Search hadith by
Hadith Book
Search Query
Search Language
English Arabic Urdu
Search Type Basic    Case Sensitive
 

Sahih Bukhari

Asking Permission

كتاب الاستئذان

حَدَّثَنَا إِسْحَاقُ بْنُ مَنْصُورٍ، أَخْبَرَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ نُمَيْرٍ، حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللَّهِ، عَنْ سَعِيدِ بْنِ أَبِي سَعِيدٍ الْمَقْبُرِيِّ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ـ رضى الله عنه أَنَّ رَجُلاً، دَخَلَ الْمَسْجِدَ وَرَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم جَالِسٌ فِي نَاحِيَةِ الْمَسْجِدِ فَصَلَّى، ثُمَّ جَاءَ فَسَلَّمَ عَلَيْهِ فَقَالَ لَهُ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ وَعَلَيْكَ السَّلاَمُ ارْجِعْ فَصَلِّ فَإِنَّكَ لَمْ تُصَلِّ ‏"‏‏.‏ فَرَجَعَ فَصَلَّى، ثُمَّ جَاءَ فَسَلَّمَ‏.‏ فَقَالَ ‏"‏ وَعَلَيْكَ السَّلاَمُ فَارْجِعْ فَصَلِّ، فَإِنَّكَ لَمْ تُصَلِّ ‏"‏‏.‏ فَقَالَ فِي الثَّانِيَةِ أَوْ فِي الَّتِي بَعْدَهَا عَلِّمْنِي يَا رَسُولَ اللَّهِ‏.‏ فَقَالَ ‏"‏ إِذَا قُمْتَ إِلَى الصَّلاَةِ فَأَسْبِغِ الْوُضُوءَ، ثُمَّ اسْتَقْبِلِ الْقِبْلَةَ فَكَبِّرْ، ثُمَّ اقْرَأْ بِمَا تَيَسَّرَ مَعَكَ مِنَ الْقُرْآنِ، ثُمَّ ارْكَعْ حَتَّى تَطْمَئِنَّ رَاكِعًا، ثُمَّ ارْفَعْ حَتَّى تَسْتَوِيَ قَائِمًا، ثُمَّ اسْجُدْ حَتَّى تَطْمَئِنَّ سَاجِدًا، ثُمَّ ارْفَعْ حَتَّى تَطْمَئِنَّ جَالِسًا، ثُمَّ اسْجُدْ حَتَّى تَطْمَئِنَّ سَاجِدًا، ثُمَّ ارْفَعْ حَتَّى تَطْمَئِنَّ جَالِسًا، ثُمَّ افْعَلْ ذَلِكَ فِي صَلاَتِكَ كُلِّهَا ‏"‏‏.‏ وَقَالَ أَبُو أُسَامَةَ فِي الأَخِيرِ ‏"‏ حَتَّى تَسْتَوِيَ قَائِمًا ‏"‏‏.‏

Narrated Abu Huraira: A man entered the mosque while Allah's Messenger (PBUH) was sitting in one side of the mosque. The man prayed, came, and greeted the Prophet. Allah's Messenger (PBUH) said to him, "Wa 'Alaikas Salam (returned his greeting). Go back and pray as you have not prayed (properly)." The man returned, repeated his prayer, came back and greeted the Prophet. The Prophet (PBUH) said, "Wa alaika-s-Salam (returned his greeting). Go back and pray again as you have not prayed (properly)." The man said at the second or third time, "O Allah's Messenger (PBUH)! Kindly teach me how to pray". The Prophet (PBUH) said, "When you stand for prayer, perform ablution properly and then face the Qibla and say Takbir (Allahu-Akbar), and then recite what you know from the Qur'an, and then bow with calmness till you feel at ease then rise from bowing, till you stand straight, and then prostrate calmly (and remain in prostration) till you feel at ease, and then raise (your head) and sit with calmness till you feel at ease and then prostrate with calmness (and remain in prostration) till you feel at ease, and then raise (your head) and sit with calmness till you feel at ease in the sitting position, and do likewise in whole of your prayer." And Abu Usama added, "Till you stand straight." (See Hadith No. 759, Vol.1) ھم سے اسحٰق بن منصور نے بیان کیا انھوں نے کھا ھم کو عبداللھ بن نمیر نے خبر دی ، ان سے عبیداللھ نے بیان کیا ، ان سے سعید بن ابی سعید مقبری نے بیان کیا اور ان سے حضرت ابوھریرھ رضی اللھ عنھ نے بیان کیا کھ ایک شخص مسجد میں داخل ھوا ، رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم مسجد کے کنارے بیٹھے ھوئے تھے ۔ اس نے نماز پڑھی اور پھر حاضر ھو کر آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کو سلام کیا ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فر مایا ” علیک السلام “ واپس جا اور دوبارھ نماز پڑھ ، کیو نکھ تم نے نماز نھیں پڑھی ۔ وھ واپس گئے اور نماز پڑھی ۔ پھر ( نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم ) کے پاس آئے اور سلام کیا آپ نے فرمایا وعلیک السلام ۔ واپس جاؤ پھر نماز پڑھو ۔ کیو نکھ تم نے نماز نھیں پڑھی ۔ وھ واپس گیا اور اس نے پھر نماز پڑھی ۔ پھر واپس آیا اور نبی اکرم صلی اللھ علیھ وسلم کی خدمت میں سلام عرض کیا ۔ آپ صلی اللھ علیھ وسلم نے جواب میں فر مایا وعلیکم السلام ۔ واپس جاؤ اور دو بارھ نمازپڑھو ۔ کیو نکھ تم نے نماز نھیں پڑھی ۔ ان صاحب نے دوسر ی مرتبھ ، یا اس کے بعد ، عرض کیا یا رسول اللھ ! مجھے نماز پڑھنی سکھا دیجئیے ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فر مایا جب نماز کے لیے کھڑے ھواکرو تو پھلے پو ری طرح وضو کیا کرو ، پھر قبلھ رو ھو کر تکبیر ( تحریمھ ) کھو ، اس کے بعد قر آن مجید میں سے جو تمھارے لئے آسان ھو وھ پڑھو ، پھر رکوع کرو اور جب رکوع کی حالت میں برابر ھو جاؤ تو سر اٹھاؤ ۔ جب سیدھے کھڑے ھو جاؤ تو پھر سجدھ میں جاؤ ، جب سجدھ پو ری طرح کر لو تو سر اٹھاؤ اور اچھی طرح سے بیٹھ جاؤ ۔ یھی عمل اپنی ھر رکعت میں کرو ۔ اور ابواسامھ راوی نے دوسرے سجدھ کے بعد یوں کھا پھر سر اٹھا یھاں تک کھ سید ھا کھڑا ھو جا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 79 Hadith no 6251
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 74 Hadith no 268


حَدَّثَنَا ابْنُ بَشَّارٍ، قَالَ حَدَّثَنِي يَحْيَى، عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ، حَدَّثَنِي سَعِيدٌ، عَنْ أَبِيهِ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، قَالَ قَالَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ ثُمَّ ارْفَعْ حَتَّى تَطْمَئِنَّ جَالِسًا ‏"‏‏.‏

Narrated Abu Huraira: The Prophet (PBUH) said (in the above narration No. 268), "And then raise your head till you feel at ease while sitting. " ھم سے ابن بشار نے بیان کیا ، کھا کھ مجھ سے یحییٰ نے بیان کیا ، ان سے عبیداللھ نے ، ان سے سعید نے بیان کیا ، ان سے ان کے والد نے اور ان سے حضر ت ابوھریرھ رضی اللھ عنھ نے بیان کیا کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے فر مایا ، پھر سر سجدھ سے اٹھا اور اچھی طرح بیٹھ جا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 79 Hadith no 6252
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 74 Hadith no 269


حَدَّثَنَا أَبُو نُعَيْمٍ، حَدَّثَنَا زَكَرِيَّاءُ، قَالَ سَمِعْتُ عَامِرًا، يَقُولُ حَدَّثَنِي أَبُو سَلَمَةَ بْنُ عَبْدِ الرَّحْمَنِ، أَنَّ عَائِشَةَ ـ رضى الله عنها ـ حَدَّثَتْهُ أَنَّ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم قَالَ لَهَا ‏"‏ إِنَّ جِبْرِيلَ يُقْرِئُكِ السَّلاَمَ ‏"‏‏.‏ قَالَتْ وَعَلَيْهِ السَّلاَمُ وَرَحْمَةُ اللَّهِ‏.‏


Chapter: If one says, "So-and-so sends Salam to you"

Narrated `Aisha: That the Prophet (PBUH) said to her, "Gabriel sends Salam (greetings) to you." She replied, "Wa 'alaihi-s- Salam Wa Rahmatu-l-lah." (Peace and Allah's Mercy be on him). ھم سے ابونعیم نے بیان کیا ، کھا ھم سے زکریا نے بیان کیا ، کھا کھ میں نے عامر سے سنا ، انھوں نے بیان کیا کھ مجھ سے ابوسلمھ بن عبدالرحمٰن نے بیان کیا اور ان سے حضرت عائشھ رضی اللھ عنھا نے بیان کیا کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے اس سے فرمایا کھ جبرائیل علیھ السلام تمھیں سلام کھتے ھیں ۔ عائشھ رضی اللھ عنھا نے کھا کھ ” وعلیھ السلام ورحمۃ اللھ ۔ ان پر بھی اللھ کی طرف سے سلامتی اور اس کی رحمت نازل ھو ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 79 Hadith no 6253
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 74 Hadith no 270


حَدَّثَنَا إِبْرَاهِيمُ بْنُ مُوسَى، أَخْبَرَنَا هِشَامٌ، عَنْ مَعْمَرٍ، عَنِ الزُّهْرِيِّ، عَنْ عُرْوَةَ بْنِ الزُّبَيْرِ، قَالَ أَخْبَرَنِي أُسَامَةُ بْنُ زَيْدٍ، أَنَّ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم رَكِبَ حِمَارًا عَلَيْهِ إِكَافٌ، تَحْتَهُ قَطِيفَةٌ فَدَكِيَّةٌ، وَأَرْدَفَ وَرَاءَهُ أُسَامَةَ بْنَ زَيْدٍ وَهْوَ يَعُودُ سَعْدَ بْنَ عُبَادَةَ فِي بَنِي الْحَارِثِ بْنِ الْخَزْرَجِ، وَذَلِكَ قَبْلَ وَقْعَةِ بَدْرٍ حَتَّى مَرَّ فِي مَجْلِسٍ فِيهِ أَخْلاَطٌ مِنَ الْمُسْلِمِينَ وَالْمُشْرِكِينَ عَبَدَةِ الأَوْثَانِ وَالْيَهُودِ، وَفِيهِمْ عَبْدُ اللَّهِ بْنُ أُبَىٍّ ابْنُ سَلُولَ، وَفِي الْمَجْلِسِ عَبْدُ اللَّهِ بْنُ رَوَاحَةَ، فَلَمَّا غَشِيَتِ الْمَجْلِسَ عَجَاجَةُ الدَّابَّةِ خَمَّرَ عَبْدُ اللَّهِ بْنُ أُبَىٍّ أَنْفَهُ بِرِدَائِهِ ثُمَّ قَالَ لاَ تُغَبِّرُوا عَلَيْنَا‏.‏ فَسَلَّمَ عَلَيْهِمُ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ثُمَّ وَقَفَ فَنَزَلَ، فَدَعَاهُمْ إِلَى اللَّهِ وَقَرَأَ عَلَيْهِمُ الْقُرْآنَ فَقَالَ عَبْدُ اللَّهِ بْنُ أُبَىٍّ ابْنُ سَلُولَ أَيُّهَا الْمَرْءُ لاَ أَحْسَنَ مِنْ هَذَا، إِنْ كَانَ مَا تَقُولُ حَقًّا، فَلاَ تُؤْذِنَا فِي مَجَالِسِنَا، وَارْجِعْ إِلَى رَحْلِكَ، فَمَنْ جَاءَكَ مِنَّا فَاقْصُصْ عَلَيْهِ‏.‏ قَالَ ابْنُ رَوَاحَةَ اغْشَنَا فِي مَجَالِسِنَا، فَإِنَّا نُحِبُّ ذَلِكَ‏.‏ فَاسْتَبَّ الْمُسْلِمُونَ وَالْمُشْرِكُونَ وَالْيَهُودُ حَتَّى هَمُّوا أَنْ يَتَوَاثَبُوا، فَلَمْ يَزَلِ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم يُخَفِّضُهُمْ، ثُمَّ رَكِبَ دَابَّتَهُ حَتَّى دَخَلَ عَلَى سَعْدِ بْنِ عُبَادَةَ فَقَالَ ‏"‏ أَىْ سَعْدُ أَلَمْ تَسْمَعْ مَا قَالَ أَبُو حُبَابٍ ‏"‏‏.‏ يُرِيدُ عَبْدَ اللَّهِ بْنَ أُبَىٍّ قَالَ كَذَا وَكَذَا قَالَ اعْفُ عَنْهُ يَا رَسُولَ اللَّهِ وَاصْفَحْ فَوَاللَّهِ لَقَدْ أَعْطَاكَ اللَّهُ الَّذِي أَعْطَاكَ، وَلَقَدِ اصْطَلَحَ أَهْلُ هَذِهِ الْبَحْرَةِ عَلَى أَنْ يُتَوِّجُوهُ فَيُعَصِّبُونَهُ بِالْعِصَابَةِ، فَلَمَّا رَدَّ اللَّهُ ذَلِكَ بِالْحَقِّ الَّذِي أَعْطَاكَ شَرِقَ بِذَلِكَ، فَذَلِكَ فَعَلَ بِهِ مَا رَأَيْتَ، فَعَفَا عَنْهُ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم‏.‏


Chapter: Greeting a mix-up gathering

Narrated `Urwa-bin Az-Zubair: Usama bin Zaid said, "The Prophet (PBUH) rode over a donkey with a saddle underneath which there was a thick soft Fadakiya velvet sheet. Usama bin Zaid was his companion rider, and he was going to pay a visit to Sa`d bin Ubada (who was sick) at the dwelling place of Bani Al-Harith bin Al-Khazraj, and this incident happened before the battle of Badr. The Prophet (PBUH) passed by a gathering in which there were Muslims and pagan idolators and Jews, and among them there was `Abdullah bin Ubai bin Salul, and there was `Abdullah bin Rawaha too. When a cloud of dust raised by the animal covered that gathering, `Abdullah bin Ubai covered his nose with his Rida (sheet) and said (to the Prophet), "Don't cover us with dust." The Prophet (PBUH) greeted them and then stopped, dismounted and invited them to Allah (i.e., to embrace Islam) and also recited to them the Holy Qur'an. `Abdullah bin Ubai' bin Salul said, "O man! There is nothing better than what you say, if what you say is the truth. So do not trouble us in our gatherings. Go back to your mount (or house,) and if anyone of us comes to you, tell (your tales) to him." On that `Abdullah bin Rawaha said, "(O Allah's Messenger (PBUH)!) Come to us and bring it(what you want to say) in our gatherings, for we love that." So the Muslims, the pagans and the Jews started quarreling till they were about to fight and clash with one another. The Prophet (PBUH) kept on quietening them (till they all became quiet). He then rode his animal, and proceeded till he entered upon Sa`d bin 'Ubada, he said, "O Sa`d, didn't you hear what Abu Habbab said? (He meant `Abdullah bin Ubai). He said so-and-so." Sa`d bin 'Ubada said, "O Allah's Messenger (PBUH)! Excuse and forgive him, for by Allah, Allah has given you what He has given you. The people of this town decided to crown him (as their chief) and make him their king. But when Allah prevented that with the Truth which He had given you, it choked him, and that was what made him behave in the way you saw him behaving." So the Prophet excused him. ھم سے ابراھیم بن موسیٰ نے بیان کیا ، کھا ھم کو ھشام بن عروھ نے خبر دی ، انھیں معمر نے ، انھیں زھری نے ، ان سے عروھ بن زبیر نے بیان کیا کھ مجھے اسامھ بن زید رضی اللھ عنھ نے خبر دی کھ نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم ایک گدھے پر سوار ھوئے جس پر پالان بندھا ھوا تھا اور نیچے فد ک کی بنی ھوئی ایک مخملی چادر بچھی ھوئی تھی ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے سواری پر اپنے پیچھے اسامھ بن زید رضی اللھ عنھ کو بٹھایا تھا ۔ آپ بنی حارث بن خزرج میں حضرت سعد بن عبادھ رضی اللھ عنھ کی عیادت کے لئے تشریف لے جا رھے تھے ۔ یھ جنگ بدر سے پھلے کا واقعھ ھے ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم ایک مجلس پر سے گزرے جس میں مسلمان بت پرست مشرک اور یھودی سب ھی شریک تھے ۔ عبداللھ بن ابی ابن سلول بھی ان میں تھا ۔ مجلس میں عبداللھ بن رواحھ بھی موجود تھے ۔ جب مجلس پر سواری کا گرد پڑا تو عبداللھ نے اپنی چادر سے اپنی ناک چھپا لی اور کھا کھ ھمارے اوپر غبار نھ اڑاؤ ۔ پھر حضور اکرم صلی اللھ علیھ وسلم نے سلام کیا اور وھاں رک گئے اور اتر کر انھیں اللھ کی طرف بلایا اور ان کے لئے قرآن مجید کی تلاو ت کی ۔ عبداللھ بن ابی ابن سلول بولا ، میاں میں ان باتوں کے سمجھنے سے قاصر ھوں اگر وھ چیز حق ھے جو تم کھتے ھو تو ھماری مجلسوں میں آ کر ھمیں تکلیف نھ دیا کرو ۔ اس پر ابن رواحھ نے کھا آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم ھماری مجلسوں میں تشریف لایا کریں کیونکھ ھم اسے پسند کرتے ھیں ۔ پھر مسلمانوں مشرکوں اور یھودیوں میں اس بات پر تو تو میں میں ھونے لگی اور قریب تھا کھ وھ کوئی ارادھ کربیٹھیں اور ایک دوسرے پر حملھ کر دیں ۔ لیکن آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم انھیں برابر خاموش کراتے رھے اور جب وھ خاموش ھو گئے تو آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم اپنی سواری پر بیٹھ کر سعد بن عبادھ رضی اللھ عنھ کے یھاں گئے ۔ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے ان سے فرمایا ، سعد تم نے نھیں سنا کھ ابو حباب نے آج کیا بات کھی ھے ۔ آپ کا اشارھ عبداللھ بن ابی کی طرف تھا کھ اس نے یھ یھ باتیں کھی ھیں ۔ حضرت سعد نے عرض کیا کھ یا رسول اللھ ! اسے معاف کر دیجئیے اور درگزر فرمائیے ۔ اللھ تعالیٰ نے وھ حق آپ کو عطا فرمایا ھے جو عطا فرمانا تھا ۔ اس بستی ( مدینھ منورھ ) کے لوگ ( آپ کی تشریف آوری سے پھلے ) اس پر متفق ھو گئے تھے کھ اسے تاج پھنا دیں اور شاھی عمامھ اس کے سر پر باندھ دیں لیکن جب اللھ تعالیٰ نے اس منصوبھ کو اس حق کی وجھ سے ختم کر دیا جو اس نے آپ کو عطا فرمایا ھے تو اسے حق سے حسد ھو گیا اور اسی وجھ سے اس نے یھ معاملھ کیا ھے جو آپ نے دیکھا ۔ چنانچھ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے اسے معاف کر دیا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 79 Hadith no 6254
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 74 Hadith no 271


حَدَّثَنَا ابْنُ بُكَيْرٍ، حَدَّثَنَا اللَّيْثُ، عَنْ عُقَيْلٍ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ، عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ، أَنَّ عَبْدَ اللَّهِ بْنَ كَعْبٍ، قَالَ سَمِعْتُ كَعْبَ بْنَ مَالِكٍ، يُحَدِّثُ حِينَ تَخَلَّفَ عَنْ تَبُوكَ، وَنَهَى، رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم عَنْ كَلاَمِنَا، وَآتِي رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم فَأُسَلِّمُ عَلَيْهِ، فَأَقُولُ فِي نَفْسِي هَلْ حَرَّكَ شَفَتَيْهِ بِرَدِّ السَّلاَمِ أَمْ لاَ حَتَّى كَمَلَتْ خَمْسُونَ لَيْلَةً، وَآذَنَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم بِتَوْبَةِ اللَّهِ عَلَيْنَا حِينَ صَلَّى الْفَجْرَ‏.‏

Narrated `Abdullah bin Ka`b: I heard Ka`b bin Malik narrating (when he did not join the battle of Tabuk): Allah's Messenger (PBUH) forbade all the Muslims to speak to us. I would come to Allah's Messenger (PBUH) and greet him, and I would wonder whether the Prophet (PBUH) did move his lips to return to my greetings or not till fifty nights passed away. The Prophet (PBUH) then announced (to the people) Allah's forgiveness for us (acceptance of our repentance) at the time when he had offered the Fajr (morning) prayer. ھم سے ابن بکیر نے بیان کیا ، کھا ھم سے لیث بن سعد نے بیان کیا ، ان سے عقیل نے ، ان سے ابن شھاب نے ، ان سے عبدالرحمٰن بن عبداللھ نے اور ان سے عبداللھ بن کعب نے بیان کیا کھ میں نے کعب بن مالک سے سنا ، وھ بیان کرتے تھے کھ جب وھ غزوھ تبوک میں شریک نھیں ھو سکے تھے اور نبی کریم صلی اللھ علیھ وسلم نے ھم سے بات چیت کرنے کی ممانعت کر دی تھی اور میں آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم کی خدمت میں حاضر ھو کر سلام کرتا تھا اور یھ اندازھ لگاتاتھا کھ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے جواب سلام میں ھونٹ مبارک ھلائے یا نھیں ، آخر پچاس دن گزرگئے اور آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے اللھ کی بارگاھ میں ھماری توبھ کے قبول کئے جانے کا نماز فجر کے بعد اعلان کیا ۔

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 79 Hadith no 6255
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 74 Hadith no 272


حَدَّثَنَا أَبُو الْيَمَانِ، أَخْبَرَنَا شُعَيْبٌ، عَنِ الزُّهْرِيِّ، قَالَ أَخْبَرَنِي عُرْوَةُ، أَنَّ عَائِشَةَ ـ رضى الله عنها ـ قَالَتْ دَخَلَ رَهْطٌ مِنَ الْيَهُودِ عَلَى رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم فَقَالُوا السَّامُ عَلَيْكَ‏.‏ فَفَهِمْتُهَا فَقُلْتُ عَلَيْكُمُ السَّامُ وَاللَّعْنَةُ‏.‏ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ مَهْلاً يَا عَائِشَةُ، فَإِنَّ اللَّهَ يُحِبُّ الرِّفْقَ فِي الأَمْرِ كُلِّهِ ‏"‏‏.‏ فَقُلْتُ يَا رَسُولَ اللَّهِ أَوَلَمْ تَسْمَعْ مَا قَالُوا قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ فَقَدْ قُلْتُ وَعَلَيْكُمْ ‏"‏‏.‏


Chapter: How to return the greeting of Dhimmi

Narrated `Aisha: A group of Jews came to Allah's Messenger (PBUH) and said, "As-samu 'Alaika " (Death be on you), and I understood it and said to them, "Alaikum AsSamu wa-l-la'na (Death and curse be on you)." Allah's Apostle said, "Be calm! O `Aisha, for Allah loves that one should be kind and lenient in all matters." I said. "O Allah's Messenger (PBUH)! Haven't you heard what they have said?" Allah's Messenger (PBUH) said, "I have (already) said (to them), 'Alaikum (upon you).' " ھم سے ابو الیمان نے بیان کیا ، انھوں نے کھا ھم کو شعیب نے خبر دی ، انھیں زھری نے ، انھوں نے کھا کھ مجھے عروھ نے خبر دی ، اور ان سے حضرت عائشھ رضی اللھ عنھا نے بیان کیاکھ کچھ یھودی رسول اللھ صلی اللھ علیھ وسلم کی خدمت میں حاضر ھوئے اور کھا کھ ” السام علیک “ ( تمھیں موت آئے ) میں ان کی بات سمجھ گئی اور میں نے جواب دیا ” علیکم السام واللعنۃ “ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا عائشھ صبر سے کام لے کیونکھ اللھ تعالیٰ تمام معاملات میں نرمی کو پسند کرتا ھے ، میں نے عرض کیا یا رسول اللھ ! کیا آپ نے نھیں سنا کھ انھوں نے کیا کھا تھا ؟ آنحضرت صلی اللھ علیھ وسلم نے فرمایا کھ میں نے ان کو جواب دے دیا تھا کھ ” وعلیکم “ ( اور تمھیں بھی )

Share »

Book reference: Sahih Bukhari Book 79 Hadith no 6256
Web reference: Sahih Bukhari Volume 8 Book 74 Hadith no 273



Copyrights: if you have any objection regarding any shared content on pdf9.com please click here.