Search hadith by
Hadith Book
Search Query
Search Language
English Arabic Urdu
Search Type Basic    Case Sensitive
 

Sahih Bukhari

Afflictions and the End of the World

كتاب الفتن

حَدَّثَنَا سُلَيْمَانُ بْنُ حَرْبٍ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، عَنْ عَلِيِّ بْنِ مُدْرِكٍ، سَمِعْتُ أَبَا زُرْعَةَ بْنَ عَمْرِو بْنِ جَرِيرٍ، عَنْ جَدِّهِ، جَرِيرٍ قَالَ قَالَ لِي رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم فِي حَجَّةِ الْوَدَاعِ ‏"‏ اسْتَنْصِتِ النَّاسَ ‏"‏‏.‏ ثُمَّ قَالَ ‏"‏ لاَ تَرْجِعُوا بَعْدِي كُفَّارًا، يَضْرِبُ بَعْضُكُمْ رِقَابَ بَعْضٍ ‏"‏‏.‏

Narrated Jarir: The Prophet (PBUH) said to me during Hajjat-al-Wada`, "Let the people keep quiet and listen." Then he said (addressing the people), "Beware! Do not renegade as disbelievers after me by striking (cutting) the necks of one another." ھم سے سلیمان بن حرب نے بیان کیا ‘ انھوں نے کھا ھم سے شعبھ نے بیان کیا ‘ انھوں نے کھا ھم سے علی بن مدرک نے بیان کیا ‘ کھا میں نے ابو زرعھ بن عمرو بن جریر سے سنا ‘ ان سے ان کے دادا جریر رضی اللھ عنھ نے بیان کیا کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے مجھ سے حجۃ الوداع کے موقع پر فرمایا لوگوں کو خاموش کر دو ۔ پھر آپ نے فرمایا میرے بعد کافر نھ ھو جانا کھ تم ایک دوسرے کی گردن مارنے لگ جاؤ ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 92 Hadith no 7080
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 88 Hadith no 201


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عُبَيْدِ اللَّهِ، حَدَّثَنَا إِبْرَاهِيمُ بْنُ سَعْدٍ، عَنْ أَبِيهِ، عَنْ أَبِي سَلَمَةَ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏.‏ قَالَ إِبْرَاهِيمُ وَحَدَّثَنِي صَالِحُ بْنُ كَيْسَانَ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ، عَنْ سَعِيدِ بْنِ الْمُسَيَّبِ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، قَالَ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ سَتَكُونُ فِتَنٌ الْقَاعِدُ فِيهَا خَيْرٌ مِنَ الْقَائِمِ، وَالْقَائِمُ فِيهَا خَيْرٌ مِنَ الْمَاشِي، وَالْمَاشِي فِيهَا خَيْرٌ مِنَ السَّاعِي، مَنْ تَشَرَّفَ لَهَا تَسْتَشْرِفْهُ، فَمَنْ وَجَدَ فِيهَا مَلْجَأً أَوْ مَعَاذًا فَلْيَعُذْ بِهِ ‏"‏‏.‏


Chapter: There will be Fitnah during which a sitting person will be better than standing one

Narrated Abu Huraira: Allah's Messenger (PBUH) said, "There will be afflictions (in the near future) during which a sitting person will be better than a standing one, and the standing one will be better than the walking one, and the walking one will be better than the running one, and whoever will expose himself to these afflictions, they will destroy him. So whoever can find a place of protection or refuge from them, should take shelter in it." ھم سے محمد بن عبیداللھ نے بیان کیا ‘ کھا ھم سے ابراھیم بن سعد نے بیان کیا ‘ ان سے ان کے والد نے ‘ ان سے ابوسلمھ بن عبدالرحمٰن نے اور ان سے ابوھریرھ رضی اللھ عنھ نے بیان کیا کھ ابراھیم بن سعد نے کھا کھ مجھ سے صالح بن کیسان نے بیان کیا ‘ ان سے ابن شھاب نے ‘ ان سے سعید بن المسیب نے اور ان سے حضرت ابوھریرھ رضی اللھ عنھ نے بیان کیا کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا عنقریب ایسے فتنے برپا ھوں گے جن میں بیٹھنے والا کھڑے ھونے والے سے بھتر ھو گا اور کھڑا ھونے والا ان میں چلنے والے سے بھتر ھو گا اور چلنے والا ان میں دوڑنے والے سے بھتر ھو گا ‘ جو دور سے ان کی طرف جھانک کر بھی دیکھے گا تو وھ ان کو بھی سمیٹ لیں گے ۔ اس وقت جس کسی کو کوئی پناھ کی جگھ مل جائے یا بچاؤ کامقام مل سکے وھ اس میں چلا جائے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 92 Hadith no 7081
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 88 Hadith no 202


حَدَّثَنَا أَبُو الْيَمَانِ، أَخْبَرَنَا شُعَيْبٌ، عَنِ الزُّهْرِيِّ، أَخْبَرَنِي أَبُو سَلَمَةَ بْنُ عَبْدِ الرَّحْمَنِ، أَنَّ أَبَا هُرَيْرَةَ، قَالَ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ سَتَكُونُ فِتَنٌ الْقَاعِدُ فِيهَا خَيْرٌ مِنَ الْقَائِمِ، وَالْقَائِمُ خَيْرٌ مِنَ الْمَاشِي، وَالْمَاشِي فِيهَا خَيْرٌ مِنَ السَّاعِي، مَنْ تَشَرَّفَ لَهَا تَسْتَشْرِفْهُ، فَمَنْ وَجَدَ مَلْجَأً أَوْ مَعَاذًا فَلْيَعُذْ بِهِ ‏"‏‏.‏

Narrated Abu Huraira: Allah's Messenger (PBUH) said, "There will be afflictions (in the near future) during which a sitting person will be better than a standing one, and the standing one will be better than a walking one, and the walking one will be better than a running one, and whoever will expose himself to these afflictions, they will destroy him. So whoever can find a place of protection or refuge from them, should take shelter in it." ھم سے ابو الیمان نے بیان کیا ‘ کھا ھم کو شعیب نے خبر دی ‘ انھیں زھری نے ‘ انھیں ابوسلمھ بن عبدالرحمٰن نے خبر دی اور ان سے ابوھریرھ رضی اللھ عنھ نے بیان کیا کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا ایسے فتنے برپا ھوں گے کھ ان میں بیٹھنے والا کھڑے ھونے والے سے بھتر ھو گا اور کھڑا ھونے والا چلنے والے سے بھتر ھو گا اور چلنے والا دوڑنے والے سے بھتر ھو گا ۔ اگر کوئی ان کی طرف دور سے بھی جھانک کر دیکھے گا تو وھ اسے بھی سمیٹ لیں گے ایسے وقت جو کوئی اس سے کوئی پناھ کی جگھ پا لے اسے اس کی پناھ لے لینی چاھئیے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 92 Hadith no 7082
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 88 Hadith no 203


حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ عَبْدِ الْوَهَّابِ، حَدَّثَنَا حَمَّادٌ، عَنْ رَجُلٍ، لَمْ يُسَمِّهِ عَنِ الْحَسَنِ، قَالَ خَرَجْتُ بِسِلاَحِي لَيَالِيَ الْفِتْنَةِ فَاسْتَقْبَلَنِي أَبُو بَكْرَةَ فَقَالَ أَيْنَ تُرِيدُ قُلْتُ أُرِيدُ نُصْرَةَ ابْنِ عَمِّ رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم‏.‏ قَالَ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ إِذَا تَوَاجَهَ الْمُسْلِمَانِ بِسَيْفَيْهِمَا فَكِلاَهُمَا مِنْ أَهْلِ النَّارِ ‏"‏‏.‏ قِيلَ فَهَذَا الْقَاتِلُ، فَمَا بَالُ الْمَقْتُولِ قَالَ ‏"‏ إِنَّهُ أَرَادَ قَتْلَ صَاحِبِهِ ‏"‏‏.‏ قَالَ حَمَّادُ بْنُ زَيْدٍ فَذَكَرْتُ هَذَا الْحَدِيثَ لأَيُّوبَ وَيُونُسَ بْنِ عُبَيْدٍ وَأَنَا أُرِيدُ أَنْ يُحَدِّثَانِي بِهِ فَقَالاَ إِنَّمَا رَوَى هَذَا الْحَدِيثَ الْحَسَنُ عَنِ الأَحْنَفِ بْنِ قَيْسٍ عَنْ أَبِي بَكْرَةَ‏.‏ حَدَّثَنَا سُلَيْمَانُ حَدَّثَنَا حَمَّادٌ بِهَذَا‏.‏ وَقَالَ مُؤَمَّلٌ حَدَّثَنَا حَمَّادُ بْنُ زَيْدٍ، حَدَّثَنَا أَيُّوبُ، وَيُونُسُ، وَهِشَامٌ، وَمُعَلَّى بْنُ زِيَادٍ، عَنِ الْحَسَنِ، عَنِ الأَحْنَفِ، عَنْ أَبِي بَكْرَةَ، عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم‏.‏ وَرَوَاهُ مَعْمَرٌ عَنْ أَيُّوبَ‏.‏ وَرَوَاهُ بَكَّارُ بْنُ عَبْدِ الْعَزِيزِ عَنْ أَبِيهِ عَنْ أَبِي بَكْرَةَ‏.‏ وَقَالَ غُنْدَرٌ حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، عَنْ مَنْصُورٍ، عَنْ رِبْعِيِّ بْنِ حِرَاشٍ، عَنْ أَبِي بَكْرَةَ، عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم‏.‏ وَلَمْ يَرْفَعْهُ سُفْيَانُ عَنْ مَنْصُورٍ‏.‏


Chapter: If two Muslims meet each other with their swords

Narrated Al-Hasan: (Al-Ahnaf said:) I went out carrying my arms during the nights of the affliction (i.e. the war between `Ali and `Aisha) and Abu Bakra met me and asked, "Where are you going?" I replied, "I intend to help the cousin of Allah's Messenger (PBUH) (i.e.,`Ali)." Abu Bakra said, "Allah's Messenger (PBUH) said, 'If two Muslims take out their swords to fight each other, then both of them will be from amongst the people of the Hell- Fire.' It was said to the Prophet, 'It is alright for the killer but what about the killed one?' He replied, 'The killed one had the intention to kill his opponent.'" (See Hadith No. 30, Vol. 1) Narrated Al-Ahnaf: Abu Bakra said: The Prophet (PBUH) said (as above, 204). ھم سے عبداللھ بن عبدالوھاب نے بیان کیا ‘ کھا ھم سے حماد بن زید نے بیان کیا ‘ ان سے ایک شخص نے جس کا نام نھیں بتایا ‘ ان سے امام حسن بصری نے بیان کیا کھ میں ایک مرتبھ باھمی فسادات کے دنوں میں اپنے ھتھیار لگا کر نکلا تو ابوبکرھ رضی اللھ عنھ سے راستے میں ملاقات ھو گئی ۔ انھوں نے پوچھا کھاں جانے کا ارادھ ھے ؟ میں نے کھا کھ میں رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم کے چچا کے لڑکے کی ( جنگ جمل وصفین میں ) مدد کرنی چاھتا ھوں ۔ انھوں نے کھا لوٹ جاؤ ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا ھے کھ جب دو مسلمان اپنی تلواروں کو لے کر آمنے سامنے مقابلھ پر آ جائیں تو دونوں دوزخی ھیں ۔ پوچھا گیا یھ تو قاتل تھا ‘ مقتول نے کیا کیا ( کھ وھ بھی ناری ھو گیا ) فرمایا کھ وھ بھی اپنے مقابل کو قتل کرنے کا ارادھ کئے ھوئے تھا ۔ حماد بن زید نے کھا کھ پھر میں نے یھ حدیث ایوب اور یونس بن عبید سے ذکر کی ‘ میرا مقصد تھا کھ یھ دونوں بھی مجھ سے یھ حدیث بیان کریں ‘ ان دونوں نے کھا کھ اس حدیث کی روایت حسن بصری نے احنف بن قیس سے اور انھوں نے ابوبکر رضی اللھ عنھ سے کی ۔ ھم سے سلیمان بن حرب نے بیان کیا کھا ھم سے حماد بن زید نے یھی حدیث بیان کی اور مؤمل بن ھشام نے کھا کھ ھم سے حماد بن زید نے بیان کیا ‘کھا ھم سے ایوب ‘ یونس ‘ ھشام اور معلی بن زیاد نے امام حسن بصری سے بیان کیا ‘ ان سے احنف بن قیس اور ان سے ابوبکرھ رضی اللھ عنھ نے اور ان سے نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے اور اس کی روایت معمر نے بھی ایوب سے کی ھے اور اس کی روایت بکار بن عبد العزیز نے اپنے باپ سے کی اور ان سے ابو بکرھ رضی اللھ عنھ نے اور غندر نے بیان کیا ‘ کھا ھم سے شعبھ نے بیان کیا ‘ ان سے منصور نے ‘ ان سے ربعی بن حراش نے ‘ ان سے ابوبکرھ رضی اللھ عنھ نے نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم سے ۔ اور سفیان ثوری نے بھی اس حدیث کو منصور بن معتمر سے روایت کیا ‘ پھر یھ روایت مرفوعھ نھیں ھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 92 Hadith no 7083
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 88 Hadith no 204


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى، حَدَّثَنَا الْوَلِيدُ بْنُ مُسْلِمٍ، حَدَّثَنَا ابْنُ جَابِرٍ، حَدَّثَنِي بُسْرُ بْنُ عُبَيْدِ اللَّهِ الْحَضْرَمِيُّ، أَنَّهُ سَمِعَ أَبَا إِدْرِيسَ الْخَوْلاَنِيَّ، أَنَّهُ سَمِعَ حُذَيْفَةَ بْنَ الْيَمَانِ، يَقُولُ كَانَ النَّاسُ يَسْأَلُونَ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم عَنِ الْخَيْرِ، وَكُنْتُ أَسْأَلُهُ عَنِ الشَّرِّ، مَخَافَةَ أَنْ يُدْرِكَنِي فَقُلْتُ يَا رَسُولَ اللَّهِ إِنَّا كُنَّا فِي جَاهِلِيَّةٍ وَشَرٍّ فَجَاءَنَا اللَّهُ بِهَذَا الْخَيْرِ، فَهَلْ بَعْدَ هَذَا الْخَيْرِ مِنْ شَرٍّ قَالَ ‏"‏ نَعَمْ ‏"‏‏.‏ قُلْتُ وَهَلْ بَعْدَ ذَلِكَ الشَّرِّ مِنْ خَيْرٍ قَالَ ‏"‏ نَعَمْ، وَفِيهِ دَخَنٌ ‏"‏‏.‏ قُلْتُ وَمَا دَخَنُهُ قَالَ ‏"‏ قَوْمٌ يَهْدُونَ بِغَيْرِ هَدْىٍ، تَعْرِفُ مِنْهُمْ وَتُنْكِرُ ‏"‏‏.‏ قُلْتُ فَهَلْ بَعْدَ ذَلِكَ الْخَيْرِ مِنْ شَرٍّ قَالَ ‏"‏ نَعَمْ، دُعَاةٌ عَلَى أَبْوَابِ جَهَنَّمَ، مَنْ أَجَابَهُمْ إِلَيْهَا قَذَفُوهُ فِيهَا ‏"‏‏.‏ قُلْتُ يَا رَسُولَ اللَّهِ صِفْهُمْ لَنَا‏.‏ قَالَ ‏"‏ هُمْ مِنْ جِلْدَتِنَا، وَيَتَكَلَّمُونَ بِأَلْسِنَتِنَا ‏"‏‏.‏ قُلْتُ فَمَا تَأْمُرُنِي إِنْ أَدْرَكَنِي ذَلِكَ قَالَ ‏"‏ تَلْزَمُ جَمَاعَةَ الْمُسْلِمِينَ وَإِمَامَهُمْ ‏"‏‏.‏ قُلْتُ فَإِنْ لَمْ يَكُنْ لَهُمْ جَمَاعَةٌ وَلاَ إِمَامٌ قَالَ ‏"‏ فَاعْتَزِلْ تِلْكَ الْفِرَقَ كُلَّهَا، وَلَوْ أَنْ تَعَضَّ بِأَصْلِ شَجَرَةٍ، حَتَّى يُدْرِكَكَ الْمَوْتُ، وَأَنْتَ عَلَى ذَلِكَ ‏"‏‏.‏


Chapter: If there is no righteous group of Muslims

Narrated Hudhaifa bin Al-Yaman: The people used to ask Allah's Messenger (PBUH) about the good but I used to ask him about the evil lest I should be overtaken by them. So I said, "O Allah's Messenger (PBUH)! We were living in ignorance and in an (extremely) worst atmosphere, then Allah brought to us this good (i.e., Islam); will there be any evil after this good?" He said, "Yes." I said, 'Will there be any good after that evil?" He replied, "Yes, but it will be tainted (not pure.)'' I asked, "What will be its taint?" He replied, "(There will be) some people who will guide others not according to my tradition? You will approve of some of their deeds and disapprove of some others." I asked, "Will there be any evil after that good?" He replied, "Yes, (there will be) some people calling at the gates of the (Hell) Fire, and whoever will respond to their call, will be thrown by them into the (Hell) Fire." I said, "O Allah s Apostle! Will you describe them to us?" He said, "They will be from our own people and will speak our language." I said, "What do you order me to do if such a state should take place in my life?" He said, "Stick to the group of Muslims and their Imam (ruler)." I said, "If there is neither a group of Muslims nor an Imam (ruler)?" He said, "Then turn away from all those sects even if you were to bite (eat) the roots of a tree till death overtakes you while you are in that state." ھم سے محمد بن مثنیٰ نے بیان کیا ‘انھوں نے کھا ھم سے ولید بن مسلم نے بیان کیا ‘ انھوں نے کھا ھم سے ابن جابر نے بیان کیا ‘ ان سے بسر بن عبیداللھ الخصرمی نے بیان کیا ‘ انھوں نے ابو ادریس خولانی سے سنا ‘ انھوں نے حذیفھ بن الیمان رضی اللھ عنھ سے سنا ‘انھوں نے بیان کیا کھ لوگ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم سے خیر کے بارے میں پوچھا کرتے تھے لیکن میں شر کے بارے میں پوچھتا تھا ۔ اس خوف سے کھ کھیں میری زندگی میں ھی شر نھ پیدا ھو جائے ۔ میں نے پوچھا یا رسول اللھ ! ھم جاھلیت اور شر کے دور میں تھے پھر اللھ تعالیٰ نے ھمیں اس خیر سے نوازا تو کیا اس خیر کے بعد پھر شر کا زمانھ ھو گا ؟ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ ھاں ۔ میں نے پوچھا کیا اس شر کے بعد پھر خیر کا زمانھ آئے گا ؟ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا ھاں لیکن اس خیر میں کمزوری ھو گی ۔ میں نے پوچھا کھ کمزوری کیا ھو گی ؟ فرمایا کھ کچھ لوگ ھوں گے جو میرے طریقے کے خلاف چلیں گے ‘ ان کی بعض باتیں اچھی ھوں گی لیکن بعض میں تم برائی دیکھو گے ۔ میں نے پوچھا کیا پھر دور خیر کے بعد دور شر آئے گا ؟ فرمایا کھ ھاں جھنم کی طرف سے بلانے والے دوزخ کے دروازوں پر کھڑے ھوں گے ‘ جو ان کی بات مان لے گا وھ اس میں انھیں جھٹک دیں گے ۔ میں نے کھا یا رسول اللھ ! ان کی کچھ صفت بیان کیجئے ۔ فرمایا کھ وھ ھمارے ھی جیسے ھوں گے اور ھماری ھی زبان عربی بولیں گے ۔ میں نے پوچھا پھر اگر میں نے وھ زمانھ پایا تو آپ مجھے ان کے بارے میں کیا حکم دیتے ھیں ؟ فرمایا کھ مسلمانوں کی جماعت اور ان کے امام کے ساتھ رھنا ۔ میں نے کھا کھ اگر مسلمانوں کی جماعت نھ ھو اور نھ ان کا کوئی امام ھو ؟ فرمایا کھ پھر ان تمام لوگوں سے الگ ھو کر خواھ تمھیں جنگل میں جا کر درختوں کی جڑیں چبانی پڑیں یھاں تک کھ اسی حالت میں تمھاری موت آ جائے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 92 Hadith no 7084
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 88 Hadith no 206


حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ يَزِيدَ، حَدَّثَنَا حَيْوَةُ، وَغَيْرُهُ، قَالاَ حَدَّثَنَا أَبُو الأَسْوَدِ،‏.‏ وَقَالَ اللَّيْثُ عَنْ أَبِي الأَسْوَدِ، قَالَ قُطِعَ عَلَى أَهْلِ الْمَدِينَةِ بَعْثٌ فَاكْتُتِبْتُ فِيهِ فَلَقِيتُ عِكْرِمَةَ فَأَخْبَرْتُهُ فَنَهَانِي أَشَدَّ النَّهْىِ ثُمَّ قَالَ أَخْبَرَنِي ابْنُ عَبَّاسٍ أَنَّ أُنَاسًا مِنَ الْمُسْلِمِينَ كَانُوا مَعَ الْمُشْرِكِينَ يُكَثِّرُونَ سَوَادَ الْمُشْرِكِينَ عَلَى رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم فَيَأْتِي السَّهْمُ فَيُرْمَى فَيُصِيبُ أَحَدَهُمْ، فَيَقْتُلُهُ أَوْ يَضْرِبُهُ فَيَقْتُلُهُ‏.‏ فَأَنْزَلَ اللَّهُ تَعَالَى ‏{‏إِنَّ الَّذِينَ تَوَفَّاهُمُ الْمَلاَئِكَةُ ظَالِمِي أَنْفُسِهِمْ‏}‏


Chapter: Whoever disliked to increase the number Al-Fitan and oppressions

Narrated Abu Al-Aswad: An army unit was being recruited from the people of Medina and my name was written among them. Then I met `Ikrima, and when I informed him about it, he discouraged me very strongly and said, "Ibn `Abbas told me that there were some Muslims who were with the pagans to increase their number against Allah's Messenger (PBUH) (and the Muslim army) so arrows (from the Muslim army) would hit one of them and kill him or a Muslim would strike him (with his sword) and kill him. So Allah revealed:-- 'Verily! As for those whom the angels take (in death) while they are wronging themselves (by staying among the disbelievers).' (4.97) ھم سے عبداللھ بن یزید نے بیان کیا ، کھا ھم سے حیوھ بن شریح وغیرھ نے بیان کیا کھ ھم سے ابوالاسود نے بیان کیا ، یا لیث نے ابوالاسود سے بیان کیا کھ اھل مدینھ کا ایک لشکر تیار کیا گیا ( یعنی عبداللھ بن زبیر رضی اللھ عنھما کے زمانھ میں شام والوں سے مقابلھ کرنے کے لیے ) اور میرا نام اس میں لکھ دیا گیا ۔ پھر میں عکرمھ سے ملا اور میں نے انھیں خبر دی تو انھوں نے مجھے شرکت سے سختی کے ساتھ منع کیا ۔ پھر کھا کھ ابن عباس رضی اللھ عنھما نے مجھے خبر دی ھے کھ کچھ مسلمان جو مشرکین کے ساتھ رھتے تھے وھ رسول کریم صلی اللھ علیھ وسلم کے خلاف ( غزوات ) میں مشرکین کی جماعت کی زیادتی کا باعث بنتے ۔ پھر کوئی تیر آتا اور ان میں سے کسی کو لگ جاتا اور قتل کر دیتا یا انھیں کوئی تلوار سے قتل کر دیتا ، پھر اللھ تعالیٰ نے یھ آیت نازل کی ” بلا شک وھ لوگ جن کو فرشتے فوت کرتے ھیں اس حال میں کھ وھ اپنی جانوں پر ظلم کرنے والے ھوتے ھیں ۔ “

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 92 Hadith no 7085
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 88 Hadith no 207



@2019 Copyrights: if you have any objection regarding any shared content on pdf9.com please click here.