Search hadith by
Hadith Book
Search Query
Search Language
English Arabic Urdu
Search Type Basic    Case Sensitive
 

Sahih Bukhari

Prophets

كتاب أحاديث الأنبياء

حَدَّثَنَا عَمْرُو بْنُ مُحَمَّدٍ، حَدَّثَنَا يَعْقُوبُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ، قَالَ حَدَّثَنِي أَبِي، عَنْ صَالِحٍ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ، أَنَّ عُبَيْدَ اللَّهِ بْنَ عَبْدِ اللَّهِ، أَخْبَرَهُ عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ، أَنَّهُ تَمَارَى هُوَ وَالْحُرُّ بْنُ قَيْسٍ الْفَزَارِيُّ فِي صَاحِبِ مُوسَى، قَالَ ابْنُ عَبَّاسٍ هُوَ خَضِرٌ، فَمَرَّ بِهِمَا أُبَىُّ بْنُ كَعْبٍ، فَدَعَاهُ ابْنُ عَبَّاسٍ، فَقَالَ إِنِّي تَمَارَيْتُ أَنَا وَصَاحِبِي، هَذَا فِي صَاحِبِ مُوسَى الَّذِي سَأَلَ السَّبِيلَ إِلَى لُقِيِّهِ، هَلْ سَمِعْتَ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم يَذْكُرُ شَأْنَهُ قَالَ نَعَمْ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم يَقُولُ ‏"‏ بَيْنَمَا مُوسَى فِي مَلإٍ مِنْ بَنِي إِسْرَائِيلَ جَاءَهُ رَجُلٌ، فَقَالَ هَلْ تَعْلَمُ أَحَدًا أَعْلَمَ مِنْكَ قَالَ لاَ‏.‏ فَأَوْحَى اللَّهُ إِلَى مُوسَى بَلَى عَبْدُنَا خَضِرٌ‏.‏ فَسَأَلَ مُوسَى السَّبِيلَ إِلَيْهِ، فَجُعِلَ لَهُ الْحُوتُ آيَةً، وَقِيلَ لَهُ إِذَا فَقَدْتَ الْحُوتَ فَارْجِعْ، فَإِنَّكَ سَتَلْقَاهُ‏.‏ فَكَانَ يَتْبَعُ الْحُوتَ فِي الْبَحْرِ، فَقَالَ لِمُوسَى فَتَاهُ أَرَأَيْتَ إِذْ أَوَيْنَا إِلَى الصَّخْرَةِ، فَإِنِّي نَسِيتُ الْحُوتَ، وَمَا أَنْسَانِيهِ إِلاَّ الشَّيْطَانُ أَنْ أَذْكُرَهُ‏.‏ فَقَالَ مُوسَى ذَلِكَ مَا كُنَّا نَبْغِ‏.‏ فَارْتَدَّا عَلَى آثَارِهِمَا قَصَصًا فَوَجَدَا خَضِرًا، فَكَانَ مِنْ شَأْنِهِمَا الَّذِي قَصَّ اللَّهُ فِي كِتَابِهِ ‏"‏‏.‏


Chapter: The story of Al-Khidr with Musa (Moses) alayhis-salam

Narrated Ibn `Abbas: That he differed with Al-Hur bin Qais Al-Fazari regarding the companion of Moses. Ibn `Abbas said that he was Al-Khadir. Meanwhile Ubai bin Ka`b passed by them and Ibn `Abbas called him saying, "My friend and I have differed regarding Moses' companion whom Moses asked the way to meet. Have you heard Allah's Messenger (PBUH) mentioning something about him?" He said, "Yes, I heard Allah's Apostle saying, 'While Moses was sitting in the company of some Israelites, a man came and asked (him), 'Do you know anyone who is more learned than you?' Moses replied, 'No.' So, Allah sent the Divine Inspiration to Moses: 'Yes, Our slave, Khadir (is more learned than you).' Moses asked how to meet him (i.e. Khadir). So, the fish, was made, as a sign for him, and he was told that when the fish was lost, he should return and there he would meet him. So, Moses went on looking for the sign of the fish in the sea. The servant boy of Moses said to him, 'Do you know that when we were sitting by the side of the rock, I forgot the fish, and t was only Satan who made me forget to tell (you) about it.' Moses said, That was what we were seeking after,' and both of them returned, following their footmarks and found Khadir; and what happened further to them, is mentioned in Allah's Book." ھم سے عمر بن محمد نے بیان کیا ‘ کھا ھم سے یعقوب بن ابراھیم نے بیان کیا ‘ کھا کھ مجھ سے میرے والد نے بیان کیا ‘ ان سے صالح نے ‘ ان سے ابن شھاب نے ‘ انھیں عبیداللھ بن عبداللھ نے خبر دی اور انھیں حضرت ابن عباس رضی اللھ عنھما نے کھ حر بن قیس فزاری رضی اللھ عنھ سے صاحب موسیٰ علیھ السلام کے بارے میں ان کا اختلاف ھوا ۔ پھر حضرت ابی بن کعب رضی اللھ عنھ وھاں سے گزرے تو عبداللھ بن عباس رضی اللھ عنھما نے انھیں بلایا اور کھا کھ میرا اپنے ان ساتھی سے صاحب موسیٰ کے بارے میں اختلاف ھو گیا ھے جن سے ملاقات کے لئے موسیٰ علیھ السلام نے راستھ پوچھا تھا ‘ کیا رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم سے آپ نے ان کے بارے میں کچھ سنا ھے ؟ انھوں نے فرمایا کھ جی ھاں ‘ میں نے حضور صلی اللھ علیھ وسلم کو یھ فرماتے سنا تھا کھ موسیٰ علیھ السلام نبی اسرائیل کی ایک جماعت میں تشریف رکھتے تھے کھ ایک شخص نے ان سے پوچھا ‘ کیا آپ کسی ایسے شخص کو جانتے ھیں جو اس تمام زمین پر آپ سے زیادھ علم رکھنے والا ھو ؟ انھوں نے فرمایا کھ نھیں ۔ اس پر اللھ تعالیٰ نے موسیٰ علیھ السلام پر وحی نازل کی کھ کیوں نھیں ‘ ھمارا بندھ خضر ھے ۔ موسیٰ علیھ السلام نے ان تک پھنچنے کا راستھ پوچھا تو انھیں مچھلی کو اس کی نشانی کے طور پر بتایا گیا اور کھا گیا کھ جب مچھلی گم ھو جائے ( تو جھاں گم ھوئی ھو وھاں ) واپس آ جانا وھیں ان سے ملاقات ھو گی ۔ چنانچھ موسیٰ علیھ السلام دریا میں ( سفر کے دوران ) مچھلی کی برابر نگرانی کرتے رھے ۔ پھر ان سے ان کے رفیق سفر نے کھا کھ آپ نے خیال نھیں کیا جب ھم چٹان کے پاس ٹھھرے تو میں مچھلی کے متعلق آپ کو بتانا بھول گیا تھا اور مجھے شیطان نے اسے یاد رکھنے سے غافل رکھا ۔ موسیٰ علیھ السلام نے فرمایا کھ اسی کی تو ھمیں تلاش ھے چنانچھ یھ بزرگ اسی راستے سے پیچھے کی طرف لوٹے اور حضرت خضر علیھ السلام سے ملاقات ھوئی ان دونوں کے ھی وھ حالات ھیں جنھیں اللھ تعالیٰ کی کتاب میں بیان فرمایا ھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 60 Hadith no 3400
Web reference: Sahih Bukhari Volume 4 Book 55 Hadith no 612


حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، حَدَّثَنَا عَمْرُو بْنُ دِينَارٍ، قَالَ أَخْبَرَنِي سَعِيدُ بْنُ جُبَيْرٍ، قَالَ قُلْتُ لاِبْنِ عَبَّاسٍ إِنَّ نَوْفًا الْبَكَالِيَّ يَزْعُمُ أَنَّ مُوسَى صَاحِبَ الْخَضِرِ لَيْسَ هُوَ مُوسَى بَنِي إِسْرَائِيلَ، إِنَّمَا هُوَ مُوسَى آخَرُ‏.‏ فَقَالَ كَذَبَ عَدُوُّ اللَّهِ حَدَّثَنَا أُبَىُّ بْنُ كَعْبٍ عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ أَنَّ مُوسَى قَامَ خَطِيبًا فِي بَنِي إِسْرَائِيلَ، فَسُئِلَ أَىُّ النَّاسِ أَعْلَمُ فَقَالَ أَنَا‏.‏ فَعَتَبَ اللَّهُ عَلَيْهِ إِذْ لَمْ يَرُدَّ الْعِلْمَ إِلَيْهِ‏.‏ فَقَالَ لَهُ بَلَى، لِي عَبْدٌ بِمَجْمَعِ الْبَحْرَيْنِ هُوَ أَعْلَمُ مِنْكَ‏.‏ قَالَ أَىْ رَبِّ وَمَنْ لِي بِهِ ـ وَرُبَّمَا قَالَ سُفْيَانُ أَىْ رَبِّ وَكَيْفَ لِي بِهِ ـ قَالَ تَأْخُذُ حُوتًا، فَتَجْعَلُهُ فِي مِكْتَلٍ، حَيْثُمَا فَقَدْتَ الْحُوتَ فَهْوَ ثَمَّ ـ وَرُبَّمَا قَالَ فَهْوَ ثَمَّهْ ـ وَأَخَذَ حُوتًا، فَجَعَلَهُ فِي مِكْتَلٍ، ثُمَّ انْطَلَقَ هُوَ وَفَتَاهُ يُوشَعُ بْنُ نُونٍ، حَتَّى أَتَيَا الصَّخْرَةَ، وَضَعَا رُءُوسَهُمَا فَرَقَدَ مُوسَى، وَاضْطَرَبَ الْحُوتُ فَخَرَجَ فَسَقَطَ فِي الْبَحْرِ، فَاتَّخَذَ سَبِيلَهُ فِي الْبَحْرِ سَرَبًا، فَأَمْسَكَ اللَّهُ عَنِ الْحُوتِ جِرْيَةَ الْمَاءِ، فَصَارَ مِثْلَ الطَّاقِ، فَقَالَ هَكَذَا مِثْلُ الطَّاقِ‏.‏ فَانْطَلَقَا يَمْشِيَانِ بَقِيَّةَ لَيْلَتِهِمَا وَيَوْمَهُمَا، حَتَّى إِذَا كَانَ مِنَ الْغَدِ قَالَ لِفَتَاهُ آتِنَا غَدَاءَنَا لَقَدْ لَقِينَا مِنْ سَفَرِنَا هَذَا نَصَبًا‏.‏ وَلَمْ يَجِدْ مُوسَى النَّصَبَ حَتَّى جَاوَزَ حَيْثُ أَمَرَهُ اللَّهُ‏.‏ قَالَ لَهُ فَتَاهُ أَرَأَيْتَ إِذْ أَوَيْنَا إِلَى الصَّخْرَةِ فَإِنِّي نَسِيتُ الْحُوتَ، وَمَا أَنْسَانِيهِ إِلاَّ الشَّيْطَانُ أَنْ أَذْكُرَهُ، وَاتَّخَذَ سَبِيلَهُ فِي الْبَحْرِ عَجَبًا، فَكَانَ لِلْحُوتِ سَرَبًا وَلَهُمَا عَجَبًا‏.‏ قَالَ لَهُ مُوسَى ذَلِكَ مَا كُنَّا نَبْغِي، فَارْتَدَّا عَلَى آثَارِهِمَا قَصَصًا، رَجَعَا يَقُصَّانِ آثَارَهُمَا حَتَّى انْتَهَيَا إِلَى الصَّخْرَةِ، فَإِذَا رَجُلٌ مُسَجًّى بِثَوْبٍ، فَسَلَّمَ مُوسَى، فَرَدَّ عَلَيْهِ‏.‏ فَقَالَ وَأَنَّى بِأَرْضِكَ السَّلاَمُ‏.‏ قَالَ أَنَا مُوسَى‏.‏ قَالَ مُوسَى بَنِي إِسْرَائِيلَ قَالَ نَعَمْ، أَتَيْتُكَ لِتُعَلِّمَنِي مِمَّا عُلِّمْتَ رَشَدًا‏.‏ قَالَ يَا مُوسَى إِنِّي عَلَى عِلْمٍ مِنْ عِلْمِ اللَّهِ، عَلَّمَنِيهِ اللَّهُ لاَ تَعْلَمُهُ وَأَنْتَ عَلَى عِلْمٍ مِنْ عِلْمِ اللَّهِ عَلَّمَكَهُ اللَّهُ لاَ أَعْلَمُهُ‏.‏ قَالَ هَلْ أَتَّبِعُكَ قَالَ ‏{‏إِنَّكَ لَنْ تَسْتَطِيعَ مَعِيَ صَبْرًا * وَكَيْفَ تَصْبِرُ عَلَى مَا لَمْ تُحِطْ بِهِ خُبْرًا‏}‏ إِلَى قَوْلِهِ ‏{‏إِمْرًا‏}‏ فَانْطَلَقَا يَمْشِيَانِ عَلَى سَاحِلِ الْبَحْرِ، فَمَرَّتْ بِهِمَا سَفِينَةٌ، كَلَّمُوهُمْ أَنْ يَحْمِلُوهُمْ، فَعَرَفُوا الْخَضِرَ، فَحَمَلُوهُ بِغَيْرِ نَوْلٍ، فَلَمَّا رَكِبَا فِي السَّفِينَةِ جَاءَ عُصْفُورٌ، فَوَقَعَ عَلَى حَرْفِ السَّفِينَةِ، فَنَقَرَ فِي الْبَحْرِ نَقْرَةً أَوْ نَقْرَتَيْنِ، قَالَ لَهُ الْخَضِرُ يَا مُوسَى، مَا نَقَصَ عِلْمِي وَعِلْمُكَ مِنْ عِلْمِ اللَّهِ إِلاَّ مِثْلَ مَا نَقَصَ هَذَا الْعُصْفُورُ بِمِنْقَارِهِ مِنَ الْبَحْرِ‏.‏ إِذْ أَخَذَ الْفَأْسَ فَنَزَعَ لَوْحًا، قَالَ فَلَمْ يَفْجَأْ مُوسَى إِلاَّ وَقَدْ قَلَعَ لَوْحًا بِالْقَدُّومِ‏.‏ فَقَالَ لَهُ مُوسَى مَا صَنَعْتَ قَوْمٌ حَمَلُونَا بِغَيْرِ نَوْلٍ، عَمَدْتَ إِلَى سَفِينَتِهِمْ فَخَرَقْتَهَا لِتُغْرِقَ أَهْلَهَا، لَقَدْ جِئْتَ شَيْئًا إِمْرًا‏.‏ قَالَ أَلَمْ أَقُلْ إِنَّكَ لَنْ تَسْتَطِيعَ مَعِيَ صَبْرًا‏.‏ قَالَ لاَ تُؤَاخِذْنِي بِمَا نَسِيتُ وَلاَ تُرْهِقْنِي مِنْ أَمْرِي عُسْرًا، فَكَانَتِ الأُولَى مِنْ مُوسَى نِسْيَانًا‏.‏ فَلَمَّا خَرَجَا مِنَ الْبَحْرِ مَرُّوا بِغُلاَمٍ يَلْعَبُ مَعَ الصِّبْيَانِ، فَأَخَذَ الْخَضِرُ بِرَأْسِهِ فَقَلَعَهُ بِيَدِهِ هَكَذَا ـ وَأَوْمَأَ سُفْيَانُ بِأَطْرَافِ أَصَابِعِهِ كَأَنَّهُ يَقْطِفُ شَيْئًا ـ فَقَالَ لَهُ مُوسَى أَقَتَلْتَ نَفْسًا زَكِيَّةً بِغَيْرِ نَفْسٍ لَقَدْ جِئْتَ شَيْئًا نُكْرًا‏.‏ قَالَ أَلَمْ أَقُلْ لَكَ إِنَّكَ لَنْ تَسْتَطِيعَ مَعِيَ صَبْرًا‏.‏ قَالَ إِنْ سَأَلْتُكَ عَنْ شَىْءٍ بَعْدَهَا فَلاَ تُصَاحِبْنِي، قَدْ بَلَغْتَ مِنْ لَدُنِّي عُذْرًا‏.‏ فَانْطَلَقَا حَتَّى إِذَا أَتَيَا أَهْلَ قَرْيَةٍ اسْتَطْعَمَا أَهْلَهَا فَأَبَوْا أَنْ يُضَيِّفُوهُمَا فَوَجَدَا فِيهَا جِدَارًا يُرِيدُ أَنْ يَنْقَضَّ مَائِلاً ـ أَوْمَأَ بِيَدِهِ هَكَذَا وَأَشَارَ سُفْيَانُ كَأَنَّهُ يَمْسَحُ شَيْئًا إِلَى فَوْقُ، فَلَمْ أَسْمَعْ سُفْيَانَ يَذْكُرُ مَائِلاً إِلاَّ مَرَّةً ـ قَالَ قَوْمٌ أَتَيْنَاهُمْ فَلَمْ يُطْعِمُونَا وَلَمْ يُضَيِّفُونَا عَمَدْتَ إِلَى حَائِطِهِمْ لَوْ شِئْتَ لاَتَّخَذْتَ عَلَيْهِ أَجْرًا‏.‏ قَالَ هَذَا فِرَاقُ بَيْنِي وَبَيْنِكَ، سَأُنَبِّئُكَ بِتَأْوِيلِ مَا لَمْ تَسْتَطِعْ عَلَيْهِ صَبْرًا‏"‏‏.‏ قَالَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ وَدِدْنَا أَنَّ مُوسَى كَانَ صَبَرَ، فَقَصَّ اللَّهُ عَلَيْنَا مِنْ خَبَرِهِمَا ‏"‏‏.‏ قَالَ سُفْيَانُ قَالَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ يَرْحَمُ اللَّهُ مُوسَى، لَوْ كَانَ صَبَرَ يُقَصُّ عَلَيْنَا مِنْ أَمْرِهِمَا ‏"‏‏.‏ وَقَرَأَ ابْنُ عَبَّاسٍ أَمَامَهُمْ مَلِكٌ يَأْخُذُ كُلَّ سَفِينَةٍ صَالِحَةٍ غَصْبًا، وَأَمَّا الْغُلاَمُ فَكَانَ كَافِرًا وَكَانَ أَبَوَاهُ مُؤْمِنَيْنِ‏.‏ ثُمَّ قَالَ لِي سُفْيَانُ سَمِعْتُهُ مِنْهُ مَرَّتَيْنِ وَحَفِظْتُهُ مِنْهُ‏.‏ قِيلَ لِسُفْيَانَ حَفِظْتَهُ قَبْلَ أَنْ تَسْمَعَهُ مِنْ عَمْرٍو، أَوْ تَحَفَّظْتَهُ مِنْ إِنْسَانٍ فَقَالَ مِمَّنْ أَتَحَفَّظُهُ وَرَوَاهُ أَحَدٌ عَنْ عَمْرٍو غَيْرِي سَمِعْتُهُ مِنْهُ مَرَّتَيْنِ أَوْ ثَلاَثًا وَحَفِظْتُهُ مِنْهُ‏.‏

Narrated Sa`id bin Jubair: I said to Ibn `Abbas, "Nauf Al-Bukah claims that Moses, the companion of Al-Khadir was not Moses (the prophet) of the children of Israel, but some other Moses." Ibn `Abbas said, "Allah's enemy (i.e. Nauf) has told a lie. Ubai bin Ka`b told us that the Prophet (PBUH) said, 'Once Moses stood up and addressed Bani Israel. He was asked who was the most learned man amongst the people. He said, 'I.' Allah admonished him as he did not attribute absolute knowledge to Him (Allah). So, Allah said to him, 'Yes, at the junction of the two seas there is a Slave of Mine who is more learned than you.' Moses said, 'O my Lord! How can I meet him?' Allah said, 'Take a fish and put it in a large basket and you will find him at the place where you will lose the fish.' Moses took a fish and put it in a basket and proceeded along with his (servant) boy, Yusha` bin Noon, till they reached the rock where they laid their heads (i.e. lay down). Moses slept, and the fish, moving out of the basket, fell into the sea. It took its way into the sea (straight) as in a tunnel. Allah stopped the flow of water over the fish and it became like an arch (the Prophet (PBUH) pointed out this arch with his hands). They travelled the rest of the night, and the next day Moses said to his boy (servant), 'Give us our food, for indeed, we have suffered much fatigue in this journey of ours.' Moses did not feel tired till he crossed that place which Allah had ordered him to seek after. His boy (servant) said to him, 'Do you know that when we were sitting near that rock, I forgot the fish, and none but Satan caused me to forget to tell (you) about it, and it took its course into the sea in an amazing way?.' So there was a path for the fish and that astonished them. Moses said, 'That was what we were seeking after.' So, both of them retraced their footsteps till they reached the rock. There they saw a man Lying covered with a garment. Moses greeted him and he replied saying, 'How do people greet each other in your land?' Moses said, 'I am Moses.' The man asked, 'Moses of Bani Israel?' Moses said, 'Yes, I have come to you so that you may teach me from those things which Allah has taught you.' He said, 'O Moses! I have some of the Knowledge of Allah which Allah has taught me, and which you do not know, while you have some of the Knowledge of Allah which Allah has taught you and which I do not know.' Moses asked, 'May I follow you?' He said, 'But you will not be able to remain patient with me for how can you be patient about things which you will not be able to understand?' (Moses said, 'You will find me, if Allah so will, truly patient, and I will not disobey you in aught.') So, both of them set out walking along the sea-shore, a boat passed by them and they asked the crew of the boat to take them on board. The crew recognized Al-Khadir and so they took them on board without fare. When they were on board the boat, a sparrow came and stood on the edge of the boat and dipped its beak once or twice into the sea. Al-Khadir said to Moses, 'O Moses! My knowledge and your knowledge have not decreased Allah's Knowledge except as much as this sparrow has decreased the water of the sea with its beak.' Then suddenly Al-Khadir took an adze and plucked a plank, and Moses did not notice it till he had plucked a plank with the adze. Moses said to him, 'What have you done? They took us on board charging us nothing; yet you I have intentionally made a hole in their boat so as to drown its passengers. Verily, you have done a dreadful thing.' Al-Khadir replied, 'Did I not tell you that you would not be able to remain patient with me?' Moses replied, 'Do not blame me for what I have forgotten, and do not be hard upon me for my fault.' So the first excuse of Moses was that he had forgotten. When they had left the sea, they passed by a boy playing with other boys. Al-Khadir took hold of the boys head and plucked it with his hand like this. (Sufyan, the sub narrator pointed with his fingertips as if he was plucking some fruit.) Moses said to him, "Have you killed an innocent person who has not killed any person? You have really done a horrible thing." Al-Khadir said, "Did I not tell you that you could not remain patient with me?' Moses said "If I ask you about anything after this, don't accompany me. You have received an excuse from me.' Then both of them went on till they came to some people of a village, and they asked its inhabitant for wood but they refused to entertain them as guests. Then they saw therein a wall which was just going to collapse (and Al Khadir repaired it just by touching it with his hands). (Sufyan, the sub-narrator, pointed with his hands, illustrating how Al-Khadir passed his hands over the wall upwards.) Moses said, "These are the people whom we have called on, but they neither gave us food, nor entertained us as guests, yet you have repaired their wall. If you had wished, you could have taken wages for it." Al-Khadir said, "This is the parting between you and me, and I shall tell you the explanation of those things on which you could not remain patient." The Prophet (PBUH) added, "We wished that Moses could have remained patient by virtue of which Allah might have told us more about their story. (Sufyan the sub-narrator said that the Prophet (PBUH) said, "May Allah bestow His Mercy on Moses! If he had remained patient, we would have been told further about their case.") ھم سے علی بن عبداللھ مدینی نے بیان کیا ‘ کھا ھم سے سفیان بن عیینھ نے بیان کیا ‘ کھا ھم سے عمرو بن دینار نے بیان کیا ‘ کھا کھ مجھے سعید بن جبیر نے خبر دی ‘ انھوں نے کھا کھ میں نے ابن عباس رضی اللھ عنھما سے عرض کیا کھ نوف بکالی یھ کھتا ھے کھ موسیٰ ‘ صاحب خضر بنی اسرائیل کے موسیٰ نھیں ھیں بلکھ وھ دوسرے موسیٰ ھیں ۔ حضرت ابن عباس رضی اللھ عنھما نے کھا کھ دشمن خدا نے بالکل غلط بات کھی ھے ۔ حضرت ابی بن کعب رضی اللھ عنھ نے نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم سے روایت کرتے ھوئے ھم سے بیان کیا کھ موسیٰ علیھ السلام نبی اسرائیل کو کھڑے ھو کر خطاب فرما رھے تھے کھ ان سے پوچھا گیا کون سا شخص سب سے زیادھ علم والا ھے ‘ انھوں نے فرمایا کھ میں ۔ اس پر اللھ تعالیٰ نے ان پر عتاب فرمایا کیونکھ انھوں علم کی نسبت اللھ تعالیٰ کی طرف نھیں کی ۔ اللھ تعالیٰ نے ان سے فرمایا کھ کیوں نھیں میرا ایک بندھ ھے جھاں دو دریا آ کر ملتے ھیں وھاں رھتا ھے اور تم سے زیادھ علم والا ھے ۔ انھوں نے عرض کیا اے رب العالمین ! میں ان سے کس طرح مل سکوں گا ؟ سفیان نے ( اپنی روایت میں یھ الفاظ ) بیان کئے کھ ” اے رب ! ” وکیف لی بھ “ اللھ تعالیٰ نے فرمایا کھ ایک مچھلی پکڑ کر اسے اپنے تھیلے میں رکھ لینا ‘ جھاں وھ مچھلی گم ھو جائے بس میرا بندھ وھیں تم کو ملے گا ۔ بعض دفعھ راوی نے ( بجائے فھوثم کے ) فھوثمھ کھا ۔ چنانچھ موسیٰ علیھ السلام نے مچھلی لے لی اور اسے ایک تھیلے میں رکھ لیا ۔ پھر وھ اور ایک ان کے رفیق سفر یوشع بن نون روانھ ھوئے ‘ جب یھ چٹان پر پھنچے تو سر سے ٹیک لگالی ‘ موسیٰ علیھ السلام کو نیند آ گئی اور مچھلی تڑپ کر نکلی اور دریا کے اندر چلی گئی اور اس نے دریا میں اپنا راستھ بنا لیا ۔ اللھ تعالیٰ نے مچھلی سے پانی کے بھاؤ کو روک دیا اور وھ محراب کی طرح ھو گئی ‘ انھوں نے واضح کیا کھ یوں محراب کی طرح ۔ پھر یھ دونوں اس دن اور رات کے باقی حصے میں چلتے رھے ‘ جب دوسرا دن آیا تو موسیٰ علیھ السلام نے اپنے رفیق سفر سے فرمایا کھ اب ھمارا کھانا لاؤ کیونکھ ھم اپنے سفر میں بھت تھک گئے ھیں ۔ موسیٰ علیھ السلام نے اس وقت تک کوئی تھکان محسوس نھیں کی تھی جب تک وھ اس مقررھ جگھ سے آگے نھ بڑھ گئے جس کا اللھ تعالیٰ نے انھیں حکم دیا تھا ۔ ان کے رفیق نے کھا کھ دیکھئیے تو سھی جب چٹان پر اترے تھے تو میں مچھلی ( کے متعلق کھنا ) آپ سے بھول گیا اور مجھے اس کی یاد سے شیطان نے غافل رکھا اور اس مچھلی نے تو وھیں ( چٹان کے قریب ) دریا میں اپنا راستھ عجیب طور پر بنا لیا تھا ۔ مچھلی کو تو راستھ مل گیا اور یھ دونوں حیران تھے ۔ موسیٰ علیھ السلام نے فرمایا کھ یھی وھ جگھ تھی جس کی تلاش میں ھم نکلے ھیں ۔ چنانچھ یھ دونوں اسی راستے سے پیچھے کی طرف واپس ھوئے اور جب اس چٹان پر پھنچے تو وھاں ایک بزرگ اپنا سارا جسم ایک کپڑے میں لپیٹے ھوئے موجود تھے ۔ حضرت موسیٰ علیھ السلام نے انھیں سلام کیا اور انھوں نے جواب دیا پھر کھا کھ تمھارے خطے میں سلام کا رواج کھاں سے آ گیا ؟ موسیٰ علیھ اسلام نے فرمایا کھ میں موسیٰ ھوں ۔ انھوں نے پوچھا ‘ بنی اسرائیل کے موسیٰ ؟ فرمایا کھ جی ھاں ۔ میں آپ کی خدمت میں اس لئے حاضر ھوا ھوں کھ آپ مجھے وھ علم نافع سکھا دیں جو آپ کو سکھایا گیا ھے ۔ انھوں نے فرمایا اے موسیٰ ! میرے پاس اللھ کا دیا ھوا ایک علم ھے اللھ تعالیٰ نے مجھے وھ علم سکھایا ھے اور آپ اس کو نھیں جانتے ۔ اسی طرح آپ کے پاس اللھ کا دیا ھوا ایک علم ھے اللھ تعالیٰ نے آپ کو سکھایا ھے اور میں اسے نھیں جانتا ۔ موسیٰ علیھ السلام نے کھا کیا میں آپ کے ساتھ رھ سکتا ھوں انھوں نے کھا کھ آپ میرے ساتھ صبر نھیں کر سکیں گے اور واقعی آپ ان کاموں کے بارے میں صبر کر بھی کیسے سکتے ھیں جو آپ کے علم میں نھیں ھیں ۔ اللھ تعالیٰ کے ارشاد امراًتک آخر موسیٰ اور خضر علیھم السلام دریا کے کنارے کنارے چلے ۔ پھر ان کے قریب سے ایک کشتی گزری ۔ ان حضرات نے کھا کھ انھیں بھی کشتی والے کشتی پر سوار کر لیں ۔ کشتی والوں نے حضرت خضر علیھ السلام کو پھچان لیا اور کوئی مزدوری لئے بغیر ان کو سوار کر لیا ۔ جب یھ حضرات اس پر سوار ھو گئے تو ایک چڑیا آئی اور کشتی کے ایک کنارے بیٹھ کر اس نے پانی میں اپنی چونچ کو ایک یا دو مرتبھ ڈالا ۔ خضر علیھ السلام نے فرمایا اے موسیٰ ! میرے اور آپ کے علم کی وجھ سے اللھ کے علم میں اتنی بھی کمی نھیں ھوئی جتنی اس چڑیا کے دریا میں چونچ مارنے سے دریا کے پانی میں کمی ھوئی ھو گی ۔ اتنے میں خضر علیھ السلام نے کلھاڑی اٹھائی اور اس کشتی میں سے ایک تختھ نکال لیا ۔ موسیٰ علیھ السلام نے جو نظر اٹھائی تو وھ اپنی کلھاڑی سے تختھ نکال چکے تھے ۔ اس پر حضرت موسیٰ علیھ السلام بول پڑے کھ یھ آپ نے کیا کیا ؟ جن لوگوں نے ھمیں بغیر کسی اجرت کے سوار کر لیا انھیں کی کشتی پر آپ نے بری نظر ڈالی اور اسے چیر دیا کھ سارے کشتی والے ڈوب جائیں ۔ اس میں کوئی شبھ نھیں کھ آپ نے نھایت ناگوار کام کیا ۔ حضرت خضر علیھ السلام نے فرمایا ‘ کیا میں نے آپ سے پھلے ھی نھیں کھھ دیا تھا کھ آپ میرے ساتھ صبر نھیں کر سکتے ۔ موسیٰ علیھ السلام نے فرمایا کھ ( یھ بےصبری اپنے وعدھ کو بھول جانے کی وجھ سے ھوئی ‘ اس لئے ) آپ اس چیز کا مجھ سے مواخذھ نھ کریں جو میں بھول گیا تھا اور میرے معاملے میں تنگی نھ فرمائیں ۔ یھ پھلی بات حضرت موسیٰ علیھ السلام سے بھول کر ھوئی تھی پھر جب دریائی سفر ختم ھوا تو ان کا گزر ایک بچے کے پاس سے ھوا جو دوسرے بچوں کے ساتھ کھیل رھا تھا ۔ حضرت خضر علیھ السلام نے اس کا سر پکڑ کر اپنے ھاتھ سے ( ڈھر سے ) جدا کر دیا ۔ سفیان نے اپنے ھاتھ سے ( جدا کرنے کی کیفیت بتانے کے لئے ) اشارھ کیا جیسے وھ کوئی چیز توڑ رھے ھوں ۔ اس پر حضرت موسیٰ علیھ السلام نے فرمایا کھ آپ نے ایک جان کو ضائع کر دیا ۔ کسی دوسری جان کے بدلے میں بھی یھ نھیں تھا ۔ بلاشبھ آپ نے ایک برا کام کیا ۔ خضر علیھ السلام نے فرمایا ‘ کیا میں نے آپ سے پھلے ھی نھیں کھا تھا کھ آپ میرے ساتھ صبر نھیں کر سکتے ۔ حضرت موسیٰ علیھ السلام نے کھا اچھا اس کے بعد اگر میں نے آپ سے کوئی بات پوچھی تو پھر آپ مجھے ساتھ نھ لے چلئے گا ، بیشک آپ میرے بارے میں حد عذر کو پھنچ چکے ھیں ۔ پھر یھ دونوں آگے بڑھے اور جب ایک بستی میں پھنچے تو بستی والوں سے کھا کھ وھ انھیں اپنا مھمان بنا لیں ‘ لیکن انھوں نے انکار کیا ۔ پھر اس بستی میں انھیں ایک دیوار دکھائی دی جو بس گرنے ھی والی تھی ۔ خضر علیھ السلام نے اپنے ھاتھ سے یوں اشارھ کیا ۔ سفیان نے ( کیفیت بتانے کے لئے ) اس طرح اشارھ کیا جیسے وھ کوئی چیز اوپر کی طرف پھیر رھے ھوں ۔ میں نے سفیان سے ” مائلا “ کا لفظ صرف ایک مرتبھ سنا تھا ۔ حضرت موسیٰ علیھ السلام نے کھا کھ یھ لوگ تو ایسے تھے کھ ھم ان کے یھاں آئے اور انھوں نے ھماری میزبانی سے بھی انکار کیا ۔ پھر ان کی دیوار آپ نے ٹھیک کر دی ‘ اگر آپ چاھتے تو اس کی اجرت ان سے لے سکتے تھے ۔ حضرت خضر علیھ السلام نے فرمایا کھ بس یھاں سے میرے اور آپ کے درمیان جدائی ھو گئی جن باتوں پر آپ صبر نھیں کر سکتے ‘ میں ان کی تاویل و توجیھ اب تم پر واضح کر دوں گا ۔ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا ھماری تو خواھش یھ تھی کھ موسیٰ علیھ السلام صبر کرتے اور اللھ تعالیٰ تکوینی واقعات ھمارے لئے بیان کرتا ۔ سفیان نے بیان کیا کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا ‘ اللھ حضرت موسیٰ علیھ السلام پر رحم کرے ‘ اگر انھوں نے صبر کیا ھوتا تو ان کے ( مزید واقعات ) ھمیں معلوم ھوتے حضرت ابن عباس رضی اللھ عنھما نے ( جمھور کی قرآت ورائھمکے بجائے ) ” امامھم ملک یاخذ کل سفینۃ غضبا “ پڑھا ھے ۔ اور وھ بچھ ( جس کی حضرت خضر علیھ السلام نے جان لی تھی ) کافر تھا اور اس کے والدین مومن تھے ۔ پھر مجھ سے سفیان نے بیان کیا کھ میں نے یھ حدیث عمرو بن دینار سے دو مرتبھ سنی تھی اور انھیں سے ( سن کر ) یاد کی تھی ۔ سفیان نے کسی سے پوچھا تھا کھ کیا یھ حدیث آپ نے عمرو بن دینار سے سننے سے پھلے ھی کسی دوسرے شخص سے سن کر ( جس نے عمرو بن دینار سے سنی ھو ) یاد کی تھی ؟ یا ( اس کے بجائے یھ جملھ کھا ) ”تحفظتھ من انسان دو مرتبھ “ ( شک علی بن عبداللھ کو تھا ) تو سفیان نے کھا کھ دوسرے کسی شخص سے سن کر میں یاد کرتا ‘ کیا اس حدیث کو عمرو بن دینار سے میرے سوا کسی اور نے بھی روایت کیا ھے ؟ میں نے ان سے یھ حدیث دو یا تین مرتبھ سنی اور انھیں سے سن کر یاد کی ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 60 Hadith no 3401
Web reference: Sahih Bukhari Volume 4 Book 55 Hadith no 613


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ سَعِيدٍ الأَصْبَهَانِيُّ، أَخْبَرَنَا ابْنُ الْمُبَارَكِ، عَنْ مَعْمَرٍ، عَنْ هَمَّامِ بْنِ مُنَبِّهٍ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ـ رضى الله عنه ـ عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ إِنَّمَا سُمِّيَ الْخَضِرُ أَنَّهُ جَلَسَ عَلَى فَرْوَةٍ بَيْضَاءَ فَإِذَا هِيَ تَهْتَزُّ مِنْ خَلْفِهِ خَضْرَاءَ ‏"‏‏.‏

Narrated Abu Huraira: The Prophet (PBUH) said, "Al-Khadir was named so because he sat over a barren white land, it turned green with plantation after (his sitting over it." ھم سے محمد بن سعید اصبھانی نے بیان کیا ‘ کھا ھم کو عبداللھ بن مبارک نے خبر دی ‘ انھیں معمر نے ‘ انھیں ھمام بن منبھ نے اور انھیں حضرت ابوھریرھ رضی اللھ عنھ نے کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا ‘ خضر علیھ السلام کا یھ نام اس وجھ سے ھوا کھ وھ ایک سوکھی زمین ( جھاں سبزی کا نام بھی نھ تھا ) پر بیٹھے ۔ لیکن جوں ھی وھ وھاں سے اٹھے تو وھ جگھ سرسبز ھو کر لھلھانے لگی ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 60 Hadith no 3402
Web reference: Sahih Bukhari Volume 4 Book 55 Hadith no 614


حَدَّثَنِي إِسْحَاقُ بْنُ نَصْرٍ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ، عَنْ مَعْمَرٍ، عَنْ هَمَّامِ بْنِ مُنَبِّهٍ، أَنَّهُ سَمِعَ أَبَا هُرَيْرَةَ ـ رضى الله عنه ـ يَقُولُ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ قِيلَ لِبَنِي إِسْرَائِيلَ ادْخُلُوا الْبَابَ سُجَّدًا وَقُولُوا حِطَّةٌ‏.‏ فَبَدَّلُوا فَدَخَلُوا يَزْحَفُونَ عَلَى أَسْتَاهِهِمْ، وَقَالُوا حَبَّةٌ فِي شَعْرَةٍ ‏"‏‏.‏

Narrated Abu Huraira: Allah's Messenger (PBUH) said, "It was said to Bani Israel, Enter the gate (of the town) with humility (prostrating yourselves) and saying: "Repentance", but they changed the word and entered the town crawling on their buttocks and saying: "A wheat grain in the hair." مجھ سے اسحاق بن نصرنے بیان کیا ، کھا ھم سے عبدالرزاق نے بیان کیا ‘ ان سے معمر نے ‘ ان سے ھمام بن منبھ نے اور انھوں نے حضرت ابوھریرھ رضی اللھ عنھ سے سنا ۔ انھوں نے بیان کیا کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا ‘ نبی اسرائیل کو حکم ھوا تھا کھ بیت المقدس میں سجدھ و رکوع کرتے ھوئے داخل ھوں اور یھ کھتے ھوئے کھ یا اللھ ! ھم کو بخش دے ۔ لیکن انھوں نے اس کو الٹا کیا اور اپنے چوتڑوں کے بل گھسٹتے ھوئے داخل ھوئے اور یھ کھتے ھوئے ” حبۃ فی شعرھ “ ( یعنی بالیوں میں دانے خوب ھوں ) داخل ھوئے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 60 Hadith no 3403
Web reference: Sahih Bukhari Volume 4 Book 55 Hadith no 615


حَدَّثَنِي إِسْحَاقُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ، حَدَّثَنَا رَوْحُ بْنُ عُبَادَةَ، حَدَّثَنَا عَوْفٌ، عَنِ الْحَسَنِ، وَمُحَمَّدٍ، وَخِلاَسٍ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ إِنَّ مُوسَى كَانَ رَجُلاً حَيِيًّا سِتِّيرًا، لاَ يُرَى مِنْ جِلْدِهِ شَىْءٌ، اسْتِحْيَاءً مِنْهُ، فَآذَاهُ مَنْ آذَاهُ مِنْ بَنِي إِسْرَائِيلَ، فَقَالُوا مَا يَسْتَتِرُ هَذَا التَّسَتُّرَ إِلاَّ مِنْ عَيْبٍ بِجِلْدِهِ، إِمَّا بَرَصٌ وَإِمَّا أُدْرَةٌ وَإِمَّا آفَةٌ‏.‏ وَإِنَّ اللَّهَ أَرَادَ أَنْ يُبَرِّئَهُ مِمَّا قَالُوا لِمُوسَى فَخَلاَ يَوْمًا وَحْدَهُ فَوَضَعَ ثِيَابَهُ عَلَى الْحَجَرِ ثُمَّ اغْتَسَلَ، فَلَمَّا فَرَغَ أَقْبَلَ إِلَى ثِيَابِهِ لِيَأْخُذَهَا، وَإِنَّ الْحَجَرَ عَدَا بِثَوْبِهِ، فَأَخَذَ مُوسَى عَصَاهُ وَطَلَبَ الْحَجَرَ، فَجَعَلَ يَقُولُ ثَوْبِي حَجَرُ، ثَوْبِي حَجَرُ، حَتَّى انْتَهَى إِلَى مَلإٍ مِنْ بَنِي إِسْرَائِيلَ، فَرَأَوْهُ عُرْيَانًا أَحْسَنَ مَا خَلَقَ اللَّهُ، وَأَبْرَأَهُ مِمَّا يَقُولُونَ، وَقَامَ الْحَجَرُ فَأَخَذَ ثَوْبَهُ فَلَبِسَهُ، وَطَفِقَ بِالْحَجَرِ ضَرْبًا بِعَصَاهُ، فَوَاللَّهِ إِنَّ بِالْحَجَرِ لَنَدَبًا مِنْ أَثَرِ ضَرْبِهِ ثَلاَثًا أَوْ أَرْبَعًا أَوْ خَمْسًا، فَذَلِكَ قَوْلُهُ ‏{‏يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا لاَ تَكُونُوا كَالَّذِينَ آذَوْا مُوسَى فَبَرَّأَهُ اللَّهُ مِمَّا قَالُوا وَكَانَ عِنْدَ اللَّهِ وَجِيهًا‏}‏‏.‏‏"‏

Narrated Abu Huraira: Allah's Messenger (PBUH) said, "(The Prophet) Moses was a shy person and used to cover his body completely because of his extensive shyness. One of the children of Israel hurt him by saying, 'He covers his body in this way only because of some defect in his skin, either leprosy or scrotal hernia, or he has some other defect.' Allah wished to clear Moses of what they said about him, so one day while Moses was in seclusion, he took off his clothes and put them on a stone and started taking a bath. When he had finished the bath, he moved towards his clothes so as to take them, but the stone took his clothes and fled; Moses picked up his stick and ran after the stone saying, 'O stone! Give me my garment!' Till he reached a group of Bani Israel who saw him naked then, and found him the best of what Allah had created, and Allah cleared him of what they had accused him of. The stone stopped there and Moses took and put his garment on and started hitting the stone with his stick. By Allah, the stone still has some traces of the hitting, three, four or five marks. This was what Allah refers to in His Saying:-- "O you who believe! Be you not like those Who annoyed Moses, But Allah proved his innocence of that which they alleged, And he was honorable In Allah's Sight." (33.69) مجھ سے اسحاق بن ابراھیم نے بیان کیا ‘ کھا ھم سے روح بن عبادھ نے بیان کیا ‘ ان سے عوف بن ابو جمیلھ نے بیان کیا ‘ ان سے امام حسن بصری اور محمد بن سیرین اور خلاس بن عمرو نے اور ان سے حضرت ابوھریرھ رضی اللھ عنھ نے بیان کیا کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ حضرت موسیٰ علیھ السلام بڑے ھی شرم والے اور بدن ڈھانپنے والے تھے ۔ ان کی حیاء کی وجھ سے ان کے بدن کو کوئی حصھ بھی نھیں دیکھا جا سکتا تھا ۔ بنی اسرائیل کے جو لوگ انھیں اذیت پھنچانے کے درپے تھے ‘ وھ کیوں باز رھ سکتے تھے ‘ ان لوگوں نے کھنا شروع کیا کھ اس درجھ بدن چھپانے کا اھتمام صرف اس لئے ھے کھ ان کے جسم میں عیب ھے یا کوڑھ ھے یا ان کے خصیتین بڑھے ھوئے ھیں یا پھر کوئی اور بیماری ھے ۔ ادھر اللھ تعالیٰ کو یھ منظور ھوا کھ موسیٰ علیھ السلام کی ان کی ھفوات سے پاکی دکھلائے ۔ ایک دن حضرت موسیٰ علیھ السلام اکیلے غسل کرنے کے لئے آئے ایک پتھر پر اپنے کپڑے ( اتار کر ) رکھ دیئے ۔ پھر غسل شروع کیا ۔ جب فارغ ھوئے تو کپڑے اٹھانے کے لئے بڑھے لیکن پتھر ان کے کپڑوں سمیت بھاگنے لگا ۔ حضرت موسیٰ علیھ السلام نے اپنا عصا اٹھایا اور پتھر کے پیچھے دوڑے ۔ یھ کھتے ھوئے کھ پتھر ! میرا کپڑا دیدے ۔ آخر نبی اسرائیل کی ایک جماعت تک پھنچ گئے اور ان سب نے آپ کو ننگا دیکھ لیا ‘ اللھ کی مخلوق میں سب سے بھتر حالت میں اور اس طرح اللھ تعالیٰ نے ان کی تھمت سے ان کی برات کر دی ۔ اب پتھر بھی رک گیا اور آپ نے کپڑا اٹھا کر پھنا ۔ پھر پتھر کو اپنے عصا سے مارنے لگے ۔ خدا کی قسم اس پتھر پر حضرت موسیٰ علیھ السلام کے مارنے کی وجھ سے تین یا چار یا پانچ جگھ نشان پڑ گئے تھے ۔ اللھ تعالیٰ کے اس فرمان ” تم ان کی طرح نھ ھو جانا جنھوں نے موسیٰ علیھ السلام کو اذیت دی تھی ‘ پھر ان کی تھمت سے اللھ تعالیٰ نے انھیں بری قرار دیا اور وھ اللھ کی بارگاھ میں بڑی شان والے اور عزت والے تھے ۔ “ میں اسی واقعھ کی طرف اشارھ ھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 60 Hadith no 3404
Web reference: Sahih Bukhari Volume 4 Book 55 Hadith no 616


حَدَّثَنَا أَبُو الْوَلِيدِ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، عَنِ الأَعْمَشِ، قَالَ سَمِعْتُ أَبَا وَائِلٍ، قَالَ سَمِعْتُ عَبْدَ اللَّهِ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ قَسَمَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم قَسْمًا، فَقَالَ رَجُلٌ إِنَّ هَذِهِ لَقِسْمَةٌ مَا أُرِيدَ بِهَا وَجْهُ اللَّهِ‏.‏ فَأَتَيْتُ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم فَأَخْبَرْتُهُ، فَغَضِبَ حَتَّى رَأَيْتُ الْغَضَبَ فِي وَجْهِهِ، ثُمَّ قَالَ ‏"‏ يَرْحَمُ اللَّهُ مُوسَى قَدْ أُوذِيَ بِأَكْثَرَ مِنْ هَذَا فَصَبَرَ ‏"‏‏.‏

Narrated `Abdullah: Once the Prophet (PBUH) distributed something (among his followers. A man said, "This distribution has not been done (with justice) seeking Allah's Countenance." I went to the Prophet (PBUH) and told him (of that). He became so angry that I saw the signs of anger oh his face. Then he said, "May Allah bestow His Mercy on Moses, for he was harmed more (in a worse manner) than this; yet he endured patiently." ھم سے ابو الولید نے بیان کیا ‘ کھا ھم سے شعبھ نے بیان کیا ‘ ان سے اعمش نے بیان کیا کھ میں نے ابووائل سے سنا‘انھوں نے بیان کیا کھ میں نے حضرت عبداللھ بن مسعود رضی اللھ عنھما سے سنا ‘ وھ کھتے تھے کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے ایک مرتبھ مال تقسیم کیا ‘ ایک شخص نے کھا کھ یھ ایک ایسی تقسیم ھے جس میں اللھ کی رضا جوئی کا کوئی لحاظ نھیں کیا گیا ۔ میں نے آنحضور صلی اللھ علیھ وسلم کی خدمت میں حاضر ھو کر آپ کو اس کی خبر دی ۔ آپ غصھ ھوئے اور میں نے آپ کے چھرھ مبارک پر غصے کے آثار دیکھے ۔ پھر فرمایا ‘ اللھ تعالیٰ حضرت موسیٰ علیھ السلام پر رحم فرمائے ‘ ان کو اس سے بھی زیادھ تکلیف دی گئی تھی مگر انھوں نے صبر کیا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 60 Hadith no 3405
Web reference: Sahih Bukhari Volume 4 Book 55 Hadith no 617



@2019 Copyrights: if you have any objection regarding any shared content on pdf9.com please click here.