Search hadith by
Hadith Book
Search Query
Search Language
English Arabic Urdu
Search Type Basic    Case Sensitive
 

Sahih Bukhari

Afflictions and the End of the World

كتاب الفتن

حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ كَثِيرٍ، أَخْبَرَنَا سُفْيَانُ، حَدَّثَنَا الأَعْمَشُ، عَنْ زَيْدِ بْنِ وَهْبٍ، حَدَّثَنَا حُذَيْفَةُ، قَالَ حَدَّثَنَا رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم حَدِيثَيْنِ رَأَيْتُ أَحَدَهُمَا وَأَنَا أَنْتَظِرُ الآخَرَ حَدَّثَنَا ‏"‏ أَنَّ الأَمَانَةَ نَزَلَتْ فِي جَذْرِ قُلُوبِ الرِّجَالِ، ثُمَّ عَلِمُوا مِنَ الْقُرْآنِ، ثُمَّ عَلِمُوا مِنَ السُّنَّةِ ‏"‏‏.‏ وَحَدَّثَنَا عَنْ رَفْعِهَا قَالَ ‏"‏ يَنَامُ الرَّجُلُ النَّوْمَةَ فَتُقْبَضُ الأَمَانَةُ مِنْ قَلْبِهِ، فَيَظَلُّ أَثَرُهَا مِثْلَ أَثَرِ الْوَكْتِ، ثُمَّ يَنَامُ النَّوْمَةَ فَتُقْبَضُ فَيَبْقَى فِيهَا أَثَرُهَا مِثْلَ أَثَرِ الْمَجْلِ، كَجَمْرٍ دَحْرَجْتَهُ عَلَى رِجْلِكَ فَنَفِطَ، فَتَرَاهُ مُنْتَبِرًا وَلَيْسَ فِيهِ شَىْءٌ، وَيُصْبِحُ النَّاسُ يَتَبَايَعُونَ فَلاَ يَكَادُ أَحَدٌ يُؤَدِّي الأَمَانَةَ فَيُقَالُ إِنَّ فِي بَنِي فُلاَنٍ رَجُلاً أَمِينًا‏.‏ وَيُقَالُ لِلرَّجُلِ مَا أَعْقَلَهُ، وَمَا أَظْرَفَهُ، وَمَا أَجْلَدَهُ، وَمَا فِي قَلْبِهِ مِثْقَالُ حَبَّةِ خَرْدَلٍ مِنْ إِيمَانٍ، وَلَقَدْ أَتَى عَلَىَّ زَمَانٌ، وَلاَ أُبَالِي أَيُّكُمْ بَايَعْتُ، لَئِنْ كَانَ مُسْلِمًا رَدَّهُ عَلَىَّ الإِسْلاَمُ، وَإِنْ كَانَ نَصْرَانِيًّا رَدَّهُ عَلَىَّ سَاعِيهِ، وَأَمَّا الْيَوْمَ فَمَا كُنْتُ أُبَايِعُ إِلاَّ فُلاَنًا وَفُلاَنًا ‏"‏‏.‏


Chapter: If a Muslim stays among the bad people

Narrated Hudhaifa: Allah's Messenger (PBUH) related to us, two prophetic narrations one of which I have seen fulfilled and I am waiting for the fulfillment of the other. The Prophet (PBUH) told us that the virtue of honesty descended in the roots of men's hearts (from Allah) and then they learned it from the Qur'an and then they learned it from the Sunna (the Prophet's traditions). The Prophet (PBUH) further told us how that honesty will be taken away: He said: "Man will go to sleep during which honesty will be taken away from his heart and only its trace will remain in his heart like the trace of a dark spot; then man will go to sleep, during which honesty will decrease further still, so that its trace will resemble the trace of blister as when an ember is dropped on one's foot which would make it swell, and one would see it swollen but there would be nothing inside. People would be carrying out their trade but hardly will there be a trustworthy person. It will be said, 'in such-and-such tribe there is an honest man,' and later it will be said about some man, 'What a wise, polite and strong man he is!' Though he will not have faith equal even to a mustard seed in his heart." No doubt, there came upon me a time when I did not mind dealing (bargaining) with anyone of you, for if he was a Muslim his Islam would compel him to pay me what is due to me, and if he was a Christian, the Muslim official would compel him to pay me what is due to me, but today I do not deal except with such-and-such person. ھم سے محمد بن کثیر نے بیان کیا ، کھا ھم کو سفیان نے خبر دی ، کھا ھم سے اعمش نے بیان کیا ، ان سے زید بن وھب نے بیان کیا ، ان سے حذیفھ نے بیان کیا ، کھا ھم سے رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے دو احادیث فرمائی تھیں جن میں سے ایک تو میں نے دیکھ لی دوسری کا انتظار ھے ۔ ھم سے آپ نے فرمایا تھا کھ امانت لوگوں کے دلوں کی جڑوں میں نازل ھوئی تھی پھر لوگوں نے اسے قرآن سے سیکھا ، پھر سنت سے سیکھا اور آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے ھم سے امانت کے اٹھ جانے کے متعلق فرمایا تھا کھ ایک شخص ایک نیند سوئے گا اور امانت اس کے دل سے نکال دی جائے گی اور اس کا نشان ایک دھبے جتنا باقی رھ جائے گا ، پھر وھ ایک نیند سوئے گا اور پھر امانت نکالی جائے گی تو اس کے دل میں آبلے کی طرح اس کا نشان باقی رھ جائے گا ، جیسے تم نے کوئی چنگاری اپنے پاؤں پر گرالی ھو اور اس کی وجھ سے آبلھ پڑ جائے ، تم اس میں سو جن دیکھوگے لیکن اندر کچھ نھیں ھو گا اور لوگ خریدوفروخت کریں گے لیکن کوئی امانت ادا کرنے والا نھیں ھو گا ۔ پھر کھا جائے گا کھ فلاں قبیلے میں ایک امانت دار آدمی ھے اور کسی کے متعلق کھا جائے گا کھ وھ کس قدر عقلمند ، کتنا خوش طبع ، کتنا دلاور آدمی ھے حالانکھ اس کے دل میں رائی کے دانے کے برابر بھی ایمان نھ ھو گا اور مجھ پر ایک زمانھ گزر گیا اور میں اس کی پروا نھیں کرتا تھا کھ تم میں سے کس کے ساتھ میں لین دین کرتا ھوں اگر وھ مسلمان ھوتا تو اس کا اسلام اسے میرے حق کے ادا کرنے پر مجبور کرتا اور اگر وھ نصرانی ھوتا تو اس کے حاکم لوگ اس کو دباتے ایمانداری پر مجبور کرتے ۔ لیکن آج کل تو میں صرف فلاں فلاں لوگوں سے ھی لین دین کرتا ھوں ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 92 Hadith no 7086
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 88 Hadith no 208


حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ، حَدَّثَنَا حَاتِمٌ، عَنْ يَزِيدَ بْنِ أَبِي عُبَيْدٍ، عَنْ سَلَمَةَ بْنِ الأَكْوَعِ، أَنَّهُ دَخَلَ عَلَى الْحَجَّاجِ فَقَالَ يَا ابْنَ الأَكْوَعِ ارْتَدَدْتَ عَلَى عَقِبَيْكَ تَعَرَّبْتَ قَالَ لاَ وَلَكِنَّ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم أَذِنَ لِي فِي الْبَدْوِ‏.‏ وَعَنْ يَزِيدَ بْنِ أَبِي عُبَيْدٍ قَالَ لَمَّا قُتِلَ عُثْمَانُ بْنُ عَفَّانَ خَرَجَ سَلَمَةُ بْنُ الأَكْوَعِ إِلَى الرَّبَذَةِ، وَتَزَوَّجَ هُنَاكَ امْرَأَةً وَوَلَدَتْ لَهُ أَوْلاَدًا، فَلَمْ يَزَلْ بِهَا حَتَّى قَبْلَ أَنْ يَمُوتَ بِلَيَالٍ، فَنَزَلَ الْمَدِينَةَ‏.‏


Chapter: To stay with the Bedouins during Al-Fitnah

Narrated Salama bin Al-Akwa`: That he visited Al-Hajjaj (bin Yusuf). Al-Hajjaj said, "O son of Al-Akwa`! You have turned on your heels (i.e., deserted Islam) by staying (in the desert) with the bedouins." Salama replied, "No, but Allah's Messenger (PBUH) allowed me to stay with the bedouin in the desert." Narrated Yazid bin Abi Ubaid: When `Uthman bin `Affan was killed (martyred), Salama bin Al-Akwa` went out to a place called Ar- Rabadha and married there and begot children, and he stayed there till a few nights before his death when he came to Medina. ھم سے قتیبھ بن سعید نے بیان کیا ، انھوں نے کھا ھم سے حاتم نے بیان کیا ، ان سے یزید بن ابی عبید نے بیان کیا ، ان سے سلمھ بن الاکوع رضی اللھ عنھ نے بیان کیا کھ وھ حجاج کے یھاں گئے تو اس نے کھا کھ اے ابن الاکوع ! تم گاؤں میں رھنے لگے ھو کیا الٹے پاؤں پھر گئے ؟ کھا کھ نھیں بلکھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے مجھے جنگل میں رھنے کی اجازت دی تھی ۔ اور یزید بن ابی عبید سے روایت ھے ، انھوں نے کھا کھ جب حضرت عثمان بن عفان رضی اللھ عنھ شھید کئے گئے تو سلمھ بن الاکوع رضی اللھ عنھ ربذھ چلے گئے اور وھاں ایک عورت سے شادی کر لی اور وھاں ان کے بچے بھی پیدا ھوئے ۔ وھ برابر وھیں پر رھے ، یھاں تک کھ وفات سے چند دن پھلے مدینھ آ گئے تھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 92 Hadith no 7087
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 88 Hadith no 209


حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ يُوسُفَ، أَخْبَرَنَا مَالِكٌ، عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ أَبِي صَعْصَعَةَ، عَنْ أَبِيهِ، عَنْ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ ـ رضى الله عنه ـ أَنَّهُ قَالَ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ يُوشِكُ أَنْ يَكُونَ خَيْرَ مَالِ الْمُسْلِمِ غَنَمٌ، يَتْبَعُ بِهَا شَعَفَ الْجِبَالِ وَمَوَاقِعَ الْقَطْرِ، يَفِرُّ بِدِينِهِ مِنَ الْفِتَنِ ‏"‏‏.‏

Narrated Abu Sa`id Al-Khudri: Allah's Messenger (PBUH) said, "There will come a time when the best property of a Muslim will be sheep which he will take to the tops of mountains and the places of rainfall so as to flee with his religion from the afflictions. ھم سے عبداللھ بن یوسف نے بیان کیا ، کھا ھم کو مالک نے خبر دی ، انھیں عبدالرحمٰن بن عبداللھ بن ابی صعصعھ نے ، انھیں ان کے والد نے اور ان سے ابو سعید خدری رضی اللھ عنھ نے بیان کیا کھ رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا وھ وقت قریب ھے کھ مسلمان کا بھترین مال وھ بکریاں ھوں گی جنھیں وھ لے کر پھاڑی کی چوٹیوں اور بارش برسنے کی جگھوں پر چلا جائے گا ۔ وھ فتنوں سے اپنے دین کی حفاظت کے لیے وھاں بھاگ کر آ جائے گا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 92 Hadith no 7088
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 88 Hadith no 210


حَدَّثَنَا مُعَاذُ بْنُ فَضَالَةَ، حَدَّثَنَا هِشَامٌ، عَنْ قَتَادَةَ، عَنْ أَنَسٍ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ سَأَلُوا النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم حَتَّى أَحْفَوْهُ بِالْمَسْأَلَةِ، فَصَعِدَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ذَاتَ يَوْمٍ الْمِنْبَرَ فَقَالَ ‏"‏ لاَ تَسْأَلُونِي عَنْ شَىْءٍ إِلاَّ بَيَّنْتُ لَكُمْ ‏"‏‏.‏ فَجَعَلْتُ أَنْظُرُ يَمِينًا وَشِمَالاً، فَإِذَا كُلُّ رَجُلٍ رَأْسُهُ فِي ثَوْبِهِ يَبْكِي، فَأَنْشَأَ رَجُلٌ كَانَ إِذَا لاَحَى يُدْعَى إِلَى غَيْرِ أَبِيهِ فَقَالَ يَا نَبِيَّ اللَّهِ مَنْ أَبِي فَقَالَ ‏"‏ أَبُوكَ حُذَافَةُ ‏"‏‏.‏ ثُمَّ أَنْشَأَ عُمَرُ فَقَالَ رَضِينَا بِاللَّهِ رَبًّا، وَبِالإِسْلاَمِ دِينًا، وَبِمُحَمَّدٍ رَسُولاً، نَعُوذُ بِاللَّهِ مِنْ سُوءِ الْفِتَنِ‏.‏ فَقَالَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ مَا رَأَيْتُ فِي الْخَيْرِ وَالشَّرِّ كَالْيَوْمِ قَطُّ، إِنَّهُ صُوِّرَتْ لِي الْجَنَّةُ وَالنَّارُ حَتَّى رَأَيْتُهُمَا دُونَ الْحَائِطِ ‏"‏‏.‏ قَالَ قَتَادَةُ يُذْكَرُ هَذَا الْحَدِيثُ عِنْدَ هَذِهِ الآيَةِ ‏{‏يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا لاَ تَسْأَلُوا عَنْ أَشْيَاءَ إِنْ تُبْدَ لَكُمْ تَسُؤْكُمْ‏}‏


Chapter: To seek refuge with Allah from Al-Fitan

Narrated Anas: The people started asking the Prophet (PBUH) too many questions importunately. So one day he ascended the pulpit and said, "You will not ask me any question but I will explain it to you." I looked right and left, and behold, every man was covering his head with his garment and weeping. Then got up a man who, whenever quarreling with somebody, used to be accused of not being the son of his father. He said, "O Allah's Messenger (PBUH)! Who is my father?" The Prophet (PBUH) replied, "Your father is Hudhaifa." Then `Umar got up and said, "We accept Allah as our Lord, Islam as our religion and Muhammad as our Apostle and we seek refuge with Allah from the evil of afflictions." The Prophet (PBUH) said, " I have never seen the good and bad like on this day. No doubt, Paradise and Hell was displayed in front of me till I saw them in front of that wall," Qatada said: This Hadith used to be mentioned as an explanation of this Verse:-- 'O you who believe! Ask not questions about things which, if made plain to you, may cause you trouble.' (5.101) ھم سے معاذ بن فضالھ نے بیان کیا ، کھا ھم سے ھشام نے بیان کیا ، ان سے قتادھ نے اور ان سے انس رضی اللھ عنھ نے کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے لوگوں سے سوالات کئے آخر جب لوگ باربار سوال کرنے لگے تو آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم منبر پر ایک دن چڑھے اور فرمایا کھ آج تم مجھ سے جو سوال بھی کرو گے میں تمھیں اس کا جواب دوں گا ۔ انس رضی اللھ عنھ نے بیان کیا کھ پھر میں دائیں بائیں دیکھنے لگا تو ھر شخص کا سراس کے کپڑے میں چھپا ھوا تھا اور وھ رورھا تھا ۔ آخر ایک شخص نے خاموشی توڑی ۔ اس کا جب کسی سے جھگڑا ھوتا تو انھیں ان کے باپ کے سوا دوسرے باپ کی طرف پکارا جاتا ۔ انھوں نے کھا یا رسول اللھ ! میرے والد کون ھیں ؟ فرمایا تمھارے والد حذافھ ھیں ۔ پھر عمر رضی اللھ عنھ سامنے آئے اور عرض کیا ھم اللھ سے کھ وھ رب ھے ، اسلام سے کھ وھ دین ھے ، محمد صلی اللھ علیھ وسلم سے کھ وھ سول ھیں راضی ھیں اور آزمائش کی برائی سے ھم اللھ کی پناھ مانگتے ھیں ۔ پھر آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ میں نے خیروشر آج جیسا دیکھا کبھی نھیں دیکھا تھا ۔ میرے سامنے جنت و دوزخ کی صورت پیش کی گئی اور میں نے انھیں دیوار کے قریب دیکھا ۔ قتادھ نے بیان کیا کھ یھ بات اس آیت کے ساتھ ذکر کی جاتی ھے کھ ” اے لوگو ! جو ایمان لائے ھو ایسی چیزوں کے بارے میں سوال نھ کرو اگر وھ ظاھر کر دی جائیں تو تمھیں بری معلوم ھوں “ ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 92 Hadith no 7089
Web reference: Sahih Bukhari Volume 9 Book 88 Hadith no 211


وَقَالَ عَبَّاسٌ النَّرْسِيُّ حَدَّثَنَا يَزِيدُ بْنُ زُرَيْعٍ، حَدَّثَنَا سَعِيدٌ، حَدَّثَنَا قَتَادَةُ، أَنَّ أَنَسًا، حَدَّثَهُمْ أَنَّ نَبِيَّ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم بِهَذَا وَقَالَ كُلُّ رَجُلٍ لاَفًّا رَأْسَهُ فِي ثَوْبِهِ يَبْكِي‏.‏ وَقَالَ عَائِذًا بِاللَّهِ مِنْ سُوءِ الْفِتَنِ‏.‏ أَوْ قَالَ أَعُوذُ بِاللَّهِ مِنْ سُوءِ الْفِتَنِ‏.‏

The the above hadith was narrated by Anas through another chain and said (with the wording) "and every man had his head wrapped in his garment and weeping". And he said (with the wording) "seeking refuge with Allah from the evil of afflictions" or he said "I seek refuge with Allah from the evil of afflictions." اور عباس النرسی نے بیان کیا ، ان سے یزید بن زریع نے بیان کیا ، ان سے سعید نے بیان کیا ، ان سے قتادھ نے بیان کیا اور ان سے انس رضی اللھ عنھ نے نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم سے یھی حدیث بیان کی اور انس رضی اللھ عنھ نے کھا ھر شخص کپڑے میں اپنا سر لپیٹے ھوئے رورھا تھا اور فتنے سے اللھ کی پناھ مانگ رھا تھا یا یوں کھھ رھا تھا کھ میں اللھ سے فتنھ کی برائی سے پناھ مانگتا ھوں ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 92 Hadith no 7090
Web reference: Sahih Bukhari Volume 1 Book 88 Hadith no 211


وَقَالَ لِي خَلِيفَةُ حَدَّثَنَا يَزِيدُ بْنُ زُرَيْعٍ، حَدَّثَنَا سَعِيدٌ، وَمُعْتَمِرٌ، عَنْ أَبِيهِ، عَنْ قَتَادَةَ، أَنَّ أَنَسًا، حَدَّثَهُمْ عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم بِهَذَا وَقَالَ عَائِذًا بِاللَّهِ مِنْ شَرِّ الْفِتَنِ‏.‏

Narrated Anas: The above hadith is narrated on the authority of Anas thorugh another chain and he said (with the wording) "seeking refuge with Allah from the evil of afflictions." اور مجھ سے خلیفھ بن خیاط نے بیان کیا ، ان سے یزید بن زریع نے بیان کیا ، ان سے سعید و معتمر کے والد نے قتادھ سے اور ان سے انس رضی اللھ عنھ نے بیان کیا ، پھر یھی حدیث آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم سے نقل کی ، اس میں بجائے سوء کے شر کا لفظ ھے ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 92 Hadith no 7091
Web reference: Sahih Bukhari Volume 1 Book 88 Hadith no 211



Copyrights: if you have any objection regarding any shared content on pdf9.com please click here.