں ، اس لیے آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے مجھے حکم دیا کھ میں بیت اللھ کا طواف ، صفا اور مروھ کی سعی کروں چنانچھ میں اپنی قوم کی ایک خاتون کے پاس آیا ۔ انھوں نے میرے سر کا کنگھا کیا یا میرا سرد ھویا ۔ پھر حضرت عمر رضی اللھ عنھ کا زمانھ آیا تو آپ نے فرمایا کھ اگر ھم اللھ کی کتاب پر عمل کریں تو وھ یھ حکم دیتی ھے کھ حج اور عمرھ پورا کرو ۔ اللھ تعالیٰ فرماتا ھے ’’ اور حج اور عمرھ پورا کرو اللھ کی رضا کے لیے ۔ “ اور اگر ھم آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کی سنت کو لیں تو آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے اس وقت تک احرام نھیں کھولا جب تک آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے قربانی سے فراغت نھیں حاصل فرمائی ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 25 Hadith no 1559
Web reference: Sahih Bukhari Volume 2 Book 26 Hadith no 630


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ، قَالَ حَدَّثَنِي أَبُو بَكْرٍ الْحَنَفِيُّ، حَدَّثَنَا أَفْلَحُ بْنُ حُمَيْدٍ، سَمِعْتُ الْقَاسِمَ بْنَ مُحَمَّدٍ، عَنْ عَائِشَةَ ـ رضى الله عنها ـ قَالَتْ خَرَجْنَا مَعَ رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم فِي أَشْهُرِ الْحَجِّ، وَلَيَالِي الْحَجِّ وَحُرُمِ الْحَجِّ، فَنَزَلْنَا بِسَرِفَ قَالَتْ فَخَرَجَ إِلَى أَصْحَابِهِ فَقَالَ ‏"‏ مَنْ لَمْ يَكُنْ مِنْكُمْ مَعَهُ هَدْىٌ فَأَحَبَّ أَنْ يَجْعَلَهَا عُمْرَةً فَلْيَفْعَلْ، وَمَنْ كَانَ مَعَهُ الْهَدْىُ فَلاَ ‏"‏‏.‏ قَالَتْ فَالآخِذُ بِهَا وَالتَّارِكُ لَهَا مِنْ أَصْحَابِهِ قَالَتْ فَأَمَّا رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم وَرِجَالٌ مِنْ أَصْحَابِهِ فَكَانُوا أَهْلَ قُوَّةٍ، وَكَانَ مَعَهُمُ الْهَدْىُ، فَلَمْ يَقْدِرُوا عَلَى الْعُمْرَةِ قَالَتْ فَدَخَلَ عَلَىَّ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم وَأَنَا أَبْكِي فَقَالَ ‏"‏ مَا يُبْكِيكِ يَا هَنْتَاهْ ‏"‏‏.‏ قُلْتُ سَمِعْتُ قَوْلَكَ لأَصْحَابِكَ فَمُنِعْتُ الْعُمْرَةَ‏.‏ قَالَ ‏"‏ وَمَا شَأْنُكِ ‏"‏‏.‏ قُلْتُ لاَ أُصَلِّي‏.‏ قَالَ ‏"‏ فَلاَ يَضِيرُكِ، إِنَّمَا أَنْتِ امْرَأَةٌ مِنْ بَنَاتِ آدَمَ كَتَبَ اللَّهُ عَلَيْكِ مَا كَتَبَ عَلَيْهِنَّ، فَكُونِي فِي حَجَّتِكِ، فَعَسَى اللَّهُ أَنْ يَرْزُقَكِيهَا ‏"‏‏.‏ قَالَتْ فَخَرَجْنَا فِي حَجَّتِهِ حَتَّى قَدِمْنَا مِنًى فَطَهَرْتُ، ثُمَّ خَرَجْتُ مِنْ مِنًى فَأَفَضْتُ بِالْبَيْتِ قَالَتْ ثُمَّ خَرَجَتْ مَعَهُ فِي النَّفْرِ الآخِرِ حَتَّى نَزَلَ الْمُحَصَّبَ، وَنَزَلْنَا مَعَهُ فَدَعَا عَبْدَ الرَّحْمَنِ بْنَ أَبِي بَكْرٍ فَقَالَ ‏"‏ اخْرُجْ بِأُخْتِكَ مِنَ الْحَرَمِ، فَلْتُهِلَّ بِعُمْرَةٍ ثُمَّ افْرُغَا، ثُمَّ ائْتِيَا هَا هُنَا، فَإِنِّي أَنْظُرُكُمَا حَتَّى تَأْتِيَانِي ‏"‏‏.‏ ـ قَالَتْ ـ فَخَرَجْنَا حَتَّى إِذَا فَرَغْتُ، وَفَرَغْتُ مِنَ الطَّوَافِ ثُمَّ جِئْتُهُ بِسَحَرَ فَقَالَ ‏"‏ هَلْ فَرَغْتُمْ ‏"‏‏.‏ فَقُلْتُ نَعَمْ‏.‏ فَآذَنَ بِالرَّحِيلِ فِي أَصْحَابِهِ، فَارْتَحَلَ النَّاسُ فَمَرَّ مُتَوَجِّهًا إِلَى الْمَدِينَةِ‏.‏ ضَيْرُ مِنْ ضَارَ يَضِيرُ ضَيْرًا، وَيُقَالُ ضَارَ يَضُورُ ضَوْرًا وَضَرَّ يَضُرُّ ضَرًّا‏.‏

Narrated Al-Qasim bin Muhammad: ' Aisha said, "We set out with Allah's Messenger (PBUH)s in the months of Hajj, and (in) the nights of Hajj, and at the time and places of Hajj and in a state of Hajj. We dismounted at Sarif (a village six miles from Mecca). The Prophet (PBUH) then addressed his companions and said, "Anyone who has not got the Hadi and likes to do Umra instead of Hajj may do so (i.e. Hajj-al-Tamattu`) and anyone who has got the Hadi should not finish the Ihram after performing ' `Umra). (i.e. Hajj-al-Qiran). Aisha added, "The companions of the Prophet (PBUH) obeyed the above (order) and some of them (i.e. who did not have Hadi) finished their Ihram after Umra." Allah's Messenger (PBUH) and some of his companions were resourceful and had the Hadi with them, they could not perform Umra (alone) (but had to perform both Hajj and Umra with one Ihram). Aisha added, "Allah's Messenger (PBUH) came to me and saw me weeping and said, "What makes you weep, O Hantah?" I replied, "I have heard your conversation with your companions and I cannot perform the Umra." He asked, "What is wrong with you?' I replied, ' I do not offer the prayers (i.e. I have my menses).' He said, ' It will not harm you for you are one of the daughters of Adam, and Allah has written for you (this state) as He has written it for them. Keep on with your intentions for Hajj and Allah may reward you that." Aisha further added, "Then we proceeded for Hajj till we reached Mina and I became clean from my menses. Then I went out from Mina and performed Tawaf round the Ka`ba." Aisha added, "I went along with the Prophet (PBUH) in his final departure (from Hajj) till he dismounted at Al-Muhassab (a valley outside Mecca), and we too, dismounted with him." He called ' `Abdur-Rahman bin Abu Bakr and said to him, ' Take your sister outside the sanctuary of Mecca and let her assume Ihram for ' `Umra, and when you had finished ' `Umra, return to this place and I will wait for you both till you both return to me.' " ' Aisha added, " So we went out of the sanctuary of Mecca and after finishing from the ' `Umra and the Tawaf we returned to the Prophet (PBUH) at dawn. He said, 'Have you performed the ' `Umra?' We replied in the affirmative. So he announced the departure amongst his companions and the people set out for the journey, and the Prophet: too left for Medina.'' ھم سے محمد بن بشار نے بیان کیا ، کھا کھ ھم سے ابوبکر حنفی نے بیان کیا ، کھا کھ ھم سے افلح بن حمید نے بیان کیا ، کھا کھ میں نے قاسم بن محمد سے سنا ، ان سے عائشھ رضی اللھ عنھا نے بیان کیا کھ ھم رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم کے ساتھ حج کے مھینوں میں حج کی راتوں میں اور حج کے دنوں میں نکلے ۔ پھر سرف میں جا کر اترے ۔ آپ نے بیان کیا کھ پھر نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے صحابھ کو خطاب فرمایا جس کے ساتھ ھدی نھ ھو اور وھ چاھتا ھو کھ اپنے احرام کو صرف عمرھ کا بنا لے تو اسے ایسا کر لینا چاھئے لیکن جس کے ساتھ قربانی ھے وھ ایسا نھ کرے ۔ حضرت عائشھ رضی اللھ عنھا نے بیان فرمایا کھ آنحضور صلی اللھ علیھ وسلم کے بعض اصحاب نے اس فرمان پر عمل کیا اور بعض نے نھیں کیا ۔ انھوں نے بیان کیا کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم اور آپ کے بعض اصحاب جو استطاعت و حوصلھ والے تھے ( کھ وھ احرام کے ممنوعات سے بچ سکتے تھے ۔ ) ان کے ساتھ ھدی بھی تھی ، اس لیے وھ تنھا عمرھ نھیں کر سکتے تھے ( پس انھوں نے احرام نھیں کھولا ) عائشھ رضی اللھ عنھا نے بیان کیا کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم میرے پاس تشریف لائے تو میں رو رھی تھی ۔ آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے پوچھا کھ ( اے بھولی بھالی عورت ! تو ) رو کیوں رھی ھے ؟ میں نے عرض کی کھ میں نے آپ کے اپنے صحابھ سے ارشاد کو سن لیا ، اب تو میں عمرھ نھ کر سکوں گی ۔ آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے پوچھا کیا بات ھے ؟ میں نے کھا میں نماز پڑھنے کے قابل نھ رھی ( یعنی حائضھ ھو گئی ) آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کوئی حرج نھیں ۔ آخر تم بھی تو آدم کی بیٹیوں کی طرح ایک عورت ھو اور اللھ نے تمھارے لیے بھی وھ مقدر کیا ھے جو تمام عورتوں کے لیے کیا ھے ۔ اس لیے ( عمرھ چھوڑ کر ) حج کرتی رھ اللھ تعالیٰ تمھیں جلد ھی عمرھ کی توفیق دیدے گا ۔ حضرت عائشھ رضی اللھ عنھا نے یھ بیان کیا کھ ھم حج کے لیے نکلے ۔ جب ھم ( عرفات سے ) منیٰ پھنچے تو میں پاک ھو گئی ۔ پھر منٰی سے جب میں نکلی تو بیت اللھ کا طواف الزیارۃ کیا ۔ آپ نے بیان کیا کھ آخر میں آنحضور صلی اللھ علیھ وسلم کے ساتھ جب واپس ھونے لگی تو آپ صلی اللھ علیھ وسلم وادی محصب میں آن کر اترے ۔ ھم بھی آپ صلی اللھ علیھ وسلم کے ساتھ ٹھھرے ۔ آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے عبدالرحمٰن بن ابی بکر کو بلا کر کھا کھ اپنی بھن کو لے کر حرم سے باھر جا اور وھاں سے عمرھ کا احرام باندھ پھر عمرھ سے فارغ ھو کر تم لوگ یھیں واپس آ جاؤ ، میں تمھارا انتظار کرتا رھوں گا ۔ عائشھ رضی اللھ عنھا نے بیان کیا کھ ھم ( آنحضور صلی اللھ علیھ وسلم کی ھدایت کے مطابق ) چلے اور جب میں اور میرے بھائی طواف سے فارغ ھو لیے تو میں سحری کے وقت آپ صلی اللھ علیھ وسلم کی خدمت میں پھنچی ۔ آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے پوچھا کھ فارغ ھو لیں ؟ میں نے کھا ھاں ۔ تب آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے اپنے ساتھیوں سے سفر شروع کر دینے کے لیے کھا ۔ سفر شروع ھو گیا اور آپ صلی اللھ علیھ وسلم مدینھ منورھ واپس ھو رھے تھے ۔ ابوعبداللھ ( امام بخاری ) نے کھا کھ جو «لايضيرک» ھے وھ «ضار يضير ضيراا» سے مشتق ھے ضار يضور ضورا» بھی استعمال ھوتا ھے ۔ اور جس روایت میں «لايضرک» ھے وھ «ضر يضر ضرا‏» سے نکلا ھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 25 Hadith no 1560
Web reference: Sahih Bukhari Volume 2 Book 26 Hadith no 631


حَدَّثَنَا عُثْمَانُ، حَدَّثَنَا جَرِيرٌ، عَنْ مَنْصُورٍ، عَنْ إِبْرَاهِيمَ، عَنِ الأَسْوَدِ، عَنْ عَائِشَةَ ـ رضى الله عنها ـ خَرَجْنَا مَعَ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم وَلاَ نُرَى إِلاَّ أَنَّهُ الْحَجُّ، فَلَمَّا قَدِمْنَا تَطَوَّفْنَا بِالْبَيْتِ، فَأَمَرَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم مَنْ لَمْ يَكُنْ سَاقَ الْهَدْىَ أَنْ يَحِلَّ، فَحَلَّ مَنْ لَمْ يَكُنْ سَاقَ الْهَدْىَ، وَنِسَاؤُهُ لَمْ يَسُقْنَ فَأَحْلَلْنَ، قَالَتْ عَائِشَةُ ـ رضى الله عنها ـ فَحِضْتُ فَلَمْ أَطُفْ بِالْبَيْتِ، فَلَمَّا كَانَتْ لَيْلَةُ الْحَصْبَةِ قَالَتْ يَا رَسُولَ اللَّهِ، يَرْجِعُ النَّاسُ بِعُمْرَةٍ وَحَجَّةٍ وَأَرْجِعُ أَنَا بِحَجَّةٍ قَالَ ‏"‏ وَمَا طُفْتِ لَيَالِيَ قَدِمْنَا مَكَّةَ ‏"‏‏.‏ قُلْتُ لاَ‏.‏ قَالَ ‏"‏ فَاذْهَبِي مَعَ أَخِيكِ إِلَى التَّنْعِيمِ، فَأَهِلِّي بِعُمْرَةٍ ثُمَّ مَوْعِدُكِ كَذَا وَكَذَا ‏"‏‏.‏ قَالَتْ صَفِيَّةُ مَا أُرَانِي إِلاَّ حَابِسَتَهُمْ‏.‏ قَالَ ‏"‏ عَقْرَى حَلْقَى، أَوَمَا طُفْتِ يَوْمَ النَّحْرِ ‏"‏‏.‏ قَالَتْ قُلْتُ بَلَى‏.‏ قَالَ ‏"‏ لاَ بَأْسَ، انْفِرِي ‏"‏‏.‏ قَالَتْ عَائِشَةُ ـ رضى الله عنها ـ فَلَقِيَنِي النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم وَهُوَ مُصْعِدٌ مِنْ مَكَّةَ، وَأَنَا مُنْهَبِطَةٌ عَلَيْهَا، أَوْ أَنَا مُصْعِدَةٌ وَهْوَ مُنْهَبِطٌ مِنْهَا‏.‏


Chapter: Hajj-at-Tamattu', Hajj-al-Qiran, and Hajj-al-Ifrad

Narrated Al-Aswad: ' Aisha said, We went out with the Prophet (from Medina) with the intention of performing Hajj only and when we reached Mecca we performed Tawaf round the Ka`ba and then the Prophet (PBUH) ordered those who had not driven the Hadi along with them to finish their Ihram. So the people who had not driven the Hadi along with them finished their Ihram. The Prophet's wives, too, had not driven the Hadi with them, so they too, finished their Ihram." `Aisha added, "I got my menses and could not perform Tawaf round the Ka`ba." So when it was the night of Hasba (i.e. when we stopped at Al-Muhassab), I said, 'O Allah's Messenger (PBUH)! Everyone is returning after performing Hajj and `Umra but I am returning after performing Hajj only.' He said, 'Didn't you perform Tawaf round the Ka`ba the night we reached Mecca?' I replied in the negative. He said, 'Go with your brother to Tan`im and assume the Ihram for `Umra, (and after performing it) come back to such and such a place.' On that Safiya said, 'I feel that I will detain you all.' The Prophet (PBUH) said, 'O 'Aqra Halqa! Didn't you perform Tawaf of the Ka`ba on the day of sacrifice? (i.e. Tawaf-al-ifada) Safiya replied in the affirmative. He said, (to Safiya). 'There is no harm for you to proceed on with us.' " `Aisha added, "(after returning from `Umra), the Prophet (PBUH) met me while he was ascending (from Mecca) and I was descending to it, or I was ascending and he was descending." ھم سے عثمان بن ابی شیبھ نے بیان کیا ، کھا کھ ھم سے جریر نے بیان کیا ، ان سے منصور نے ، ان سے ابراھیم نخعی نے ، ان سے اسود نے اور ان سے عائشھ رضی اللھ عنھا نے کھ ھم حج کے لیے رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم کے ساتھ نکلے ۔ ھماری نیت حج کے سوا اور کچھ نھ تھی ۔ جب ھم مکھ پھنچے تو ( اور لوگوں نے ) بیت اللھ کا طواف کیا ۔ آنحضور صلی اللھ علیھ وسلم کا حکم تھا کھ جو قربانی اپنے ساتھ نھ لایا ھو وھ حلال ھو جائے ۔ چنانچھ جن کے پاس ھدی نھ تھی وھ حلال ھو گئے ۔ ( افعال عمرھ کے بعد ) آنحضور صلی اللھ علیھ وسلم کی ازواج مطھرات ھدی نھیں لے گئی تھیں ، اس لیے انھوں نے بھی احرام کھول ڈالے ۔ عائشھ رضی اللھ عنھا نے کھا کھ میں حائضھ ھو گئی تھیں اس لیے بیت اللھ کا طواف نھ کر سکی ( یعنی عمرھ چھوٹ گیا اور حج کرتی چلی گئی ) جب محصب کی رات آئی ، میں نے کھا یا رسول اللھ ! اور لوگ تو حج اور عمرھ دونوں کر کے واپس ھو رھے ھیں لیکن میں صرف حج کر سکی ھوں ۔ اس پر آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ جب ھم مکھ آئے تھے تو تم طواف نھ کر سکی تھی ؟ میں نے کھا کھ نھیں ۔ آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ اپنے بھائی کے ساتھ تنعیم تک چلی جا اور وھاں سے عمرھ کا احرام باندھ ( پھر عمرھ ادا کر ) ھم لوگ تمھارا فلاں جگھ انتظار کریں گے اور صفیھ رضی اللھ عنھا نے کھا کھ معلوم ھوتا ھے میں بھی آپ ( لوگوں ) کو روکنے کا سبب بن جاؤں گی ۔ آنحضور صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا «عقرى حلقى» کیا تو نے یوم نحر کا طواف نھیں کیا تھا ؟ انھوں نے کھا کیوں نھیں میں تو طواف کر چکی ھوں ۔ آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا پھر کوئی حرج نھیں چل کوچ کر ۔ عائشھ رضی اللھ عنھا نے کھا کھ پھر میری ملاقات نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم سے ھوئی تو آپ صلی اللھ علیھ وسلم مکھ سے جاتے ھوئے اوپر کے حصھ پر چڑھ رھے تھے اور میں نشیب میں اتر رھی تھی یا یھ کھا کھ میں اوپر چڑھ رھی تھی اور آنحضور صلی اللھ علیھ وسلم اس چڑھاؤ کے بعد اتر رھے تھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 25 Hadith no 1561
Web reference: Sahih Bukhari Volume 2 Book 26 Hadith no 632


حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ يُوسُفَ، أَخْبَرَنَا مَالِكٌ، عَنْ أَبِي الأَسْوَدِ، مُحَمَّدِ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ نَوْفَلٍ عَنْ عُرْوَةَ بْنِ الزُّبَيْرِ، عَنْ عَائِشَةَ ـ رضى الله عنها ـ أَنَّهَا قَالَتْ خَرَجْنَا مَعَ رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم عَامَ حَجَّةِ الْوَدَاعِ، فَمِنَّا مَنْ أَهَلَّ بِعُمْرَةٍ، وَمِنَّا مَنْ أَهَلَّ بِحَجَّةٍ وَعُمْرَةٍ، وَمِنَّا مَنْ أَهَلَّ بِالْحَجِّ وَأَهَلَّ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم بِالْحَجِّ، فَأَمَّا مَنْ أَهَلَّ بِالْحَجِّ أَوْ جَمَعَ الْحَجَّ وَالْعُمْرَةَ لَمْ يَحِلُّوا حَتَّى كَانَ يَوْمُ النَّحْرِ‏.‏

Narrated `Aisha: We set out with Allah's Messenger (PBUH)s (to Mecca) in the year of the Prophet's Last Hajj. Some of us had assumed Ihram for `Umra only, some for both Hajj and `Umra, and others for Hajj only. Allah's Apostle assumed Ihram for Hajj. So whoever had assumed Ihram for Hajj or for both Hajj and `Umra did not finish the Ihram till the day of sacrifice. (See Hadith No. 631, 636, and 639). ھم سے عبداللھ بن یوسف نے بیان کیا ‘ انھوں نے کھا کھ ھمیں امام مالک نے خبر دی ، انھیں ابوالاسود محمد بن عبدالرحمٰن بن نوفل نے ، انھیں عروھ بن زبیر نے اور ان سے ام المؤمنین حضرت عائشھ صدیقھ رضی اللھ عنھا نے بیان کیا کھ ھم حجتھ الوداع کے موقع پر رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم کے ساتھ چلے ۔ کچھ لوگوں نے عمرھ کا احرام باندھا تھا ، کچھ نے حج اور عمرھ دونوں کا اور کچھ نے صرف حج کا ۔ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے ( پھلے ) صرف حج کا احرام باندھا تھا ، پھر آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے عمرھ بھی شریک کر لیا ، پھر جن لوگوں نے حج کا احرام باندھا تھا یا حج اور عمرھ دونوں کا ، ان کا احرام دسویں تاریخ تک نھ کھل سکا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 25 Hadith no 1562
Web reference: Sahih Bukhari Volume 2 Book 26 Hadith no 633



@2019 Copyrights: if you have any objection regarding any shared content on pdf9.com please click here.